مالتی چودھری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مالتی چودھری
Malati Choudhury.jpg
 

مناصب
رکن مجلس دستور ساز بھارت   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
6 جولا‎ئی 1946  – 24 جنوری 1950 
معلومات شخصیت
پیدائش 26 جولا‎ئی 1904  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہار  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 15 مارچ 1998 (94 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکنیت نیشنل فلیگ پریزنٹیشن کمیٹی[1]  ویکی ڈیٹا پر (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شریک حیات ناباکرشنا چودھری  ویکی ڈیٹا پر (P26) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ سماجی کارکن  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
دیشی کوتم (1998)[2]
جمنا لعل بجاج اعزاز (1988)  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مالتی دیوی چودھری (سین) (26 جولائی 1904ء – 15 مارچ 1998ء) ایک بھارتی شہری حقوق اور آزادی کی کارکن اور گاندھیائی تھیں۔ وہ 1904ء میں ایک اعلیٰ متوسط طبقے کے برہمو گھرانے میں پیدا ہوئیں۔ وہ بیرسٹر کمود ناتھ سین کی بیٹی تھیں، جن کی وفات تب ہو گئی تھی جب مالتی دیوی صرف ڈھائی سال کی عمر تھی، اور سنیہلتا سین نے ان کی پرورش کی۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

مالتی کا خاندان اصل میں بکرم پور، ڈھاکہ (اب بنگلہ دیش میں) کے کماراکھنڈا کے برہمن خاندان [3] سے تعلق رکھتا تھا، لیکن ان کے خاندان کے افراد سمتلالہ، بہار میں آباد ہو گئے تھے۔ ان کے نانا بہاری لال گپتا، آئی سی ایس تھے، جو بڑودہ کے دیوان بنے۔ خاندان میں ان کی والدہ کی طرف سے ان کے پہلے کزن رنجیت گپتا، آئی سی ایس، مغربی بنگال کے سابق چیف سکریٹری، اور اندراجیت گپتا، مشہور پارلیمنٹیری اور بھارت کے سابق وزیر داخلہ تھے۔ سب سے بڑے بھائی، پی کے سین گپتا، سابق انکم ٹیکس کمشنر، کا تعلق انڈین ریونیو سروس سے تھا، اور ایک اور بھائی، کے پی سین، جو سابق پوسٹ ماسٹر جنرل تھے، انڈین پوسٹل سروس سے تھے۔ اپنے والدین کی سب سے چھوٹی اولاد ہونے کے ناطے وہ اپنے تمام بھائیوں اور بہنوں کی لاڈلی تھی۔ ان کی والدہ سنہلتا اپنے طور پر ایک مصنفہ تھیں، اور انہوں نے ٹیگور کے کچھ کاموں کا ترجمہ کیا تھا، جیسا کہ ان کی کتاب جوگلانجلی سے پتا چلتا ہے۔

رابندر ناتھ ٹیگور کی وشو بھارتی میں شامل ہونے کے بعد مالتی چودھری نے بالکل مختلف طرز زندگی اپنا لیا۔ 'سینتی نکیتن کی یادیں' کے عنوان سے ایک مضمون میں، اس کی ماں نے لکھا تھا: "مالتی بہت خوش تھی اور ایک طالبہ کے طور پر وشو بھارتی میں اپنی رہائش سے بہت فائدہ اٹھایا۔ گرودیو کے ذاتی اثر اور ان کی تعلیمات، ان کی حب الوطنی اور آئیڈیل ازم نے مالتی کو زندگی بھر متاثر کیا اور اس کی رہنمائی کی۔"

وہ کافی خوش قسمت تھیں کہ ٹیگور اور گاندھی دونوں سے گہری متاثر ہوئیں۔ [4] یہ وہ تشکیل کنندہ ی تھا جس کے قدموں پر اس نے تعلیم، ترقی، فن اور ثقافت کے کچھ نادر اقدار اور اصولوں کو سیکھا اور حاصل کیا، جو اس کی زندگی میں رہنما اصول رہے تھے۔ اور بعد میں جس نے اس پر جادو کیا اور جس کے کہنے پر اس نے خود کو آزادی کی جدوجہد میں جھونک دیا۔

گاندھی جی اسے "طوفانی" کہتے تھے [5]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://164.100.47.194/Loksabha/Debates/cadebatefiles/C14081947.html
  2. https://www.etribaltribune.com/index.php/volume-1/mv1i11/malati-chaudhury-a-biographical-sketch — اخذ شدہ بتاریخ: 16 جولا‎ئی 2020
  3. "Famous Odia Oriya Personality Malati Choudhury Biography, Photos-NuaOdisha". www.nuaodisha.com. اخذ شدہ بتاریخ 11 جنوری 2022. 
  4. Here commitment to the teachings of Tagore was evident in her acceptance speech on receiving the Tagore Literacy Award given by the Indian Adult Education Association in 1995. She said: "I feel doubly honoured to receive the Award, which is named after Kabiguru رابندر ناتھ ٹیگور، to commemorate his memorable achievements in bringing a synthesis among culture, music and aesthetics in evolving and practising his unique philosophy and principles of education. Like ژاں ژاک روسو، Gurudev did not want purposefulness, belonging to the adult mind, to be forced upon the children in school. He believed that once purposefulness was introduced, it brought torture to the child, as it went against the purpose of nature. According to Tagore, nature was the greatest of all teachers for the child. He had tremendous faith in the educational value of natural objects. Natural events like the beautiful sunrise and sunset, blossoming of flowers and singing of birds are the learning resources for children possessing the natural gift of learning things very easily. He had a great faith in the children’s natural way of learning. He did not insist on forced mental feeding as a result of which lessons become a form of torture. Gurudev considered artificial feeding of the mind to be of man’s most cruel and wasteful mistakes. According to him, the greatest possible gift for children was their own freedom to grow. Tagore also wanted the children to have another kind of freedom – the freedom of sympathy with all humanity, a freedom from all national and racial prejudices. Thus, his philosophy of education is based on the ideal of the spiritual unity of all races." She had also said, " Rabindranath was always following the ideal to realize, in and through education, the essential unity of man. The way in which he achieved that unity gave him a deep insight into the object of education and its problems."
  5. "Malati Choudhury". Odiya.org. 2009. اخذ شدہ بتاریخ 1 جنوری 2013. Because of Malati Devi's storm like activities Gandhiji had nick named her ' Toophani '