محمد بن سیرین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد بن سیرین
(عربی میں: مُحمَّد بن سيرين البصري ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 653  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بصرہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 14 جنوری 729 (75–76 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بصرہ  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طبی کیفیت بہرا پن  ویکی ڈیٹا پر (P1050) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
استاد انس بن مالک،  زید بن ثابت،  ابو ہریرہ،  عبد اللہ بن عباس،  عبد اللہ بن عمر  ویکی ڈیٹا پر (P1066) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نمایاں شاگرد قتادہ بن دعامہ،  ایوب سختیانی  ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مصنف،  محدث،  فقیہ،  مفسر قرآن  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی[1]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل فقہ،  علم حدیث،  تفسیر قرآن،  خواب کی تعبیر  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

آپ کا نام محمد، کنیت ابو بکر اور والد کا نام سیرین تھا ۔ابن سیرین کے نام سے معروف ہیں۔

نام ونسب[ترمیم]

محمد نام،ابوبکر کنیت والد کا نام سیرین تھا،سیرین جرجرایا(عراق) کے باشندے تھے اور ٹھٹھیرے کا کام کرتے تھے،عین التمر میں ان کی دوکان تھی،حضرت عمرؓ کے عہد خلافت میں عین التمر کے معرکہ میں اورعجمیوں کے ساتھ سیرین بھی گرفتار ہوئے اور کسی مجاہد کے حصہ میں پڑے، بعد میں وہ انس بن مالکؓ کی غلامی میں تھے، اس سے قیاس ہوتا ہے کہ شاید وہ ان ہی کے حصہ میں پڑے ہوں گے، یا انہوں نے کسی مجاہد سے خریدا ہوگا، بہرحال وہ انسؓ بن مالک کی غلامی میں تھے،سیرین بڑے صناع تھے،کافی کماتے تھے،اس لیے انسؓ نے بیس یا چالیس ہزار لے کر انہیں کچھ عرصہ کے بعد آزاد کردیا۔ [2]

ان کی بیوی صفیہ حضرت ابوبکر صدیق کی لونڈی تھیں اورایسی لونڈی تھیں جن کی ذات آزاد عورتوں کے لیے قابل رشک ہے،ان کے نکاح میں تین امہات المومنین نے ان کو سنوارا تھا اور اٹھارہ بدری صحابہ شریکِ نکاح تھے، اوران کے لیے دعائے خیر کی تھی۔ [3]

پیدائش[ترمیم]

ان دونوں کی شخصیت سے مل کر محمد بن سیرین کی ذات وجود میں آئی وہ ۳۳ میں تولد ہوئے۔[4]

فضل وکمال[ترمیم]

حضرت انس بن مالکؓ کی ذات وہ تھی جن کے معمولی تربیت یافتہ علم و عمل کے وارث ہوئے، ابن سیرین نے انہی کے دامنِ علم میں تربیت پائی تھی اورمدتوں ان کے ساتھ رہے تھے (تہذیب وتذکرہ الحفاظ وابن سعد وغیرہ)انس بن مالکؓ کے علاوہ اکابر صحابہ میں انہوں نے ابوہریرہؓ کی زیادہ صحبت اٹھائی تھی اور ان کے اصحاب میں ان کا شمار تھا،تابعین میں وہ مدتوں سرتاجِ تابعین حضرت حسن بصری کی صحبت میں رہے۔ [5] ان بزرگوں کے فیض صحبت نے ابن سیرین کو پیکر علم وعمل بنادیا،علامہ ابن سعد لکھتے ہیں : کان ثقۃ مامونا عالیار فیعا اماما کثیر العلم ورعا حافظ ذہبی لکھتے ہیں،کان فقیھا اماما عزیز العلم ثقۃ ثبتا علامۃ التفسیر راسانی الورع

تفسیر[ترمیم]

انہیں جملہ علوم میں یکساں کمال حاصل تھا،امام نووی لکھتے ہیں کہ وہ تفسیر،حدیث فقہ اور تعبیر رویا وغیرہ فنون میں امام تھے۔ [6]

حدیث[ترمیم]

