مرتضی بھٹو

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مير مرتضی بھٹو
Mir Murtaza Bhutto
(انگریزی میں: Murtaza Bhutto ویکی ڈیٹا پر مقامی زبان میں نام (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش 18 ستمبر 1954(1954-09-18)
لاڑکانہ  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 20 ستمبر 1996(1996-90-20) (عمر  42 سال)
کراچی  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات قتل  ویکی ڈیٹا پر طرزِ موت (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت پاکستان پیپلز پارٹی  ویکی ڈیٹا پر سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
زوجہ فوزیہ فصح الدین بھٹو
غنوی بھٹو
اولاد فاطمہ بھٹو  ویکی ڈیٹا پر اولاد (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدین ذوالفقار علی بھٹو
نصرت بھٹو
والد ذوالفقار علی بھٹو  ویکی ڈیٹا پر والد (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ نصرت بھٹو  ویکی ڈیٹا پر والدہ (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
خاندان بھٹو خاندان  ویکی ڈیٹا پر خاندان (P53) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی ہارورڈ یونیورسٹی
کرائسٹ چرچ  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان
عسکری خدمات
وفاداری الذوالفقار

میر غلام مرتضی بھٹو ایک پاکستانی سیاست دان تھا۔[1][2] وہ سابقہ وزیر اعظم پاکستان ذوالفقار علی بھٹو اور نصرت بھٹو کا بیٹا تھا۔ وہ دہشت گرد تنظیم الذوالفقار کا بانی بھی تھا جو محمد ضیاء الحق کے دور میں اس کے والد کی سزائے موت کے رد عمل میں بنائی گئی تھی۔[3][4] وہ ایک مفرور کے طور پر افغانستان منتقل ہو گیا، فوجی ٹربیونل نے اس کی غیر حاضری میں اسے سزائے موت کا حکم جاری کیا۔جمعرات، 20 ستمبر 1996ء کی شام کو مرتضی بھٹو اور دیگر چھ پارٹی کارکنوں کو اس کی رہائش گاہ کے قریب ایک پولیس مقابلے میں ہلاک کر دیا گیا۔

کہانی کاآغاز کیسے؟[ترمیم]

1993 کے عام انتخابات[ترمیم]

سات سال کے بعد بہن بھائی کی ملاقات[ترمیم]

سات سال کے بعد بہن بھائی کی ملاقات 7 جولائی 1996 کو وزیر اعظم ہائوس اسلام آباد میں ہوئی۔ بینظیر والہانہ انداز میں بھائی سے گلے ملیں۔ چھ گھنٹے کی اس ملاقات میں بیگم نصرت بھٹو بھی موجود تھیں۔ کچھ دیر کے لیے آصف علی زرداری بھی شریک ہوئے۔ کہا جاتا ہے کہ اس ملاقات سے بچھڑے ہوئے بہن بھائی سیاسی طور پر بھی قریب آ رہے تھے۔  اس ملاقات کے دو ماہ بعد بیس سمتبر 1996 کو مرتضیٰ بھٹو کو ان کی رہائش گاہ ستر کلفٹن کے قریب ان کے چھ ساتھیوں سمیت مبینہ پولیس مقابلے میں قتل کر دیا گیا۔

بعد ازقتل[ترمیم]

مرتضٰی کا قتل خطرے کی گھنٹی[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

https://www.urdunews.com/node/434096

بیرونی روابط[ترمیم]