لالا امرناتھ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
لالا امرناتھ
Lala Amarnath at Lord's 1936.jpg
لالا امرناتھ 1936 میں
ذاتی معلومات
پیدائش11 ستمبر 1911(1911-09-11)

کپور تھلہ، پنجاب
وفات5 اگست 2000(2000-80-50) (عمر  88 سال)

نئی دہلی، بھارت
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں بازو کا میڈیم گیند باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ فرسٹ کلاس
میچ 24 184
رنز بنائے 878 10,426
بیٹنگ اوسط 24.38 41.37
100s/50s 1/4 31/59
ٹاپ اسکور 118 262
گیندیں کرائیں 4241 29,474
وکٹ 45 463
بولنگ اوسط 32.91 22.98
اننگز میں 5 وکٹ 2 19
میچ میں 10 وکٹ 0 3
بہترین بولنگ 5/96 7/27
کیچ/سٹمپ 13 96/2
ماخذ: Cricinfo

نانک امرناتھ بھردواج लाला अमरनाथ भरुदाजी پیدائش:11 ستمبر 1911ءکپورتھلا، پنجاب|وفات:5 اگست 2000،نئی دہلی،)ایک بھارتی ٹیسٹ کھلاڑی جن کا بھارتی کرکٹ میں ایک خاص مقام ہے کو لالا امر ناتھ بھی کہا جاتا تھا وہ آزاد بھارت کی قومی کرکٹ ٹیم کے پہلے کپتان اور بھارت کی طرف سے پہلی سنچری بنانے والے بلے باز بھی تھے۔ٹیسٹ کرکٹ میں ہندوستان کی قومی کرکٹ ٹیم کے لیے سنچری بنانے والے پہلے بلے باز تھے۔ وہ آزاد ہندوستان کے پہلے کرکٹ کپتان تھے اور 1952ء میں پاکستان کے خلاف پہلی ٹیسٹ سیریز جیتنے میں ہندوستان کی کپتانی کی تھی۔ انہیں حکومت ہند کی طرف سےپدم بھوشن سے بھی نوازا گیا تھا ان کے تین بیٹوں موہندر امرناتھ بھردواج سریندر امرناتھ بھردواج اور راجندر امرناتھ کے علاوہ ان لے پوتے اور سریندر امر ناتھ کے بیٹے ڈگ وجے امرناتھ نے کرکٹ کے میدانوں پر اپنے قدم جمائے لالا امر ناتھ نے انڈیا کے ساتھ ساتھ گجرات، ہندو،مہاراجہ پٹیالہ الیون، ریلوے، جنوبی پنجاب اور اتر پردیش کی طرف سے بھی کرکٹ مقابلوں میں شرکت کی ،اس نے دوسری جنگ عظیم سے پہلے صرف تین ٹیسٹ میچ کھیلے (بھارت نے جنگ کے دوران کوئی باضابطہ ٹیسٹ میچ نہیں کھیلا)۔ اس دوران انہوں نے فرسٹ کلاس کرکٹ میں 30 سنچریوں کے ساتھ تقریباً 10,000 رنز بنائے جس میں آسٹریلیا اور انگلینڈ کی ٹیمیں شامل تھیں۔ جنگ کے بعد اس نے بھارتبکے لیے مزید 21 ٹیسٹ میچ کھیلے۔ بعد میں وہ سینئر سلیکشن کمیٹی، بی سی سی آئی کے چیئرمین بن گئے اور ایک مبصر اور ماہر بھی تھے۔ ان کے حامیوں میں چندو بورڈے، ایم ایل۔ جیسمہا، اور جسو پٹیل جو ہندوستان کے لیے کھیلتے تھے۔

اعزاز[ترمیم]

حکومت ہند نے انہیں 1991ء میں پدم بھوشن کے شہری اعزاز سے نوازا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

امرناتھ پنجاب کے کپورتھلہ کے ایک برہمن خاندان میں غریب ہندو والدین کے ہاں پیدا ہوئے۔ لاہور میں اس کی صلاحیتوں کو پہچانتے ہوئے، ایک مسلم کرکٹ گھرانے نے امرناتھ کو گود لیا۔ انہوں نے اپنا پہلا میچ انگلینڈ کے خلاف 1933ء میں جنوبی بمبئی کے بمبئی جم خانہ گراؤنڈ پر کھیلا۔ امرناتھ نے بمبئی چوکور میں ہندوؤں کے لیے بھی کھیلا۔ ایک بلے باز ہونے کے علاوہ، لالہ امرناتھ ایک باؤلر بھی تھے، جنہوں نے ڈونلڈ بریڈمین کو ہٹ وکٹ آؤٹ کیا۔

