فیروز نظامی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
فیروز نظامی
معلومات شخصیت
پیدائش 10 نومبر 1910(1910-11-10)ء
لاہور، برطانوی ہندوستان (موجودہ پاکستان)
وفات 15 نومبر 1975(1975-11-15) (عمر  65 سال)
لاہور، پاکستان
وجہ وفات دورۂ قلب  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قومیت پاکستان کا پرچمپاکستانی
عملی زندگی
تعليم بی اے
مادر علمی اسلامیہ کالج لاہور
پیشہ نغمہ ساز  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ شہرت موسیقار، مصنف
صنف فلمی موسیقی

فیروز نظامی (پیدائش: 10 نومبر، 1910ء - وفات: 15 نومبر، 1975ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے بر صغیر کے نامور فلمی موسیقار تھے جنہوں نے تیرے مکھڑے دا کالا کالا تل وے اور چاندنی راتیں تاروں سے کریں باتیں جیسے مشہور و معروف نغمات کی موسیقی ترتیب دی۔

حالات زندگی[ترمیم]

فیروز نظامی 10 نومبر، 1910ء کو لاہور، برطانوی ہندوستان (موجودہ پاکستان) میں پیدا ہوئے [1][2]۔

ان کا تعلق لاہور کے ایک فن کار گھرانے سے تھا۔ 

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

اسلامیہ کالج لاہور سے گریجویشن کیا ساتھ ساتھ ہی اپنے گھرانے کے مشہور استاد استاد عبد الوحید خان کیرانوی سے موسیقی کے اسرار و رموز سیکھتے رہے اور بہت جلد خود بھی موسیقی میں درجہ استاد تک پہنچ گئے۔ [3]

وہ 10 نومبر 1910 کو برطانوی ہندوستان (جدید لاہور ، پاکستان میں) میں پیدا ہوئے۔ فیروز نظامی نے اپنی تعلیم گورنمنٹ اسلامیہ کالج سے حاصل کی، اور بعد میں ایک سرکاری کالج سے گریجویشن کیا۔ اس نے تصوف اور مابعد الطبیعیات کا بھی مطالعہ کیا۔ وہ پاکستانی کرکٹر نذر محمد اور مصنف سراج نظامی کے بھائی تھے۔ ان کی شادی ہندوستانی نژاد خاتون غلام فاطمہ سے ہوئی تھی۔ 2016 میں، ان کی اہلیہ نے دلیل دی کہ اس نے حکومت پاکستان کو مالی امداد کے لیے متعدد درخواستیں جمع کرائی ہیں، جن میں پنجاب کی صوبائی حکومت بھی شامل ہے، ایکسپریس ٹریبیون کے مطابق وہ لاہور کے بھاٹی چوک کے علاقے جوگی محلہ میں کرائے کے ایک کمرے میں رہ رہی ہے، اور حکام کی طرف سے مدد نہیں کی گئی. دعویٰ کردہ مشکل حالات کے بعد، خیال کیا جاتا ہے کہ وہ اپنے آبائی شہر بھنڈی بازار ، بھارت واپس آ جائیں گی۔ فیروز نظامی اصل میں لاہور کے ایک سرکاری ریڈیو سٹیشن میں بطور گلوکار کام کر رہے تھے اور بعد میں ان کا تبادلہ آل انڈیا ریڈیو میں کر دیا گیا اور بالآخر دہلی اور بعد میں لکھنؤ میں یہاں تک کہ وہ بالی ووڈ میں کیریئر کے مواقع کی تلاش میں بمبئی (اب ممبئی ) چلے گئے۔ . ریڈیو اسٹیشن پر کام کے دوران انہیں سعادت حسن منٹو ، کرشن چندر اور ایک اور میوزک ڈائریکٹر خواجہ خورشید انور جیسے لوگوں کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا

1936ء میں جب لاہور سے آل انڈیا ریڈیو کی نشریات کا آغاز ہوا تو فیروز نظامی اس ادارے سے بطور پروڈیوسر وابستہ ہو گئے اور لاہور کے بعد دہلی اور لکھنؤ کے ریڈیو اسٹیشن سے اپنے فن کا جادو جگاتے رہے کچھ عرصہ بعد وہ آل انڈیا ریڈیو کی ملازمت ترک کرکے بمبئی پہنچ گئے۔[3]

