مریخ پر پانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ارضیاتی اعداد و شمار کی بنیاد پر قدیمی مریخ کس طرح  کا نظر آتا ہوگا، ایک مصور کا تخیل۔

دور حاضر میں اگرچہ مریخ پر پانی کی تھوڑی سی مقدار کرۂ فضائی میں بطور آبی بخارات موجود ہے تاہم یہاں پر زیادہ تر پانی صرف برف کی صورت ہی میں پایا جاتا ہے[1] جبکہ کبھی کبھار تھوڑے سے نمکین پانی کی مقدار مریخ کی مٹی میں کم گہرائی پر بھی پائی جاتی ہے۔[2] وہ واحد جگہ جہاں پر پانی کی برف سطح پر دکھائی دے سکتی ہے وہ شمالی قطبی برفیلی ٹوپی ہے۔[3] پانی کی برف کی فراواں مقدار مریخ کے جنوبی قطب پر سدا بہار کاربن ڈائی آکسائڈ کی برفیلی ٹوپی کے نیچے اور معتدل عرض البلد میں سطح زمین سے قریب موجود ہے۔[4][5][6][7] پچاس لاکھ مکعب کلومیٹر سے زیادہ برف کا سراغ مریخ کی سطح پر یا اس کے قریب لگایا جا چکا ہے۔ یہ مقدار اس قدر ہے کہ پورے سیارے کی سطح کو 35 میٹر کی گہرائی میں ڈبو سکتی ہے۔[8] بلکہ سطح سے نیچے اور گہرائی میں مزید برف کی موجودگی کا امکان ہے۔[9]

دور حاضر میں کچھ مائع پانی مریخ کی سطح پر عارضی طور پر نمودار ہو سکتا ہے تاہم ایسا صرف مخصوص حالات کے زیر اثر ہی ہوتا ہے۔[10][11][12] مریخ کی سطح پر مائع پانی کےکھڑے بڑے ذخیرے اس لیے وجود نہیں رکھتے کیونکہ سطح پر موجود فضائی دباؤ کی اوسط 600 پاسکل (0.087 psi) – یعنی زمین کے سطح سمندر کے دباؤ کا صرف 0.6 فیصد ہے – اور کیونکہ سیاروی درجہ حرارت بہت ہی کم ((210K (-63 °C ) ہے لہٰذا اس کی وجہ سے یا تو تیز رفتار تبخیر (عمل تصعید) یا تیز رفتار انجماد وقوع پزیر ہو جاتا ہے۔ آج سے لگ بھگ 3 ارب 80 کروڑ برس پہلے، مریخ کا کرۂ فضائی کافی کثیف اور درجہ حرارت کافی بلند تھا [13][14] جس کی وجہ سے سطح پر پانی کی وسیع مقدار موجود تھی [15][16][17] گمان ہے کہ مریخ پر اس دور میں ایک بڑا سمندر بھی ہوگا[18][19][20][21] جس نے سیارے کے ایک تہائی حصّے کو گھیرا ہوا ہوگا۔[22][23][24] بظاہر ایسا لگتا ہے کہ مریخ کے ماضی قریب میں پانی سطح پر مختلف ادوار میں مختصر طور پر بہتا رہا ہے۔[25][26][27] 9 دسمبر 2013ء کو ناسا نے کیوریوسٹی جہاں گرد کی تحقیق سے حاصل کردہ ثبوتوں کی بنیاد پر بتایا کہ ایولس پالس، گیل شہابی گڑھے میں قدیمی تازہ پانی کی جھیلیں موجود ہیں جو خرد حیات کے لیے مہمان نواز ماحول مہیا کر سکتی تھیں۔[28][29]

مریخ پر پانی کی  کثیر مقدار اور سیارے کی ارضیاتی تاریخ میں اس کے اہم کردار کے بارے میں  کافی ثبوت ملے ہیں۔[30][31] دور حاضر میں مریخ کے پانی کے ذخائر کا اندازہ خلائی جہاز سے حاصل کردہ تصاویر، دور حساسی تیکنیک ( طیف پیمائی،[32][33] ریڈار،[34] وغیرہ) اور خلائی گاڑیوں اور جہاں گردوں کی تفتیش سے لگایا جا سکتا ہے۔[35][36] ماضی کے پانی سے متعلق ارضیاتی ثبوتوں کے سراغ میں مریخ کی سطح پر آنے والے سیلابوں سے تراشی ہوئی شاندار بہنے والی نہریں،[37] قدیمی دریائی وادیوں کے جال،[38][39] ڈیلٹا اور جھیلوں کی تہیں،[40][41][42][43] اورمائع پانی سے بننے والی سطح پر موجود چٹانیں اور معدنیات شامل ہیں۔[44] اکثر سطحی خدوخال زمینی برف (زیر سطحی مستقلاً جمی ہوئی زمین)،[45] اور برفانی تودوں میں ہونے والی برف کی حرکت کے بارے میں ماضی قریب[46][47][48][49] اور عصر حاضر [50] میں اشارہ دیتے ہیں۔ عمودی چوٹیوں اور شہابی گڑھوں کی دیواروں کے ساتھ نالیاں اور ڈھلوانی نالیاں بتاتی ہیں کہ پانی نے مریخ کی سطح کی تراش خراش کو جاری رکھا ہے، ہرچند کہ یہ عمل قدیمی ماضی کی نسبت اب حد درجہ کم ہو گیا ہے۔

اگرچہ مریخ کی سطح ماضی میں مختلف ادوار میں مرطوب رہی ہے اور امکان ہے کہ یہ ارب ہا برس پہلے خرد حیات کے لیے مہربان بھی رہی ہوگی،[51] تاہم سطح پر موجود حالیہ ماحول خشک اور جما دینے والا ہے، شاید یہ ماحول خرد حیات کے لیے ایک ناقابل تسخیر رکاوٹ ہے۔ مزید براں مریخ میں کثیف کرۂ فضائی، اوزون کی تہ اور مقناطیسی میدان بھی موجود نہیں ہیں جس کی وجہ سے شمسی اور کائناتی اشعاع بغیر کسی رکاوٹ کے اس کی سطح سے ٹکراتی ہیں۔ سطح پر موجود خلیاتی ساخت رکھنے والی حیات کے زندہ رہنے کے لیے ایک اور بڑا مسئلہ ان پر پڑنے والی آئن زدہ تابکاری کا تباہ کر دینے والا اثر ہے۔[52][53] لہٰذا مریخ پر حیات کو پروان چڑھانے کے لیے سب سے بہترین جگہ زیر سطح ماحول ہی ہو سکتا ہے۔[54][55][56]

واریگو  ویلس کے قریب خشک نالے

مریخ پر پانی کے بارے میں علم، سیارے کی حیات کو سہارا دینے کی تفہیم اور مستقبل کی انسانی کھوج کے لیے وسائل کو مہیا کرنے کی صلاحیت کی جانچ کے لیے انتہائی اہم و ضروری ہے۔ اکیسویں صدی کی پہلی دہائی میں "پانی کے پیچھے چلو"کا نعرہ ناسا کے مریخ کھوجی پروگرام کا رہا ہے۔ 2001ء مریخی مہمات، مریخی کھوجی جہاں گرد، مریخی پڑتال گر مدار گرد اور مریخی فینکس خلائی گاڑی یہ تمام کے تمام مریخ پر پانی کی فراوانی اور تقسیم کے بارے میں اہم سوالات کے جواب دینے کے لیے کھوج کر چکے ہیں۔ ای ایس اے کا مریخی ایکسپریس مدار گرد نے بھی اس مہم جوئی کے بارے میں اہم معلومات فراہم کی ہے۔[57] مریخی مہم، مریخی ایکسپریس، آپرچونیٹی جہاں گرد، ایم آر او اور مریخی سائنس خلائی گاڑی کیوریوسٹی جہاں گرد اب بھی مریخ سے معلومات کو بھیج رہے ہیں اور دریافتوں نے ہونا اب بھی جاری رکھا ہوا ہے۔

تاریخی پس منظر [ترمیم]

مریخ پر پانی کا قیاس خلائی دور شروع ہونے سے بھی سینکڑوں برس پہلے سے رہا ہے۔ دوربین سے ابتدائی مشاہدہ کرنے والوں نے انتہائی درستی سے سفید قطبی ٹوپیوں اور بادلوں کو پانی کی موجودگی کے نشان کے طور پرشناخت کر لیا تھا۔ کافی برسوں تک مریخ کی سطح پر موجود تاریک حصّوں کو سمندرسمجھا جاتا رہا۔[58] ان مشاہدات نے اس حقیقت کے ساتھ مل کر کہ مریخ پر بھی دن 24 گھنٹے کا ہوتا ہے، فلکیات دان ولیم ہرشل کو1784ء اس بات کا اعلان کرنے کی راہ دکھائی کہ شاید مریخ اپنے رہائشیوں کو ایک ایسا ماحول فراہم کرتا ہے جوزمین سے کافی حد تک مشابہ ہے۔ [59]

مریخ کا تاریخی نقشہ از طرف جیووانی شیاپیریلی۔
مریخی نہروں کے فلکیات دان پرسیول لوویل کے 1898ء میں بنائے گئے خاکے۔

بیسویں صدی کے آغاز میں اکثر فلکیات دانوں نے یہ دریافت کر لیا تھا کہ مریخ زمین سے زیادہ سرد و خشک ہے۔ سمندروں کے وجود کو اب تسلیم نہیں کیا جاتا تھا، لہٰذا مریخ کی تصویر تبدیل ہو کر ایک ایسے "دم توڑتے" ہوئے سیارے کی ہو گئی تھی جس میں پانی کی انتہائی قلیل مقدار تھی۔ وہ تاریک علاقے جو موسم کے ساتھ بدلتے تھے اب ان کو سبزہ روئیدگی سمجھا جانے لگا تھا۔[60] وہ آدمی جس نے مریخ کے اس چہرہ کو قبول عام بنانے میں سب سے زیادہ کردار ادا کیا تھا وہ پرسیول لوویل (1855–1916) تھا، جس نے یہ تصور کیا تھا کہ مریخ پر نہروں کے جال کو بنانے کی ایک دوڑ لگی ہوئی ہے اور ان نہروں کے ذریعہ مریخ کے استوائی خطے کے لوگ پانی کو قطبین سے لاتے ہوں گے۔ ہرچند کہ اس نے عوام الناس میں انتہائی جوش و خروش بھر دیا تھا، تاہم لوویل کا خیال اکثر فلکیات دانوں نے رد کر دیا تھا۔ اس دور میں سائنسی حقیقت پر سب سے زیادہ لوگوں کو جس شخص نے قائل کیا وہ انگریز فلکیات دان ایڈورڈ والٹر مونڈر (1851–1928) تھے جنہوں نے مریخ کے ماحول کوآرکٹک جزیرے پر موجود بیس ہزار فٹ کی چوٹی سے ملایا تھا [61] اس طرح کے ماحول میں صرف کائی کے باقی رہنے کی امید کی جا سکتی ہے۔

اسی دوران میں کئی فلکیات دان سیاروی طیف بینی کے آلات کو مزید بہتر کرنے میں لگے ہوئے تھے تاکہ مریخی ماحول کے اجزاء کا تعین کرسکیں۔ 1925ء تا 1943ء کے درمیان ماؤنٹ ولسن رصدگاہ کے والٹر ایڈمزاور تھیوڈور ڈنہم مریخ کے ماحول میں آکسیجن اور پانی کے بخارات کو ڈھونڈنے کی کوشش کی، جس کے نتائج کچھ زیادہ حوصلہ افزا نہ تھے۔ مریخی ماحول میں جس جز کے بارے میں یقین سے کہا جا سکتا تھا وہ صرف کاربن ڈائی آکسائڈ تھا جس کی شاخت جیرارڈ کائیپر نے طیف بینی کرکے 1947ء میں کی تھی۔[62] مریخ پر 1963ءسے پہلے تک پانی کے بخارات کا واضح طور پر سراغ نہیں لگایا گیا تھا۔ [63]

مرینیر چارم سے حاصل کردہ اس تصویر میں ایک ویران سیارہ دکھائی دیتا ہے (1965ء)

کیسینی (1666ء) کے دور سے قطبی ٹوپیوں کے اجزائے ترکیبی میں پانی کو فرض کیا جاتا رہا تھا، اس پر 1800ء کے دور کے کچھ سائنس دانوں نے اعتراض اٹھائے جو وہاں پر کاربن ڈائی آکسائڈ ہونے کے حق میں تھے کیونکہ اس کی وجہ ان کی نظر میں سیارے کا بحیثیت مجموعی درجہ حرارت اور پانی کی قابل ذکر مقدار کی کمی تھی۔ 1966ء میں اس مفروضے کی تصدیق رابرٹ لیٹن اور بروس مررے نے کی۔[64] آج ہم جانتے ہیں کہ دونوں قطب کی سرد ٹوپیاں بنیادی طور پر کاربن ڈائی آکسائڈ کی برف سے بنی ہوئی ہیں، تاہم ایک دائمی (یا سدا بہار) پانی کی برف کی ٹوپی شمالی قطب پر موسم گرما کے دوران موجود رہتی ہے۔ جنوبی قطب پر موسم گرما کے دوران میں کاربن ڈائی آکسائڈ کی برف رہتی ہے، تاہم اس ٹوپی کے نیچے بھی پانی کی برف موجود ہے۔

