محمد طیب قاسمی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مہتمم دارالعلوم دیوبند قاری محمد طیب قاسمی

ولادت[ترمیم]

مولانا قاری محمد طیب قاسمی 1315ھ مطابق 1898ء میں پیدا ہوئے۔ آپ کا تاریخی نام مظفرالدین ہے۔[1]

تعلیم[ترمیم]

7 سال کی عمر میں دار العلوم میں داخل کیا گیا۔ ممتاز بزرگوں کے عظیم الشان اجتماع میں مکتب نشینی کی تقریب عمل میں آئی۔ دوسال کی قلیل ترین مدت میں قرآن مجید قرأت وتجوید کے ساتھ حفظ کیا، پانچ سال فارسی اور ریاضی کے درجات میں تعلیم حاصل کرکے عربی کا نصاب شروع کیا، جس سے 1337ھ مطابق 1918ء میں فراغت اور سند فضیلت حاصل کی۔ دوران تعلیم میں امام المحدثین علامہ انور شاہ کشمیر اور پھر الامام المجدد حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانوی نے اعلی پیمانے اور مخصوص طریق پرآپ کی تعلیم وتربیت کی، حدیث کی خصوصی سند آپ کو وقت کے مشاہیر علما و اساتذہ سے حاصل ہوئی، علامۃ العصر مولانا محمد انور شاہ صاحب کشمیریؒ علم حدیث میں آپ کے خاص استاذ ہیں۔ 1350ھ مطابق 1931ء میں الامام المجدد حکیم الامت حضرت مولانا اشرف علی تھانویؒ سے خلافت حاصل ہوئی۔[1]

مشہور اساتذہ[ترمیم]

آپ کے اساتذہ میں علامہ مشہور علمائے دین علامہ انور شاہ کشمیری، عزیزالرحمٰن عثمانی، حبیب الرحمٰن عثمانی، علامی شبیر احمد عثمانی اور مولانا اصغر حسین جیسے جید علما شامل ہیں۔

تدریس[ترمیم]

فراغت کے بعد دارالعلوم دیوبند ہی میں مدرس مقرر ہوئے۔ علوم کی تکمیل کے بعد آپ نے دارالعلوم دیوبند میں درس و تدریس کا سلسلہ شروع کیا، ذاتی علم و فضل، ذہانت و ذکاوت اور آبائی نسبت و وجاہت کے باعث بہت جلد طلبہ کے حلقے میں آپ کے ساتھ گرویدگی پیدا ہو گئی،اوائل 1341ھ مطابق 1924ء میں نائب مہتمم کے منصب پر آپ کا تقرر کیا گیا، جس پر اوائل 1348ھ مطابق 1928ء تک آپ اپنے والد ماجد مولانا محمد احمد صاحبؒ اور حضرت مولانا حبیب الرحمٰن صاحبؒ کی زیر نگرانی ادارۂ اہتمام کے انتظامی معاملات میں حصہ لیتے رہے، وسط 1348ھ مطابق 1929ء میں مولانا حبیب الرحمٰن صاحب کے انتقال کے بعد آپ کو مہتمم بنایا گیا۔ سابقہ تجربۂ اہلیت کار اور آبائی نسبت کے پیش نظر یہ ثابت ہوچکا تھا کہ آپ کی ذات میں اہتمام دار العلوم کی صلاحیت بدرجۂ اتم موجود ہے۔ چنانچہ مہتمم ہونے کے بعد آپ کو اپنے علم و فضل اور خاندانی وجاہت و اثر کی بنا پر ملک میں بہت جلد مقبولیت اور عظمت حاصل ہو گئی، جس سے دار العلوم کی عظمت و شہرت کو کافی فوائد حاصل ہوئے۔[1]

مناصب[ترمیم]

1341ھ بمطابق 1923ء میں آپ کو دار العلوم کا نائب مہتمم بنادیا گیا، پھر 1348ھ بمطابق 1930ء میں باقاعدہ طور پر دار العلوم کا مہتمم مقرر کیا گیا۔ آپ حدیث کی اونچی اونچی کتابیں پڑھاتے تھے۔

بیعت و اجازت[ترمیم]

1339ھ میں آپ محمود الحسن سے بیعت ہوئے۔ ان کے وصال کے بعد 1350ھ میں مشہور عالم دین مولانا اشرف علی تھانوی نے آپ کو خلافت سے نوازا۔

تصانیف[ترمیم]

خطابت و تقریرکی طرح تحریر و تصنیف پر بھی قدرت حاصل ہے، آپ کی تصانیف کی تعداد کافی ہے۔ چند کتابوں کے نام درج ذیل ہیں: التشبہ فی الاسلام، مشاہیر امت، کلمات طیبات، اطیب الثمرفی مسئلۃ القضاء والقدر، سائنس اور اسلام، تعلیمات اسلام اور مسیحی اقوام، مسئلۂ زبان اردو ہندوستان میں، دین و سیاست، اسباب عروج و زوال ِ اقوام، اسلامی آزادی کا مکمل پروگرام، الاجتہاد والتقلید، اصول دعوتِ اسلام، اسلامی مساوات، تفسیر سورۂ فیل، فطری حکومت وغیرہ۔[1]

آخری ایام اور وفات[ترمیم]

آپ نے اپنی زندگی کے آخری ایام تک ملت اسلامیہ کے لیے خدمات انجام دیں۔ 1980ء میں جشن آغاز دار العلوم دیوبند کے بعد حکیم الاسلام قاری محمد طیب ؒکی صحت بہت تیزی سے بدلنے لگی۔ پیرانہ سالی اور ضعف کے باوجود آپ اپنی قیام گاہ پر لوگوں سے ملاقات فرماتے تھے۔ بالآخر یوم اجل آ گیا او1980ءر 17جولائی 1983 مطابق 6شوال 1403ھ بروز اتوار آپ اپنے اعمال حسنہ کی جزاء پانے کے لیے داعئ اجل سے جاملے،اس وقت آپ کے گرد بہت سے جانثار و محبین موجود تھے جو اللہ سبحانہ و تعالی کے نام کی تلقین کر رہے تھے۔ آپ کی نماز جنازہ دار العلوم دیوبند کے احاطہ میں آپ کے صاحبزادے حضرت مولانا محمد سالم صاحب قاسمی نے پڑھائی۔ ہزاروں مسلمانوں نے شرکت کی۔ آپ کے جسد خاکی کو آپ کے جد امجد اور بانئ دارالعلوم دیوبند حجۃالاسلام محمد قاسم النانوتوی کے قبر مبارک کے بالکل قریب دفن کیا گیا ہے

حوالہ جات[ترمیم]

http://dud.edu.in/index.php/ur?id=74