کام[ترمیم]

اردو اور ہندی فلموں میں قدم رکھنے سے پہلے، فیروز نے کلاسیکی موسیقی کی تربیت کیرانہ گھرانے کے کلاسیکی موسیقی کے استاد عبدالواحد خان سے حاصل کی۔ اپنی تربیت مکمل کرنے کے بعد، انہوں نے آل انڈیا ریڈیو کے لیے کام کرنا درمیان میں چھوڑ دیا اور بالی ووڈ فلم انڈسٹری میں ممبئی چلے گئے۔ انہوں نے اپنے پورے کیریئر میں مختلف قسم کی موسیقی ترتیب دی، اور ہندوستان (تقسیم سے پہلے) اور پاکستان میں (تقسیم کے بعد) کلاسیکی، نیم کلاسیکی ، ٹھمری اور مغربی موسیقی کا استعمال کیا۔ انہوں نے اصل میں اپنے کیریئر کا آغاز 1943 میں وشواس فلم سے کیا، جس میں انہوں نے ہندوستانی میوزک ڈائریکٹر چہلالال کے ساتھ کام کیا۔ اس کے بعد انہوں نے 1946 میں نیک پروین فلم کے لیے موسیقی ترتیب دی، جو اس وقت کی ایک فلاپ فلم تھی، لیکن اس کی کچھ کمپوزیشن اچھی تھیں۔ بعد ازاں 1947 میں، نور جہاں اور ان کے شوہر شوکت حسین رضوی کی پروڈکشن کمپنی شوکت آرٹ پروڈکشن (SAP) نے ممبئی میں انہیں SAP کی پہلی فلم جگنو کے لیے موسیقی دینے کے لیے بھرتی کیا، جو 1940 کی دہائی کی ایک میوزک بلاک بسٹر فلم تھی۔

تقسیم کے بعد، وہ لاہور ہجرت کر گئے اور پاکستانی فلم انڈسٹری میں بطور میوزک ڈائریکٹر اپنی پہلی فلم ہماری بستی (1949) کے ساتھ کام کرنا شروع کیا، جو ایک فلاپ فلم تھی۔ تاہم، چار سال بعد، نور جہاں نے پاکستانی فلم ' چن وی ' پروڈیوس کی، اس فلم کے لیے ان کی کمپوزیشن کو برصغیر پاک و ہند میں سراہا گیا۔ 1952 میں، انہوں نے دوپٹہ فلم کے لیے موسیقی دی، جو 1950 کی دہائی کی واحد پاکستانی فلم تھی۔


بمبئی میں انہیں فلمی صنعت نے خوش آمدید کہا یہ وہ زمانہ تھا جب ماسٹر غلام حیدر اور استاد جھنڈے خان جیسے موسیقار بمبئی کی فلمی صنعت پر چھائے ہوئے تھے ان بڑے موسیقاروں کی موجودگی میں فیروز نظامی نے اپنے فن کا لوہا منوایا۔بمبئی میں ان کی ابتدائی فلموں میں وشواس، بڑی بات، امنگ، اس پار، شربتی آنکھیں، امر راج، نیک پروین، پتی سیوا اور رنگین کہانی شامل تھیں مگر انہیں جس فلم سے ہندوستان گیر شہرت ملی وہ شوکت حسین رضوی کی فلم جگنو تھی۔ اس فلم میں دلیپ کمار اور نور جہاں نے مرکزی کردار ادا کیے تھے۔ اس فلم کی کامیابی میں فیروز نظامی کی خوبصورت موسیقی کا بھی بڑا دخل تھا۔[3]