مریخ کے ماحول کے معمے کا آخری حصّے مرینیر چہارم نے 1965ء میں دیا۔ خلائی جہاز سے حاصل کردہ دانے دار ٹیلی ویژن کی تصویروں میں معلوم ہوا کہ سطح پر شہابی گڑھوں کا غلبہ ہے، جس کا مطلب یہ تھا کہ سطح کافی پرانی ہے اور اس نے کٹاؤ اور ساختمائی کے عمل کا سامنا نہیں کیا ہے جس طرح سے زمین پر ہوتا ہے۔ کم کٹاؤ کا مطلب یہ تھا کہ مائع پانی نے شاید سیارے کی شکلی ارضیات میں ارب ہا برس سے کوئی اہم کردار ادا نہیں کیا ہے۔[65] مزید براں جب خلائی جہاز سیارے کے پیچھے سے گزرتا ہے تو اس سے حاصل کردہ ریڈیائی اشاروں میں تغیرات سائنس دانوں کو اس قابل کرتے ہیں کہ وہ کرۂ فضائی کی کثافت کو ناپ سکیں۔ نتائج سے معلوم ہوا ہے کہ زمین کے سطح سمندر کے دباؤ کا 1 فیصد سے بھی کم وہاں کا ماحولیاتی دباؤ ہے جو لامحالہ طور پر مائع پانی کے وجود کا انکار کرتا ہے کیونکہ اتنے کم دباؤ کی وجہ سے پانی تیزی سے ابلے گا یا پھر جم جائے گا۔[66] مریخ ایک ایسی دنیا کے طور پر ابھرا جو چاند کی طرح کی ہے تاہم اس کا لچھے دار کرۂ فضائی اتنا ہے کہ ارد گرد کی دھول کو اڑا دیتا ہے۔ مریخ کی یہ تصویر اس وقت تک مزید ایک دہائی تک باقی رہی جب تک مرینیر نہم نے مریخ کی زیادہ متحرک تصویر نہیں دکھائی جس میں اس نے اشارہ دیا کہ سیارے کا ماضی اس کے حال کے ماحول سے کافی حلیم و مہمان نواز تھا۔

24 جنوری 2014ء میں ناسا نے بتایا کہ کیوریوسٹی اور آپرچونیٹی جہاں گردوں کے ذریعہ مریخ پر کی جانے والی حالیہ تحقیق قدیمی حیات کے ثبوتوں کی تلاش کرے گی۔ اس کے علاوہ یہ اس حیاتی کرہ کی بھی تلاش کریں گے جس کی بنیاد خود پرور، جرثوموں اور / یا کیمیائی سنگی خود پرور خرد حیاتیات ہوتی ہے۔ مزید براں اس نے قدیمی پانی کے ساتھ یخ تودوں کے تالابی ماحول (میدان جن کا تعلق قدیمی دریاؤں یا جھیلوں سے ہے) اور قابل مسکن جگہوں کو بھی تلاش کرنا ہے۔[67] [68][69][70]

کئی برسوں تک یہ سمجھا جاتا رہا کہ سیلابوں کی باقیات کے مشاہدات کی وجوہات سیاروی پانی کے جدول سے نکلنے والا پانی ہے، تاہم 2015ء میں ہونے والی تحقیق نے 45 کروڑ برس پہلے مقامی رسوبی چٹانوں کے ذخیرے اور دھری ہوئی برف کو اس کا ماخذ بتایا ہے۔[71] دریاؤں اور تودوں کے پگھلنے سے رسوبی ذخائر نے قدیمی سمندروں کے نیچے موجود دیو ہیکل گھاٹیوں کو بھر دیا ہے جو سیارے کے شمالی نچلے میدانوں میں موجود ہیں۔ یہ وہ پانی تھا جو ان گھاٹیوں کی رسوبی چٹانوں میں جمع تھا جو بعد میں عظیم سیلابوں کی صورت میں نکلا جس کا اثر آج بھی دیکھا جا سکتا ہے۔

چٹانوں اور معدنیات سے حاصل کردہ ثبوت [ترمیم]

آج اس بات کو کافی حد تک تسلیم کر لیا گیا ہے کہ مریخ کی ابتدائی تاریخ میں وہاں پانی کی کافی فراوانی تھی،[72][73] تاہم اس دور کے پانی کے تمام بڑے علاقے آج غائب ہو چکے ہیں۔ ابتدائی مریخ کے دور کے پانی کا کچھ حصّے عصرحاضر کے مریخ میں اب بھی موجود ہے کیونکہ برف اور پانی سے لبریز مادّوں کی ساخت بشمول مٹی والی معدنیات (سیلیکٹ) اور گندھک کے نمک میں قید ہے۔[74][75][76][77][78] ہائیڈروجن کے ہم جاؤں کی تحقیق بتاتی ہے کہ مریخ سے 2.5 فلکی اکائیوں کے فاصلے پر موجود سیارچوں اور دم دار تاروں نے مریخ کو پانی دیا، جس کی مقدار زمین کے حالیہ سمندروں کا 6 تا 27 فیصد بنتی ہے۔[79]

مریخ پر پانی کی تاریخ  اعدادپہلے کے  ارب ہا برسوں کو ظاہر کررہے ہیں

پانی ماحولیاتی مصنوعات میں (آبی معدنیات)[ترمیم]

مریخ کی سطح پر بنیادی پتھر کی قسم سنگ سیاہ ہے۔ یہ ایک لطیف دانے دار آتشیں چٹان ہوتی ہے جو زیادہ تر مافک سیلیکٹ زبر جد، پیروکسن اور پلاجیوکلاس فلسپار(بلوری قلموں پر مُشتمل فلسپار معدنیات کے سلسلے) پر مشتمل ہوتی ہے۔[80] جب پانی اور فضائی گیسوں سے اس کا سامنا ہوتا ہے تو یہ معدنیات کیمیائی موسم میں ایک نئی (ذیلی) معدنیات میں بدل جاتے ہیں، جس میں سے کچھ اپنی قلمی ساخت میں پانی کو بھی شامل کر لیتے ہیں، چاہیے وہ پانی ہو یا ہائیڈروکسل(ایک ہائیڈروجن ایٹم ایک آکسیجن ایٹم سے مزدوج) کی صورت ہو۔ آبیدہ معدنیات کی مثالوں میں آئرن ہائیڈ روآکسائیڈز گوتھائٹ (میدانی مٹی کا ایک عام جز)؛ تبخیر ہوئے معدنیات، جپسم اور کیسیرائیٹ؛ اپلائن سیلیکا اور سنگی سیلی کیٹ (جس کو مٹی کی معدن بھی کہتے ہیں)، جیسا کہ گل چینی اور مونٹ موریلونائیٹ شامل ہیں۔ [81]

کیمیائی ماحول کا ایک براہ راست اثر پانی اور دوسرے تعاملی کیمیائی عناصر کا استعمال ہے، جس کو وہ چلتے پھرتے ذخیروں مثلاً کرۂ فضائی اور آبی کرہ سے حاصل کرتا ہے اور اس کو جدا کرکے چٹانوں اور معدنیات میں ڈال دیتا ہے۔[82] مریخی پرت نے آبیدہ معدنیات میں پانی کی کتنی مقدار کو ذخیرہ کیا ہے اس کا فی الوقت معلوم نہیں ہے تاہم اندازہ ہے کہ یہ کافی بڑی مقدار ہوگی۔[83] مثال کے طور پر مریڈیانی پلانم پر آپرچونیٹی جہاں گرد میں لگے ہوئے آلات سے کی گئی سطح سے نکلی ہوئی چٹان کے معدنیاتی نمونے کی جانچ سے معلوم ہوا کہ وہاں پر موجود گندھک کے نمک کے ذخیرے اپنے وزن کا 22 فیصد تک پانی پر مشتمل ہوتے ہیں۔[84]

زمین پر تمام کیمیائی موسمی تعاملات میں پانی کسی حد تک شامل ہوتا ہے۔[85] لہٰذا کافی ذیلی معدن اصل میں پانی کو اپنے اندر ذخیرہ نہیں کرتے بلکہ ان کو بننے کے لیے پانی ضرورت ہوتی ہے۔ کچھ نابیدہ ذیلی معدن کی مثالوں میں کاربونیٹ، کچھ گندھک کے نمکیات (جیسا کہ نابیدہ کیلشیم سلفیٹ) اور دھاتی آکسائڈز جیسا کہ آئرن آکسائڈ معدن قلمی کچا لوہا شامل ہیں۔ مریخ پراس طرح کی کچھ موسمی پیدوار نظری طور پر پانی کے بغیر یا قلیل مقدار کی موجود برف یا مہین سالماتی پیمانے کی فلموں (یک سالمی تہ) میں بھی بن سکتی ہیں۔[86][87] مریخ پر جاری رہنے والے اس عجیب موسم کے دائرہ کار کے بارے میں اب بھی ہم قطعیت کے ساتھ کچھ نہیں کہہ سکتے۔ ان معدنیات کو جو پانی کو شامل کرتی ہیں یا پانی کی موجودگی میں بنتی ہیں، عام طور سے "آبیدہ معدنیات" کہتے ہیں۔

آبیدہ معدنیات اپنے بننے کے وقت موجود ماحول کی قسم کا حساس اشارہ دیتی ہیں۔ آبیدہ تعامل کے آسانی سے وقوع پزیر ہونے کا انحصار دباؤ، درجہ حرارت اور قابل حل مادّوں اور گیسوں کے مرتکز ہونے پر ہوتا ہے۔[88] دو اہم خصوصیات pH اور تکسیدی تخفیفی امکان (Eh) ہے۔ مثال کے طور پر سلفیٹ معدن جاروسائٹ صرف کم pH (زبردست تیزابی) پانی میں ہی بنتا ہے۔ سنگی سیلی کیٹ عام طور پر معتدل سے لے کر زیادہ pH (کھارے) میں بنتا ہے۔ Eh آبیدہ نظام میں تکسیدی حالت کو ناپنے کی اکائی ہے۔ Eh اور pH مل کر ان معدنیات کی اقسام کا بتاتے ہیں جن کے حرحرکی طور پر بننے کا امکان مخصوص آبیدہ جزئیات سے ہوتا ہے۔ اس طرح مریخ پر موجود ماضی کی ماحولیاتی شرائط بشمول مائل با حیات کو چٹانوں میں موجود معدنیات کی اقسام سے انبساط کیا جا سکتا ہے۔

گرماہی تغیر [ترمیم]

گرماہی(hydrothermal) سیال کی مساموں اور شگافوں کے ذریعہ ہجرت بھی زیر سطح زمین میں آبیدہ معدن کو بنا سکتے ہیں۔ گرماہی نظام کو چلانے والی توانائی قریبی میگما جسم یا بڑے تصادموں کی باقی مانندہ حرارت سے ملتی ہوگی۔[89] زمینی سمندروں کی تہ میں ہونے والے گرماہی تغیر کی ایک اہم قسم سرپنٹینائیٹ( بل کھائی ہوئی ساخت) ہے، جو اس وقت وقوع پزیر ہوتی ہے جب سمندری پانی بالائے مافک اور سنگ سیاہ کی چٹانوں کے درمیان میں سے ہوتا ہوا ہجرت کرتا ہے۔ پانی کی چٹانوں کا تعامل کا نتیجہ زبرجد اور پیروکسن میں موجود لوہے کی تکسید کی صورت میں نکلتا ہے جس سے آہنی لوہا (جیسا کہ معدن سنگ مقناطیس) بنتا ہے اور ضمنی پیداوار کے طور پر سالماتی ہائیڈروجن کو بناتا ہے۔ اس عمل میں ایک بلند درجے کا کھاری اور تخفیفی (پست Eh) ماحول بنتا ہے۔ یہ ماحول مختلف قسم کی سنگی سیلی کیٹ (بل کھاتی معدن) اور مختلف کاربونیٹ معدنیات کو بنانے کے لیے سازگار ہوتا ہے اور مل کر ایک چٹان کو بناتا ہے جس کو سرپنٹینائیٹ (بل کھائی ہوئی ساخت) کہتے ہیں۔[90] بننے والی ہائیڈروجن گیس کیمیائی تالیفی جانداروں کی توانائی کا اہم ذریعہ ہو سکتی ہے بصورت دیگر یہ کاربن ڈائی آکسائڈ سے تعامل کرکے میتھین گیس کو پیدا کر سکتی ہے، مریخ کے ماحول میں پائی جانے والی میتھین گیس کی کچھ مقدار اس عمل کے ذریعہ بنی ہے جس کو غیر حیاتیاتی ماخذ کے طور پر جانا جاتا ہے۔[91] سرپنٹین معدن بھی کافی پانی کا ذخیرہ (ہائیڈروکسل) کے طور پر اپنی قلمی ساخت میں کر سکتے ہیں۔ ایک حالیہ تحقیق دلیل دیتی ہے کہ مریخ کے قدیمی بلند میدانوں کی پرتوں میں قیاسی سرپنٹینائیٹ پانی کی 500 میٹر موٹی سیاروی ہم پلہ تہ تک رکھ سکتی ہے۔[92] ہرچند کہ کچھ سرپنٹینا ئیٹ معدن کا سراغ مریخ پر لگایا جا چکا ہے، دور حساسیوں سے حاصل کردہ اعداد و شمار اس طرح کے وسیع سطح سے اوپر نکلے ہوئے ثبوت فراہم نہیں کر سکے ہیں۔[93] یہ حقیقت اس بات کو نظر انداز نہیں کر سکتی کہ سرپنٹینائیٹ کی بڑی مقدار مریخی تہ میں مخفی ہو سکتی ہے۔

موسمی شرح [ترمیم]

وہ شرح جس سے بنیادی معدن ذیلی آبیدہ معدن میں تبدیل ہوتی ہے، بدلتی رہتی ہے۔ بنیادی سیلی کیٹ معدن کی قلمیں میگما سے جس دباؤ اور درجہ حرارت میں بنتی ہیں وہ سیارے کی سطح پر موجود ماحول سے وسیع پیمانے پر الگ ہوتا ہے۔ جب یہ سطح کے ماحول کا سامنا کرتے ہیں تو یہ معدنیات توازن کو کھو دیتے ہیں اور دستیاب کیمیائی اجزاء سے متعامل کرنے کی کوشش کرتے ہیں تاکہ مزید پائیدار معدن بنا سکیں۔ عام طور پر وہ سیلی کیٹ معدن جو اونچے درجہ حرارت والے موسم پر قلم کی شکل انتہائی تیزی سے اختیار کر لیتے ہیں (ٹھنڈے ہوئے میگما میں پہلے ٹھوس ہوتے ہیں)۔[94] زمین اور مریخ دونوں پر سب سے زیادہ عام پایا جانے والا معدن جو اس کسوٹی پر پورا اترتا ہے زبرجد ہے جو پانی کی موجودگی میں فوراً مٹی والی معدن میں بدلتا ہے۔

