مارجوری حسین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مارجوری حسین
مارجوری حسین
معلومات شخصیت
قومیت پاکستان
عملی زندگی
پیشہ مصنفہ، آرٹ نقاد، فنکار

مارجوری حسین ایک برطانوی فنکار، آرٹ نقاد اور مصنفہ ہیں جو پاکستان میں 1960 سے 2019 کے درمیان رہائش پزیر تھیں۔ ملک کے اندر، وہ آرٹ برادری کی ممتاز شخصیت ہونے کے ساتھ ساتھ پہلی آرٹ گیلری کی بانی ممبر بھی تھیں۔ انہوں نے قومی اور بین الاقوامی سطح پر پاکستانی فن کو فروغ دینے کے لیے کام کیا۔[1][2][3][4][5]

پیشہ ورانہ زندگی[ترمیم]

مارجوری حسین، 1960 کی دہائی میں حامد حسین سے شادی کے بعد کراچی آئی تھیں۔ وہ اور ان کے شوہر دونوں برطانیہ میں رہتے ہوئے آرٹ کے طالب علم تھے۔ [6]

مارجوری، آرٹ کے حلقے میں ایک فنکار کے طور پر جانی جاتی تھیں، تاہم وقت کے ساتھ وہ ایک مشہور آرٹ نقاد بن گئیں۔ [7][8] 1960ء کی دہائی کے آخر میں، مارجوری پی اے سی سی میں امریکی پرنٹ میکر مائیکل پونس ڈی لیون کے زیر اہتمام ایک پرنٹ میکنگ ورکشاپ میں شامل ہوئیں۔ ورکشاپ پاکستان میں اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ تھا اور شہر سے فنکار جمع ہوئے۔ یہاں انھوں نے بشیر مرزا اور مسعود کوہاڑی جیسے فنکاروں سے ملاقات کی۔ 1965ء میں بشیر مرزا نے کراچی میں کچہری روڈ پر پہلی کمرشل آرٹ گیلری کھولی۔ [9][10] مرزا بعد میں جرمنی چلے گئے اور اسی طرح گیلری کو ایس ایم ایچ ایس میں تبدیل کر دیا گیا۔ مارجوری کو فنکاروں نے گیلری کو سنبھالنے کی تاکید کی اور وہ پاکستان کی پہلی آرٹ گیلری کی بانی ارکان میں شامل ہوگئیں۔[11][12]

مارجوری نے کیوریٹنگ شوز کے ساتھ کام جاری رہا۔ اس دوران، مارجوری کو اپنے حلقے کی خواتین، جو میڈیا میں کام کرتی تھیں، نے اخبارات کے لیے لکھنا شروع کرنے کی ترغیب دی۔ [13] نجمہ بابر نے انھیں 90 کی دہائی میں ڈان کے منگل کے روزنامہ کے لیے لکھنے کی ترغیب دی۔ [14] مارجوری اس کے بعد شی میگزین میں زہرہ کریم کے لیے اور فوزیہ نقوی کے لیے "زمین" میں لکھتی رہیں۔ [15] مارجوری نے ڈان، دی اسٹار، نیوز لائن اور فرنٹیئر پوسٹ کے لیے مضامین بھی لکھے ہیں۔ [16] [17]

مارجوری نے فن کے جائزے لکھنا جاری رکھا، تاہم انہیں جلد ہی پاکستانی فن سے متعلق معلومات کی کمی کا احساس ہو گیا۔ یہاں کوئی میوزیم نہیں تھا، معلوماتی کتابیں نہیں تھیں، کوئی تحقیقی مواد اور مقامی فنکاروں کی بہت کم دستاویزات نہیں تھیں۔ اس کے بعد مارجوری نے پاکستان میں آرٹ اور فنکاروں کی فہرست سازی اور آرکائیو شروع کرنے کا فیصلہ کیا۔[18][19]

مارجوری نے بہت سی کتابیں لکھی ہیں ، جو زیادہ تر پاکستان کے فنکاروں اور فن سے متعلق ہیں۔ انھوں نے علی امام، احمد پرویز، جمیل نقش، بشیر مرزا، اینا مولکا احمد، رابعہ زوبی، اقبال حسین، کولن ڈیوڈ اور ناہید رضا پر لکھا ہے ۔ [20]

