مخطوطہ وائنیچ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مخطوطہ وائنیچ
Voynich manuscript
Beinecke Rare Book and Manuscript Library،
ییل یونیورسٹی
Voynich Manuscript (32).jpg
A floral illustration on page 32
معروفیتBeinecke MS 408
قسمcodex
تاریخunknown, parchment dated to early 15th century[1][2]
اصل مقامpossibly اطالیہ[1][2]
زبانunknown
possibly فطری زبان[3] or مصنوعی زبان[4][5]
a very small number of words were found in لاطینی زبان and High German[4]
مصنفunknown
suggested:
راجر بیکن، [6]
Wilfrid Voynich himself,[7]
Jakub of Tepenec، [8]
Athanasius Kircher، [9]
Raphael Mnishovsky,[6]
Antonio Averlino Filarete,[10]
Cornelis Drebbel,[11]
Anthony Ascham[4] etc.
موادvellum
حجم≈ 23.5 سینٹی میٹر × 16.2 سینٹی میٹر × 5 سینٹی میٹر (9.3 انچ × 6.4 انچ × 2.0 انچ)
ہیئتone column in the page body, with slightly indented right margin and with paragraph divisions, and often with stars in the left margin;[12]
the rest of the manuscript appears in the form of graphics i.e. diagrams or markings for certain parts related to illustrations;
the manuscript contains foldable parts
حالتpartially damaged and incomplete;
240 out of 272 pages found (≈ 88%)[13][10][12]
i.e. 18 out of 20 quires found
(272 pages i.e. 20 quires is the smallest estimated number, and it contains > 170,000 characters)[14]
رسم الخطunknown
possibly an invented script[15]
very small number of words found in لاطینی زبان script[4][13]
موادنباتات، فلکیات، balneological، کونیات and pharmaceutical sections + section with recipes
Illumination(s)color ink, a bit crude, was used for painting the figures, probably later than the time of creation of the text and the outlines themselves[13]
نمونہtwo manuscript copies which Baresch sent twice to Kircher in Rome
پہلے مالک?   رڈولف ثانی → Jakub of Tepenec → Georg Baresch  Athanasius Kircher (copies) → Jan Marek Marci (Joannes Marcus Marci) → rector of Charles University in Prague → Athanasius Kircher → Pieter Jan Beckx → Wilfrid Voynich → Ethel Voynich → Anne Nill → Hans Peter Kraus → ییل یونیورسٹی[4][9][12][16][17]
اہم دریافتearliest information about the existence comes from a letter that was found inside the covers of the manuscript, and it was written in either 1665 or 1666
دیگرcryptography case which has not been solved or deciphered

مخطوطہ وائنیچ (انگریزی: Voynich manuscript) ایک غیر معروف نظام تحریر میں ہاتھ سے لکھا ہوا ایک مصوری کوڈیکس ہے، جسے "وائنیچیز" (Voynichese) کہا جاتا ہے۔ [18] جس ویلم پر یہ لکھا گیا ہے وہ پندرہویں صدی کے اوائل (1404ء–1438ء) تک کی کاربن ڈیٹنگ ہے، اور اسٹائلسٹک تجزیہ بتاتا ہے کہ یہ اطالوی نشاۃ ثانیہ کے دوران میں اطالیہ میں تشکیل دیا گیا تھا۔ [1][2] مخطوطہ کی ابتدا، تصنیف اور مقصد پر بحث ہوئی ہے۔ مختلف مفروضے تجویز کیے گئے ہیں، جن میں یہ بھی شامل ہے کہ یہ قدرتی زبان یا تعمیر شدہ زبان کے لیے دوسری صورت میں غیر ریکارڈ شدہ رسم الخط ہے؛ ایک بغیر پڑھا ہوا رمز، سائفر، یا خفیہ نگاری کی دوسری شکل یا محض ایک بے معنی دھوکا ہے۔

مخطوطہ فی الحال تقریباً 240 صفحات پر مشتمل ہے، لیکن اس بات کا ثبوت ہے کہ اضافی صفحات غائب ہیں۔ کچھ صفحات مختلف سائز کی فولڈ ایبل شیٹس ہیں۔ زیادہ تر صفحات پر شاندار عکاسی یا خاکے بنے ہوئے ہیں، کچھ کچے رنگ کے ہیں، مخطوطہ کے کچھ حصوں میں لوگ، فرضی پودے، علم نجوم کی علامتیں وغیرہ دکھائی گئی ہیں۔ متن بائیں سے دائیں لکھا گیا ہے۔ اس مخطوطہ کا نام پولش بک ڈیلر ولفرڈ وائنیچ کے نام پر رکھا گیا ہے جس نے اسے 1912ء میں خریدا تھا۔ [19] 1969ء سے یہ ییل یونیورسٹی کی بینیک کی نایاب کتاب اور مخطوطہ لائبریری میں شامل کی گئی ہے۔ [20][12][21]

مخطوطہ وائنیچ کا مطالعہ بہت سے پیشہ ورانہ اور شوقیہ کرپٹوگرافروں نے کیا ہے، جن میں پہلی جنگ عظیم اور دوسری جنگ عظیم کے امریکی اور برطانوی کوڈ بریکر بھی شامل ہیں۔ [22] مخطوطہ کو کبھی بھی واضح طور پر سمجھا نہیں جا سکا، اور پچھلے سو سالوں میں تجویز کردہ بہت سے مفروضوں میں سے کسی کی بھی آزادانہ طور پر تصدیق نہیں کی گئی ہے۔ [23] اس کے معنی اور اصل کے اسرار نے مقبول تخیل کو پرجوش کر دیا ہے، اسے مطالعہ اور قیاس کا موضوع بنا دیا ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Steindl, Klaus؛ Sulzer, Andreas (2011). "The Voynich Code — The World's Mysterious Manuscript". مارچ 9, 2012 میں اصل (video) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ جون 8, 2016. 
  2. ^ ا ب پ Stolte، Daniel (فروری 10, 2011). "Experts determine age of book 'nobody can read'". PhysOrg. اخذ شدہ بتاریخ جون 8, 2016. 
  3. ^ ا ب پ ت ٹ
  4. ^ ا ب
  5. ^ ا ب
  6. ^ ا ب
  7. SantaColoma، H. Richard. "New Atlantis Voynich Theory". Santa-coloma.net. اخذ شدہ بتاریخ جون 8, 2016. 
  8. ^ ا ب پ ت
  9. ^ ا ب پ
  10. Schinner 2007.
  11. Brumbaugh 1978
  12. "MS 408" (image). Yale Library. اخذ شدہ بتاریخ جون 8, 2016. 
  13. "Voynich Manuscript". Beinecke Library. جنوری 13, 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ جون 8, 2016. 
  14. Hogenboom، Melissa (جون 21, 2013). "Mysterious Voynich manuscript has 'genuine message'". بی بی سی نیوز. اخذ شدہ بتاریخ جون 8, 2016. 
  15. Pelling، Nick. "Voynich theories". ciphermysteries.com. اخذ شدہ بتاریخ جون 8, 2016.