قائداعظم ریزیڈنسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
زیارت میں واقع قائد اعظم ریزیڈنسی کی عمارت
قائداعظم ریزیڈنسی عمارت

کوئٹہ سے 122کلو میٹر کے فاصلے پر واقع وادی زیارت کے خوبصورت اور پر فضاء مقام پر واقع ہے ۔ لکڑی سے تعمیر کی گئی یہ خوبصورت رہائش گاہ اپنے بنانے والے کے اعلیٰ فن کی عکاس ہے۔ عمارت کے بیرونی چاروں اطراف میں لکڑی کے ستون ہیں اور عمارت کے اندرونی حصے میں بھی لکڑی کا ا ستعمال بہت خو بصورتی سے کیا گیا ہے آٹھ کمروں پر مشتمل اس رہائش گاہ میں دونوں اطراف سے مجموعی طور پر 28 دروازے بنائے گئے ہیں۔

تاریخ و اہمیت[ترمیم]

یہ رہائشگاہ سنہ 1892 کے آس پاس لکڑی سے تعمیر کی گئی تھی۔یہ بات بھی کہی جاتی ہے کہ اس دور میں جو بھی حکومتِ برطانیہ کے افسران یہاں آتے تھے وہ اس رہائشگاہ میں قیام کرتے تھے۔

قائد اعظم ریزیڈنسی پاکستان کے 100 روپے کے بینک نوٹ پر

قیام پاکستان کے بعد 1948ء میں اس رہائش گاہ کی تاریخی اہمیت میں اس وقت اضافہ ہوا جب یکم جولائی کو بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح اپنے ذاتی معالج ڈاکٹر کرنل الٰہی بخش کے مشورے پر ناسازئ طبیعت کے باعث یہاں تشریف لائے۔ قائد اعظم نے اپنی زندگی کے آخری دو ماہ دس دن اس رہائش گاہ میں قیام کیا۔ جس کے بعد اس رہائش گاہ کو "قائداعظم ریزیڈنسی" کا نام دے کر قومی ورثہ قرار دیا گیا۔ بلوچستان کو قائداعظم ریزیڈنسی کی تصاویر سے بھی متعارف کرایا جاتا ہے جیسا کہ پاکستان کے 100 روپے کے بینک نوٹ کے عقبی رخ پر اس کی تصویر موجود ہے جبکہ کئی پاکستانی ٹیلی وژن چینلوں میں یہ رہائش گاہ ہی بلوچستان کی نمائندگی کرتی دکھائی دیتی ہے۔

ریزیڈنسی میں قائم کمروں میں ایک کمرہ محترمہ فاطمہ جناح اور ایک کمرہ قائد اعظم کے ذاتی معالج کرنل الہی بخش جبکہ ایک کمرہ ان کے ذاتی معتمد کے لئے مختص کیا گیا تھا۔ یہ عمارت آج بھی قائد اعظم کی بارعب شخصیت کا احساس دلاتی ہے ۔

رہائش گاہ میں ایک کمرہ ایسا بھی ہے جہاں قائداعظم دوپہر اور رات کو کھانا کھانے اور اپنے رفقاءکار کے ساتھ شطرنج کھیلا کھیلتے تھے۔ اپنی زندگی کے آخری ایام میں بابائے قوم، جب شدید علیل تھے تو محترمہ فاطمہ جناح وہاں ان کی تیمارداری کے لئے ان کے ساتھ ہی رہائش گاہ میں قیام کرتی تھیں۔ رہائش گاہ میں قائداعظم کے زیر استعمال کمروں میں ایسی کئی تصاویر آویزاں ہیں جو قائداعظم نے اپنی بیٹی، بہن، بلوچستان کے قبائلی عمائدین اور دیگر سرکردہ شخصیات کے ساتھ کھنچوائی تھیں۔

اس عمارت کو اب عجائب گھر میں تبد یل کر دیا گیا ہے جہاں قائد اعظم کے زیر استعمال ر ہنے والی ا شیاء کو نمائش کے لئے ر کھا گیا ہے۔

29 اکتوبر 2008ء کو زیارت، پشین اور دیگر علاقوں میں آنے والے زلزلے کے باعث اس عمارت کو بھی جزوی نقصان پہنچا جس کے بعد پاک فوج نے عمارت کی دوبارہ مرمت اور تزئین و آرائش کی ۔

رہائش گاہ دیکھنے کے لئے ملک بھر سے لوگ وہاں آتے ہیں لیکن موسم گرما کے شروع ہوتے ہی یہاں سیاحوں کی آمد میں زبردست اضافہ ہو جاتا ہے جن میں مردوں کے ساتھ ساتھ خواتین اور بچے بھی شامل ہوتے ہیں۔ رہائش گاہ میں دو گائیڈز بھی خدمات انجام دے رہے ہیں اوریہاں آنے والے سیاحوں کو اس کی تاریخی پس منظر سے آگاہ کرتے ہیں۔

2013 حملہ[ترمیم]

2013 میں کچھ شدت پسندوں نے قائداعظم ریزیڈنسی پر حملہ کیا۔اس حملے میں چار سیکیورٹی پر معمور گارڈ بھی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے اور ریزڈنسی کا عمارت بھی آگ میں جل گیا۔[1] وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثار علی خاں نے کہا کہ زیارت میں قائد اعظم ریزیڈنسی ہمارا قومی ورثہ تھا، ریزیڈنسی کی عمارت کو دوبارہ تعمیر کریں گے،عمارت کی تعمیر میں 3سے 4 ماہ کا عرصہ لگے گا۔[2]اس کے بعد پھر دوبارہ تعمیر کرنے کا کام شروع ہوا اور اگست 2014 تک دوبارہ تعمیر کرنے کا یہ عمل جاری رہا۔14 اگست کو یوم آزادی کے دن وزیراعظم پاکستان نے افتتاح کی۔[3]

متعلقہ مضامین[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

30°22′50.64″N 67°43′45″E / 30.3807333°N 67.72917°E / 30.3807333; 67.72917متناسقات: 30°22′50.64″N 67°43′45″E / 30.3807333°N 67.72917°E / 30.3807333; 67.72917