زبرجد مریخ پر کافی موجود ہے [95] جس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ مریخ کی سطح کو پانی نے بہت زیادہ متغیر نہیں کیا؛ کثیر ارضیاتی ثبوت اس کے برخلاف بھی موجود ہیں۔[96][97][98][99][100]

مریخی شہابیے[ترمیم]

مریخی شہابیہ  ALH84001

60 سے زائد مریخ سے آنے والے شہابیے دریافت کیے جاچکے ہیں۔[101] ان میں سے کچھ میں ایسے ثبوت موجود ہیں جو یہ بتاتے ہیں کہ جب وہ مریخ پر تھے تو ان کا سامنا پانی سے ہوا تھا۔ کچھ مریخی شہابیے سنگ سیاہ شیرگو ٹایئٹ کہلاتے ہیں، ان کو ( آبیدہ کاربونیٹ اور گندھک کی نمکیات کی موجودگی سے )دیکھ کر ایسا لگتا ہے کہ خلا میں پھینکے جانے سے پہلے اس کا سامنا مائع پانی سے ہوا تھا۔[102][103] ایسا بھی دیکھا گیا ہے کہ شہابیوں کی ایک اور جماعت نخیلائیٹ میں مائع پانی لگ بھگ 62 کروڑ برس پہلے پھیلا تھا اور وہ مریخ سے لگ بھگ ایک کروڑ سات لاکھ پچاس ہزار برس پہلے سیارچوی ٹکر میں وہاں سے ٹوٹ کر نکلا تھا۔ یہ زمین پر پچھلے دس ہزار برس میں گرے ہیں۔ [104]

1996ء میں سائنس دانوں کے ایک گروپ نے مریخ سے آئے ہوئے شہابیے ایلن ہلز 84001 میں خرد رکاز کی ممکنہ موجودگی کا بتایا۔[105] اس پر کی جانے والی اکثر تحقیقات نے رکاز کے معتبر ہونے کو تسلیم نہیں کیا۔[106][107] یہ پتا لگا کہ سیارچے کا زیادہ تر نامیاتی مادّہ ارضیاتی اصل کا تھا۔[108]

ارض شکلہ ثبوت [ترمیم]

جھیلیں اور دریائی وادیاں [ترمیم]

1971ء کے مرینیر نہم خلائی جہاز نے مریخ پر پانی کے حوالے سے ہمارے تصورات میں انقلاب برپا کر دیا۔ کئی علاقوں میں وسیع دریائی وادیاں پائی گئیں۔ تصاویر بتاتی ہیں کہ پانی کے سیلاب نے ڈیموں کو توڑتے ہوئے گہری وادیاں تراشیں، چکر دار نالیوں کو بہا کر نچلی چٹانوں میں بدل دیا اور ہزار ہا کلومیٹر کا سفر طے کیا۔ جنوبی نصف کرہ میں شاخ دار بہاؤ کے علاقے بتاتے ہیں کہ کبھی وہاں بارش بھی ہوتی تھی۔[109][110][111] وقت گزرنے کے ساتھ شناخت شدہ وادیوں کی تعداد میں اضافہ ہوتا گیا۔ 2010ء میں شایع ہونے والی تحقیقاتی رپورٹ نے مریخ پر 40 ہزار وادیوں کا نقشہ بنایا یعنی یہ تعداد لگ بھگ پہلے جانے جانی والی وادیوں کی تعداد سے چار گنا زیادہ ہے۔ مریخی پانی سے کٹاؤ سے بننے والے خدوخال دو مختلف جماعتوں میں زمرہ بند کیے جا سکتے ہیں: ١) شجر نما (شجرینی)، میدانی پیمانے کے وسیع منقسم، نوایچین دور کے وادیوں کے جال اور ٢) غیر معمولی بڑے، لمبے، یک لڑی، الگ، ہیسپیرین دور کے مخرج نالے۔ حالیہ کام بتاتا ہے کہ ہو سکتا ہے کہ وہاں کوئی حالیہ پیچیدہ، چھوٹے، نوجوان ( ایمیزونی ہیسپیرین) نالوں کی جماعت وسط عرض البلد میں بھی موجود ہو، جو ممکنہ طور پر مقامی پگھلی ہوئی برف کے ذخیروں کی وجہ سے بنی ہو۔[112][113]

کیسی ویلز - ایک اہم مخرج نہر - مولا کے ارتفاعی اعداد و شمار میں دیکھا جانے والا۔ بہاؤ نیچے بائیں سے دائیں طرف ہے۔ تصویر لگ بھگ 1600 کلومیٹر حصّے کی ہے۔ یہ نہروں کا نظام اس تصویر کے جنوب میں 1200 کلومیٹر ایکس کھائی تک پھیلا ہوا ہے۔

مریخ کے کچھ حصّے الٹے سطح کے ابھار دکھاتے ہیں۔ ایسا تب ہوتا ہے جب گاد بہاؤ کی تہ میں جمع ہو جاتی ہے اور کٹاؤ سے سیمنٹ کی طرح جڑ کر مزاحمت کرنا شروع کر دیتی ہے۔ بعد میں یہ علاقے دفن ہو جاتے ہیں۔ بالآخر کٹاؤ اوپری سطح کو الگ کرکے بعد الذکر بہاؤ کو سامنے لے آتی ہے کیونکہ یہ کٹاؤ سے مزاحمت کرتے ہیں۔ مریخ آفاقی سرویر نے اس عمل کی کافی مثالیں دیکھی ہیں۔،[114][115] مریخ کے کافی علاقوں میں اس طرح کے الٹی سطح کے ابھار ملے ہیں بطور خاص، میڈوسا مجوف بناوٹ[116] میاموٹو شہابی گڑھے،[117] سہیکی شہابی گڑھے[118] اور جونتا ئے سطح مرتفع میں۔[119][120]

انٹونیاڈی شہابی گڑھے میں موجود الٹے بہاؤ والی نہریں۔ مقام سرٹس بڑا چوگوشہ

مریخ میں جھیلوں کے طاس کی مختلف نوع دریافت ہوئی ہیں۔[121] ان میں سے کچھ تو زمین پر موجود بڑی جھیلوں سے مماثلت رکھتی ہے جیسا کہ کیسپین جھیل، بحیرہ مردار اور بیکل جھیل۔ وہ جھیلیں جو وادیوں کے نظام سے بھرتی ہوں گے وہ جنوبی اونچے علاقوں میں پائی گئی ہیں۔ یہاں ایسی جگہیں ہیں جو ان تک جاتی دریائی وادیوں کے ساتھ پچکنے کے قریب ہیں۔ ان علاقوں کے بارے میں یہ سمجھا جاتا ہے کہ کسی زمانے میں یہاں جھیلیں ہوں گی؛ ایک میدانی سیرنم ہے جس کا مخرج مادام ویلس سے گزرتا ہوا گوسف شہابی گڑھے تک جاتا ہے، اس کی چھان بین مریخی کھوجی جہاں گرد اسپرٹ سے کی گئی ہے۔ ایک اور پرانہ ویلس لائیر ویلس میں بھی موجود ہے۔[122] کچھ جھیلوں کے بارے میں خیال ہے کہ یہ عمل تبخیر کے نتیجے میں بنی ہوں گی، جبکہ کچھ زیر زمین پانی کی وجہ سے وجود میں آئی ہوں گی۔ جھیلوں کے بارے میں اندازہ لگایا گیا ہے کہ ارگیرے طاس، ہیلس طاس[123] اور شاید ویلس مرینیر میں بھی موجود ہوں گی۔[124][125] گمان ہے کہ نوکین میں اکثر بہت سارے شہابی گڑھے جھیلوں کی میزبانی کرتے تھے۔ یہ جھیلیں ٹھنڈی خشک (زمینی معیار کے مطابق) آبیاتی ماحول سے میل کھاتی ہیں جس طرح سے مغربی یو ایس اے کا عظیم طاس آخری تودے کی انتہا کے دور میں تھا۔[126]

2010ء کے بعد سے کی جانے والی تحقیق بتاتی ہے کہ مریخ میں استوائی علاقوں کے کچھ حصّوں میں جھیلیں موجود تھیں۔ ہرچند کہ پہلی ہونے والی تحقیق بتاتی ہے کہ مریخ کا گرم و مرطوب ابتدائی موسم تھا تاہم وہ عرصہ ہوا ختم ہو کر خشک ہو گیا، یہ جھیلیں ہیسپیرین دور میں موجود تھیں، جو کافی بعد کا دور ہے۔ ناسا کے مریخی پڑتال گر مدارگرد سے حاصل کردہ مفصل تصاویر کا استعمال کرتے ہوئے، محققین نے اندازہ لگایا ہے ایک دور ایسا ہوگا جس کے دوران مریخ میں آتش فشانی عمل، شہابی ٹکراؤ میں اضافہ یا مریخ کے مدار میں تبدیلی ہوئی ہوگی جس سے مریخ کے ماحول اتنا گرم ہو گیا ہوگا کہ زمین پر موجود کثیر برف کو پگھلا سکے۔ آتش فشانوں نے وہ گیسیں خارج کی ہوں گی جنہوں نے ماحول کو وقتی عرصے کے لیے کثیف کر دیا ہوگا، یوں سورج کی روشنی ماحول میں زیادہ قید ہونے لگی ہوگی اور ماحول کو اس قدر گرما دیا ہوگا کہ مائع پانی اپنا وجود برقرار رکھ سکے۔ اس تحقیق میں وہ نہریں دریافت ہوئی ہیں جو جھیل کے طاسوں کو آپس میں ایرس ویلس میں ملاتی ہیں۔ جب ایک جھیل بہر جاتی، تو اس کا پانی کناروں سے نکلتا اور نچلے علاقوں میں نالیوں کو بناتا چلا جاتا جہاں ایک اور جھیل بن جاتی۔[127][128] یہ خشک جھیلیں ماضی میں موجود حیاتیاتی نقش پا کے ثبوت تلاش کرنے کے لیے مستقبل میں ہمارا ہدف ہوں گی۔

27 ستمبر 2012ء میں ناسا کے سائنس دانوں نے اعلان کیا کہ کیوریوسٹی جہاں گرد نے براہ راست قدیمی بہنے والی نہروں کے ثبوت گیل شہابی گڑھے میں دریافت کیے جس سے مریخ کی سطح پر قدیمی زبردست پانی کے بہاؤ کے بارے میں پتا چلتا ہے۔[129][130][131][132] بطور خاص اب سوکھے ہوئے بہتی ہوئی نہروں کے نشانوں کا تجزیہ بتاتا ہے کہ پانی ممکنہ طور پر بلندی سے پستی کی طرف 3.3 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے بہتا تھا۔ بہتے ہوئے پانی کا ثبوت گول کنکروں اور بجری کے بکھرے ہوئے حصّوں کی صورت میں موجود ہے، ایسی چیزیں صرف اس وقت بن سکتی ہیں جب مائع بہتے ہوئے پانی کا زبردست بہاؤ موجود ہو۔ ان کی شکل و صورت اور سمت بتاتی ہے کہ وہ کافی لمبا سفر طے کرکے شہابی گڑھے کے کنارے کے اوپر سے آئے ہیں جہاں پر ایک پیس ویلس نام کی نہر الوویل فین کو بھرتی تھی۔

جھیلوں کے ڈیلٹا[ترمیم]

ایبرس والڈ شہابی گڑھا

مریخی جھیلوں میں بننے والے ڈیلٹا کی کئی مثالیں محققین کو ملی ہیں۔ ڈیلٹا کا ملنا ایک اہم سراغ اس بات کا ہے کہ مریخ پر کبھی گرم مائع پانی موجود تھا۔ ڈیلٹا بننے کے لیے عموماً لمبے عرصے تک گہرا پانی درکار ہوتا ہے۔ مزید براں پانی کی سطح کو متوازن ہونے کی بھی ضرورت ہوتی ہے تاکہ گاد کو بہنے سے روک سکے۔ وسیع ارضیاتی پیمانے پر ڈیلٹا ملے ہیں، اگرچہ کچھ اشارے ایسے بھی موجود ہیں جو یہ بتاتے ہیں کہ ڈیلٹا شاید مریخ کے سابقہ قیاسی شمالی سمندر کے کناروں کے گرد مرتکز ہیں۔[133]

زیر زمین پانی[ترمیم]

پرتیں شاید بتدریج بلند ہوتے ہوئے پانی کی وجہ سے بنی ہیں۔

1979ء تک ایسا سمجھا جاتا تھا کہ بہتی ہوئی نہریں برف سے بند زیر زمین پانی کے ذخیروں میں کسی ایک آنے والی تباہ کن شکستگی کی وجہ سے بنتی ہیں، جس کے نتیجے میں عظیم پانی کی مقدار مریخ کے خشک سطح پر نکلتی تھی۔[134][135] مزید براں بھاری یا تباہ کن سیلاب کے ثبوت ایتھابسکا ویلس کی دیوہیکل لہروں میں پائے گئے ہیں۔[136][137] بہتی ہوئی اکثر نہریں کسی تباہی یا کھائی کا نتیجہ ہیں جس سے وہ ثبوت ملتا ہے جو ہمیں یہ بتاتا ہے کہ پھٹاؤ نے زیر زمین برف کے بند کو توڑ دیا ہوگا۔

