لندن بلین مارکیٹ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

لندن بُلین مارکیٹ لندن میں سونے اور چاندی کی تھوک خرید و فروخت کی منڈی ہے۔ یہاں ہونے والی خرید و فروخت کا ریکارڈ حکومت کے علم میں لانا قانونی ذمہ داری نہیں ہے۔


لندن کی گولڈ بلین مارکیٹ کچھ پراسرار طریقے سے کام کرتی ہے۔ یہاں صرف گیارہ ممبر بُلین بینک اور 58 دوسرے ممبر بینک خریدوفروخت کر سکتے ہیں اور عام لوگ نہیں کر سکتے۔ سالانہ چار لاکھ ٹن سے زیادہ سونا خریدا اور بیچا جاتا ہے حالانکہ اتنا سونا دنیا میں موجود ہی نہیں ہے۔ بیشتر خرید و فروخت میں سونا اپنی تجوری سے باہر نہیں آتا صرف کھاتوں میں ملکیت تبدیل ہوتی ہے اور سونے کا ایک ہی ٹکڑا دن میں کئی کئی بار بکتا ہے۔ خریدار کا نام ظاہر نہیں ہو پاتا نہ ہی یہ پتہ چلتا ہے کہ کس نے بڑی مقدار میں سونا بیچا۔ لندن بلین مارکیٹ کو پس پردہ بینک آف انگلینڈ چلاتا ہے جو ایک پرائیوٹ بینک ہے۔ یہ شبہ کیا جاتا ہے کہ سنٹرل بینکوں کی جانب سے بیچا جانے والا بیشتر سونا ان ہی بینکوں کے مالکان نجی حیثیت سے خرید لیتے ہیں۔ 1999 سے 2002 کے درمیان برطانیہ کے وزیر اعظم گورڈن براون نے برطانیہ کا 60 فیصد یعنی 395 ٹن سونا پچھلے 20 سالوں کی سستی ترین قیمت پر بیچا اور ساڑھے تین ارب ڈالر حاصل کیئے۔ اس بارے میں بھی قیاس آرائی یہ ہے کہ یہ سونا جن بینکوں نے قرض پر لے کر بیچا تھا وہ اسے واپس لوٹانے کی پوزیشن میں نہیں رہے تھے اس لیئے خانہ پری کے لیئے اسے فروخت میں ظاہر کر دیا گیا۔ اسکے بعد 2004 میں AIG اور روتھشیلڈ کو لندن بلین مارکیٹ سے باہر نکال دیا گیا۔[1]

فروری سے اپریل 2013 کے تین مہینوں میں Comex میں 99.3 فیصد کاغذی سونے کا فروخت کنندہ J. P. Morgan رہا ہے۔[2]


مزید دیکھیئے[ترمیم]

بیرونی ربط[ترمیم]

حوالہ[ترمیم]

  1. ^ گولڈ بُلین مارکیٹ
  2. ^ بینکاروں کو پھانسی دو