ابن سیرین حضرت انسؓ کے تربیت یافتہ،ابوہریرہؓ کے شاگرد اورحسن بصری کے ہم جلیس تھے، جن میں سے ہر ایک حدیث کا رکن اعظم تھا ،ان تینوں بزرگوں کے علاوہ انہوں نے اس فن شریف میں صحابہ میں زید بن ثابتؓ،حذیفہ بن یمانؓ، ابن عمرؓ، ابن عباسؓ،حسنؓ بن علیؓ، جندب بن عبداللہ بجلیؓ،رافع بن خدیجؓ،سلیمان بن عامرؓ، سمرہ بن جندبؓ،عثمان بن ابی العاصؓ،عمران بن حصینؓ،کعب بن عجرہؓ،معاویہؓ،ابودرداءؓ، ابو سعید خدریؓ، ابوقتادہ انصاریؓ ابوبکر ثقفیؓ، ام المومنین عائشہ صدیقہؓ،اور غیر صحابہ علماء میں عکرمہ،شریح،حمید بن عبدالرحمن حمیری عبداللہ ابن شفیق،عبدالرحمن بن ابی بکرہ،قیس بن عباد،مسلم بن یسار،یونس بن جبیر،عمروبن وہب یحیی بن ابی اسحٰق حضرمی،خالد الخدا وغیرہ ایک بڑی جماعت سے روایتیں کی ہیں۔ [7] ان بزرگوں کے فیض نے ان کو علم حدیث کا دریا بنادیا تھا، ابن سعد،حافظ ذہبی، امام نووی ابن حجرا نہیں امام الحدیث لکھتے ہیں:

احتیاط[ترمیم]

اس وسعتِ علم کے باوجود وہ بڑے محتاط تھے اورسماع اورروایت دونوں میں انتہائی احتیاط برتتے تھے،معمولی درجہ کے اشخاص سے تحصیل علم اور اخذحدیث خلافِ احتیاط سمجھتے تھے؛چنانچہ فرماتے تھے کہ یہ علم دین ہے،اس لیے اس کو حاصل کرنے سے پہلے اس شخص کو خوب اچھی طرح سے پرکھ لو جس سے اس کو حاصل کرنا ہے۔ [8]

روایت میں اتنے محتاط تھے کہ احادیث کو بالفاظہا روایت کرتے تھے،تنہا معنی بیان کرنا کافی نہ سمجھتے تھے[9]حدیث اس احتیاط سے بیان کرتے تھے کہ معلوم ہوتا تھا کہ کوئی چیز صاف کررہے ہیں،یا کسی چیز کا خوف ہے ،انتہائی احتیاط کی بنا پر حدیثوں کا قلم بندکرنا پسند نہ تھا،فرماتے تھے کہ کتاب سے بچو،تمہارے اگلے لوگ کتابوں ہی سے سر گردان اورگمراہ ہوئے،اگر میں کسی چیز کو کتاب بناتا تو رسول اللہ ﷺ کے خطوط کو بتاتا لیکن حدیثوں کو حفظ کرنے کے لیے اس شرط پر ان کا قلمبند کرنا جائز سمجھتے تھے کہ حفظ کرنے کے بعد وہ مٹادی جائیں[10]روایت اورکتابتِ حدیث کے سلسلہ میں ایک باریک نکتہ ارشاد فرماتے تھے کہ اگر کسی بات کرنے والے کو یہ معلوم ہوجائے کہ اس کی باتیں مواخذہ کے لیے قلم بند کی جاتی ہیں تو وہ گفتگو کم کردے [11]اس کا مقصد یہ ہے کہ جب معمولی باتوں میں باتیں کرنے والے مواخذہ کے خوف سے احتیاط کرنے لگتے ہیں تو حدیثوں کی کتابت میں تو بدرجہ اولی احتیاط کرنی چاہئے کہ اس کی بھول چوک میں زیادہ مواخذہ ہے اور کتابت کی بھول چوک کو دوام حاصل ہوجاتا ہے۔

ان کی مرویات کا پایہ[ترمیم]

اس احتیاط کی بناء پر ارباب فن کے نزدیک وہ بڑے صادق القول اور ان کی روایات نہایت معتبر مانی جاتی تھیں،ہشام بن حسان کہتے تھے کہ میں نے انسانوں میں سب سے زیادہ سچا ابن سیرین کو پایا،بڑے بڑے ائمہ حدیث شائقین علم کو ان کا دامن پکڑنے کی ہدایت کرتے تھے،شعیب بن حجاب کا بیان ہے کہ شعبی ہم لوگوں سے کہتے تھے کہ تم لوگ ابن سیرین کا دامن پکڑو [12]