مریخ پر وادیوں کے جال کی شاخیں زیر زمین پانی کے اچانک نکلنے کی وجہ سے بننے والی نہروں سے ،نہ تو اپنی شجر نما صورت سے جو کسی ایک بہتے ہوئی نقطہ سے نہیں بن سکتی اور نہ ہی پانی کے نکلنے کی صورت میں جو بظاہر ایسا لگتا ہے کہ ان کے ساتھ ہی بہا، میل کھاتی ہیں۔[138] اس کی بجائے کچھ مصنفین دلائل دیتے ہیں کہ یہ زیر زمین پانی کے سست رفتار اچھل کر نکلنے والے اخراج سے رس کر بنی ہیں۔[139] اپنی اس دلیل کے ثبوت کے طور پر وہ بتاتے ہیں کہ اس طرح کے جال میں اکثر وادیوں کے اوپری بہاؤ کے کونے ڈبے والی کھائی یا بیضوی کھاڑی کے سر سے شروع ہوتی ہیں، زمین پر اس طرح کی چیزیں عام طور پر زمینی پانی کے رساؤ سے ہی بنتی ہیں۔ بہتر پیمانے کی نہروں یا نہروں کے سوتوں پر موجود وادیوں کے بارے میں بھی ثبوت انتہائی کم ہیں جس کی وجہ سے کچھ لوگ کہتے ہیں کہ بجائے سطح پر بتدریج پانی کے جمع ہونے کے پانی کی قابل ذکر مقدار اچانک سے زیر زمین سے نکل کر بہتی ہوئی لگتی ہے۔ کچھ لوگ وادیوں کی بیضوی کھاڑی کے سر اور زیر زمین پانی سے بننے والی ساختوں کی ارضیاتی مثال کو نہیں مانتے،[140] اور دلیل دیتے ہیں کہ وادیوں کے جال میں بہتر پیمانے کی نہروں کی کمی کی وجہ موسمی اور تصادمی پھلواڑی ہے۔

اکثر مصنفین مانتے ہیں کہ اکثر وادیوں کے جال کم از کم جزوی طور پر زیر زمین پانی کے رساؤ کے عمل کی وجہ سے بنے ہیں۔

اینڈیورینس شہابی گڑھے کی برنس عمودی پہاڑی کے ہوائی ٹیلے کی طبقات شناسی کے محفوظ اور سیمنٹ کی طرح جڑے رہنے کی وجہ اتھلے زیر زمین پانی کے بہاؤ کو سمجھا جاتا ہے۔[141]

مریخ پر زیر زمین پانی وسیع پیمانے کی تہ نشینی کے نمونوں اور عمل کا انتظام سنبھالنے میں ایک اہم کردار ادا کرتا ہے۔[142] اس مفروضے کے مطابق، زیر زمین پانی حل پزیر معدنیات کے ساتھ سطح پر شہابی گڑھوں اور اس کے آس پاس آیا اور معدنیات کا اضافہ کرکے پرتوں کو بنانے میں مدد دی - بطور خاص سلفیٹ – اور سیمنٹ کی طرح جڑے رہنے والی گاد۔[143][144][145][146][147] بالفاظ دیگر کچھ پرتیں شاید زیر زمین پانی کے اوپر آنے کی وجہ سے بنی جنہوں نے معدنیات کو یہاں جمع کیا اور موجود بکھری ہوئی ہوائی گاد کو جوڑا۔

ساختی پرتیں لامحالہ طور پر کٹاؤ سے زیادہ محفوظ رہی۔ شاید یہ عمل جھیلوں کے اندر پرتوں کے بننے کے عمل کے برخلاف وقوع پزیر ہوا ہوگا۔ 2011ء میں مریخی پڑتال گر مدار گرد سے حاصل کردہ اطلاعات کی روشنی میں ایک تحقیق شایع ہوئی، جس نے بتایا کہ اسی طرح کے گاد بڑے علاقے بشمول عربیہ میدان میں وجود رکھتی ہے۔[148] یہ دلیل دی جاتی ہے کہ ہم دور حساسی سیارچوں سے حاصل ہونے والی معلومات کے نتیجہ میں جانے گئے علاقوں کو گاد سے بنی چٹانوں سے لبریز دیکھتے ہیں یہ وہ علاقے ہیں جو زیر زمین پانی کے علاقائی پیمانے پر اوپر آنے کا مزہ چکھنے کے سب سے بڑے امیدوار ہیں۔[149]

مریخی سمندروں کا مفروضہ[ترمیم]

مریخ پر سمندروں کی موجودگی کا نظریہ بتاتا ہے کہ وسٹیٹس بوریلس طاس کبھی کسی زمانے میں مائع پانی کے سمندر کی جگہ تھی اور یہ ظاہر کرتا ہے کہ قریباً مریخ کی ایک تہائی سطح مائع پانی سے سیارے کی ابتدائی ارضیاتی تاریخ میں ڈھکی ہوئی تھی۔[150] یہ سمندر جس کو بوریلس سمندر کہا جاتا ہے اس نے وسٹیٹس طاس کو شمالی نصف کرہ میں بھر دیا ہوگا، یہ علاقہ سیارے کی اوسط اونچائی سے 4تا 5 کلومیٹر نیچے ہے۔ دو نام نہاد ساحلی پٹیوں کے نام بھی تجویز کیے گئے ہیں۔ ایک بلندی والی ہے جو لگ بھگ 3 ارب 80 کروڑ برس پہلے اونچے میدان کی وادیوں کے جال کے بننے کے ساتھ بنی ہے اور دوسری پستی والی ہے، جو امید ہے کہ نوجوان مخرج نہروں کے ساتھ بنی ہوگی۔ بلندی والی، عربیہ ساحلی پٹی کو پورے مریخ پر دیکھا جا سکتا ہے سوائے تھارسس آتش فشانی علاقے کے۔ پستی والی ڈیوٹرو نیلس وسٹیٹس بوریلس کے ساتھ بنی ہے۔

2010ء میں ہونے والی تحقیق نے نتیجہ اخذ کیا کہ زیادہ قدیمی سمندروں نے مریخ کا 36 فیصد حصّہ ڈھانکا ہوا تھا۔ مریخی مدار گرد لیزر الٹیمیٹر (مولا) سے حاصل کردہ اعداد و شمار جس نے مریخ پر موجود تمام میدانوں کو ناپا ہے، اس کا استعمال 1999ء میں کیا گیا جس نے بتایا کہ کسی ایسے سمندر کا پن دھارے 75 فیصد سیارے کو ڈھانک سکتا ہے۔[151] قدیمی مریخ کو اپنی سطح پر مائع پانی کا وجود برقرار رکھنے کے لیے گرم ماحول اور کثیف کرۂ فضائی کی ضرورت ہوگی۔[152][153] مزید براں بڑی تعداد میں وادیوں کے جال سیارے کے ماضی میں آبی چکر کے امکان کا بھی ظاہر کرتے ہیں۔[154]

قدیمی مریخی سمندروں کی موجودگی سائنس دانوں کے درمیان میں وجہ تنازع بنی ہوئی ہے اور قدیمی ساحلی پٹیوں کی توجیہ کو للکارا گیا ہے۔[155][156] دو ارب برس پرانے قیاسی ساحلی پٹی کے ساتھ ایک مسئلہ تو یہ ہے کہ یہ چپٹی نہیں ہے – یعنی یہ خط مستقل ثقلی سکنہ کی اتباع نہیں کرتا۔ اس کی وجہ مریخ کی کمیت کی تقسیم میں ہونے والا فرق بھی ہو سکتا ہے جو شاید آتش فشانی پھٹاؤ یا شہابی ٹکراؤ کے نتیجے میں وقوع پزیر ہوا ہوگا۔[157] ایلی سیم آتش فشانی صوبہ یا ضخیم یو ٹوپیا طاس جو شمالی میدان کے نیچے دفن ہے اس کو بھی ایسا کرنے کا ذمہ دار سمجھا جاتا ہے۔

مارچ 2015ء میں سائنس دانوں نے کہا کہ مریخی قدیم سمندر کے ثبوت وجود رکھتے ہیں، جو سیارے کے شمالی نصف کرہ میں زمین کے آرکٹک سمندر کے حجم کے برابر یا لگ بھگ مریخ کی سطح کے 19 فیصد تک کے تھے۔ یہ تلاش حالیہ مریخ کے ماحول میں پانی اور ڈیوٹیریئم میں پائی جانے والی نسبت کا مقابلہ زمینی پر پائے جانے والی نسبت سے لگا کر کیا ہے۔ زمین کے مقابلے میں مریخ پر ڈیوٹیریئم کی مقدار آٹھ گنا زیادہ ہے، جس سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ مریخ میں پانی کی سطح اچھی خاصی تھی۔ کیوریوسٹی جہاں گرد سے حاصل کردہ نتائج نے پہلے گیل شہابی گڑھے میں ڈیوٹیریئم کے زیادہ نسبت پائی تھی تاہم یہ اس قدر زیادہ نہیں تھی کہ اس سے کسی سمندر کے وجود کے بارے میں قیاس کیا جا سکتا۔ دوسرے سائنس دان خبردار کرتے ہیں کہ اس تحقیق کی ابھی تصدیق ہونا باقی ہے اور کہتے ہیں کہ مریخی ماحولیاتی نمونے نے ابھی تک یہ نہیں ظاہر کیا کہ سیارہ ماضی میں اس قدر گرم تھا کہ مائع پانی کے اجسام کو سہارا دے سکے۔[158]

موجودہ پانی کی برف[ترمیم]

پانی کی برف کا حصّہ مریخی نچلی سطح (اوپر) اور اوپری سطح (نیچے) کے عرض البلد پر جو حال میں موجود ہے۔ بر حری نیوٹرانی اخراج کی بنیاد پر مقادیر پیما کے ذریعہ لگائے گئے حساب سے شرح فیصد کو حاصل کیا گیا ہے۔ اس بہاؤ کو2001ء مریخی مہم کے خلائی جہاز پر لگے ہوئے نیوٹران کے طیف پیما سے ناپا گیا۔

مریخی مہم نیوٹران طیف پیما اور گیما شعاع طیف پیما سے سیاروی طور پر بڑی تعداد میں ہائیڈروجن کو سطح پر پایا گیا ہے۔[159] یہ سمجھا جاتا ہے کہ برف کی سالمی ساخت میں یہ ہائیڈروجن ضم ہو گئی ہوگی اور مقادیر پیما کے ذریعہ لگائے گئے حساب سے کیے گئے مشاہدے میں بہاؤ کو پانی کی برف میں بدل کر مریخ کے اوپری میٹر میں مرتکز کر دیا گیا۔ اس عمل نے بتایا کہ برف نہ صرف کافی جگہ پھیلی ہوئی ہے بلکہ حالیہ مریخ کی سطح پر کافی فراواں ہے۔60درجہ سے نیچے عرض البلد پر برف کئی علاقوں میں ٹکڑوں میں مرتکز ہے بطور خاص ایلی سیم آتش فشاں، میدانی سبیا اور میدانی سرینم کے شمال مغرب میں اور زیر زمین میں برف 18 فیصد تک مرتکز ہو سکتی ہے۔ 60 درجے سے اوپر کے عرض البلد میں برف کثرت سے ہے۔ پولوارڈ کے 70 درجے عرض البلد پر برف کا ارتکاز ہر جگہ لگ بھگ 25 فیصد کا ہے اور یہ قطبین پر جا کر تو 100 فیصد ہو جاتا ہے۔[160] حال ہی میں شراڈ اور مارسس ریڈار کے صوتی آلات نے اس قابل ہونا شروع کر دیا ہے کہ بتا سکیں کہ سطح کے خدوخال برف سے مالا مال ہیں یا نہیں۔ مریخ کی سطح کی حالیہ صورت میں برف کے غیر استحکام پزیر ہونے کے بارے میں معلوم ہونے کی وجہ سے یہ سمجھا جاتا ہے کہ لگ بھگ تمام برف لازمی طور پر چٹان کی پرت یا دھول کی پرت سے ڈھکی ہوئی ہوگی۔

مریخی مہم نیوٹران طیف پیما کے مشاہدات بتاتے ہیں کہ اگر مریخی سطح کے بالا بحر میں موجود تمام برف برابر پھیلی ہوئی ہوگی تو یہ کم از کم 14 سینٹی میٹر کی پانی کی سیاروی سطح کے برابر ہوگی – بالفاظ دیگر یہ اوسطاً مریخی سیاروی سطح لگ بھگ 14 فیصد پانی کا ہے۔[161] دونوں قطبین میں پھنسی ہوئی برف 30 میٹر پانی کی سیاروی سطح کے برابر ہے اور ارضی شکلہ ثبوت ارضیاتی تاریخ کے مقابلے میں کافی بڑی سطح پر موجود پانی کی مقدار کا بتاتے ہیں جس میں 500 میٹر تک کی گہرائی تک کی سیاروی سطح کے برابر پانی کی مقدار ہے۔ یہ سمجھا جاتا ہے کہ ماضی کے اس پانی کا کچھ حصّہ زیر زمین گہرائی میں چلا گیا ہے جب کہ کچھ خلا میں ہرچند کہ اس عمل کا مفصل کمیتی توازن اب بھی جاننا جانا باقی ہے۔ موجودہ فضائی پانی کا ذخیرہ بطور آب گزر کے برف کی ایک حصّے سے دوسرے حصّے بتدریج ہجرت موسمی اور لمبے عرصے کے دوران میں بہت اہم ہے۔ مقدار کے حوالے سے یہ بہت معمولی ہے اور 10 مائیکرو میٹر سیاروی سطح کے برابر ہے۔

برفیلے پیوند[ترمیم]

28 جولائی 2005ء میں یورپین اسپیس ایجنسی نے ایک ایسے شہابی گڑھے کا اعلان کیا جو جزوی طور پر منجمد پانی سے بھرا ہوا؛[162] کچھ لوگوں نے اس دریافت کو برف کی جھیل سے تعبیر کیا۔[163] یوروپی اسپیس ایجنسی کے مریخی ایکسپریس پر لگے ہوئے ہائی ریزولوشن اسٹیریو کیمرے سے لی ہوئی تصاویر واضح طور پر ایک چوڑی برف کی چادر کو ایک بے نام شہابی گڑھے کے تلے میں دکھا رہی ہیں۔ یہ شہابی گڑھا وسٹیٹس بوریلس میں واقع ہے، یہ جگہ ایک ایسا میدان ہے جو مریخ کے شمالی بعید ارض البلد پر تقریباً 70.5° شمال اور103° مشرق پر پھیلا ہوا ہے۔ شہابی گڑھا لگ بھگ 35 کلومیٹر چوڑا اور 2 کلومیٹر گہرا ہے۔ شہابی گڑھے کے فرش اور پانی کی برف کے درمیان میں اونچائی کا فرق لگ بھگ 200 میٹر کا ہے۔ ای ایس اے کے سائنس دان اس اونچائی کے فرق کے زیادہ ذمہ دار برف کے نیچے موجود ٹیلوں کو بتاتے ہیں جن کو جزوی طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔ اگرچہ سائنس دان اس پیوند کو "جھیل" نہیں گردانتے، پانی کا برف کا یہ پیوند اپنے حجم اور پورے سال وجود رکھنے کی وجہ سے قابل ذکر ہے۔ پانی کی برف کے ذخیرے اور برف کی پرتیں سیارے کے مختلف مقامات پر پائی گئی ہیں۔

