فینول اور پانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

فینول ایک ٹھوس مرکب ہے جو پانی میں حل پزیر ہے۔
فینول کو اکثر کاربولک ایسڈ بھی کہتے ہیں۔

خشک فینول

جب کسی شیشے کے برتن میں فینول کو پانی میں ملایا جاتا ہے تو ایک ہی برتن میں دو محلول بن جاتے ہیں جو تیل اور پانی کی طرح الگ الگ رہتے ہیں اور ہلانے پر بھی عارضی طور پر تو ایک گدلا محلول بنا دیتے ہیں مگر اگر مناسب وقت دیا جائے تو یہ پھر الگ الگ ہو جاتے ہیں۔
اس میں نیچے کے محلول میں پانی فینول میں حل ہوتا ہے جبکہ اوپر کے محلول میں فینول پانی میں حل ہوتا ہے اور یہ دونوں محلول ایک دوسرے میں حل نہیں ہوتے۔ اگر درجہ حرارت آہستہ آہستہ بڑھایا جائے تو ان دونوں محلولوں کی حل پذیری ایک دوسرے میں بڑھتی چلی جاتی ہے اور 66.8 ڈگری سنٹی گریڈ پر دونوں محلول مکمل طور پر ایک دوسرے میں حل ہو جاتے ہیں۔ اب اس برتن میں تیل پانی کی طرح دو مائع نظر نہیں آتے۔ ٹھنڈا کرنے پر دوبارہ دونوں محلول الگ الگ ہو جاتے ہیں۔

فینول کے برعکس کچھ مرکبات ایسے بھی ہیں جو پانی کے ساتھ حل ہو کر ایک ہی محلول بناتے ہیں مگر گرم کرنے پر دو محلولوں میں بٹ جاتے ہیں۔ اگر trimethylamine اور پانی کی برابر برابر مقدار بلحاظ حجم ملائی جائے تو ایک ہی شفاف محلول حاصل ہوتا ہے۔ مگر گرم کرنے پر یہ دو الگ الگ محلولوں میں تقسیم ہو جاتا ہے۔ ٹھنڈا کرنے پر یہ دونوں محلول پھر سے مل کر ایک ہو جاتے ہیں۔[1]
نکوٹین اور پانی ملکر ایسا محلول بناتے ہیں جو بہت گرم یا بہت سرد حالت میں تو ایک ہی محلول ہوتا ہے لیکن درمیانی درجہ حرارت پر دو محلولوں میں بٹ جاتا ہے۔

فینول اور پانی کا گراف[ترمیم]

اگر پانی میں فینول ملاتے چلے جائیں تو پہلے ایک محلول بنتا ہے پھر دو محلول بنتے ہیں اور آخر میں پھر ایک محلول رہ جاتا ہے۔

بائیں طرف دیے ہوئے گراف سے واضح ہوتا ہے کہ اگر 50 ڈگری سینٹی گریڈ کے پانی میں 11 فیصد سے کم فینول ہو تو صرف ایک محلول بنتا ہے۔ 11 سے 63 فیصد فینول کی موجودگی میں فینول اور پانی کے دو محلول بنتے ہیں۔ 63 فیصد سے زیادہ فینول پانی کے ساتھ صرف ایک محلول بناتی ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالے[ترمیم]