مالک (2016 فلم)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مالک
Maalik film.jpeg
تھیٹر ریلیز پوسچر
ہدایت کارعاشر عظیم
سیمی رحمان
پروڈیوسرعاشر عظیم
بشرٰی عاشر عظیم
ستارے
سنیماگرافیعمران علی
ایڈیٹرسلمان
پروڈکشن
کمپنی
میڈیا ہب
تقسیم کارفٹ پرنٹ انٹرٹینمنٹ
تاریخ اجراء
  • 8 اپریل 2016ء (2016ء-04-08) (پاکستان)
ملکپاکستان
زباناردو
باکس آفس3.15 کروڑ روپے (امریکی ڈالر $310,000)

مالک 2016ء میں بننی والی ایک سیاست پر مبنی فلم ہے۔ فلم میں مرکزی کردار فرحان علی آغا،ساجد حسن، حسن نیازی، عدنان شاہ، راشد فاروقی، احتشام الدین اور عاشر عظیم نبھا رہے ہیں۔ فلم 8 اپریل 2016ء کو پاکستان بھر کے سینماؤں میں ریلیز کیا گیاتھا۔ اس فلم پر حکومت نے پابندی لگادی ہے۔ حکومت نے پابندی کی وجہ یہ بتائی ہے کہ فلم میں صوبائی تعصب اجاگر کرنے، عام شہریوں کے قانون ہاتھ میں لینے اور سیاست دانوں کے خلاف پروپیگنڈے کے باعث فلم پر پابندی لگائی گئی ہے۔[1]

کہانی[ترمیم]

اس فلم کی کہانی یوں ہے کہ ایک افغانی خاندان، افغانستان میں سوویت یونین کے حملے اور ظلم و ستم سے بچنے کے لیے کراچی شہر آجاتا ہے اور یہی رہنا شروع کردیتا ہے۔ یہی سے ایک ایس ایس جی کے سابق افسر کی کہانی شروع ہوجاتی ہے جس کی ذاتی زندگی میں ایک سانحہ پیش ہوا ہوتا ہے۔ لیکن وہ اپنا دھیان بٹانے کے لیے ایک نجی سکیورٹی کمپنی شروع کرتا ہے جس میں اس کے کئی ساتھی ایس ایس جی سے ریٹائر ہونے کے بعد اس میں شامل ہوتے چلے جاتے ہیں۔ یہ لوگ اپنے ملک کے تباہ ہوتے سیاسی و سماجی ماحول سے ڈرے ہوتے ہیں اور یہ سب اپنے ملک کی ذمہ داری اپنے ہاتھ میں لینے کی کوشش کرتے ہیں۔ اسی اثنا میں ایک بڑا جاگیردار صوبے کا وزیر اعلیٰ بن جاتا ہے (جو غالباََ صوبہ سندھ کا وزیراعلیٰ ہوتا ہے) اور اپنی مخصوص سوچ سے صوبے بھر میں کرپشن اور خوف کا ایک بدترین دور شروع کرتا ہے۔ لگتا یوں ہے کہ جیسے اس کا راستہ روکنے والا کوئی انسان موجود نہیں، ایسے میں اس سکیورٹی کمپنی کے لوگ اس تمام کرپشن اور مس گورننس کو صاف کرنے کا بیڑا خود اُٹھاتے ہیں۔ اب وہ اس میں کتنے کامیاب ہوئے اپنی مشن میں یہی اس فلم کی کہانی ہے۔

پابندی[ترمیم]

ذرائع ابلاغ کے مطابق، پہلے حکومت سندھ نے صوبہ سندھ میں اس پر پابندی عائد کی تھی جس کی وجہ یہ تھی کہ اس میں صوبے کا وزیراعلیٰ منفی کردار میں دکھایا گیا ہے۔۔[2] سندھ سنسر بورڈ کے بعد وفاقی سنسر بورڈ نے بھی فلم ’’مالک‘‘ کی نمائش پر پابندی لگادی ہے۔ وفاقی سنسر بورڈ کے چیئرمین کا کہنا ہے کہ فلم میں صوبائی تعصب اجاگر کرنے، عام شہریوں کے قانون ہاتھ میں لینے اور سیاست دانوں کے خلاف پروپیگنڈے کے باعث فلم پر پابندی لگائی گئی ہے۔ وفاقی وزارت اطلاعات و نشریات نے اپنے نوٹیفیکیشن میں کہا ہے کہ موشن پکچرز آرڈیننس 1979 کے سیکشن 9 کے تحت حاصل اختیارات کی بنیاد پر فلم کا سنسر سرٹیفیکیٹ واپس لیا گیا ہے اور اس فلم کی نمائش پر ملک بھر میں پابندی عائد کی گئی ہے۔[3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "'Maalik' film banned across Pakistan". صبح صادق. 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 نومبر 2015. 
  2. http://arynews.tv/en/sindh-bans
  3. 'Maalik' film banned across Pakistan - Pakistan - DAWN.COM

بیرونی روابط[ترمیم]