تلامذہ[ترمیم]

حدیث میں ان کے تلامذہ کا دائرہ نہایت وسیع تھا،بعضوں کے نام یہ ہیں، امام شعبی،ثابت،خالد الخداد،داؤد بن ابی ہند،ابن عون،جریر بن حازم،ایوب،عاصم الاحول قتادہ ،سلیمان التیمی،مالک بن دینار،امام اوزاعی،قرہ بن خالد،ہشام بن حسان اور ابو ہلال رابسی وغیرہ۔ [13]

فقہ[ترمیم]

فقہ میں بھی ان کا پایہ نہایت بلند تھا،وہ بالاتفاق اپنے عہد کے اکابر فقہاء میں تھے،ابن سعد، حافظ ذہبی، امام نووی اورابن حجر وغیرہ تمام آئمہ فقہ میں ان کی امامت کے معترف ہیں (دیکھو کتب مذکور حالات ابن سیرین) ابن حبان کہتے ہیں کہ ابن سیرین فقیہ، فاضل ،حافظ اورمقنن تھے۔ [14]

مہارت قضاء اوراس سے گریز[ترمیم]

فقہی کمال کی بناء پر انہیں قضا میں بڑی مہارت تھی،عثمانؓ البتی کا بیان ہے کہ اس علاقہ میں ابن سیرین سے زیادہ قضاء کا عالم نہ تھا [15] ان کی مہارت قضا کی وجہ سے ان کے سامنے عہدہ قضا پیش کیا گیا ،یہ اس کے خوف سے شام بھاگ گئے پھر عرصہ کے بعد وہاں سے مدینہ واپس آئے۔ [16]

فتاوی میں احتیاط[ترمیم]

مسائل اورفتاویٰ کے جواب میں اتنے محتاط تھے کہ جواب دیتے وقت شدتِ احتیاط یا خوف سے گھبرا جاتے اوران کی حالت بدل جاتی ،اشعث کا بیان ہے کہ ہم لوگ جب ابن سیرین کے پاس بیٹھتے تھے، تو وہ باتیں بھی کرتے تھے،ہنستے بھی تھے، حالات بھی پوچھتے تھے،لیکن جہاں ان سے فقہ کا کوئی مسئلہ یا حرام وحلال کے متعلق کچھ پوچھا جاتا تو اُن کا رنگ متغیر ہوجاتا اور یہ معلوم ہی نہ ہوتا کہ تھوڑی دیر پہلے وہ ہنس بول رہے تھے [17]ابن عون کا بیان ہے کہ میں نے ایک مسئلہ میں ابن سیرین کی طرف رجوع کیا،انہوں نے جواب میں کہا میں یہ نہیں کہتا کہ اس میں کوئی حرج نہیں ہے؛بلکہ میں اس میں کوئی حرج نہیں سمجھا۔ [18]

معاصر علماءکا اعتراف[ترمیم]

اس عہد کے بڑے بڑے علماء اوراربابِ کمال انہیں ان کے زمانہ کا ممتاز فاضل سمجھتے تھے،ابن عون کہتے تھے کہ ساری دنیا میں تین آدمیوں کا مثل نہیں مل سکتا،عراق میں ابن سیرین کا حجاز میں قاسم بن محمد کا اورشام میں رجاء بن حیوۃ کا، اورپھر ابن سیرین ان تینوں میں فایق تھے [19] ابن حبان لکھتے ہیں کہ محمد بن سیرین بصرہ کے سب سے بڑے متورع فقیہ،فاضل،حافظ،متفنن اورمعبر خواب تھے۔ [20]

زہد وورع[ترمیم]

ان کی ذات جامع العلم والعمل تھی، ان میں جس درجہ کا علم تھا، اسی درجہ کا عمل بھی تھا، وہ اپنے عہد کے بڑے عابد ومتورع بزرگ تھے، ابن سعد لکھتے ہیں کہ وہ کثیر العلم اورمتورع تھے [21]حافظ ذہبی لکھتے ہیں کہ وہ راس المتورعین تھے [22]خطیب کا بیان ہے کہ وہ متورع فقہاء میں تھے، عجلی کا بیاں ہے کہ میں نے کسی کو ورع میں ان سے بڑا فقیہ اور فقہ میں ان سے زیادہ متورع نہیں دیکھا [23] فرماتے تھے کہ ورع نہایت آسان شے ہے کسی نے پوچھا وہ کیسے فرمایا جس چیز میں شک معلوم ہواس کو چھوڑدو۔ [24]