جس طرح سیارے کی سطح کی تصاویر جدید نسل کے مدار گرد حاصل کر رہے ہیں اس سے بتدریج یہ بات عیاں ہو رہی ہے کہ شاید ممکنہ طور پر برف کے مزید پیوند مریخی سطح پر بکھرے ہوئے ہوں گے۔ برف کے یہ نام نہاد پیوند اکثر مریخ کے وسطی عرض البلد (تقریباً استواء کے 30 تا 60° شمال/ جنوب ) میں پائے جاتے ہیں۔ مثال کے طور پر کافی سائنس دان اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ ان عرض البلد پٹیوں میں پھیلے ہوئے خدوخال کو بطور " عرض البلد پر انحصار کرنے والے غلاف" یا " "میدان میں چپکے ہوئے" سے بیان کیا جاتا ہے جو مٹی و دھول سے اٹے ہوئے برف کے پیوند ہیں اور آہستہ آہستہ انحطاط پزیر ہو رہے ہیں۔ دھول کی ایک چادر، تصویر میں نظر آنے والی مدھم سطح جو برف کی طرح منعکس نہیں ہو رہی اور برف کے پیوندوں کو لمبے عرصے تک مکمل تبخیر ہوئے بغیر، دونوں وجوہات کو بیان کرنے کے لیے درکار ہے۔ یہ پیوند بطور پراسرار نہروں کے بہاؤ جیسے نالوں کے ممکنہ پانی کے وسیلے کے طور پر ان عرض البلد کے علاقوں میں بیان کیے جاتے ہیں۔

استوائی منجمد سمندر[ترمیم]

سطح کے خدوخال جنوبی ایلی سیم پلانیشیا میں دریافت ہوئے موجودہ جمی ہوئی برف سے میل کھاتے ہیں ۔30 میٹر سے 30 کلومیٹر کے درمیان میں کی بظاہر نظر آنے والی پرتیں نہروں میں پائی گئی ہیں جو شمالی سمندر جتنے چوڑے اور گہرے سیلابی علاقوں تک جاتی ہیں۔ پرتوں میں ٹوٹ پھوٹ اور گھماؤ کے نشان موجود ہیں جو واضح طور پر ان کو کہیں اور مریخ کی سطح پر پائے جانے والی لاوا کی پرتوں سے ممتاز کرتے ہیں۔ سیلاب کا ماخذ قریبی ارضیاتی شگاف سر بیرس مجوف سمجھا جاتا ہے جس نے پانی و لاوا کو 20 لاکھ سے ایک کروڑ برس تک کے درمیان میں اگلا تھا۔ یہ قیاس کیا جاتا ہے کہ پانی سر بیرس مجوف میں موجود تھا اس کے بعد یہ جمع ہو کر نچلے میدانی سطح پر جم گیا اور ہو سکتا ہے کہ وہ جھیلیں اب بھی موجود ہوں۔[164] تمام کے تمام سائنس دان ان نتائج سے متفق نہیں ہیں۔[165][166]

قطبی برفیلی ٹوپیاں[ترمیم]

مریخی سیاروی سرویر نے شمالی موسم گرما کے شروع میں مریخی شمالی قطب کی برفیلی ٹوپی کی یہ تصویر حاصل کی ہے۔

دونوں شمالی قطبی ٹوپی (پلانم بوریم) اور جنوبی قطبی ٹوپی (پلانم اوسٹریل) کے بارے میں سمجھا جاتا ہے کہ ان کی موٹائی سردیوں میں بڑھتی ہے جبکہ جزوی طور پر گرمیوں میں ان میں عمل تصعید وقوع پزیر ہوتا ہے۔ 2004ء میں مریخی ایکسپریس سیارچے پر لگے ہوئے مار سس ریڈار آواز پیما نے جنوبی قطبی ٹوپی کو ہدف بنایا اور اس نے وہاں پر 3.7کلومیٹر تک کی گہری برف کی سطح کے نیچے تصدیق کی۔[167] اسی برس اسی جہاں گرد پر لگے ہوئے اومیگا آلے نے بتایا کہ ٹوپی تین مختلف حصّوں میں بٹی ہوئی ہے، جس میں منجمد پانی کی متغیر مقدار عرض البلد کے لحاظ سے موجود ہے۔ تصویر میں دیکھا جانے والا پہلا حصّہ قطبی ٹوپی کا روشن حصّہ ہے، قطب کے درمیان میں کاربن ڈائی آکسائڈ کی برف 85 فیصد جبکہ 15 فیصد برف پانی کی ہے۔ دوسرے حصّہ کھڑی ڈھلوانوں پر مشتمل ہے جس کو فصیل کے نام سے جانا جاتا ہے، جو لگ بھگ پانی کی برف سے بنی ہے، جو قطب کے آس پاس کے میدانی علاقوں میں حلقہ بناتی ہوئی قطب سے دور جاتی ہے۔ تیسرا حصّہ وسیع دائمی زیر سطحی برف پر مشتمل ہے جو اس فصیل سے دسیوں ہزار ہا کلومیٹر دور تک کھینچا ہوا ہے اور اس وقت تک قطب کا حصّہ نہیں سمجھا گیا جب تک سطح کے اجزاء کا تجزیہ نہیں کیا گیا۔[168] ناسا کے سائنس دانوں نے حساب لگایا کہ اگر جنوبی برفیلی ٹوپی میں موجود برف کی مقدار کو پگھلایا جائے تو یہ اتنی ہوگی کہ پورے سیارے کی سطح کو 11 میٹر کی گہرائی تک ڈھانک لے گی۔[169] دونوں قطبین اور سیارے کی وسیع سطح کے مشاہدے بتاتے ہیں کہ اگر اس کی سطح کی تمام برف کو پگھلا دیا جائے تو پانی کی سیاروی سطح کی 35 میٹر گہری تہ بن جائے گی۔

مریخ کے شمالی قطب کی برفیلی ٹوپی کا سیارچے کے آواز پیما ریڈار سے اخذ کردہ عمودی حصّہ۔

جولائی 2008ء میں ناسا نے اعلان کیا کہ فینکس خلائی گاڑی نے پانی کی برف کی موجودگی کی تصدیق اپنے اترنے کی جگہ سے قریب شمالی قطبی ٹوپی (68.2° عرض البلد) پر کی ہے۔ سطح سے حاصل ہونے والا یہ برف کی موجودگی کا پہلا براہ راست ثبوت تھا۔[170] دو برس بعد، مریخی پڑتال گر مدار گرد پر لگے اتھلے ریڈار نے شمالی قطبی ٹوپی کی پیمائش کی اور اندازہ لگایا کہ ٹوپی پر پانی کی برف کل مقدار821٫000 مکعب کلومیٹر (197٫000 مکعب میل) ہے۔ یہ مقدار زمین پر موجود گرین لینڈ کی برف کی چادر کے 30 فیصد کے برابر ہے یا اس قدر ہے کہ مریخ کی سطح کو 5.6 میٹر تک ڈھانپ لے۔[171] دونوں قطبی ٹوپیوں نے کثیر باریک اندرونی پرت کو اس وقت ظاہر کیا جب ان کا تجزیہ ہائیرائز اور مریخی سیاروی سرویر امیجری نے کیا۔ کئی محققین نے اس پرت کا استعمال کرتے ہوئے کوشش کی کہ ٹوپیوں کی ساخت، تاریخ اور بہاؤ کے خصائص کو سمجھ سکیں اگرچہ کہ ان کی توضیح صاف گو نہیں تھی۔[172]

انٹارکٹکا میں واقع جھیل ووستک کو دیکھتے ہوئے کہا جا سکتا ہے کہ مائع پانی مریخ پر شاید اب بھی وجود رکھتا ہو کیونکہ اگر پانی مریخ پر قطبی برفیلی ٹوپیوں سے پہلے موجود تھا تو یہ ممکن ہے کہ برفیلی ٹوپیوں کے نیچے اب بھی مائع پانی موجود ہو۔[173]

زمینی برف[ترمیم]

کئی برسوں سے اکثر سائنس دان رائے دیتے ہیں کہ کچھ مریخی سطح، زمین کے برفیلے تودوں کے آس پاس کے علاقوں جیسی لگتی ہے۔[174] ان میدانی خدوخال سے مشابہت کے ذریعہ یہ دلیل کئی برسوں تک دی جاتی رہی کہ یہ علاقے سطح زمین کے اندر موجود دائمی برف کے ہیں۔ اس کا مطلب یہ ہوا کہ منجمد پانی سطح کے بالکل عین نیچے موجود ہوگا۔ بلند عرض البلد کی نقش دار میدانوں کی ایک عمومی خاصیت کئی صورتوں میں وقوع پزیر ہو سکتی ہے بشمول پٹیوں اور کثیر الزاویہ اشکال کے۔ زمین پر ان صورتوں کے بننے کی وجہ مٹی کا جمنا اور پگھلنا ہوتا ہے۔[175] مریخ کی سطح کے نیچے بڑی مقدار میں جمے ہوئے پانی کے دوسرے ثبوت بھی ہے جیسے کہ نرم زمین، جس کے گول مقامی جغرافیائی خدوخال ہیں۔[176] نظریاتی حساب اور تجزیئے اس بات کے امکان کی جانب اشارہ کر رہے ہیں کہ یہ خدوخال زمینی برف کے اثر کی وجہ سے بنے ہیں۔ مریخی مہم کے گیما شعاع کے طیف پیما اور فینکس خلائی گاڑی کی براہ راست پیمائش سے حاصل کردہ ثبوت اس بات کو تقویت دیتے ہیں کہ ان میں سے اکثر خدوخال کا قریبی تعلق زمینی برف کی موجودگی کے ساتھ ہے۔[177]

مریخ کے کچھ علاقے مخروطی اشکال سے ڈھکے ہوئے ہیں جو زمین کے ان علاقوں سے ملتے ہیں جہاں لاوا جمے ہوئی برفیلی زمین کے اوپر بہتا ہے۔ لاوے کی حرارت برف کو پگھلا دیتی ہے اور بدل کر بھاپ میں تبدیل کر دیتی ہے۔ بھاپ کی طاقت ور قوّت لاوے سے ہوتی ہوئی نکلتی ہے اور اس قسم کی بے جڑ کی مخروطی اشکال کو بناتی ہے۔ مثال کے طور پر ان خدوخال کو اتھابیسکا ویلس میں تلاش کیا جا سکتا ہے جو مخرج نہروں کے ساتھ بہتے ہوئے لاوے سے تعلق رکھتی ہیں۔ بڑی مخروطی اشکال اس وقت بنتی ہیں جب بھاپ موٹی لاوے کی پرت میں سے گزرتی ہے۔[178]

خول نما مقامی جغرافیہ[ترمیم]

ہیلس چو گوشہ میں بننے والی خول نما ساختوں کے مراحل

مریخ کے کچھ علاقے خول نما شکل کی بھینچی ہوئی صورت کو ظاہر کرتے ہیں۔ ان بھینچی ہوئی ساختوں کے بارے میں گمان یہ ہے کہ شاید یہ انحطاط پزیر برف سے لبریز غلاف کے ذخیرے کی باقیات ہوں گی۔ جمی ہوئی مٹی میں سے برف کی عمل تصعید کے نتیجے میں یہ خول نما ساختیں وجود میں آتی ہیں۔ ایکارس میں شایع ہونے والی ایک تحقیق میں پتا لگا ہے کہ خول نما مقامی جغرافیائی کے قطعہ زمین کو مریخ کی حالیہ ماحول کی شرائط کے اندر ہونے والی سطح زمین کے اندر موجود پانی کی برف کو عمل تصعید کے نتیجے میں کھونے سے حاصل کیا جا سکتا ہے۔ ان کے نمونے اسی طرح کی ساختوں کے بارے میں اس وقت بھی پیش گوئی کرتے ہیں جب زمین میں بڑی مقدار میں دسیوں میٹر گہری خالص برف موجود ہو۔[179] یہ غلاف کا مادّہ ممکنہ طور پر کرۂ فضائی سے نکل کر یہاں جمع ہو گیا ہے کیونکہ برف دھول پر اس وقت جمی ہے جب موسم مریخ کے قطب کے جھکاؤ(نیچے برفانی دور کو دیکھیے) میں ہونے والی تبدیلی کی وجہ سے مختلف ہو گیا تھا۔[180][181] خول نما ساختیں عام طور پر دسیوں میٹر گہری ہوتی ہیں۔ کچھ چند سو سے لے کر چند ہزار میٹر تک پھیلی ہوئی ہوتی ہیں۔ یہ لگ بھگ دائروی یا لمبوتری ہو سکتی ہیں۔ کچھ تو ایسی لگتی ہیں کہ جیسے ایک بڑے بھاری کھڈے والی زمین کی وجہ سے متحد ہو گئی ہوں۔ زمین کو بنانے کا عمل شاید شگاف سے ہونے والی عمل تصعید سے شروع ہوتا ہوگا۔ وہاں اکثر کثیر الاضلاع شگاف موجود ہوتے ہیں جہاں خول نما ساختیں بنتی ہیں اور خول نما جغرافیائی ساختوں کی موجودگی منجمد زمین کے بارے میں عندیہ دیتی ہے۔[177]

