لارڈ ڈلہوزی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سر  ویکی ڈیٹا پر (P511) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لارڈ ڈلہوزی
(انگریزی میں: James Broun-Ramsay, 1st Marquess of Dalhousie ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Marquess of Dalhousie.JPG
 

معلومات شخصیت
پیدائش 22 اپریل 1812[1][2][3][4]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
میدلوتھیان  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 19 دسمبر 1860 (48 سال)[2][3]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
میدلوتھیان  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن میدلوتھیان  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the United Kingdom.svg متحدہ مملکت برطانیہ عظمی و آئر لینڈ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت کنزرویٹو پارٹی  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
رکن دارالامرا   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
21 مارچ 1838  – 19 دسمبر 1860 
Flag of the Governor-General of India (1885–1947).svg گورنر جنرل ہند   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
12 جنوری 1848  – 28 فروری 1856 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png ہنری ہارڈنج 
چارلس کیننگ  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
عملی زندگی
مادر علمی کرائسٹ چرچ  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[5]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
United-kingdom138.gif آرڈر آف تھیسلے  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

لارڈ ڈلہوزی ہندوستان کا گورنر جنرل تھا۔ 1848ء میں ہندوستان آیا۔ اس کے عہد میں برما اور سکھوں کی دوسری لڑائی ہوئی اور پنجاب پر انگریزوں کا قبضہ ہو گیا۔ ڈلہوزی نے ہندوستانی ریاستوں کے الحاق پر بڑی سختی سے عمل کیا۔ ستارہ، جھانسی، ناگپور اور اودھ کے علاوہ کئی اور ریاستیں انگریزی علاقے میں شامل کر لی گئیں۔ بہادر شاہ ظفر آخری مغل بادشاہ کو بھی نوٹس مل گیا کہ وہ شاہی قلعے کا آخری تاجدار ہے۔ الحاق کے اس مسئلے نے ہندستانی حکمرانوں میں بے چینی کی ایک ایسی لہر پیدا کر دی جو 1857ء کی جنگ آزادی کا اہم سبب بنی۔ لارڈ ڈلہوزی نے رفاہ عامہ کی خاطر محکمہ تعمیرات قائم کیا۔ ڈاک کے دو پیسے کے ٹکٹ جاری کیے۔ ریل اور تار کا سلسلہ بھی اسی کے عہد میں شروع ہوا 1856ء میں خرابی صحت کی بنا پر انگلستان چلا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb106669967 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/James-Andrew-Broun-Ramsay-Marquess-of-Dalhousie — بنام: James Andrew Broun Ramsay, marquess and 10th earl of Dalhousie — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  3. ^ ا ب Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/dalhousie-james-andrew — بنام: James Andrew Dalhousie
  4. دا پیرایج پرسن آئی ڈی: https://wikidata-externalid-url.toolforge.org/?p=4638&url_prefix=http://www.thepeerage.com/&id=p2922.htm#i29216 — بنام: James Andrew Ramsay, 1st and last Marquess of Dalhousie of Dalhousie Castle — مصنف: Darryl Roger Lundy — خالق: Darryl Roger Lundy
  5. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb106669967 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