ماوراء الطبیعیات

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
Gnome-devel.svg اس مضمون / موضوع / اصطلاح کا نام گفت و شنید سے ہونے والی اتفاقِ رائے کے بعد پرانے نام ---- مابعدالطبیعیات ---- سے تبدیل کردیا گیا ہے۔ اگر آپ کو دائرۃ المعارف کے کسی بھی صفحے پر اس کے لئے کوئی دیگر اصطلاح یا اس کا پرانا نام نظر آئے تو براۂ کرم اسے درست کرکے اس صفحے کے عنوان کی عبارت سے مماثل کر دیجئے۔

ماوراء الطبیعیات (Metaphysics), فلسفہ کی ایک اہم شاخ ہے۔ یہ عالم کے داخلی و غیر مادی امور سے بحث کرتی ہے۔ وجودیت، الہیات و کونیات اسکی ذیلی شاخیں ہیں۔ خدا، غایت، علت، وقت اور ممکنات اس کے موضوعات ہیں۔

ہستی و وجود کے --- ہونے --- کی وجہ اور فہم و ادراک کے مسائل میں الجھ کر کون (being) کی تلاش اسکے خاص موضوعات ہیں۔ علم فلسفہ کی اس شاخ تنظیر و تفکر میں کسی بھی موجود کے پہلے سبب سے بحث کی جاتی ہے۔ دور قرون وسطی (Medieval) کے یونانی لفظ سے metaphysika ماخوذ ہے آج کا میٹافزکس اور دو الفاظ کا مرکب ہے ، 1- meta بمعنی پس از یا بعد 2- physics بمعنی طبیعی وطبیعیات یا فطرت۔

اوپر بیان شدہ ماخوذیت کے بعد سادہ الفاظ میں اسکو یوں کہ سکتے ہیں کہ ؛ قدرت یا فطرت سے آگے (سوچ یا کام)، یا پھر یوں کہ لیں کہ فطرت (طبیعیات) سے آگے یا طبیعیات کے بعد یعنی مابعدالطبیعیات۔ اور یہی ، طبیعیات کے بعد (کام) ، ارسطو کے تحریر کردہ بیان میں فطرت اور طبیعیات کا ذکر ختم ہونے پر 13 ویں مقالے یا دانش نویسہ کا عنوان بھی ہے جو عربی کے دور عروج میں ترجمہ ہوا۔ ارسطو کی تحریر میں تو اسکو طبیعیات کے بعد (کام) کہا گیا تھا مگر لاطینی والوں کے ترجمہ کا کمال کہیۓ کہ انہوں نے اسکو ؛ طبیعیات سے (آگے یا ماوراء) علم ، ترجمہ کردیا اور اسی ؛ بعد (after) اور آگے یا ماوراء (beyond) کے محرف یا تفسیرسہوا سے اسکا آج کا فلسفیانہ --- مابعد --- کا مفہوم آیا ہے۔

بیرونی روابط[ترمیم]

http://plato.stanford.edu/entries/aristotle-metaphysics/

http://www.ditext.com/runes/index.html

http://waysofseeing.net