مارک گریٹ بیچ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مارک گریٹ بیچ
Mark Greatbatch.jpg
ذاتی معلومات
مکمل ناممارک جان گریٹ بیچ
پیدائش11 دسمبر 1963ء (عمر 58 سال)
آکلینڈ، نیوزی لینڈ
بلے بازیبائیں ہاتھ کے بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا میڈیم گیند باز
حیثیتوکٹ کیپر
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 165)25 فروری 1988  بمقابلہ  انگلینڈ
آخری ٹیسٹ28 نومبر 1996  بمقابلہ  پاکستان
پہلا ایک روزہ (کیپ 60)9 مارچ 1988  بمقابلہ  انگلینڈ
آخری ایک روزہ8 دسمبر 1996  بمقابلہ  پاکستان
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
1982/83–1985/86 آکلینڈ
1986/87–1999/00 سنٹرل ڈسٹرکٹس
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 41 84 170 175
رنز بنائے 2,021 2,206 9,890 4,678
بیٹنگ اوسط 30.62 28.28 37.89 29.98
100s/50s 3/10 2/13 24/43 2/34
ٹاپ اسکور 146* 111 202* 111
گیندیں کرائیں 6 6 171 13
وکٹ 0 0 1 0
بالنگ اوسط 149.00
اننگز میں 5 وکٹ 0
میچ میں 10 وکٹ 0
بہترین بولنگ 1/23
کیچ/سٹمپ 27/– 35/– 144/– 82/–
ماخذ: Cricinfo، 7 May 2017

مارک جان گریٹ بیچ (پیدائش: 11 دسمبر 1963ء) نیوزی لینڈ کے سابق بین الاقوامی کرکٹر ہیں ۔ انہوں نے نیوزی لینڈ کے لیے اپنے 41 ٹیسٹ میچوں میں 2,000 سے زیادہ رنز بنائے۔ آکلینڈ اور سینٹرل ڈسٹرکٹس کے لیے فرسٹ کلاس کرکٹ میں بائیں ہاتھ کے بلے باز اور کبھی کبھار دائیں ہاتھ کے میڈیم پیس بولر، گریٹ بیچ نے مجموعی طور پر 9,890 فرسٹ کلاس رنز بنائے اور ساتھ ہی ساتھ کبھی کبھار وکٹ کیپر بھی۔

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

485 گیندوں پر ناٹ آؤٹ 146 رنز کا عظیم ترین ٹیسٹ سکور نومبر 1989ء میں پرتھ میں آسٹریلیا کے خلاف تھا [1] گریٹ بیچ نیوزی لینڈ کو شکست سے بچانے کے لیے 11 گھنٹے (2 دن) کریز پر تھے، ان کی کوششوں کی وجہ سے کھیل ڈرا پر ختم ہوا۔ [2] کھیل کے اختتام پر انہوں نے کھڑے ہوکر داد وصول کی۔ گریٹ بیچ کی دفاعی اننگز کو اب بھی بہت سے پنڈت سمجھتے ہیں۔  حالات کے تحت کرکٹ سب سے بڑی سنچریوں میں سے ایک ہونا۔  1992ء کے کرکٹ ورلڈ کپ کے لیے گریٹ بیچ کو آسٹریلیا کے خلاف پہلے میچ میں کھیلنے کے لیے منتخب نہیں کیا گیا تھا تاہم انہیں جان رائٹ کی جگہ جنوبی افریقہ کے خلاف اوپننگ کے لیے منتخب کیا گیا جو زخمی ہو گئے تھے اور اننگز کے آغاز میں فیلڈنگ کی پابندیوں کا فائدہ اٹھانے کے لیے جارحانہ انداز میں بلے بازی کی۔ حکمت عملی نے کام کیا، اسی طرح پورے ورلڈ کپ میں دوبارہ دہرایا گیا اور گریٹ بیچ ایک روزہ بین الاقوامی میچوں میں اننگز کا آغاز کرنے والے پہلے ' چٹکی مارنے والے ' کھلاڑیوں میں سے ایک بن گیا۔اس کامیابی کی وجہ ممالک خاص طور پر سری لنکا نے ایک جارحانہ بلے باز کے ساتھ اوپننگ کا خیال اپنایا جو عام طور پر ٹیسٹ میچوں کے مڈل آرڈر میں جلدی رنز بنانے کے لیے کھیلتا ہے اور یہ حربہ اب بین الاقوامی کرکٹ میں عام ہے۔

کرکٹ کے بعد[ترمیم]

گریٹ بیچ ایک ٹھوس فیلڈر تھا اور اس نے اپنے پورے کیریئر میں ڈائیونگ کے کچھ بہترین کیچز لیے۔ ستمبر 2005ء میں وہ انگلینڈ کے وارکشائر کاؤنٹی کرکٹ کلب میں کوچنگ کے ڈائریکٹر بن گئے۔ [3] 2007ء میں کاؤنٹی چیمپئن شپ اور پرو40 لیگ دونوں سے دستبردار ہونے کے بعد ان کی جگہ ایشلے جائلز نے لے لی۔ [4] جنوری 2010ء میں گریٹ بیچ کو نیوزی لینڈ کی قومی کرکٹ ٹیم کا کوچ مقرر کیا گیا۔ [5]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Only Test: Australia v New Zealand at Perth, Nov 24–28, 1989. Cricket Scorecard". ای ایس پی این کرک انفو. اخذ شدہ بتاریخ 13 اگست 2014. 
  2. Monga، Sidharth (31 March 2009). "I Was There: One man against the mob". Cricinfo Magazine. ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 اگست 2014. 
  3. Greatbatch to coach Warwickshire. retrieved 5 October 2007
  4. Giles succeeds Greatbatch at Warwickshire, retrieved 5 October 2007
  5. Greatbatch handed New Zealand team coaching role, retrieved 30 January 2010