خشیت الہی اور رقتِ قلب[ترمیم]

طبعاً نہایت خندہ جبین اورخوش مزاج تھے،لیکن ان کا دل خشیت الہی سے لبریز تھا،یونس کا بیان ہے کہ ابن سیرین ہنس مکھ اور پر مذاق آدمی تھے لیکن گداز قلب اور خشیت الہی کا یہ حال تھا کہ جلوت میں ان کے لب ہنستے تھے،لیکن خلوت میں ان کی آنکھیں اشکبار رہتی تھیں، ہشام بن حسان کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ ہم لوگ ابن سیرین کے ساتھ مقیم تھے،دن میں انہیں ہنستا دیکھتے تھے اور رات کی تاریکی میں ان کے گریہ کی آواز سنتے تھے اور موت کے ذکر سے ان پر موت کی سی کیفیت طاری ہوجاتی تھی،زہیر الاقطع کا بیان ہے کہ ابن سیرین جب موت کا ذکر کرتے تھے،تو ان کا ہر عضو بدن جیسے مرجاتا تھا۔

صحت عقیدہ[ترمیم]

عقائد میں وہ سلف صالحین کے سادہ اور بے آمیز عقیدہ کے پابند تھے اس میں عقلی موشگافیوں اورجدتوں کو سخت ناپسند کرتے تھے،قدر کا مسئلہ ان کے زمانہ میں چھڑ چکا تھا، ابن سیرین کو اس سے سخت نفرت تھی،اس کو وہ سننا بھی گوارانہ کرتے تھے۔ ابن عون کا بیان ہے کہ ایک مرتبہ ایک شخص ابن سیرین کے پاس آیا اوران سے قدر کے متعلق کچھ باتیں کیں،انہوں نے اس کے جواب میں یہ آیت تلاوت کی۔ إِنَّ اللَّهَ يَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالْإِحْسَانِ وَإِيتَاءِ ذِي الْقُرْبَى وَيَنْهَى عَنِ الْفَحْشَاءِ وَالْمُنْكَرِ وَالْبَغْيِ يَعِظُكُمْ لَعَلَّكُمْ تَذَكَّرُونَ [25] اللہ تعالی عدل،احسان اور قرابت مندوں کو دینے کا حکم دیتا ہے اوربے حیائی اورناشائستہ باتوں اورزیادتی کرنے سے منع کرتا ہے تم لوگوں کو نصیحت کرتا ہے کہ اس کو یادرکھو۔

یہ آیت سنا کر انہوں نے کانوں میں انگلیاں دے لیں اور باتیں کرنے والے شخص سے کہا تم میرے پاس سے چلے جاؤ، یامیں خود اٹھ جاتا ہوں،یہ نفرت دیکھ کر وہ شخص چلا گیا اس کے جانے کے بعد ابن سیرین نے کہا کہ میرا دل میرے اختیار میں نہیں ہے،مجھے ڈر تھا کہ وہ میرے دل میں ایسا خیال نہ پھونک دے جس کے دور کرنے پر مجھے کو قدرت نہ ہو، اس لیے میرے لیے یہی مناسب تھا کہ میں اس کی باتیں ہی نہ سنوں۔ [26]

اسی طریقہ سے ایک مرتبہ آپ کے پاس ایک اعرابی آیا اورمذہب کے متعلق کچھ باتیں پوچھنے لگا،آپ اس کے جوابات دیتے رہے،کسی نے اس شخص سے کہا کہ ذرا قدر کے متعلق دریافت کرو،دیکھو کیا کہتے ہیں،اس نے پوچھا ابوبکر قدر کےبارہ میں آپ کی کیا رائے ہے انہوں نے کہا تم سے یہ کن لوگوں نے کہا ہے،پھر چند ساعت خاموش رہ کر فرمایا کسی کے اوپر شیطان کا بس نہیں ہے،جو شخص خود اس کی اطاعت کرلیتا ہے،اس کو وہ ہلاک کردیتا ہے۔ [27]