یہ خول نما خدوخال سطحی طور پر بے شمار سوراخ والے سوئس پنیر کی طرح کے ہوتے ہیں، جو جنوبی قطبی ٹوپی کے گرد پائے گئے ہیں۔ بے شمار سوراخ والے سوئس پنیر کی طرح کے خدوخال کے بارے میں یہ سمجھا جاتا ہے کہ یہ بجائے پانی کی برف کے ٹھوس کاربن ڈائی آکسائڈ کی پرت کی سطح پر بننے والے سوراخوں کی وجہ سے بنتی ہیں– ہرچند کہ ان سوراخوں کے فرش میں ممکنہ طور پر پانی کی مقدار کافی ہے۔[182]

برفیلے تودے[ترمیم]

5 کلومیٹر چوڑے نظارے میں برفیلے تودوں کی طرح گوشہ کے ذخیرے ڈبے والی گھاٹی میں نیچے سے اوپر کی طرف ہے ۔ سطح پر چٹانوں کا ثلجی ملبے کے ذخیرے ہیں جو برفیلے تودوں کی پیش قدمی کو ظاہر کرتے ہیں۔

مریخ کے کچھ بڑے حصّے یا تو بڑے تودوں کی میزبانی کرتے نظر آتے ہیں یا وہ ثبوت رکھتے ہیں جو حال میں ہم دیکھتے ہیں۔ زیادہ تر بلند عرض البلد کے حصّے بالخصوص اسمینس لاکس چوگوشہ کے بارے میں یہ سمجھا جاتا ہے کہ اب بھی وہ بڑی مقدار میں پانی کی برف رکھتا ہے۔[183][184] حالیہ ثبوت و شواہد نے کافی سیاروی سائنس دنوں کو یہ یقین کرنے پر مجبور کر دیا کہ پانی کی برف اب بھی بطور برف کے تودوں کے مریخ کے وسطی اور بلند عرض البلد میں موجود ہیں جن کی عمل تصعید سے حفاظت غیر حاجز چٹانوں کی پتلی سے تہ یا دھول کرتی ہے۔ جنوری 2009ء میں سائنس دانوں نے ڈیوٹیرو نیلس مینسا کے علاقے میں موجود برف کے تودوں جیسے خصائص جن کو گوشہ دار دھول تہ بند کہتے ہیں، پر کی جانے والی تحقیق ریڈار کی مدد سے کی جس میں انھیں چند میٹرچٹانوں کی دھول کے نیچے جگہ جگہ پھیلی ہوئی برف کے ثبوت ملے ہیں۔ برف کے تودوں کا تعلق منقش میدانوں اور کئی آتش فشانوں کے ساتھ ہوتا ہے۔ محققین نے ہیکاٹس تھولس،[185] عرشیہ مونس، [186] پیوونس مونس [187] اور اولمپس مونس [188] کو برفیلے تودوں کے ذخیرے کے طور پر بیان کیا ہے۔ وسطی اور بلند عرض البلد میں موجود کئی مریخی شہابی گڑھے میں برفیلی تودوں کے ہونے کے بارے میں اطلاعات ہیں۔

رول ویلس دھاری دار فرشی ذخیروں کے ساتھ۔ محل وقوع ہیلس چو گوشہ ہے۔

مریخ پر تودوں جیسے خدوخال کو نقوش کی شکل و صورت، ۔[189] محل وقوع، جس زمین سے اس کا تعلق ہے اور کون سا مصنف اس کی تشریح کر رہا ہے ،کی مناسبت سے بطور بہاؤ کے نقوش، مریخی بہاؤ کے نقوش، گوشہ دار دھول تہ بند ،یا بھری ہوئی دھاری دار وادیوں سے بھی بیان کیا جاتا ہے۔ تمام کے تمام تو نہیں تاہم ان میں سے اکثر برف کے تودے غلاف کے مادّے اورتنگ گھاٹی کی دیواروں میں موجود تنگ گھاٹی سے نسبت رکھتے ہیں۔[190] دھاری دار ذخیرے جن کو بھری ہوئی دھاری دار وادیوں سے بھی جانا جاتا ہے ممکنہ طور پر پتھروں سے ڈھکے ہوئے برفیلے تودے ہیں جو زیادہ تر نہروں کی تہ میں پائے گئے ہیں جو شمالی نصف کرہ میں واقع عربیہ میدان کے منقش میدان میں پائے گئے ہیں۔ ان کی ستہ پر پہاڑیاں اور کھانچے دار مادّہ موجود ہے جو رکاوٹوں کے گرد ٹیڑھا ہو جاتا ہے۔ ہو سکتا ہے کہ دھاری دار تہ کے ذخیرے گوشہ دار دھول تہ بند سے نسبت رکھتے ہوں جن میں مدار گردریڈار پہلے ہی بڑی مقدار میں برف کے ہونے کی تصدیق کر چکے ہیں۔ کئی برسوں سے محققین یہ تشریح کرتے رہے ہیں کہ نقوش جن کو گوشہ دار دھول تہ بند کہتے ہیں اصل میں برفیلے تودوں کا بہاؤ ہیں اور یہ سمجھا جاتا ہے کہ برف ایک غیر موصل پتھروں کی تہ کے نیچے موجود ہے[191][192] نئے آلات کے اعداد و شمار کے ساتھ اس بات کی تصدیق ہو گئی ہے کہ گوشہ دار دھول تہ بند میں لگ بھگ خالص برف موجود ہے جس کو چٹان کی ایک پرت نے ڈھانک رکھا ہے۔

الپائن برفیلے تودے کا بچا ہوا ثلجی ملبے کو پہاڑی سمجھا جاتا ہے۔ محل وقوع اسمینس لاکس چو گوشہ

متحرک برف اپنے ساتھ چٹانی مادّہ لے جاتی ہے اور جب برف غائب ہو جاتی ہے تو وہ باقی رہ جاتا ہے۔ عام طور پر ایسا تودے کے کنارے یا تھوتھنی پر ہوتا ہے۔ زمین پر ایسے نقوش ثلجی ملبہ کہلاتے ہیں، تاہم مریخ پر ان کو عموماً ہم ثلجی ملبے جیسے پہاڑ یا خم دار پہاڑی کہتے ہیں۔[193] کیونکہ مریخ میں برف پگھلنے کی بجائے تصعیدی عمل ہوتا ہے اور کیونکہ مریخ کے کم درجہ حرارت کی وجہ سے برف کے تودے ٹھنڈ کی بنیاد (اپنے تختے پر جم کر ہلنے کے قابل نہیں رہتے)پر ہوتے ہیں، تو ان برفیلے تودوں اور پہاڑیوں کی باقیات جو وہ چھوڑتے ہیں بعینہ ایسے نہیں ہوتے جیسا کہ زمین پر موجود عام برف کے تودے چھوڑتے ہیں۔ بطور خاص مریخی ثلجی ملبے نیچے موجود مقامی جغرافیہ سے خم کھائے بغیر ہی جمع ہوئے ہیں جو اس بات کو ظاہر کرتا ہے کہ مریخی تودوں میں موجود برف عام طور پر جم کر نیچے بیٹھ جاتی ہے اور ہل نہیں سکتی۔ برف کے تودوں کی سطح پر موجود دھول کی پہاڑیاں برف کی حرکت کا اشارہ دیتی ہیں۔ کچھ تودوں کی سطح پر کھردری بناوٹ دفن ہوئی برف میں تصعیدی عمل کی وجہ سے ہوتا ہے۔ برف بغیر پگھلے ہی تبخیر ہو جاتی ہے اور اپنے پیچھے خالی جگہ چھوڑ دیتی ہے۔ اوپر موجود مادّہ خالی جگہ میں منہدم ہو جاتا ہے۔[194] کبھی کبھار برف کے ٹکڑے تودے سے گر کر زمین کی سطح پر دفن ہو جاتے ہیں۔ جب وہ پگھلتے ہیں، تو کم و بیش سوراخ جیسی چیز باقی رہ جاتی ہے۔ کیتلی جیسے سوراخوں کو مریخ میں شناخت کیا گیا ہے۔[195]

مریخ پر برفیلے تودوں کے بہاؤ کے مضبوط شواہد کے باوجودبرفیلے تودوں کے کٹاؤ سے بننے والی زمینی تراش کے بارے میں قائل کرنے کے لیے انتہائی کم ثبوت ہیں مثال کے طور پر یو صورت کی وادیاں، گھاٹی اور دم دار پہاڑیاں، ایریٹس، ڈرملنس وغیرہ۔ زمین پر موجود برفیلے تودوں کے علاقوں میں اس طرح کے نقوش عام ہیں، لہذا مریخ پر ان کی غیر موجودگی ایک ثابت معما ہے۔ زمینی تراش کی اس طرح کی کمی کی وجہ مریخ پر موجودہ برفانی تودوں میں موجود برف کی ٹھنڈ کی بنیا د کی ہیئت کو سمجھا جاتا ہے۔ سیارے پر پہنچنے والی شمسی آفتاب زدگی کی وجہ سے کرۂ فضائی کا درجہ حرارت اور کثافت اور زمینی حرارتی گرمی کا بہاؤ تمام کے تمام زمین کی نسبت مریخ پر کم ہیں۔ نمونہ جات بتاتے ہیں کہ برف کے تودے اور اس کے تختے کے درمیان میں درجہ حرارت کا تعامل جمنے سے نیچے رہتا ہے اور برف حقیقت میں زمین سے نیچے جم جاتی ہے۔ اس کی وجہ سے یہ تختے پر پھسلنے سے بچ جاتی ہے اور اسی کوبرف کی وجہ سے سطح کے کٹاؤ کی قابلیت کو روکنا سمجھا جاتا ہے۔

برفانی دور[ترمیم]

شمالی قطب میں برف اوردھول کی تہ کے ذخیرے

اپنے حالیہ ماضی قریب میں مریخ نے برف کی مقدار اور تقسیم میں بڑے پیمانے پر تبدیلی کو دیکھا ہے۔ زمین پر ایسی تبدیلیوں کو برفانی دور یا برفانی عہد کہا جاتا ہے۔ مریخ کے برفانی دور زمین کے برفانی ادوار سے کافی مختلف ہیں۔ مریخی برفانی دور کے دوران میں قطبین گرم ہو جاتے ہیں، تب پانی کی برف ٹوپیوں کو چھوڑ دیتی ہے اور وسطی عرض البلد میں جا کر ذخیرہ ہو جاتی ہے۔[196] برفیلی ٹوپی سے نمی پست عرض البلد کی طرف پالے یا برف کے گالوں کی صورت میں سفر کرتی ہے۔ مریخ کے کرۂ فضائی میں بریک مٹی کے ذرّات کی ایک بڑی تعداد موجود ہے، پانی کے بخارات ان ذرّات میں تکثیف ہو جاتے ہیں اور پھر پانی کے اضافی وزن کی وجہ سے وہ زمین پر گر جاتے ہیں۔ جب غلافی پرت کے اوپر موجود برف واپس کرۂ فضائی میں جاتی ہے تو یہ اپنے پیچھے دھول چھوڑ دیتی ہے جو باقی بچی ہوئی برف کے لیے بطور حاجز کا کم کرتی ہے۔ برفیلی ٹوپی سے جانے والی پانی کی کل مقدار اس کا صرف کچھ فیصد ہی ہوتی ہے یا یوں کہہ لیں کہ یہ مقدار اس قدر ہوتی ہے کہ پورے سیارے کی سطح کو ایک میٹر تک ڈھک سکتی ہے۔ برف کی ٹوپیوں کی زیادہ تر نمی کا نتیجہ برف و دھول کے آمیزے سے بنے ہوئے موٹے ہموار غلاف کی صورت میں نکلتا ہے۔[197][198] برف سے لبریز یہ چند میٹر موٹا غلاف پست عرض البلد کی زمین کو ہموار کر دیتا ہے، تاہم اس کی ظاہری صورت ناہموار ہوتی ہے۔ گلیشیر بستگی کے ایک سے زیادہ مراحل وقوع پزیر ہوتے ہیں۔[199] کیونکہ موجود دور کے غلاف میں صرف چند شہابی گڑھے ہی موجود ہیں، لہٰذا اس کو کافی نوجوان سمجھا جاتا ہے۔ یہ سمجھا جاتا ہے کہ یہ غلاف نسبتاً حال کے برفانی دور کے دروان بچھا ہے۔

برفانی دور مریخ کے مدار اور جھکاؤ میں تبدیلی کی وجہ سے آتے ہیں، جس کا موازنہ ہم ارضیاتی میلانکووچ چکر سے کر سکتے ہیں۔ مداروی حساب بتاتے ہیں کہ مریخ اپنے محور پر زمین کے مقابلے میں زیادہ ڈگمگاتا ہے۔ زمین کو استحکام اس کے نسبتاً بڑے چاند کی وجہ سے مل جاتا ہے لہٰذا یہ صرف چند درجے تک ڈگمگاتی ہے۔ مریخ اپنا جھکاؤ- جس کو خمیدگی سے جانا جاتا ہے- دسیوں درجے تک بدل سکتا ہے۔ جب یہ خمیدگی زیادہ ہوتی ہے، اس کے قطبین کو زیادہ روشنی اور حرارت براہ راست ملتی ہے؛ اس سے اس کے برفیلی ٹوپیاں گرم ہو جاتی ہیں اور برف کے تصعیدی عمل کی وجہ سے یہ مہین ہو جاتی ہیں۔ ماحول میں تغیر کو بھی اگر جمع کر لیں تو مریخ کے مدار میں یہ انحرافی تبدیلی زمین کے انحراف سے دگنا تک ہو سکتی ہے۔ جب قطب تصعید کے عمل سے گزرتے ہیں تو برف استواء کے قریب دوبارہ جمع ہو جاتی ہے جو ان زیادہ خمیدگی کی نسبت کم شمسی آفتاب زدگی کو پاتی ہیں۔ کمپیوٹر نقول بتاتی ہیں کہ مریخ کے 45 درجے کے جھکاؤ پر برفانی تودوں کو رکھنے والی زمین میں برف کافی جمع ہو جاتی ہے۔[200] 2008ء میں ہونے والی تحقیق ایمیزونی گلیشیر بستگی کے آخری دور کے دوران مریخ کی سرحد کو دو حصّوں میں تقسیم کرنے کی جگہ پر کثیر برفانی مراحل کے بارے میں ثبوت دیتی ہے۔[201]

