محمد اسحاق بھٹی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

مولانا محمد اسحاق بھٹّی بن عبد المجید بن محمد بن دوست محمد بن منصور بن خزانہ بن جیوا اہل حدیث مسلک سے وابستہ صحافی، مؤرخ، عالم دین، تجزیہ نگار اور خاکہ نگار ہیں۔ ان کی پیدائش یہیں 15 مارچ 1925ء کو کوٹ کپورہ (ریاست فرید کوٹ) مشرقی پنجاب میں ہوئی۔

تعلیم[ترمیم]

مولانا بھٹّی پانچ سال کی عمر میں دادا مرحوم سے قرآن مجید ناظرہ اور اردو لکھنا پڑھنا شروع کیا اور ساتھ ہی سرکاری اسکول کی پہلی جماعت میں داخلہ لیا۔ یہیں چوتھی جماعت تک پڑھ کر پرائمری پاس کیا۔ دینی معاملوں میں بھٹی نے شارح سنن نسائی ،اور ادارہ الدعوة السلفیہ اور ہفت روزہ مجلہ الاعتصام کے بانی حضرت مولانا عطاءاللہ حنیف محدث بھوجیانی، جو موضع بھوجیان، تحصیل ترنتارن، ضلع امرتسر کے رہنے والے تھے، سے نحو صرف سے 1939ء کے درمیان سیکھا تھا۔ اس کے علاوہ انہوں نے کئی اور علما سے درس حاصل کیا۔

تحریک آزادی[ترمیم]

مولانا بھٹّی وطن کی آزادی کے لیے اپنی ریاست کی "پرجا منڈل" میں شمولیت اختیار کرلی، جس کے صدر اس زمانے میں گیانی ذیل سنگھ تھے۔ اس سلسلے انہیں کئی مصائب اٹھانے پڑے تھے۔

پاکستان ہجرت[ترمیم]

24 جولائی 1948ء کو مولانا بھٹّی ترکِ وطن کر کے پاکستان آ گئے۔ وہ اپنے ساتھ بہت ہی محدود اسباب لائے تھے۔ اسی سال جب پاکستان میں جماعتی نظم"مرکزی جمعیت اہل حدیث کاقیام عمل میں لایاگیا۔ اس وقت امیرمولانا داؤد غزنوی اور ناظم اعلی مولانامحمداسماعیل سلفی تھے۔ آپ کوناظم دفتربنایاگیا اس عہدے پر1964ء تک کام کیا۔ اس دوران 1949ء میں ہفت روزہ الاعتصام کااجراہواجس کے آپ معاون ایڈیٹرتھے اورایڈیٹر مولانا محمد حنیف ندوی تھے بعد ازاں 1951ء میں مولانا محمد حنیف ندوی کے مستعفی ہونے کے بعدآپ ایڈیٹربن گئے۔

ادارہ ثقافت اسلامیہ سے وابستگی[ترمیم]

12 اکتوبر 1965ء کو مشہور اسلامی تحقیقی ادارۂ ثقافت اسلامیہ نے بغیر کسی درخواست کے ریسرچ سکالر کی حیثیت سے مولانا بھٹّی کی خدمات حاصل کر لیں، یہ وہ ادارہ ہے جو بر صغیر کے معروف محققین کا مرکز تھا، جن میں اس ادارہ کے ڈائرکٹر شیخ محمد اکرام ،مولانا محمد حنیف ندوی، سید جعفر شاہ پھلواروی، رئیس احمد جعفری وغیرہ ہیں۔ یہ ایک نیم سرکاری ادارہ تھا، جس میں بھٹی صاحب کو خالص تحقیقی میدان سے واسطہ پڑا۔ آپ ادارۂ ثقافت اسلامیہ سے وابستہ ہو گئے اور 1997ء تک 32سال اس ادارے میں کام کرتے رہے۔

تصنیفی خدمات[ترمیم]

اس دوران اور ریٹائرڈ ہونے کے بعد تصنیفی خدمات اس طرح رہیں: 1.نقوش عظمت رفتہ

2.بزم ارجمنداں
3.کاروان سلف
4.قافلہ حدیث
5.گلستان حدیث
6.دبستان حديث
7.تذکرہ قاضی سلیمان منصورپوری
8.تذکرہ مولاناغلام رسول قلعوی
9.تذکرہ صوفی محمد عبد اللہ
10.تذکرہ مولانااحمدالدین گکهڑوی
11.قصوری خاندان
12.ارمغان حنیف
13.تذکرہ مولانامحمداسماعیل سلفی
14.برصغیرمیں علم فقہ
15.برصغیرمیں اسلام کے اولین نقوش
16.برصغیرمیں اہل حدیث کی آمد
17.فقهائے پاک وهند
18.میاں فضل حق اور ان کی خدمات
19.میاں عبد العزیز مالواڈہ
20تذکرہ محدث روپڑی
21.برصغیرکے اہل حدیث خدام قرآن
22.هفت اقلیم
23.برصغیرمیں اہل حدیث کی اولیات
24.برصغیرمیں اہل حدیث کی تدریسی خدمات
25.عربی کے تین هندوستانی ادیب
26.آثارماضی
27.محفل دانشمنداں
28.عارفان حدیث
29.چمنستان حدیث
30.اسلام کی بیٹیاں
31.لسان القرآن۔
32.ترجمہ ریاض الصالحین
33.ترجمہ فہرست ابن ندیم

یہ تهیں مولانامحمداسحاق بهٹی صاحب کی قلمی خدمات۔

آپ پرپنجاب یونیورسٹی سے ایم فل کامقالہ بهی لکهاگیاہے جس کانام ہے:"محمداسحاق بهٹی کی خاکہ نگاری"مقالہ نگا رہیں پروفیسرفوزیہ سحرملک۔ یہ کتاب فیصل آباد کے ایک ادارے۔"ادارہ قرطاس" سے شائع ہوچکی ہے۔[1]

وفات[ترمیم]

مولانا اسحاق بھٹی کا انتقال 22 دسمبر 2015ء کو ہوا۔

حوالہ جات[ترمیم]