شدت احتیاط میں مالی نقصان[ترمیم]

تجارت ایک ایسا شغل ہے جس میں زیادہ احتیاط برتنا خسارہ میں پڑنا ہے،ابن سیرین کا شغل تجارت تھا،وہ احتیاط کے سلسلہ میں خندہ پیشانی کے ساتھ نقصان اٹھاتے تھے، لیکن مشتبہ اشیاء کو ہاتھ نہیں لگاتے تھے، ایک مرتبہ انہو ں نے بیع کے طور پر غلہ خریدا،اس میں انہیں اسی ہزار کا فائدہ ہوا،لیکن ان کے دل میں شک پیدا ہوگیا کہ اس منافع میں سود کا شائبہ ہے، اس لیے پوری رقم چھوڑدی حالانکہ اس میں مطلق ربوانہ تھا۔ [28]

بعض مرتبہ اس احتیاط کی وجہ سے انہیں قید تک کی سزا اٹھانی پڑی ،اس کا واقعہ یہ ہے کہ ایک مرتبہ انہوں نے چالیس ہزار کا غلہ خریدا،بعد میں انہیں اس کے متعلق کچھ ایسی باتیں معلوم ہوئیں ،جنہیں وہ مکروہ سمجھتے تھے، اس لیے غلہ چھوڑ دیا یا خیرات کردیا اوراس کی قیمت باقی رہ گئی،جس کے بدلہ میں انہیں قید ہونا پڑا۔ [29] اس واقعہ کے سلسلہ میں ایک روایت یہ بھی بیان کی جاتی ہے کہ چالیس ہزار کا روغن زیتون خریدا تھا،اس کے پیسوں میں چوہا نکلا، معلوم ہوا کہ یہ چوہا کولہو میں پڑگیا تھا یہ معلوم کرکے انہوں نے کل تیل پھینکو ادیا،لیکن اتنی بڑی رقم نہ ادا کرسکے اور اس کی سزا میں قید کی مشقت اٹھانی پڑی۔ [30]

ایک روایت یہ ہے کہ عبداللہ بن عثمان بن ابی العاص ثقفی کی لڑکی نے ام محمد کے ہاتھ ایک لونڈی بیچی تھی،اس نے شکایت کی کہ ام محمد اس کو تکلیف پہنچاتی ہے،اس لیے لونڈی کو واپس کرو لیکن قیمت خرچ ہوچکی تھی،اس لیے سزا کاٹنی پڑی۔ [31]

جو سودا بیچتے تھے اسے گاہک کو اچھی طرح دکھا کر،خریداری پر لوگوں کو گواہ بناتے تھے، میمون بن مہران کا بیان ہے کہ میں کچھ کپڑے خریدنے کے لیے کوفہ گیا اور محمد بن سیرین کی دکان پر پہنچا جب میں بھاؤ کرکے کوئی کپڑا خریدتا تھا تو وہ مجھ سے تین مرتبہ پوچھتے تھے کہ تم اس کی خریداری پر راضی ہو،اس کے بعد بھی تشفی نہ ہوتی تھی اور وہ آدمیوں کو بُلا کر گواہ بناتے تھے، ان مراحل کے بعد کہتے اب سامان لے جاؤ،حجاجی درہم سے سودا نہیں بیچتے تھے یہ احتیاط دیکھ کر میں اپنی ضرورت کا کل سامان انہی کے یہاں سے خریدتا تھایہاں تک کہ کپڑا لپٹنے کا سامان بھی انہی کے یہاں سے لیتا تھا۔ [32] اس زمانہ میں چونکہ وزن کرنے کے پیمانوں کی مقدار گھٹتی بڑھتی رہتی تھی،اس لیے جب کسی سے مال قرض لیتے تھے تو رائج پیمانوں اوزان کے علاوہ کسی اورچیز سے تول کر مال لیتے تھے اور جس چیز سے تولتے اس کو مہر کرکےمحفوظ کردیتے تھے پھر جب مال واپس کرنے لگتے تو اسی مہر کردہ شے سے تول کر واپس کرتے اور فرماتے کہ وزن گھٹتا بڑھتا رہتا ہے۔ [33]

