محمد حسن اخوند

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ملا  ویکی ڈیٹا پر (P511) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
محمد حسن اخوند
(پشتو میں: ملا محمد حسن اخوند ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

عبوری وزیراعظم افغانستان
آغاز منصب
7 ستمبر 2021
نائب عبدالغنی برادر
Fleche-defaut-droite-gris-32.png عبدالکبیر (عبوری، 2001)
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
نائب وزیراعظم افغانستان
مدت منصب
27 ستمبر 1996 – 13 نومبر 2001
وزیر اعظم محمد ربانی
Fleche-defaut-droite-gris-32.png نیا عہدہ
عبدالغنی برادر (2021) Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1945 (عمر 75–76 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Taliban.svg اسلامی امارت افغانستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت تحریک الاسلامی طالبان[1]  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان پشتو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
وفاداری امارت اسلامی افغانستان

محمد حسن اخوند (ملا محمد حسن اخوند) افغانستان کے قائم مقام وزیراعظم ہیں۔ انہوں نے 7 ستمبر 2021ء کو عہدہ سنبھالا۔ وہ امارت اسلامی افغانستان کے وزیر خارجہ اور نائب وزیراعظم بھی رہ چکے ہیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسلکے مطابق ، اخوند پشمول میں پیدا ہوا تھا جو تب پنجوائی ضلع میں تھا اور اب ژڑی ضلع ، صوبہ قندھار ، افغانستان میں موجود ہے۔ اقوام متحدہ کے پاس اس کی پیدائش کے سال کے لیے دو تخمینے ہیں ، تقریبا 1945–1950 اور تقریبا 195 1955–1958۔ ان کا تعلق کاکڑ پشتون قبیلے سے ہے۔ [2]الجزیرہ کا کہنا ہے کہ اخوند کا پشتون نسب جدید افغانستان کے بانی احمد شاہ درانی سے منسوب ہے۔ انہوں نے افغانستان اور پاکستان کے مختلف مدارس میں تعلیم حاصل کی۔

سیاست[ترمیم]

اخوندطویل عرصے سے تحریک اسلام ی طالبان کی رہبری شوریٰ کا رہنما رہے ہیں جو کہ فیصلہ ساز ادارہ ہے۔ ان کا شمار طالبان کی قدیم ترین شخصیات میں ہوتا ہے اور وہ ملا عمر کے قریبی ساتھی تھے۔ [3]

طالبان کی حکومت کے دوران (1996-2001) اخوند 1996 سے 2001 تک افغانستان کے نائب وزیر خارجہ رہے۔ اس دوران وہ نائب وزیر اعظم بھی رہے۔ ان کا نام اقوام متحدہ کی پابندیوں کی فہرست میں شامل ہے۔

اخوند 1995 میں کابل کی چھ رکنی نگرانی کونسل میں شامل تھے۔ [4]

شورش کے دور میں (2001-2021) ، اخوند وقفے وقفے سے کوئٹہ شوریٰ کا رکن تھا۔ [5] 2013 میں ، وہ طالبان کے کمیشن کے سربراہ اور بھرتی کمیشن کے سربراہ تھے۔ [6]

2021 میں طالبان کی اقتدار میں واپسی کے بعد ، اخوند کو عبوری وزیر اعظم مقرر کیا گیا۔ ان کی تقرری کو طالبان کی اعتدال پسند اور سخت گیر شخصیات کے درمیان سمجھوتے کے طور پر دیکھا گیا۔

دیگر[ترمیم]

وہ اسلام پر متعدد کتابوں کے مصنف ہیں۔ بی بی سی نیوز کے مطابق اخوند طالبان کے مذہبی پہلو پر زیادہ بااثر ہیں۔ ریاستہائے متحدہ کے ایک انسٹی ٹیوٹ برائے امن کے تجزیہ کار نے دلیل دی ہے کہ اخوند اہم حیثیت کے حامل مذہبی اسکالر نہیں ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://www.un.org/securitycouncil/es/sanctions/1988/materials/summaries/individual/mohammad-hassan-akhund
  2. "United Nations Security Council Consolidated List". United Nations. 08 ستمبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 ستمبر 2021. 
  3. Kamal Matinuddin (2000). The Taliban Phenomenon. صفحہ 45. 
  4. Peter Bergen (2013). Talibanistan. اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس. صفحہ 9. 
  5. Seth G. Jones (2017). Waging Insurgent Warfare: Lessons from the Vietcong to the Islamic State. اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس. صفحہ 99.