قطر کا سفارتی بحران 2017ء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
قطر کا سفارتی بحران، 2017ء
بسلسلہ ایران سعودی عرب کا بالواسطہ تنازع، قطر کے خارجہ تعلقات
Qatar diplomatic crisis.svg
     قطر     جن ممالک نے قطر سے سفارتی تعلقات ختم کر دیے     وہ ممالک جنہوں نے سفارتی تعلقات کو کم یا قطر سے اپنے سفیر کو واپس بلا لیا ہے۔
تاریخ 5 جون 2017 – تاحال
(2 مہینا، 2 ہفتہ)
مقام قطر
نتیجہ جاری
سفارتی تنازع میں شامل فریق

Flag of Saudi Arabia.svg سعودی عرب
Flag of the United Arab Emirates.svg متحدہ عرب امارات
Flag of Bahrain.svg بحرین
Flag of Egypt.svg مصر
Flag of Maldives.svg مالدیپ
Flag of Yemen.svg یمن[a]
Flag of Mauritania (1959–2017).svg موریتانیہ
Flag of the Comoros.svg اتحاد القمری
حمایتی:
Flag of Libya.svg لیبیا (Tobruk government)[b]
Flag of Jordan.svg اردن
Flag of Chad.svg چاڈ[1]
Flag of Djibouti.svg جبوتی[2][3]
Flag of Senegal.svg سینیگال[4]

Flag of Gabon.svg گیبون[5]
ثالث:[6]
Flag of the United States.svg ریاستہائے متحدہ امریکا
Flag of Kuwait.svg کویت
Flag of Oman.svg سلطنت عمان[7]
Flag of Sudan.svg سوڈان[8][9]
Flag of Pakistan.svg پاکستان[10]
Flag of Qatar.svg قطر
حمایتی:
Flag of Turkey.svg ترکی[11][12]
Flag of Iran.svg ایران[11][13]
Flag of Germany.svg جرمنی[14]

a Yemen is affected by an ongoing خانہ جنگی۔ The internationally recognized government has cut ties with Qatar.

b Libya is affected by an ongoing خانہ جنگی۔ The Tobruk-based government lost international recognition after the formation of the Government of National Accord in جنوری 2016. The Tobruk-based government claims to have cut ties with Qatar despite not having diplomatic representation in the country.

قطر کا سفارتی بحران 2017ء مشرق وسطی میں پروان چڑهنے والا بحران ہے۔ اس کا آغاز اس وقت ہوا جب متعدد عرب ممالک (بشمول سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، بحرین اور مصر) نے قطر سے سیاسی و سفارتی تعلقات منقطع کر لیے۔ ان ممالک کا الزام یہ ہے کہ قطر نے ایسی کچھ تنظیموں کی مالی معاونت کی ہے جنہیں شدت پسند قرار دیا گیا ہے۔ ان ممالک نے قطر کو اپنے ملکی حدود کے ہوائی و زمینی راستوں کے استعمال سے بھی روک دیا ہے۔

سعودی عرب اور دیگر ممالک نے الجزیرہ و قطر ایران تعلقات پر شدید تنقید کی اور قطر پر ریاستی سطح پر دہشت گردی کی حمایت کا الزام عائد کیا۔ قطر نے دہشت گردی کی حمایت کی تردید کی ہے، اور دہشت کے خلاف جنگ میں امریکا کا جو ساتھ دیا اور جو اس وقت آئی ایس آئی ایل کے خلاف فوجی مزاحمت میں معاونت کی ہے اس کا حوالہ دیا ہے۔

سعودی عرب کے سفارتی اعمال کی ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے زبانی طور پر ریاست ہائے متحدہ امریکا حمایت کر رہا تھا۔ خطے کے کئی ممالک ترکی، روس اور ایران وغیرہ نے، پرامن مذاکرات کے ذریعے بحران حل کرنے پر زور دیا ہے۔


پس منظر

قطر کے دیگر عرب حکومتوں کے ساتھ کئی مسائل میں اختلافات پائے جاتے ہیں: جو الجزیرہ کی نشریات، اس پر ایران کے ساتھ اچھے تعلقات برقرار رکھنے کا الزام ہے، اور قطر نے ماضی میں اخوان المسلمین کی حمایت کی ہے۔[15] قطر امریکا کا اتحادی ہے، امریکا کا مشرق وسطی میں سب سے بڑا العديد ایئر بیس بھی قطر میں ہے۔[16]

سابقہ سفارتی واقعات

مارچ 2014ء میں، اندرونی معاملات میں مداخلت کے الزام میں بحرین، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات نے قطر سے اپنے سفیروں کو واپس بلا لیا، لیکن آٹھ ماہ بعد قطر نے اخوان کے ارکان کو ملک سے نکال دیا تو حالات پہلے جیسے ہو گئے۔[15][17]

