محمد نجیب نقی خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
محمد نجیب نقی خان

رکن آزاد جموں و کشمیر قانون سازاسمبلی
وزیر صحت، خزانہ، منصوبہ بندی و ترقیات
آغاز منصب
7 اگست 2016
صدر سردار محمد مسعود خان
وزیر اعظم راجہ محمد فاروق حیدر خان
رکن آزاد جموں و کشمیر قانون سازاسمبلی
پارلیمانی سیکریٹری برائے صحت، منصوبہ بندی و ترقیات
مدت منصب
1991 – 1996
رکن اپوزیشن
آزاد جموں و کشمیر قانون سازاسمبلی
مدت منصب
1996 – 2001
رکن
آزاد جموں و کشمیر کونسل
مدت منصب
2001 – 2006
رکن آزاد جموں و کشمیر قانون سازاسمبلی
وزیرصحت تعلیم،کالجزاورای ٹی
مدت منصب
2006 – 2011
رکن اپوزیشن
آزاد جموں و کشمیر قانون ساز اسمبلی
مدت منصب
2011 – 2016
معلومات شخصیت
پیدائش 19 جنوری 1964 (55 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
راولپنڈی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
مذہب اسلام
جماعت پاکستان مسلم لیگ (ن)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی ایچی سن کالج
کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

ڈاکٹر محمد نجیب نقی خان پاکستان مسلم لیگ (ن) کے پلیٹ فارم سے انتخابات 2016میںLA-21سدھنوتی پونچھ 5سے آزاد جموں و کشمیر قانون سازاسمبلی کے رکن منتخب ہوئے اور 7اگست 2016کو بطور صحت، خزانہ، ترقیاتی و منصوبہ بندی کی وزارت کا قلمدان سنبھالا۔بعداز ، ترقیاتی و منصوبہ بندی کی وزارت کا قلمدان چھوڑ دیا

خاندانی پس منظر[ترمیم]

ڈاکٹر نجیب نقی خان صاحب کا تعلق سدھن قبیلے سے ہے۔ عوام کے ساتھ ڈاکٹر نجیب کے گھرانے کا رشتہ خاصا پرانا ہے۔ ڈاکٹر صاحب کے والد کرنل محمد نقی خان 1985کے عام انتخابات میں آزاد جموں و کشمیر قانون سازاسمبلی کے رکن رہے۔ وزیر صحت و خوراک کی حیثیت سے مرحوم نے آزاد کشمیر کی سیاست میں نمایاں کردار ادا کیا۔ ان کے دور کی خاص بات آزاد کشمیر کے طول وعرض میں دیہی مراکز صحت کے ایک وسیع نیٹ ورک کا قیام ہے۔ آزادکشمیر کے علاقے پلندری میں پہلے کیڈٹ کالج کا قیام تعلیم کے ساتھ ان کی وابستگی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ ڈاکٹر صاحب کے دادا خان صاحب کرنل خان محمد خان کو بابائے پونچھ کے لقب سے یاد کیا جاتا ہے۔ خانصاب اپنے دور میں جموں و کشمیر قانون سازاسمبلی پرجا سبھا کے رکن رہے اور بارہ سال تک سدھنوتی باغ کی نمائندگی کا فریضہ انجام دیا۔ 1934سے 1946 کے بعد ہونے والی جنگ آزادی میں ان کردار نمایاں رہا۔ انہوں نے جنگ آزادی کے لیے وا رکونسل بنائی اور اس کے چیئرمین بھی رہے اور بعد ازاں ڈیفنس کونسل کے ارکان رہے۔

تعلیمی پس منظر[ترمیم]

ڈاکٹر نجیب نقی خانصاحب 19جنوری 1964کو راولپنڈی میں پیدا ہوئے۔ نجیب نقی صاحب کا آبائی گاوں داردر چھ نمب ہے۔ انہوں نے ابتدائی تعلیم (1970تا1982) لاہور کے مشہور قدیمی تعلیمی ادارہ ایچیسن کالج[2] سے حاصل کی اور اس کے بعد 1988 میں لاہور کے کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی[3] سے ایم بی بی ایس کی ڈگری کے ساتھ فارغ التحصیل ہوئے۔ ڈاکٹر صاحب کو کھیلوں کا بھی بہت شوق تھا۔ انہوں نے لان ٹینس کے میدان میں کئی مقابلوں میں اپنے کالج کی نمائندگی کی اور متعدد انعامات اپنے نام کیے۔