1936ء انگلینڈ کا دورہ[ترمیم]

امرناتھ کو متنازعہ طور پر 1936ء کے دورہ انگلینڈ سے وزیانگرام کے کپتان مہاراج کمار نے "بے نظمی" کی وجہ سے واپس بھیج دیا تھا۔ امرناتھ اور دوسروں کا الزام ہے کہ یہ سیاست کی وجہ سے ہوا تھا۔ وزی، وزیاناگرام کے مہاراج کمار کو 1936ء کے دورہ انگلینڈ کے لیے ہندوستانی کرکٹ ٹیم کا کپتان نامزد کیا گیا، یہ عہدہ اس نے لابنگ اور جوڑ توڑ کے بعد حاصل کیا۔ اسکواڈ میں شامل کچھ سینئر کھلاڑی، جن میں لالہ امرناتھ، سی کے نائیڈو اور وجے مرچنٹ شامل تھے، وِزی کی کھیلنے کی صلاحیتوں اور کپتانی پر تنقید کرتے تھے، اور ٹیم کپتان کی حمایت اور تنقید کرنے والوں کے درمیان بٹ گئی۔ لارڈز میں مائنر کاؤنٹیز کے خلاف ہندوستان کے میچ کے دوران لالہ امرناتھ کھیل کے دوران کمر کی انجری کا شکار ہو گئے تھے۔ وزی نے امرناتھ کو پیڈ اپ کیا تھا، لیکن اس نے اسے بلے بازی کے لیے نہیں ڈالا کیونکہ ان کے آگے دوسرے بلے باز بھیجے گئے، جس کی وجہ سے امرناتھ اپنی چوٹ کو آرام کرنے سے روک سکے۔ دن کے اختتام پر امرناتھ کو بلے بازی کے لیے لایا گیا۔ ڈریسنگ روم میں واپس آنے کے بعد بظاہر غصے میں، اس نے اپنی کٹ اپنے بیگ میں ڈالی اور پنجابی میں بڑبڑایا، "مجھے معلوم ہے کہ کیا ہو رہا ہے"۔ وزی نے اسے ایک توہین کے طور پر لیا، اور ٹیم مینیجر میجر جیک برٹین جونز کے ساتھ مل کر لالہ امرناتھ کو پہلا ٹیسٹ میچ کھیلے بغیر دورے سے واپس بھیجنے کی سازش کی۔ یہ بھی الزام ہے کہ انگلینڈ کے خلاف پہلے ٹیسٹ میں وزی نے مشتاق علی کو وجے مرچنٹ کو رن آؤٹ کرنے کے لیے سونے کی گھڑی کی پیشکش کی تھی۔

کپتان اور منیجر[ترمیم]

لالہ امرناتھ 1947-1948ء میں آسٹریلیا کا دورہ کرنے والی ہندوستانی ٹیم کے کپتان تھے۔ اگست 1947ء میں جب ہندوستان کی تقسیم ہوئی تو امرناتھ اور ان کے خاندان کو مسلمانوں کے ہجوم سے بچنے کے لیے شہر سے بھاگنا پڑا۔ وہ 1957ء تک بھارتی ریاست پنجاب کے پٹیالہ میں مقیم رہے، جب وہ دارالحکومت دہلی چلے گئے۔ لالہ امرناتھ نے اپنی تعلیم علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں حاصل کی تھی۔ امرناتھ کو ہندوستان اور پاکستان کے کھلاڑیوں اور شائقین کے درمیان تقسیم کو ختم کرنے کے لئے بڑے پیمانے پر احترام کیا جاتا ہے، جو دونوں ممالک کے درمیان سیاسی تناؤ کی وجہ سے پیدا ہوا تھا۔بان کی قیادت میں، بھارت نے 1952ء میں دہلی میں پاکستان کے خلاف اپنا پہلا ٹیسٹ جیتا، اور سیریز 2-1 سے جیت لی۔ امرناتھ نے 1954-55ء میں جب پاکستان کا دورہ کیا تو ٹیم کو بھی سنبھالا۔