تجارت کے سلسلہ میں اکثر ان کے پاس کھوٹے سکے آجاتے ،یہ احتیاط کی بناپر سب کو بے کار کردیتے ،ابن عون کا بیان ہے کہ جب ابن سیرین کے پاس کو کھوٹا سکہ آجاتا تو وہ اس سے کوئی چیز نہ خریدتے؛چنانچہ ان کی وفات کے وقت اس قسم کے بیکار سکے پانسو کی تعداد میں جمع ہوگئے تھے۔ [34]

کسب حلال کی تلقین[ترمیم]

دوسروں کو بھی کسب حلال کی تلقین کرتے تھے،لوگوں سے فرمایا کرتے تھے کہ خدا کی جانب سے حلال روزی تمہارے لیے مقدر ہوچکی ہے،اسی کو تلاش کیا کرو،اگر تم حرام کے ذریعہ سے اس کو حاصل کروگے،تو بھی اس سے زیادہ نہ ملے گی جو تمہارے لیے مقدر ہوچکی ہے[35] دوسروں کو حرام مال سے بچانے کی کوشش یہاں تک کرتے کہ اگر آپ سے کوئی ناجائز مال حاصل کرنا چاہتا تو محض اس شخص کو مال حرام سے بچانے تک قسم کھالیتے۔ ایک مرتبہ ایک شخص نے آپ پر دودر ہم کا دعویٰ کیا،آپ نے انکار کیا،مدعی نے کہا قسم کھاؤ،ابن سیرین تیار ہوگئے،لوگوں نے کہا دودرہم کے لیے قسم کھاتے ہیں جواب دیا میں جان بوجھ کر اس شخص کو حرام نہیں کھلاسکتا۔ [36]

امراء سلاطین کے ہدایا سے احتراز[ترمیم]

غالباً اسی احتیاط کی بناء پر وہ امراء وسلاطین کے ہدایانہ قبول کرتے تھے، ایک مرتبہ عمر بن عبدالعزیز جیسے بزرگ نے ان کے اورحسن بصری کے پاس کچھ بھیجا،حسن بصری نے قبول کرلیا،لیکن انہوں نے قبول نہ کیا۔ [37]

خیانت سے احتراز[ترمیم]

خیانت سے اس قدر بچتے تھے کہ ان جائز فوائد کو بھی جن میں خیانت کا کوئی خفیف پہلو بھی تصور کیا جاسکتا تھا، محض احتیاط کی وجہ سے چھوڑدیتے تھے، ان کے قید کے زمانہ میں اتفاق سے جیل کا محافظ ان کا مرتبہ شناس تھا، اس نے ان سے کہا کہ آپ رات کو گھر چلے جایا کیجئےاور صبح ہوتے ہوئے پھر چلے آیا کیجئے، فرمایا میں سلطانی خیانت میں تمہاری مدد نہیں کرسکتا۔ [38]

شہرت سے نفرت[ترمیم]

شہرت سے بہت گھبراتے تھے اوراس سے بچنے کے لیے وہ عام مجلسوں میں نہیں شریک ہوتے تھے،فرماتے کہ میں صرف شہرت کے خوف سے تمہاری مجلسوں میں نہیں آتا [39] وہ ہر ایسے امتیاز سے جس سے لوگوں کی توجہ ان کی طرف منعطف ہوتی بچتے تھے،اکثر نماز میں اپنے سے کم درجہ کے لوگوں کو امامت کے لیے بڑھادیتے، ابن عون کا بیان ہے کہ ابن ہبیرہ کے خروج کے زمانہ میں میں بھی ابن سیرین کے ساتھ نکلا، نماز کا وقت آیا تو انہوں نے مجھے نماز پڑھانے کا حکم دیا،میں نے اس کی تعمیل تو کی لیکن نماز پڑھانے کے بعد میں نے ان سے کہا کہ آپ تو فرمایا کرتے تھے کہ نماز اسی شخص کو پڑھانا چاہئے جس کو قرآن زیادہ یاد ہو،فرمایا مجھے یہ اچھا نہیں معلوم ہوتا کہ میں نماز پڑھانے کے لیے آگے بڑھو ں اورلوگ یہ کہیں کہ محمد لوگوں کی امامت کرتے ہیں۔ [40]

ماں کی اطاعت[ترمیم]