سیاسی پس منظر[ترمیم]

ڈاکٹر محمد نجیب نقی خا ن کے سیاسی کیریئر کا آغاز 1990میں ہوا جب ان کے والد محترم کرنل محمد نقی خان ایک کار کے حادثے میں پلندری کے قریب ’’پورہ‘‘ گاوں میں انتخابی مہم کے سلسلے میں جاتے ہوئے خالق حقیقی سے جا ملے۔
کرنل محمد نقی خان مرحوم ایک منجھے ہوئے سیاست دان تھے۔ ان کا خواب تھا کہ سدھنوتی کی پسماندگی کو دور کرکے اس علاقے کو اس کھویا ہوا مقام واپس ملے یعنی اسے دوبارہ ضلع کا درجہ دیا جائے۔ ان کا مشن تھا کہ یہاں اعلیٰ معیار کے تعلیمی ادارے قائم کیے جائیں۔ اسی جذبے کے پیش نظر انہوں نے اس وقت کے وزیر اعظم پاکستان ذوالفقار علی بھٹو کو 1974میں پلندری مدعو کیا اور ذو الفقار علی بھٹو نے جلسے عام سے خطاب کرتے ہوئے یہاں کیڈٹ کالج کے قیام کااعلان کیا۔ ناگہانی طور پر حکومت کی تبدیلی کی وجہ سے یہ کام التواء کا شکار ہو گیا۔ کرنل نقی کی انتھک کوششوں سے جنرل ضیاء الحق نے کالج کے لیے فنڈز جاری کروائے۔ کرنل نقی کی حادثاتی موت سے ان کا مشن ادھورا رہ گیا جسے ان کے بیٹے ڈاکٹر محمد نجیب نقی نے اپنی قابلیت اور محنت سے پایہ تکمیل تک پہنچایا۔
1991کے الیکشن میں ڈاکٹر نجیب نقی نے واضح برتری حاصل کی اور آل جموں و کشمیر مسلم کانفرنس کی حکومت بنی۔ اس وقت کے وزیر اعظم سردار محمد عبدالقیوم خان نے ضلع کا مطالبہ پس پشت ڈالنے کے عوض ڈاکٹر نجیب نقی کو وزارت کی پیشکش کی مگر ڈاکٹر صاحب کو اپنے لوگوں کی مشکلات کااحساس تھا۔ لہٰذا انہوں نے وزارت کو ٹھکرا کر سدھنوتی کو ضلع بنانے کی خواہش کااظہار کیا۔ آخر کار 1995کو سدھنوتی کو ضلع قرار دیا گیا۔
ڈاکٹر نجیب نقی ہمیشہ ضلع کی تعمیر و ترقی کے لیے کوشاں رہے۔ اس سلسلے میں موجودہ وزیر اعظم راجہ محمد فاروق حیدر خان کے ساتھ مل کر ڈاکٹر نجیب نقی نے وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نوازشریف سے ریاست کا ترقیاتی بجٹ بڑھوا کر 12ارب سے 23ارب کروایا اور پورے کشمیر کے لیے ترقیاتی منصوبوں کا ایک ایکشن پلان ترتیب دیا۔ شعبہ صحت کی اصلاح کے حوالے سے متعدد اقدامات پر عملدرآمد کیا گیا جن میں چوبیس گھنٹے ہسپتالوں میں مفت ایمرجنسی خدمات کی فراہمی خاص طور پر قابل ذکر ہے۔

قابل ذکر سیاسی کامیابیاں[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Detail Information"۔ www.pildat.org۔ PILDAT۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 اپریل 2017۔
  2. >/ ایچیسن کالج
  3. ایڈورڈ میڈیکل یوینورسٹی
  4. ^ ا ب پ ت ٹ Sudhnoti District Election Results 2016 | Mera Mirpur