موجودہ بہاؤ کے شواہد[ترمیم]

نیوٹن شہابی گڑھے میں ڈھلوان پر ہونے والے موسم گرما کے بہاؤ۔
شاخ دار آبی درے
گہرے آبی دروں کے گروہ

خالص مائع پانی مستحکم صورت میں مریخ کی ستہ پر اپنے موجودہ فضائی دباؤ اور کم درجہ حرارت کے ساتھ بجز کچھ نچلے علاقوں میں چند گھنٹوں کے نہیں قائم رہ سکتا۔[202] لہذا ارضی معما 2006ء میں اس وقت شروع ہوا جب ناسا پڑتال گر مدار گرد سے حاصل کردہ مشاہدات نے آبی درے کے ذخیروں کو ظاہر کیا جو دس برس پہلے موجود نہیں تھے، ممکنہ طور پر یہ مائع نمکین پانی مریخ کے گرمیوں کے موسم کے دوران میں کبھی بنے تھے۔[203][204][205] یہ تصاویر دو شہابی گڑھوں سیرینم میدان اور قنطورس مونٹیس کی تھیں جس میں بظاھر ایسا نظر آ رہا تھا کہ مریخ میں 1999ء تا 2001ء کے دوران میں کسی وقت مائع پانی سطح پر بہا تھا۔[206][207][208]

سائنس دانوں کے درمیان میں اس بات پر اختلاف ہے کہ آیا یہ آبی درے مائع پانی سے بنے ہیں یا نہیں۔ یہ بھی ممکن ہے کہ آبی درے ایسے بہاؤ سے بنے ہوں گے جو خشک ہوں گے،[209] یا شاید کاربن ڈائی آکسائڈ سے ہموار ہوئی ہوگی۔[210][211] اگر آبی درے سطح پر بہنے والے پانی سے بنے تو پانی کا اصل ماخذ اور اس حرکت کے پیچھے نظام صحیح طرح سے نہیں سمجھا گیا ہے۔[212]

اگست 2011ء میں ناسا نے جنوبی نصف کرہ میں شہابی گڑھوں کے کنارے چٹانی سطح سے ابھرا ہوئی ساختوں کے نیچے کھڑی ڈھلوانوں پر موجودہ موسمی تبدیلی کا اعلان کیا۔ یہ دریافت نیپالی سند فضیلت حاصل کرنے والے طالبعلم لوجیندرا اوجھا نے کی تھی۔[213] یہ گہری دھاریاں جن کو اب باز گرد ڈھلانی خط کہتے ہیں مریخی موسم گرما کے گرم ترین حصّے میں ڈھلوانوں کے نیچے بنتے ہوئے دیکھی گئی ہیں، اس کے بعد یہ بتدریج سال کے دوسرے حصّے میں غائب ہو جاتی ہیں اور سال کے دوران متوالی ہوتی ہیں۔ محققین کہتے ہیں کہ یہ نشان نمکین پانی سے میل کھاتے ہیں جو ڈھلوانوں پر نیچے کی طرف بہتا ہے اور پھر اڑ جاتا ہے اور شاید کسی قسم کی باقیات اپنے پیچھے چھوڑ جاتا ہے۔[214][215] کرزم طیف پیما آلے نے اس وقت سے آبیدہ نمک کے براہ راست مشاہدات کے ہیں جو اسی وقت ظاہر ہوتے ہیں جب یہ متوالی ڈھلوانی خط بنتے ہیں، جس سے 2015ء میں اس بات کی تصدیق ہوئی کہ یہ خط اتھلی مٹی میں سے گزرنے والے مائع نمکین پانی سے ہی بنے ہیں۔ ان خطوط میں آبیدہ کلورائیٹ اور پرکلوریٹ موجود ہے جس میں مائع پانی کے سالمے موجود ہیں۔[216] یہ خطی بہاؤ پہاڑی سے نیچے مریخی موسم گرما میں بہتے ہیں جب درجہ حرارت -23 سیلسیس (-10 فارن ہائیٹ ) سے اوپر ہوتا ہے۔[217] بہرحال پانی کا ماخذ اب بھی نامعلوم ہے۔[218][219]

سکونت پذیری کی جانچ[ترمیم]

حیات کے بارے میں جانا جاتا ہے کہ اس کو مائع پانی کی ضرورت ہوتی ہے، تاہم صرف یہ ایک شرط ہی حیات کے لیے ضروری نہیں ہے۔۔،[220][221][222] حیات کی شرائط کے لیے پانی، توانائی کے ذرائع، خلیات کی نشو و نما کے ضروری مادّے سب کے سب ایک موزوں ماحول کے ساتھ درکار ہیں[223] ماضی میں مریخ کی زمین پر کبھی بہنے والے پانی، غذائیت بخش مادّے اور پہلے سے دریافت کیے گئے ماضی کے مقناطیسی میدان جو سیارے کو کائناتی اور شمسی اشعاع سے محفوظ رکھتے تھے[224][225] یہ تمام کے تمام ثبوت مل کر بتاتے ہیں کہ مریخ میں حیات کو سہارا دینے والا ماحول ہو سکتا تھا۔ یہاں یہ بات واضح کرنا ضروری ہے کہ مریخ کو ماضی میں قابل سکونت پانے کا مطلب یہ نہیں ہے کہ مریخی حیات کبھی وہاں حقیقت میں وجود رکھتی ہو۔

ALH84001شہابیے کے ٹکڑے پر برقی خرد بین سے دیکھنے پر جرثومے کی طرح کی ساخت دکھائی دے رہی ہے۔

جب وہاں پر ایک مقناطیسی میدان ہو تو ماحول شمسی ہوا سے ہونے والے کٹاؤ سے محفوظ رہتا ہے اور کثیف کرۂ فضائی کو باقی رہنے کا بھی یقین دلاتا ہے جو سطح پر مائع پانی کے وجود کو قائم رکھنے کے لیے ضروری ہے۔[226][227] مریخی سطح پر قابل سکونت ماحول کا اندازہ لگانے کے لیے دو حالیہ ماحولیاتی طریقے 19 یا 20 عوامل کا استعمال کرتے ہیں، جس میں زیادہ زور پانی کی دستیابی، درجہ حرارت، غذائیت بخش اجزاء، توانائی کے ذرائع اور شمسی بالائے بنفشی اشعاع اور کہکشانی کائناتی اشعاع سے محفوظ رکھنے پر دیا گیا ہے۔ بطور خاص خلیاتی ساختوں پر آئن زدہ تابکاری کا تباہ کن اثر ممکنہ فلکی حیاتیاتی رہائشیوں کی زندگی کے باقی رہنے کے لیے سب سے اہم عمل ہے۔ یہاں تک کہ سطح کے 2 میٹر نیچے تک کوئی بھی خرد جرثومہ اونگھتا ہوا، حالیہ جما دینے والے حالات میں منجمد ہو کر محفوظ ہوگا، اس طرح وہ استحالی طور پر غیر عامل ہوگا اور وقوع پزیر خلیاتی انحطاط کو ہونے پر ٹھیک کرنے کے قابل نہیں ہوگا۔[228]

لہٰذا مریخ میں حیات کی تلاش کی دریافت کی سب سے بہترین جگہ زیر زمین ماحول ہے جس پر ابھی تک تحقیق نہیں کی گئی ہے۔[229][230] ماضی میں وسیع آتش فشانی عمل نے ممکنہ طور پر زیر زمین شگاف اور جوف کو مختلف شکل و صورت میں بنایا ہوگا اور ہو سکتا ہے کہ مائع پانی اس طرح کے زیر زمین جگہوں میں جمع ہوا ہو، جہاں اس نے بڑے نمکین پانی کے ذخیرے بنا دیے ہوں جن میں معدنیات، نامیاتی سالمات اور ارضی حرارتی گرمی بھی شامل ہو- یہ سب مل کر سطح پر موجود شدت کے ماحول سے دور ممکنہ طور پر موجودہ قابل سکونت ماحول مہیا کر سکتے ہیں۔[231][232][233][234]

کھوجیوں سے کی گئی دریافتیں[ترمیم]

مرینیر نہم[ترمیم]

مرینیر نہم سے دیکھا جانا والااسکامندرویلس میں پیچیدہ راستہ۔ اس طرح کی تصویروں کا مطلب ہوتا ہے کہ بڑی مقدار میں پانی کبھی مریخ کی سطح پر بہتا ہوگا۔

1971ء میں مرینیر نہم مریخی مدار گرد سے حاصل ہونے والی تصاویر نے ماضی کے پانی کے پہلے براہ راست ثبوت کو خشک دریائی فرش، آبی دروں (بشمول ویلس مرینیرز، جو ایک 4٫020 کلومیٹر پر پھیلا ہوا نظام ہے)، پانی کے کٹاؤ اور ذخیرے کے ثبوت، موسمی محاذ اور کئی دوسرے ثبوتوں کی صورت میں پہلی مرتبہ ظاہر کیا۔[235] مرینیر نہم سے کی جانے والی دریافتوں کو بعد کے وائکنگ منصوبے نے گہنا دیا۔ عظیم الشان ویلس مرینیرز آبی درے کے نظام کا نام مرینیر نہم کی خدمات کے صلے میں رکھا گیا۔

وائکنگ منصوبہ[ترمیم]

ماجا ویلس میں دھارے کی صورت والا جزیرہ مریخ پر آنے والے بڑے سیلابوں کی جانب اشارہ کرتا ہے۔

عام طور پر بڑی مقدار میں پانی سے بننے والی ارضیاتی اشکال کی دریافت کو کرکے دو وائکنگ مدار گردوں اور دو خلائی گاڑیوں نے مریخ پر پانی کے بارے میں ہمارے علم میں انقلاب برپا کر دیا۔ نہروں کے بڑے بڑے مخرج کئی علاقوں میں پائے گئے ہیں۔ یہ بتاتے ہیں کہ پانی کے سیلاب نے ڈیموں کو توڑ کر، گہری وادیوں کو تراشا، کھانچے دار زمین کو کاٹ کر دریائے فرش میں ڈھالا اور ہزار ہا کلومیٹر کا سفر کیا۔[236] جنوبی نصف کرہ میں بڑے علاقوں میں شاخ دار وادیوں کے جال موجود ہیں، جو اس بات کو ظاہر کرتے ہیں کہ کبھی وہاں بارش ہوا کرتی تھی۔[237] کئی شہابی گڑھے ایسے ظاہر کرتے ہیں جیسے کہ تصادم گیلی مٹی میں ہوا ہو۔ جب وہ بنے تھے، تو شاید مٹی میں موجود برف پگھلی ہوگی، جس سے زمین کو کیچڑ میں بدل دیا ہوگا اور پھر یہ کیچڑ سطح پر پھیل گئی ہوگی۔[238] "منتشر میدان" جیسے علاقوں میں لگتا ہے کہ پانی کی بڑی مقدار ضائع ہو گئی ہوگی جس کی وجہ سے نیچے کی طرف بہنے والی بڑی نہریں بن گئی ہوں گی۔ کچھ تخمینہ جات تو مسیسپی دریا کے بہاؤ کے مقابلے میں دس ہزار ہا گنا طور پر بہتے تھے۔[239] زیر زمین آتش فشانوں نے شاید جمی ہوئی برف کو پگھلا دیا ہوگا؛ اس کے بعد پانی دور بہ گیا ہوگا اور زمین نے منہدم ہو کر منتشر میدانوں کو اپنے پیچھے چھوڑ دیا ہوگا۔ مزید براں ان دونوں وائکنگ خلائی گاڑیوں سے کیے جانے والے عام کیمیائی تجزیے بتاتے ہیں کہ یا تو سطح ماضی میں ظاہر ہوئی ہوگی یا پھر پانی میں مل گئی ہوگی۔[240][241]

مریخی سیاروی مساحت کنندہ[ترمیم]

سائی نس میریڈیانی میں موجود قلمی کچے لوہے کی تقسیم نقشے میں دیکھی جا سکتی ہے۔ ان اطلاعات کو آپرچونیٹی خلائی گاڑی کے اترنے کی جگہ کے حوالے سے ہدف بنانے کے لیے استعمال کیا تھا جس نے ماضی کے پانی کے بارے میں قطعی ثبوت دیکھے۔

مریخی سیاروی مساحت کنندہ کا حرارتی اخراجی طائف پیما ایک ایسا آلہ ہے جو مریخ کی سطح پر جمع ہوئی معدنیات کا تعیین کر سکتا ہے۔ اس آلے نے نیلی مجوف ساخت میں ایک بڑے علاقے (30٫000 مربع کلومیٹر)کی شناخت کی ہے جس میں زبرجد معدن موجود ہے۔ یہ سمجھا جاتا ہے کہ قدیمی سیارچے کے اس تصادم میں جس میں اسیڈس طاس بنا ایسے شگاف پیدا ہو گئے جس میں یہ زبرجد سامنے نکل کر آگیا۔[242] زبرجد کی دریافت اس بات کو تقویت دیتی ہے کہ مریخ کے کچھ حصّے لمبے عرصے سے شدید خشک ہیں۔ استواء کے 60 درجے شمال اور جنوب کے اندر کچھ دوسرے چھوٹے علاقوں میں بھی زبرجد پایا گیا ہے۔[243] کھوجی نے کئی نہروں کی تفتیش کی ہے جس سے معلوم ہوتا ہے کہ مستحکم مائع بہاؤ میں سے دو نانیدی ویلس اور نرگال ویلس میں پائے گئے ہیں۔[244]

نانیدی ویلس کے فرش پر موجود اندرونی نہریں (تصویر کے اوپر) بتاتی ہیں کہ پانی کا بہاؤ کافی لمبے عرصے تک رہا ہوگا۔ تصویر از طرف لونا پالس چوگوشہ۔