ماں کے بڑے مطیع اورخدمت گزار تھے،ان کی بہن کا بیان ہے کہ ان کی ماں حجازی تھیں،اس لیے ان کو رنگین اورنفیس کپڑوں کا بڑا شوق تھا، ابن سیرین اس شوق کا اتنا لحاظ رکھتے تھے کہ جب ان کے لیے کپڑا خریدتے تھے تو محض کپڑے کی لطافت اورنرمی کو دیکھتے،اس کی مضبوطی کا مطلق خیال نہ کرتے تھے،عید کے لیے خود اپنے ہاتھوں سے ماں کے کپڑے رنگتے، میں نے کبھی ان کو ماں کے مقابلہ میں آواز بلند کرتے نہیں سُنا،جب ماں سے باتیں کرتے،تو اس آہستگی کے ساتھ جیسے کوئی راز کی بات کہہ رہے ہیں،ابن عون کا بیان ہے کہ ابن سیرین جس وقت اپنی ماں کے سامنے ہوتے تھے تو ان کی آواز اتنی پست ہوتی تھی کہ نا واقف آدمی انہیں بیمار سمجھتا تھا۔ [41]

عجز اورفروتنی[ترمیم]

اپنے کو نہایت حقیر سمجھتے تھے،اپنی ذات کے لیے کسی قسم کا امتیاز پسند نہ کرتے تھے،؛چنانچہ کسی کو اپنے ساتھ چلنے نہ دیتے تھے،اگر کوئی شخص ساتھ چلنا چاہتا تو فرماتے اگر تم بلاضرورت چل رہے ہو تو لوٹ جاؤ، فرماتے تھے کہ اگر گناہوں میں بوُ ہوتی تو کوئی شخص بو کی شدت سے میرے قریب نہیں آسکتا تھا۔ [42]

بے باکی اوربے خوفی[ترمیم]

لیکن اس فروتنی اورتواضع کے ساتھ بڑے بے باک اوربے خوف تھے،بڑے سے بڑے خطرہ کو وہ دھیان میں نہ لاتے تھے،ابو قلابہ کہا کرتے تھے کہ محمد کی برابر کون طاقت رکھتا ہے،وہ نیز ے کی نوک پر چڑھ جاتے تھے۔ [43]

صاف دلی[ترمیم]

بڑے صاف دل تھے، کبھی کسی پر رشک وحسد نہ کرتے تھے،خود فرمایا کرتے تھے کہ میں نے بھلے برے کسی پر حسد نہیں کیا۔ [44]

اجمالی رائے[ترمیم]

غرض وہ اخلاقی اورمذہبی محاسن کا ایک مکمل ترین نمونہ تھے،ابو عوانہ کا بیان ہے کہ ابن سیرین کو دیکھ کر خدا یاد آتا تھا۔ [45]

صحابہ اورتابعین پر ابن سیرین کا اثر[ترمیم]

ان کے ان محاسن کا بڑے بڑے صحابہ اورتابعین پر اتنا اثر تھا کہ وہ ان سے جنازہ کی نماز پڑھانا باعث برکت سمجھتے تھے،انس بن مالکؓ نے مرض الموت میں وصیت کی تھی کہ ابن سیرین انہیں غسل میت دیں اوران کے جنازہ کی نماز پڑھائیں،اتفاق سے انس بن مالکؓ کی وفات کے زمانہ میں وہ قید تھے، اس لیے حاکم شہر سے حصولِ اجازت کے بعد وہ لائے گئے اور غسل، تجہیز وتکفین اورنماز جنازہ کے بعد پھر قید خانہ واپس کیے گئے [46] ابن عون کا بیان ہے کہ حسن بصری کی روپوشی کے زمانہ میں ان کی ایک لڑکی کا انتقال ہوگیا،میں نے جاکر ان کو اطلاع دی مجھے خیال تھا کہ وہ مجھ ہی کو نماز جنازہ پڑھانے کا حکم دیں گے،لیکن انہوں نے ضروری ہدایات دینے کے بعد ابن سیرین سے نماز جنازہ پڑھوانے کا حکم دیا۔ [47]

وصیت ووفات[ترمیم]