فروری 2015ء میں، قطر مصر تعلقات خراب ہوگئے، جب مصری فضائیہ نے فضائی حملوں کے ذریعے لیبیا میں داعش کو ان مقامات پرنشانہ بنایا جہاں مصر کے 21 قبطی مسیحیوں کا سر قلم کیا گیا تھا۔[18][19] الجزیرہ نے ان فضائی حملوں کی مذمت کی تھی، اور ان عام شہریوں کی تصاویر نشر کیں جو ان حملوں میں ہلاک ہوئے۔[19] مزید برآں، قطر کی وزارت خارجہ نے فضائی حملوں پر تحفظات کا اظہار کیا۔ اس سے طارق عادل جو مصر میں عرب لیگ کے مندوب ہیں ان کو قطر پر دہشت گردی کی حمایت کا الزام لگانے کا جواز مل گیا۔ مصری شہریوں نے بھی ایک آن لائن مہم میں قطری حکومت کی مذمت شروع کر دی تھی۔[20]

مزید دیکھیے

ملاحظات

حوالہ جات

  1. "Chad recalls ambassador from Qatar amid Gulf Arab row". Reuters. 8 جون 2017. 
  2. Wam. "Djibouti downgrades diplomatic relations with Qatar". www.khaleejtimes.com. اخذ کردہ بتاریخ 8 جون 2017. 
  3. WAM (8 جون 2017). "Djibouti downgrades Qatar relations". gulfnews.com. اخذ کردہ بتاریخ 8 جون 2017. 
  4. Reuters (2017-06-07). "Senegal recalls ambassador in Qatar, backs Saudi Arabia". The Economic Times. http://economictimes.indiatimes.com/news/international/world-news/senegal-recalls-ambassador-in-qatar-backs-saudi-arabia/articleshow/59038991.cms. 
  5. "Mauritania breaks diplomatic ties with Qatar, Gabon voices condemnation". Reuters. 7 جون 2017. http://www.reuters.com/article/us-gulf-qatar-mauritania-idUSKBN18X2ZH?il=0۔ اخذ کردہ بتاریخ 8 جون 2017. 
  6. "Qatar vows no surrender in Gulf crisis as U.S.، Kuwait seek solution". Reuters. 8 جون، 2017. http://www.reuters.com/article/us-gulf-qatar-idUSKBN18Z1C9. 
  7. "Saudi foreign minister arrives in Oman to hold talks in Muscat". All Arabiya. 8 جون 2017. 
  8. "Sudan urges 'reconciliation' to end Gulf row with Qatar". News24. 6 جون 2017. 
  9. "Sudan appeals for calm between Qatar and Gulf". Middle East Monitor. 6 جون 2017. 
  10. "On Qatar, Pakistan walks a diplomatic tightrope". www.aljazeera.com. http://www.aljazeera.com/news/2017/06/qatar-pakistan-walks-diplomatic-tightrope-170609071856229.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 9 جون 2017. 
  11. ^ 11.0 11.1 "Turkey, Iran Back Qatar In Dispute With Other Arab States". 08.06.2017. https://www.rferl.org/a/turkey-iran-back-qatar-dispute-saudi-arabia-other-arab-states/28535012.html. 
  12. "Turkey's Tayyip Erdogan criticises Qatar sanctions". Al Jazeera. اخذ کردہ بتاریخ 7 جون 2017. 
  13. Kerr، Simeon (09.06.2017). "Iran offers Qatar use of its ports as Gulf blockade bites". https://www.ft.com/content/09c45a96-4c61-11e7-a3f4-c742b9791d43. 
  14. Cite error: حوالہ بنام GermanSupport کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  15. ^ 15.0 15.1 Barnard، Anne؛ Kirkpatrick، David (5 جون 2017). "5 Arab States Break Ties With Qatar, Complicating U.S. Coalition-Building". نیو یارک ٹائمز. اخذ کردہ بتاریخ 5 June 2017. 
  16. Cite error: حوالہ بنام USbase کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  17. Cite error: حوالہ بنام hereditary کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  18. Kirkpatrick، David (16 February 2015). "Egypt Launches Airstrike in Libya Against ISIS Branch". New York Times. اخذ کردہ بتاریخ 23 March 2015. 
  19. ^ 19.0 19.1 Hussein، Walaa (1 March 2015). "Qatar rejects Egypt’s war on terrorism". Al Monitor. اخذ کردہ بتاریخ 23 March 2015. 
  20. "Qatar recalls ambassador to Egypt over ISIL row". Al Jazeera. 19 February 2015. اخذ کردہ بتاریخ 23 March 2015. 

سانچہ:Foreign relations of Qatar