ان کی کتاب "آرٹ ویوز: انکاؤنٹرز ود آرٹسٹ ان پاکستان" میں ان کے چالیس سے زائد پاکستانی فنکاروں پر شائع مضامین کی تالیف ہے۔ وہ پاکستان میں آرٹ طلبہ کے لیے پہلی نصابی کتاب کی مصنف بھی ہیں جس کا عنوان Aspects of Art ہے۔ پاکستانی آرٹ کے طلبہ کے لیے کوئی نصابی کتاب موجود نہیں تھی اور طلبہ ان کے امتحانات سے پہلے اکثر رہنمائی کے لیے مارجوری سے رابطہ کرتے تھے۔ 2001 میں، "مارجوری کے پہلوؤں کا آرٹ" پر مبنی کتاب، او یو پی کے ذریعہ شائع ہوئی۔ [21] کتاب مغربی اور مشرقی دونوں فن کی ایک تالیف اور تاریخ تھی۔ اس کتاب کا اردو میں ترجمہ کیا گیا ہے اور یہ انڈرگریجویٹ، گریجویٹ آرٹ دونوں طالب علموں کے لیے ہے۔[22][23]

مارجوری کے کام اور پاکستانی فن کی دستاویزات نے انہیں اسکولوں میں مشہور مہمان بنایا۔ انہوں نے پاکستان کے عظیم فنکاروں کے ساتھ آرٹ اور اپنے ذاتی مقابلوں کے بارے میں بات کرنے کے لیے مقامی اسکولوں کا دورہ کیا۔ انھوں نے ان کی کہانیاں، آرٹ ورک اور مزید بہت کچھ دستاویز کی صورت لکھا۔[24][25]

مارجوری اکثر لاہور کا سفر کرتی تھیں، جہاں وہ نیشنل کالج آف آرٹس (این سی اے) جاتی تھیں۔ یہاں انھوں نے شاکر علی، سعید اختر، احمد خان اور کولن ڈیوڈ جیسے بہت سارے فنکاروں سے ملاقات کی۔ ان کا تعارف 1950 میں شروع ہونے والے فنکاروں کے ایک گروپ، لاہور گروپ سے بھی ہوا تھا۔[26][27]

پاکستان میں اپنے دور کے دوران ، مارجوری نے آرٹ سے متعلق متعدد کتابیں تصنیف کیں اور اس کے ساتھ ساتھ ملک کے اخبارات اور رسائل میں مضامین بھی شائع کیے۔ [28] [29]

وہ پاکستان کی آرٹ نمائشوں میں بھی شامل تھیں اور آرٹ کے طلبہ کے ساتھ بھی رابطے میں تھیں۔[30][31]

برطانیہ واپسی[ترمیم]

2019ء میں ، تقریبا چھ دہائیوں تک پاکستان میں رہنے کے بعد، مارجوری واپس انگلینڈ چلی گئیں۔ [32][33] ان کے شوہر کا انتقال ہو گیا تھا اور اسی وجہ سے مارجوری نے اپنے ملک واپس جانے کا فیصلہ کیا تھا۔[34][35]

اشاعتیں[ترمیم]

