محمد نواز ظفر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

}}

محمد نواز ظفر
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 1954ء
شہریت پاکستانی
مذہب اسلام
عملی زندگی
مادر علمی دارالعلوم محمدیہ غوثیہ بھیرہ شریف
P islam.svg باب اسلام

پروفیسر علامہ محمد نواز ظفر (1954ء تا حال) اعتدال پسند سنی مسلمان عالم دین ہیں، جو 1981ء سے تحریک منہاج القرآن سے وابستہ ہیں۔ آج کل منہاج یونیورسٹی کے کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سائنسز میں بطور پروفیسر [1] تدریسی خدمات کے ساتھ ساتھ کنٹرولر امتحانات کی ذمہ داری بھی نبھا رہے ہیں۔

خاندانی پس منظر[ترمیم]

1954ء میں ضلع سرگودھا کی تحصیل ساہیوال کے مضافاتی گاؤں کمالہ میں پیدا ہوئے۔ آپ کا تعلق کسی علمی گھرانے سے نہیں تھا۔ علاقائی پسماندگی کا عالم یہ تھا کہ گاؤں میں ایک پرائمریاسکول تک نہیں تھا۔

تعلیم[ترمیم]

ابتدئی تعلیم گاؤں سے چار کلومیٹر دور واقع گاؤں رادھن میں حاصل کی۔ 1966ء میں گاؤں سے بارہ کلومیٹر دور ایک گاؤں احمد پور میں مڈل کا امتحان پاس کیا اور اس کے بعد ضیاءالامت پیر محمدکرم شاہ الازہری کے قائم کردہ دارالعلوم محمدیہ غوثیہ بھیرہ شریف میں دس سالہ نصاب کی تکمیل کی۔ بعد ازاں جامعہ پنجاب سے ایم اے عربی اور ایم اے اسلامک سٹڈیز کے امتحانات پاس کیے۔

علمی خدمات[ترمیم]

1979ء میں بھیرہ شریف سے فراغت کے فوری بعد دار العلوم محمدیہ غوثیہ بھیرہ شریف کی برانچ جامعہ نقشبندیہ ماڈل ٹاؤن گوجرانوالہ کا سنگ بنیاد رکھا اور پانچ سال تک وہاں خدمات سر انجام دیں۔ 1981ء میں جامعہ نعیمیہ لاہور میں قاضی کورس کا آغاز ہوا تو اس میں داخلہ لیا۔ اس دوران میں اصول فقہ پر ڈاکٹر محمد طاہر القادری کے خطابات سن کر ان کی علمی وسعت سے بہت متاثر ہوئے اور ان سے قلبی لگاؤ ہو گیا۔ 1983ء میں تحریک منہاج القرآن کے تعلیمی و تدریسی نظام میں شامل ہوئے۔ 1986ء تا 1988ء تحریک منہاج القرآن، ڈنمارک میں بطور ڈائریکٹر خدمات سر انجام دیں۔ 1999ء تا 2002ء منہاج یونیورسٹی کے کالج آف شریعہ اینڈ اسلامک سائنسز میں بطور پرنسپل خدمات سر انجام دیں۔ آپ کی علمی و ادبی سرگرمیوں کو دیکھ کر ڈاکٹر طاہرالقادری نے آپ کو شیخ اللغۃ والادب کا خطاب دیا۔[2]

حوالہ جات[ترمیم]