محمد تقی عابدی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد تقی عابدی
معلومات شخصیت
پیدائش فروری 1952 (68 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
حیدرآباد  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Canada (Pantone).svg کینیڈا  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ شاعر،  مصنف  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

محمد تقی عابدی (انگریزی: Taqi Abedi) کی پیدائش حیدرآباد، دکن، بھارت میں پیدا ہوئے۔ وہ ایک بھارتی کینیڈائی ڈاکٹر ہیں اور متصلًا اردو زبان کے ماہر ہیں۔

فارسی ادب میں تالیف[ترمیم]

عابدی نے دو جلدوں میں کلیات غالب فارسی کو جمع کیا، جس میں مغلیہ دور کی مرزا غالب کی فارسی شاعری کو جمع کیا گیا، جسے دہلی میں واقع غالب انسٹی ٹیوٹ نے شائع کیا۔ عابدی کی رائے میں مرزا غالب کو جہاں ان کی اردو شاعری کی وجہ سے غیر معمولی شہرت ملی، وہیں وہ خود فارسی زبان کی جانب سے زیادہ مائل تھے اور اس زبان میں نمایاں شاعری انجام دے چکے ہیں۔ [1]

ایران کی وزارت فنون و ثقافت، بھارت اور پاکستان کے سفیروں کے اشتراک سے ستمبر 2010ء میں عابدی کے کلیات غالب کا تہران میں رسم اجراء ہوا تھا۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ غالب کے مجموعے کا ایران میں جاری ہونا بھارت اور ایران کے ادبی حلقوں میں قریبی تعلقات کے نئے مواقع فراہم کرتا ہے۔ مرزا دبیر اور میر انیس کی فارسی شاعری پر روشنی ڈالتے ہوئے انہوں نے کہا کہ غالب کی شاعری کا نامعلوم پہلو یہ ہے کہ فارسی شاعری اپنی ضخامت میں اردو سے زیادہ ہے۔[2]

مذہبی شاعری کے زمرے میں ہندو شعرا کے تعاون پر تحقیق[ترمیم]

عابدی نے پیغمبر اسلام اور اہل بیت پر مختلف ہندو شعرا کے کام پر تحقیق کی اور کچھ کتابچوں کی تالیف کی جن میں نعت، مرثیے، سوز اور سلام تھے۔ ان میں قابل ذکر گوپی ناتھ امن، کالی داس گپتا رضا، دلو رام کوثری شامل تھے۔ انہوں نے خصوصًا ایک خاتون ہندو شاعرہ روپ کمار کماری پر کام کیا اور پیغمبر اسلام ان کے والہانہ لگاؤ کو دکھایا۔ مذکورہ کتاب ملتان، پاکستان سے شائع ہوئی۔ اس میں شاعرہ کے اہل بیت کے لیے محبب کا بھی تذکرہ ہے۔[3]

اس کے علاوہ تقی نے میر انیس، مرزا دبیر، حتی کہ فیض احمد فیض پر بھی کافی تحقیقی کام کیا اور ان کے مقالہ جات بھارت، پاکستان اور کینیڈا میں شائع ہو چکے ہیں۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "The Tribune, Chandigarh, India – The Tribune Lifestyle". Tribuneindia.com. اخذ شدہ بتاریخ 31 جولائی 2014. 
  2. The Milli Gazette. "Dr Taqi Aabdi's Kulliyat-e-Ghalib Faarsi released in Tehran". Milligazette.com. اخذ شدہ بتاریخ 31 جولائی 2014. 
  3. "COLUMN: Lament for a marsiya writer". Dawn.com. اخذ شدہ بتاریخ 21 نومبر 2014.