  • آرٹ ویوز: پاکستان میں مصوروں کے ساتھ ملاقاتیں [36][37]
  • فن کے پہلو: فن کے طلبہ کے لیے ایک درسی کتاب (2000)(اردو میں بھی شائع)[38][39]
  • اقبال حسین: مصیبت زدہ روحوں کا پینٹر [40]
  • علی امام: مین آف دی آرٹس [41]
  • 20 پاکستانی خواتین فنکارجن کے بارے آپ کو معلوم ہونا چاہیے [42]
  • سورج میری کھڑکی کے ذریعے رنگوں کو بھڑکاتا ہے[43][44]
  • پاکستان کی ہم عصر پینٹنگز کا انتخاب [45]
  • آرٹ آف کولن ڈیوڈ[46]
  1. "High Commission for Pakistan, London". www.phclondon.org. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  2. Salman، Peerzada (2019-04-04). "Art critic Marjorie Husain bids farewell to Pakistan after 60 years". Images (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  3. Wenmin، Li (2016-04-08). "The Relationship Between Sketching and Painting in Chinese Traditional Aesthetics". Recto Verso: Redefining the Sketchbook (بزبان انگریزی). doi:10.4324/9781315604114-11. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  4. "Marjorie Husain – Karachi Art Directory" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  5. "'In, At and Around' by Soraya Sikander". Islamic Arts Magazine (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  6. "Encore, NOS, The News International". jang.com.pk. 09 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  7. "Corporate Responsibility". Pfizer Corporate Website | (بزبان انگریزی). 2013-09-04. 10 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  8. "I heart art: Pagan ritual opens Band Baja Baraat show". Amin Gulgee (بزبان انگریزی). 2012-04-12. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  9. "Articles/Press". Clifton Art Gallery (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  10. "Pakistan Heritage Cuisine – A Food Story". The Nation (بزبان انگریزی). 2017-11-16. 12 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  11. "Mughees Riaz, Profile and Palette | Pakistan Today". www.pakistantoday.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  12. "Bashir Mirza: the inventor of BM | artnow" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  13. "ISHQ: A Spiritual Journey – ADA Magazine" (بزبان انگریزی). 28 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  14. Husain، Marjorie (2014-09-13). "Art fiend: Elementally yours". DAWN.COM (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  15. "SHE Magazine Digital - Women's Magazine for Beauty, Fashion & Lifestyle". SHE Magazine (بزبان انگریزی). 04 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  16. "News stories for Marjorie Husain - DAWN.COM". www.dawn.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  17. Husain، Marjorie. "Remembering an extraordinary artist". The Friday Times (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  18. "Memoirs of Art in Pakistan – The life of Marjorie Husain | artnow" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  19. "The News on Sunday (TNS) » Weekly Magazine - The News International". www.thenews.com.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  20. "Ahmed Parvez - Overview". Grosvenor Gallery (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  21. "Aspects of Art". www.goodreads.com. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  22. "Home - DAWN.COM". www.dawn.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  23. "Brush with life in Pakistan". Arab News (بزبان انگریزی). 2008-06-15. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  24. "ACIAC aims to paint a brighter future for fine arts in Pakistan". The Express Tribune (بزبان انگریزی). 2019-07-07. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  25. "5th ArtBeat 2016 Exhibitions Season – The Little Art" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  26. Archive، Asia Art. "Hamid Husain, Marjorie Husain and Wahab Jaffer". aaa.org.hk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  27. ""Exhibiting You" - Author | International Museum of Women". exhibitions.globalfundforwomen.org. 09 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  28. "By Marjorie Husain Archives". Daily Times (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  29. "K-Electric holds the Pride of Karachi Awards at Mohatta Palace". K-Electric (بزبان انگریزی). 2014-01-20. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  30. Daur، Naya (2019-04-04). "Renowned art critic Marjorie Husain says goodbye to Pakistan after 60 years". Naya Daur (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  31. "Art critic/Author Marjorie Husain writes on Soraya Sikander". SORAYA SIKANDER (بزبان انگریزی). 2013-01-17. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. [مردہ ربط]
  32. "Pakistan bids farewell to artist Jamil Naqsh | SAMAA". Samaa TV (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  33. greenwichuniversity. "Newsletter" (PDF). 
  34. Zahra، Mehak (2019-04-05). "Marjorie Husain Bids Goodbye to Pakistan After 60 Years". HIP (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  35. "WE SHALL NOT SEE HIS LIKE AGAIN: REMEMBERING | Obituary - MAG THE WEEKLY". magtheweekly.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  36. lcwu. "The development of flavored expressionism in paintings" (PDF). 12 دسمبر 2020 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. 
  37. Husain، Marjorie. (2005). Art views: encounters with artists in Pakistan. Karachi: Foundation for Museum of Modern Art (FOMMA). ISBN 978-969-8896-00-3. 
  38. "Aspects of Art". oup.com.pk (بزبان انگریزی). 12 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  39. Husain، Marjorie (2001-05-31). Aspects of Art: A Textbook for Students of Art (بزبان انگریزی). Oxford University Press. ISBN 978-0-19-579365-9. 
  40. worldcatorg. "Marjorie Husain". 
  41. Husain، Marjorie (2003). Ali Imam: Man of the Arts (بزبان انگریزی). Foundation for Museum of Modern Art. 
  42. Husain، Marjorie؛ Nawaz، Uzma (2018). 20 Pakistani Women Artists: You Should Know (بزبان انگریزی). Millennium Media. 
  43. Husain، Marjorie (2007). "The Sun Blazes the Colours Through My Window--", Anna Molka Ahmed (بزبان انگریزی). National College of the Arts. ISBN 978-969-8623-18-0. 
  44. "PUBLICATIONS - National College of Arts (NCA)". m.nca.edu.pk. اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  45. www.bibliopolis.com. "A Selection of Contemporary Paintings From Pakistan by Pacific Asia Museum, Marjorie Husain, Marcella Nesom Sirhandi on Alan Wofsy Fine Arts". Alan Wofsy Fine Arts (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020. 
  46. "The Art of Colin David by Marjorie Husain | Waterstones". www.waterstones.com (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2020.