خاندان اور میراث[ترمیم]

ان کے بیٹے موہندر اور سریندر نے بھی ہندوستان کے لیے کرکٹ کھیلی اور ایک اور بیٹا راجندر نے فرسٹ کلاس کرکٹ کھیلی جبکہ ان کا پوتا ڈگ وجے بھی فرسٹ کلاس کھلاڑی ہے۔ اپنے گودھولی کے سالوں کے دوران، امرناتھ کو ہندوستانی کرکٹ کا زندہ لیجنڈ سمجھا جاتا تھا۔2021ء کے اسپورٹس ڈرامہ 83 میں موہندر نے اپنے والد کا کردار ادا کیا تھا، جب کہ موہندر کو خود ثاقب سلیم نے پیش کیا تھا۔ ان دونوں نے اس سے قبل 2016ء کی ایکشن کامیڈی ڈشوم میں اسکرین اسپیس شیئر کی تھی۔

اعداد و شمار[ترمیم]

لالہ امر ناتھ نے 24 ٹیسٹ میچوں کی 40 اننگز میں 4 مرتبہ ناٹ آئوٹ رہ کر 878 رنز کا مجموعہ تشکیل دیا۔ 118 ان کا سب سے بڑا انفرادی سکور تھا جس کیلئے انہیں 24.38 کی اوسط حاصل ہوئی۔ ایک سنچری، 4 نصف سنچریاں اور 13 ٹیسٹ کیچ بھی ان کے اعداد و شمار کا حصہ ہیں۔ لالہ امر ناتھ نے 186 فرسٹ کلاس میچز کی 286 اننگز میں 34 دفعہ بغیر آئوٹ ہوئے 10426 رنز سکور کئے۔ 262 ان کی کسی ایک اننگ کا بہترین سکور تھا جبکہ 41.37 کی اوسط سے بننے والے ان رنزوں میں 31 سنچریاں اور 39 نصف سنچریاں سامنے آئیں۔ 96 کیچ اور 2 سٹمپ بھی نمایاں تھے۔ لالہ امر ناتھ نے 1481 رنز دے کر 45 وکٹیں اپنے نام کیں۔ 5/96 کسی ایک اننگ جبکہ 8/167 کسی ایک میچ میں اس کی بہترین کارکردگی کی عکاسی کرتے ہیں جس کیلئے انہیں 32.91 رنز فی وکٹ دینے پڑے جبکہ 10644 رنز دے کر انہیں 463 وکٹیں ملیں۔ 7/27 ان کی کسی اننگ کی بہترین بولنگ تھی جس کیلئے 22.98 اوسط کے ذریعے انہوں نے 19 دفعہ کسی ایک اننگ میں 5 یا اس سے زائد اور 3 دفعہ کسی ایک میچ میں 10 یا اس سے زائد وکٹیں حاصل کیں۔ لالہ امر ناتھ کو یہ اعزاز بھی حاصل ہے کہ انہوں نے 1933ء سے 1952ء تک کرکٹ سپین میں 13 فروری 1934ء سے لے کر 22 جون 1946ء تک کوئی ٹیسٹ نہیں کھیلا۔ کرکٹ کی عالمی تاریخ میں 12 سال 129 دن کا یہ درمیان وقفہ حاصل کرنے والے یہ کھلاڑیوں کی فہرست میں ان کا آٹھواں نمبر ہے۔ لالہ امرناتھ کا شمار ان کھلاڑیوں میں ہوتا ہے جنہوں نے اپنے پہلے ہی ٹیسٹ میچ میں سنچری سکور کی تھی۔ لالہ امر ناتھ نے 1933ء میں انگلستان کے خلاف بمبئی کے مقام پر 118 رنز بنائے تھے جس کیلئے انہیں 185 منٹ کا انتظار کرنا پڑا جس کے دوران انہوں نے 21 چوکے بھی لگائے۔

انتقال[ترمیم]

لالا امر ناتھ 5 اگست 2000ء کو نئی دہلی میں 88 سال اور 329 دن کی عمر میں انتقال کرکٙے کرکٹ کے ایک وسیع حلقے کو سوگوار کر گئے تھے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]