مارینل سموک یوبالڈو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

مارینل سموک یوبالڈو فلپائن سے تعلق رکھنے والی ایک ماحولیاتی کارکن ہیں جنہوں نے اپنے ملک میں نوجوانوں کی پہلی موسمیاتی ہڑتال کو منظم کرنے میں مدد کی۔ انہوں نے کارپوریٹ ذمہ داری کے بارے میں تحقیقات کے ایک حصے کے طور پر فلپائن کمیشن برائے انسانی حقوق کی برادری کی گواہ کے طور پر گواہی دی اور کیا کہ موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو فلپائنیوں کے انسانی حقوق کی خلاف ورزی تصور کیا جا سکتا ہے۔[1]

پس منظر[ترمیم]

طوفان هایان کے اثرات، فلپائن (2013)

مارینل سموک اوبالڈو (پیدائش 1997) کا تعلق فلپائن کے دارالحکومت منیلا سے ہے۔ ان کے والد ماہی گیر ہیں۔[1]

2013 سے پہلے، مارینل سموک یوبالڈو، منصوبہ(بین الاقوامی تنظیم) میں نوجوان رہنما رہ چکی ہیں، ایک تنظیم جس کا مقصد بچوں اور خواتین کے حقوق کو فروغ دینا ہے۔ اس کردار میں، مارینل سموک اوبالڈو کا کہنا ہے کہ اس نے مقامی گروہوں کو عالمی حرارت کی وجوہات کے بارے میں تعلیم دی۔[1]

نومبر 2013 میں، طوفان هایان نے 275 کلومیٹر فی گھنٹہ (170 میل فی گھنٹہ) کی رفتار سے ہوائیں اور 15 میٹر (45 فٹ) تک کی لہریں چلائیں، خاص طور پر فلپائن کے نشیبی علاقوں کو متاثر کیا۔[2] اس آفت میں 6000 سے زائد افراد ہلاک اور 28000 زخمی ہوئے۔[3] سائنسدانوں نے کہا ہے کہ اس طوفان جیسے شدید موسمی واقعات عالمی درجہ حرارت میں اضافے کی وجہ سے مزید بڑھ رہے ہیں یا اس کے امکانات زیادہ ہو رہے ہیں۔[4] طوفان ھیان کے اثرات کا پہلے ہاتھ سے تجربہ کرنے کے بعد، یوبالڈو نے موسمیاتی تبدیلی کے مسائل پر حکومتوں سے لابنگ کرتے ہوئے، اپنی موسمیاتی سرگرمی جاری رکھی۔[3]

سرگرمی[ترمیم]

یوبالڈو ایک بار استعمال ہونے والے پلاسٹک پر پابندی، کاربن کے اخراج میں کمی اور قابل تجدید توانائی میں سرمایہ کاری کی وکالت کرتی ہیں۔[3]

2015 میں، یوبالڈو نے اقوام متحدہ (UN) کی موسمیاتی کانفرنس میں بات کی جہاں انہوں نے کہا کہ ‘براہ کرم ہمارے بارے میں سوچیں، آنے والی نسلوں کے بارے میں سوچیں جو نقصان اٹھائیں گی کیونکہ آپ نے وقت پر فیصلے نہیں کیے‘۔ یوبالڈو نے کہا ہے کہ موسمیاتی تبدیلیوں سے لڑنا 'میری زندگی کا مقصد' ہے۔[1]

اکتوبر 2019 میں، یوبالڈو نے یوکوہاما، جاپان میں ایک موسمیاتی قیادت کی تربیتی تقریب میں شرکت کی، جسے ایل گور نے قائم کیا تھا۔ اس نے جاپان کی مختلف یونیورسٹیوں میں بھی خطاب کیا۔[3]

یوبالڈو نے کہا ہے کہ:[3]

پہلی دنیا کے ممالک… موسمیاتی تبدیلی کو ہوا دینا بند کر سکتے ہیں، اور کاروباری طریقوں کو تبدیل کر سکتے ہیں تاکہ آپ کے کاربن کے اخراج کو کم کیا جا سکے…ان ممالک کو ذمہ دار اور جوابدہ ہونا چاہیے۔لوگوں کے لیے، فلپائن جیسی قوموں کے لیے، کسی ایسے واقعے سے دوچار ہونا بہت غیر منصفانہ ہے جو ہم نے پیدا نہیں کیا۔

یوبالڈو کا کہنا ہے کہ حفری ایندھن کی کمپنیوں کو موسمیاتی تبدیلی کے ردعمل کا حکم دینے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے۔[5] وہ کہتی ہیں کہ وہ پر امید ہیں کہ موسمیاتی تبدیلی کے اثرات کو کم کرنے کے لیے حکمت عملی تیار کی جا سکتی ہے۔[3]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت "Meet Marinel Sumook Ubaldo, Philippines". Nobel Women's Initiative (بزبان انگریزی). 2019-12-03. اخذ شدہ بتاریخ 30 اپریل 2020. 
  2. "Typhoon Haiyan: Before and after the storm". BBC News (بزبان انگریزی). 2013-11-13. اخذ شدہ بتاریخ 30 اپریل 2020. 
  3. ^ ا ب پ ت ٹ ث Takahashi، Ryusei (2019-11-05). "Filipino typhoon survivor tells of brush with climate crisis, urges Japanese to act now". The Japan Times (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 30 اپریل 2020. 
  4. Vidal، John؛ Carrington، Damian (2013-11-13). "Is climate change to blame for Typhoon Haiyan?". The Guardian (بزبان انگریزی). ISSN 0261-3077. اخذ شدہ بتاریخ 30 اپریل 2020. 
  5. Ubaldo، Marinel Sumook. "I Don't Want to Be a Climate Statistic". Teen Vogue (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 30 اپریل 2020.