لطیف کپاڈیا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
لطیف کپاڈیا
معلومات شخصیت
پیدائش 27 مارچ 1934  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ناسک  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 29 مارچ 2002 (68 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ اداکار،  ٹیلی ویژن اداکار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

لطیف کپاڈیا (27 مارچ 1934 - 29 مارچ 2002) ایک پاکستانی اسٹیج اور ٹیلی ویژن اداکار۔

کیریئر[ترمیم]

گجراتی تہذیب کے برطانوی ہندوستان کی ریاست مہاراشٹر کا ایک شہر ناسک میں پیدا ہوے۔ [1] [2] والدین کی پیدائش گجرات کے نوساری کے قریب گاؤں ابرما سے ہوئی ہے۔ لطیف کپاڈیا 13 سال کی عمر میں کراچی ہجرت کر کے بطور اسٹیج اداکار اپنے کیریئر کا آغاز کیا۔ ان کی شروعات 1953 میں تھیٹر سے محبت کرنے والے جوڑے ، مہر جی اور پرویز دستور نے کی تھی۔ انہوں نے 1950 کی دہائی میں بہت سارے ڈرامے پیش کیے۔

1957 میں ، لطیف کپاڈیا نے بڑے بھائی ، غلام علی کپاڈیا کے ذریعہ قائم کردہ اوینت گارڈے آرٹس تھیٹر میں شامل ہوئے۔ علی احمد کا ڈرامہ شیشے کے آدمی زبردست ہٹ ہوا۔ لطیف کپاڈیا نے اس میں اہم کردار ادا کیا تھا۔ اس کے دوسرے نامور ڈراموں جس نے انہیں شہرت حاصل کی وہ تھے قصہ جگتے سوتے کا ، ایک دن کا سلطان اور پھر بھی ہم جیتے رہے۔

1967 میں ، جب پاکستان ٹیلی ویژن کراچی آیا تو ، لطیف کپاڈیا نے اپنا پہلا ٹیلی ویژن ڈرامہ شیشے کی آدمی ، اسی کردار کو دوبارہ بناتے ہوئے کیا۔

ان کے دوسرے ٹیلی ویژن ڈراموں میں شامل ہیں: [3]

  • باریش
  • برزخ
  • ففٹی ففٹی
  • گریز
  • نادان نادیہ
  • شکست آرزو

لطیف کپاڈیا نے ایک فلم ویری گڈ دنیا، ویری بیڈ لوگ میں بھی کردار ادا کیا تھا ، یہ فلم 1998 میں ریلیز ہوئی تھی۔ انہیں گانے کا بھی شوق تھا اور وہ اپنے دوست احمد رشدی کے گانے بھی گاتے تھے ، جو پاکستان فلم انڈسٹری کے ایک مشہور گلوکار تھے۔

لطیف کپاڈیا اپنی 68 ویں سالگرہ کے دو دن بعد قلبی سانس کی بند سے انتقال کر گئے۔ اس نے اپنے پیچھے اپنی بیوی ، ایک بیٹا اور چار بیٹیاں چھوڑی ہیں۔ لطیف کپاڈیا کو کراچی کے میواشاہ قبرستان میں سپرد خاک کردیا گیا۔

مزید[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Ahmed Kapadia Bio". Ahmed Kapadia. اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2017. 
  2. "Tribute to Latif Kapadia". Youtube. 
  3. "Latif Kapadia - a fine artist". 18 اپریل 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 ستمبر 2012. 

بیرونی روابط[ترمیم]