تقسیم ہند کے بعد فیروز نظامی لاہور واپس آ گئے جہاں انہوں نے شوکت حسین رضوی کی فلم چن وے اور سبطین فضلی کی فلم دوپٹہ کی لازوال موسیقی ترتیب دی۔ فیروز نظامی کی موسیقی سے مزین دیگر فلموں میں ہماری بستی، شرارے، سوہنی، انتخاب، راز، قسمت، سولہ آنے، زنجیر، منزل، سوکن، غلام اور سوغات شامل تھیں۔ فیروز نظامی نے صرف فلموں کے لیے موسیقی ہی ترتیب نہیں دی بلکہ انہوں نے موسیقی میں اپنے اساتذہ سے جو کچھ سیکھا، اسے دوسروں تک پہنچانے کے لیے بھی عملی اقدامات کیے اس سلسلے میں انہوں نے کئی کتابیں تحریر کیں جن میں اسرار موسیقی، رموز موسیقی اور سرچشمۂ حیات کے نام سرفہرست ہیں۔ دو کتابیں انگریزی میں بھی تحریر کیں۔ وہ انگریزی اخبار پاکستان ٹائمز میں آرٹیکل لکھا کرتے تھے۔ ان کے علاوہ پاکستان آرٹس کونسل لاہور کی میوزک اکیڈمی میں بھی موسیقی پر لیکچر دیتے رہے۔ ان کے شاگردوں میں سلیم حسین، اقبال حسین سرفہرست ہیں جنہوں نے بعد میں سلیم اقبال کے نام سے کئی فلموں کی موسیقی بھی ترتیب دی۔ ان کے علاوہ نامور گلوکار محمد رفیع کو فلمی صنعت میں متعارف کروانے کا سہرا بھی فیروز نظامی کے سر ہے۔[3]

1950 کی دہائی کے آخر میں، وہ لاہور، پاکستان میں الحمرا آرٹس کونسل میں کلاسیکی موسیقی سکھایا کرتے تھے۔

ادبی کام[ترمیم]

موسیقی ترتیب دینے کے علاوہ، اس نے آرٹ اور موسیقی پر کتابیں بھی لکھیں، بشمول انگریزی زبان کی کتابیں جس کا عنوان ہے ABC of Music and History and Development of Music ، اس موضوع پر واحد تحریریں جو ملک کے ایک خودمختار ریاست بننے کے بعد لکھی گئی تھیں۔ بعد کے سالوں میں، اس نے اس موضوع پر مزید کتابیں لکھیں جیسے رموز موسیٰ اور اسرار موسیٰ ۔ انہوں نے روحانیت پر ایک کتاب لکھی سرچشمہ حیات ان کی سوانح عمری پر مشتمل تھی۔

فیروز نظامی معروف ادیب سراج نظامی کے چھوٹے اور نامور کرکٹ کھلاڑی نذر محمد کے بڑے بھائی تھے۔[3]

فلمی موسیقی[ترمیم]

مشہور نغمات[ترمیم]

  • تیرے مکھڑے دا کالا کالا تل وے (فلم چن وے)
  • اور چن دیا ٹوٹیا دل دیا کھوٹیا (فلم چن وے)
  • چاندنی راتیں تاروں سے کریں باتیں (فلم ڈوپٹہ)
  • جگر کی آگ سے اس دل کو (فلم ڈوپٹہ)

تصانیف[ترمیم]

  • اسرار موسیقی
  • رموز موسیقی
  • سرچشمۂ حیات

وفات[ترمیم]

فیروز نظامی 15 نومبر، 1975ء کو لاہور، پاکستان میں حرکت قلب بند ہونے سے وفات پاگئے۔ وہ لاہور میں میانی صاحب کے قبرستان میں آسودۂ خاک ہیں۔[1][2][3]


کتابیات[ترمیم]

Nizami، Feroze (1988). History and Development of Music. Punjab Council of the Arts. صفحہ 151. اخذ شدہ بتاریخ 06 جولا‎ئی 2020. Nizami، Feroze (1988). ABC of Music. Punjab Council of the Arts. صفحہ 142. اخذ شدہ بتاریخ 06 جولا‎ئی 2020. Nizami، Feroze (1988). Asrār-i mūsīqī. Niẓāmī Pablīkeshanz. صفحہ 196. اخذ شدہ بتاریخ 06 جولا‎ئی 2020.

حوالہ جات[ترمیم]