قدیم قرطاجنہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(قدیم قرطاج سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
قرطاج
Carthage

650 قبل مسیح–146 قبل مسیح
قرطاج اور تابع علاقہ جات 264 قبل مسیح
دارالحکومت قرطاج
زبانیں پیونک, فونیقی, بربر
مذہب پیونک مذہب
حکومت بادشاہت حتی 308 قبل مسیح, جمہوریہ اس کے بعد
بادشاہ, بعد میں شوفیٹ ("منصف") دیکھیے فہرست قرطاج کے بادشاہ
تاریخی دور قدیم دور
 - قیام 650 قبل مسیح
 - اختتام 146 قبل مسیح
موجودہ ممالک Flag of Tunisia.svg تونس
Flag of Algeria.svg الجزائر
Flag of Libya.svg لیبیا
Flag of Morocco.svg مراکش
Flag of Spain.svg ہسپانیہ
Flag of Portugal.svg پرتگال
Flag of Gibraltar.svg جبل الطارق
Flag of Italy.svg اطالیہ
Flag of France.svg فرانس
Flag of Malta.svg مالٹا
Warning: Value specified for "continent" does not comply

قدیم قرطاج (Ancient Carthage) (فونیقی 𐤒𐤓𐤕 𐤇𐤃𐤔𐤕 Qart-ḥadašt[1]) ایک سامی تہذیب تھی۔[2] شمالی افریقہ میں خلیج تونس پر ایک فونیقی شہر ریاست تھی جو موجودہ تونس کے تونس شہر کے قریب واقع تھی۔ اس کا قیام 814 قبل مسیح [3][4] میں عمل میں آیا، یہ اصل میں فونیقی ریاست صور کے تابع تھی قرطاج نے 650 قبل مسیح کے ارد گرد آزادی حاصل کی اور بحیرہ روم، شمالی افریقہ اور موجودہ ہسپانیہ [5] میں فونیقی بستیوں میں ایک قیادت قائم کی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Historia de Cartagena: De Qart-Ḥadašt a Carthago Nova / colaboradores: Martín Lillo Carpio ...۔ Ed. Mediterráneo۔ 1992۔ اخذ کردہ بتاریخ 12 February 2013۔ 
  2. Who Were the Phoenicians?۔ Kotarim International Publi۔ 2009۔ صفحہ 11۔ آئی ایس بی این 978-965-91415-2-4۔ 
  3. "Colonization of the Mediterranean"۔ The Phoenicians۔ I.B.Tauris۔ 12 January 2001۔ صفحہ 48۔ آئی ایس بی این 978-1-85043-533-4۔ اخذ کردہ بتاریخ 12 February 2013۔ 
  4. "Political and Economic Implications of the New Phoenician Chronologies"۔ Universidad Pompeu Fabra۔ 2008۔ صفحہ 179۔ اخذ کردہ بتاریخ 24 February 2013۔ "The recent radiocarbon dates from the earliest levels in Carthage situate the founding of this Tyrian colony in the years 835–800 cal BC, which coincides with the dates handed down by Flavius Josephus and Timeus for the founding of the city." 
  5. Phoenicians۔ University of California Press۔ 2000۔ صفحہ 55۔ آئی ایس بی این 978-0-520-22614-2۔ اخذ کردہ بتاریخ 11 February 2013۔