۱۱۰ میں مرض الموت میں مبتلا ہوئے ،آخر عمر میں چالیس ہزار کے مقروض ہوگئے تھے،اس کی بڑی فکر تھی،آپ کے صاحبزادے عبداللہ نے ادائیگی کی ذمہ داری اپنے اوپر لی،اس سعادت مندی پر ان کے لیے دعائے خیر کی،پھر وصیت فرمائی کہ تم لوگ خدا کا خوف کرتے رہنا،آپس میں صلح ومسالمت سے رہنا، اگرمومن ہونے کا دعویٰ ہے تو خدا اوررسول کی اطاعت کرنا، خدا نے تمہارے لیے ایک دین منتخب کیا ہے اسی پر مرنا، اس کا دعویٰ نہ کرنا کہ تم دین میں انصار کے بھائی اورموالی ہو،صدق اورعفاف زنا اورجھوٹ سےزیادہ بہتر اور پائدار ہیں، ان وصایا کے بعد جمعہ کے دن انتقال فرمایا اس وقت اسی سے اوپر عمر تھی۔ [48]

حلیہ اور لباس[ترمیم]

بالوں میں کتم اور حنا کا خضاب کرتے تھے مونچھیں بہت ہلکی کترواتے تھے،لباس اچھا پہنتے تھے۔

اولاد[ترمیم]

آپ کے تیس اولاد یں ہوئیں، لیکن عبداللہ کے علاوہ کوئی زندہ نہ رہی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12482780p — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. (ابن خلکان :۴/۴۵۳)
  3. (ابن سعد،۷،ق۱ ص ۱۴۰)
  4. (ابن سعد،۷،ق۱ ص ۱۴۰)
  5. (تہذیب التہذیب:۹/۲۱۵)
  6. (تہذیب الاسماء،ج اول، ق اول،ص۸۲)
  7. (تہذیب التہذیب:۹/۲۱۴)
  8. (ابن سعد،ج۷،ق۱،ص۱۴۱)
  9. (ایضاً)
  10. (ایضاً)
  11. (ایضاً:۱۴)
  12. (تذکرۃ الحفاظ :۱/۶۸)
  13. (تہذیب التہذیب:۹/۴۱۴)
  14. (تہذیب التہذیب:۹۲۱۶)
  15. (ابن سعد،ج۷،ق۱،ص۱۴۳)
  16. (شذرات الذہب:۱/۱۳۹)
  17. (ابن سعد،ج ۷،ق اول،ص ۱۴۲)
  18. (ابن سعد،ج۷،ق اول،ص۱۴۲)
  19. (تہذیب التہذیب:۹/۲۱۶)
  20. (ایضاً)
  21. (ابن سعد،ج۷،ق ۱،ص ۱۴۰)
  22. (تذکرۃ الحفاظ:۱/۶)
  23. (تہذیب الاسماء:۱/۸۳)
  24. (ابن سعد،ج۷،ق ۱،ص۱۴۲)
  25. (النحل:۹۰)
  26. (ابن سعد،ج۷،ق اول،ص۱۴۳)
  27. (ابن سعد،ج ۷،ق اول،ص ۱۴۳)
  28. (ایضاً،ق اول،ص ۱۴۴)
  29. (ابن سعد،ج،ق ۱،ص ۱۴۴)
  30. (تہذیب الاسماء،ج اول،ق ۱،ص۸۴)
  31. (ابن سعد،ج ۷،ق ۱،ص۱۴۴)
  32. (ایضاً:۱۴۶)
  33. (ایضاً)
  34. (ابن سعد،ج ۷،ق اول،ص۱۴۷)
  35. (ایضاً)
  36. (ابن سعد،ج ۷،ق اول،ص ۱۴۷)
  37. (ابن سعد،ج ۷،ق اول،ص ۱۴۷)
  38. (تہذیب الاسماء،ج۱،ص:۸۷)
  39. (تہذیب الاسماء،ج۱،ص۸۷)
  40. (ایضاً)
  41. (ایضاً:۱۴۴)
  42. (مختصر صفوۃ :۱۵۰)
  43. (ابن سعد،ج۷،ق۱،ص۱۴۴)
  44. (ایضاً:۱۴۳)
  45. (تذکرۃ الحفاظ،ج اول،ص۶۸)
  46. (ابن خلکان :۱/۴۵۳)
  47. (ابن سعد،ج۷ق اول،ص ۱۴۸)
  48. (ابن سعد،جلد۷،ق اول،ص۱۴۹،۱۵۰)

حوالہ:  التقاء المسيحين    ، صفحہ 102 ،  شیخ احمد عبد ال التہاہوی