مریخی خضر راہ[ترمیم]

خضر راہ خلائی گاڑی نے یومیہ درجہ حرارت کے چکر میں رد و بدل کی پیمائش کی۔ سورج کے طلوع ہونے سے پہلے یہ سرد ترین لگ بھگ -78 سیلسیس درجہ حرارت کے ساتھ ہوتا ہے، جبکہ سب سے زیادہ گرم مریخی دوپہر میں -8سیلسیس درجہ حرارت کے ساتھ ہوتا ہے۔ یہ دونوں شدت کے درجہ حرارت اس میدان کے قریب ہوتے ہیں جو تیزی سے گرم و سرد ہو جاتا ہے۔ اس جگہ پر سب سے زیادہ درجہ حرارت کبھی بھی پانی کے نقطۂ انجماد 0 درجہ حرارت تک نہیں پہنچتا، یہ اس قدر ٹھنڈا ہے کہ خالص مائع پانی سطح پر اپنا وجود برقرار نہیں رکھ سکتا۔

سطح کا دباؤ یومیہ 0.2 ملی بار سے اپر ہوتا ہے تاہم کم سے کم اور زیادہ سے زیادہ یومیہ 2 تک بھی جاتا ہے۔ روزانہ کا اوسطاً دباؤ 6.75 ملی بار کے لگ بھگ سے کم سے کم 6.7ملی بار ہوتا ہے، بمطابق جب کاربن ڈائی آکسائڈ کی زیادہ سے زیادہ مقدار جنوبی حصّے میں تکثیف ہوتی ہے۔ مریخ پر خضر راہ نے جس فضائی دباؤ کی پیمائش کی ہے وہ بہت کم ہے یعنی لگ بھگ زمین کا 0.6 فساد کے قریب اور یہ اتنا نہیں ہے کہ مائع پانی کو سطح پر رہنے کے قابل چھوڑے۔[245]

دوسرے مشاہدات اس بات سے میل کھاتے ہیں کہ پانی ماضی میں موجود رہا ہوگا۔ مریخی خضر راہ کے اترنے کی جگہ پر کچھ چٹانیں ایک دوسرے کے مخالف اس طرح سے ہیں جس کو ماہرین ارضیات کنارہ پوش کہتے ہیں۔ یہ قیاس کیا جاتا ہے کہ ماضی میں زبردست سیلابی پانی نے چٹانوں کو اتنا دھکا دیا ہوگا کہ وہ بہاؤ سے دور ہو گئے ہوں گے۔ کچھ کنکریاں گول ہیں، شاید بہاؤ سے لڑکھڑا کر بن گئی ہوں گی۔ زمین کا کچھ حصّے چھلکے دار ہے شاید ایسے سیال کی وجہ سے جڑ گیا ہوگا جس میں معدنیات ہوں گی۔[246] وہاں پر بادلوں اور دھند کے ثبوت بھی تھے۔

مریخی مہم[ترمیم]

سیمیکن شہابی گڑھے میں پیچیدہ نالیوں کا نظام۔ محل وقوع اسیمینس لاکس چو گوشہ ہے۔

2001ء مریخی مہم نے تصاویر کی صورت میں مریخ پر پانی کے کافی زیادہ ثبوت پائے اور اپنے طیف پیما کے ساتھ، اس نے بتایا کہ زمین کا کافی زیادہ حصّہ پانی سے لبریز تھا۔ مریخ کی سطح کے نیچے اس قدر برف موجود ہے کہ جھیل مشی گن دو مرتبہ اس سے بھر سکتی ہے۔ دونوں نصف کروں میں، 55 درجے عرض البلد سے لے کر قطبین تک، سطح کے بالکل نیچے مریخ میں برف کی بلند کثافت موجود ہے، لگ بھگ ایک کلو مٹی میں 500 گرام پانی کی برف موجود ہے۔ تاہم استواء کے قریب مٹی میں پانی کی مقدار صرف 2 فیصد سے لے کر 10 فیصد تک ہے۔ سائنس دان سمجھتے ہیں کہ اس پانی کی اکثریت معدنیات کی کیمیائی ساخت میں مقید ہے جیسا کہ مٹی اور گندھک کے تیزاب کے نمک میں۔[247][248] ہرچند کہ اوپری سطح میں کچھ فیصد ہی کیمیائی طور پر بندھا ہوا پانی موجود ہے، تاہم صرف چند میٹر گہرائی میں برف موجود ہے جسیا کہ عربیہ میدان، ایمیزونا چو گوشہ اور ایلی سیم چو گوشہ میں دیکھا گیا ہے کہ ان میں بڑی مقدار میں پانی کی برف موجود ہے۔[249] اعداد و شمار کے تجزیات بتاتے ہیں کہ جنوبی نصف کرہ میں پرت دار ساخت ہو سکتی ہے جو نیچے پرت دار ذخیرے کو اب بڑے معدوم ہوئے پانی کے ڈھیر کے بارے میں عندیہ دیتی ہے۔[250]

آرام میں موجود قالب ممکنہ قدیمی پانی کے ماخذ کے بارے میں بتاتے ہیں۔ محل وقوع اوکزیا پالس چو گوشہ ہے۔

مریخی مہم پر لگے ہوئے آلات صرف اوپری مٹی کا تجزیہ کرنے کے قابل ہیں، جبکہ مریخی پڑتال گر مدار گرد میں لگے ہوئے ریڈار چند کلومیٹر گہرائی تک پیمائش کر سکتے ہیں۔ 2002ء میں دستیاب اعداد و شمار کا استعمال کیا تاکہ یہ پتا لگا جا سکے کہ تمام سطح کی مٹی ایک برابر پانی کی تہ سے ڈھکی ہوئی ہے، تو معلوم ہوا کہ یہاں اتنا پانی ہے کہ ایک 0.5 سے لے کر 1.5 کلو میٹر گہری سیاروی پانی کی پرت بن سکتی ہے۔[251]

مہم مدار گرد سے حاصل کردہ ہزار ہا تصاویر اس خیال کو تقویت دیتی ہیں کہ مریخ میں کبھی پانی کی عظیم مقدار اس کی سطح پر بہتی تھی۔ کچھ تصاویر شاخ دار وادیوں کے نمونوں کو ظاہر کرتی ہیں؛ دوسرے کچھ ایسی پرتوں کا بتاتی ہیں جو جھیل کے اندر بنی ہوں؛ بلکہ دریا اور ڈیلٹوں کی بھی شناخت ہو چکی ہے۔[252] کافی برسوں سے محققین سوچتے رہے ہیں کہ برفیلے تودے حاجز چٹان کی تہ کے اندر موجود ہیں۔ بھری ہوئی دھاری دار وادیاں ایسے برفیلے تودوں کو ڈھک کر رکھنے والی چٹانوں کی ایک مثال ہیں۔ ان کو کچھ نہروں کے فرش پر بھی پایا گیا ہے۔ ان کی سطح پر سکڑا ہوا اور مسام دار مادّے بھی موجود ہے جو رکاوٹوں سے ٹیڑھا ہو رہا ہے۔ دھاری دھار فرش کا ممکنہ تعلق گوشہ دار دھول تہ بند سے ہے، جن کے بارے میں مدار میں چکر لگاتے ہوئے ریڈار نے بتایا تھا کہ ان میں بڑی مقدار میں برف موجود ہے۔

فینکس[ترمیم]

زیر زمین دائمی برف کی کثیر الاضلاع ساختیں جن کی تصویر فینکس خلائی گاڑی نے اتاری۔

فینکس خلائی گاڑی نے بھی مریخ کے شمالی علاقوں میں بڑی مقدار میں پانی کی موجودگی کی تصدیق کی ہے۔[253][254] اس کھوج کا اندازہ مدار گردوں سے حاصل کردہ اعداد و شمار اور نظریہ کی مدد سے لگایا گیا تھا[255] جس کی پیمائش مدار سے مریخی مہم کے آلات نے کی تھی۔ 19 جون 2008ء کو ناسا نے اعلان کیا کہ ڈوڈو گولڈی لاکس حصّے میں روشن مادّے کے پانسوں کے حجم کے ڈھیر جس کی روبوٹ کے بازو نے کھودا تھا صرف چار دن میں فضاء میں اڑ گئے، جس سے اس بات کو تقویت ملتی ہے کہ روشن ڈھیر پانی کی برف تھے جو سامنے آنے پر تصعیدی عمل سے گزرے۔ اگرچہ کاربن ڈائی آکسائڈ (خشک برف) بھی موجودہ ماحول میں تصعیدی عمل میں گزر سکتی ہے تاہم یہ ایسا مشاہدہ کیے جانے سے زیادہ کی شرح سے کرتی۔[256] 31 جولائی 2008ء ناسا نے اعلان کیا کہ فینکس نے اپنی اترنے کی جگہ پر پانی کی برف کی موجودگی کی تصدیق کی ہے۔ نمونے کے حرارتی چکر کے دوران، کمیت طیف پیما نے پانی کے بخارات کا سراغ اس وقت لگایا جب نمونے کا درجہ حرارت صفر درجہ سینٹی گریڈ تک جا پہنچا۔ مائع پانی مریخ کی سطح پراس کے موجودہ ماحولیاتی دباؤ اور درجہ حرارت کی وجہ سے وجود نہیں رکھ سکتا، کچھ نچلے علاقوں میں کچھ ہی دیر کے لیے مائع پانی رہ سکتا ہے۔[257]

پرکلوریٹ، جو ایک طاقتور اوکسائیڈ ہے اس کی موجودگی کی مٹی میں تصدیق ہوئی ہے۔ کیمیا جب پانی کے ساتھ ملتا ہے تو پانی کا نقطۂ انجماد کو کم کر دیتا ہے بعینہ اسی طرح جیسے کہ نمک کو سڑکوں پر برف کو پگھلانے کے لیے ڈالا جاتا ہے۔ یہ قیاس کیا جاتا ہے کہ پر کلوریٹ شاید مریکہ پر آج بھی تھوڑی مقدار میں مائع پانی کو بننے کی اجازت دیتا ہوگا اور شاید کھڑی ڈھلوانوں پر مٹی کے کٹاؤ کی وجہ سے بننے والی قابل مشاہدہ تنگ آبی دروں کو بنانے میں مدد دی ہوگی۔

فینکس خلائی گاڑی کے نیچے سے نظر آنے والے منظر میں پانی کی برف کو خلائی گاڑی کے راکٹ کے پیچھے کی طرف سے دیکھا جا سکتا ہے۔

جب فینکس اترا، تو زمین پر زور لگنے کی وجہ سے مٹی بکھری اور برف گاڑی پر پگھل گئی۔ ۔[258] تصاویر بتاتی ہیں کہ ٹکراؤ کی وجہ سے مادّے کی چھینٹیں کھڑی گاڑی پر لگ کر چپک گئیں۔ چھینٹیں اسی شرح سے پھیلیں جو پسیجنے سے میل کھاتی ہیں اور غائب ہونے سے پہلے گہری ہوئیں (ترقیق کے بعد ٹپکنے سے میل کھاتی ہیں) اور بھر ایسا لگا جیسا کہ ایک دوسرے میں ضم ہو گئی ہوں۔ یہ مشاہدات، حر حرارتی ثبوتوں کے ساتھ مل کر محققین کو یہ عندیہ دیتے ہیں کہ یہ چھینٹے اصل میں مائع نمکین قطرے تھے۔[259] دوسری تحقیق بتاتی ہے کہ یہ چھینٹے "برف کے ٹکڑے" بھی ہو سکتے ہیں۔[260][261][262] 2015ء میں اس بات کی تصدیق ہو گئی کہ پرکلوریٹ کھڑی نالیوں پر باز گرد ڈھلوان خطوط بنانے کے لیے اہم کردار ادا کرتا ہے۔[263]

جتنا کیمرا دیکھ سکتا تھا، اترنے کی جگہ چپٹی تھی، تاہم اس کی وضع قطع 2 تا 3 میٹر کے کثیرالاضلاع ساخت جیسی تھی اور ایسی لگن کے ساتھ بندی ہوئی تھی جو 20 سینٹی میٹر تا 50 سینٹی میٹر گہری ہیں۔ یہ ہیئت مٹی میں موجود برف کے درجہ حرارت میں اتار چڑھاؤ کے سبب پھیلنے اور سکڑنے کی وجہ سے بنی تھی۔ خرد بین نے دکھایا کہ کثیر الاضلاع ساختوں کے اوپری حصّے گول و چپٹے ذرّات سے بنے ہیں، شاید کسی قسم کی مٹی ہے۔[264] کثیر الاضلاع ساختوں کے وسط میں سطح کے کچھ انچ نیچے برف موجود ہے اور اس کے کناروں کے ساتھ برف کم از کم 8 انچ گہری ہے۔ جب برف مریخ کے کرۂ فضائی کا سامنا کرتی ہے تو آہستگی کے ساتھ تصعید ہو جاتی ہے۔

برف ریشہ دار بادلوں سے گرتے ہوئے مشاہدہ کی جاچکی ہے۔ کرۂ فضائی میں بادل اس سطح پر بنے تھے جہاں درجہ حرارت لگ بھگ -65 درجے سینٹی گریڈ تھا، لہٰذا بادلوں کو لازمی طور پر کاربن ڈائی آکسائڈ (خشک برف) سے بننے کی بجائے پانی کی برف سے بننا ہوگا کیونکہ کاربن ڈائی آکسائڈ کی برف بننے کے لیے درجہ حرارت کو -120سینٹی گریڈ جتنا ہونا ہوگا۔ مہم کے مشاہدات کے نتیجے میں اب گمان یہ ہے کہ پانی کی برف (ژالہ) اس جگہ پر اس برس بعد میں جمع ہوگی۔[265] مہم کے درمیان میں سب سے زیادہ درجہ حرارت جو مریخی موسم گرما کے دوران میں درج کیا گیا وہ -19.6 سینٹی گریڈ تھا جب کہ سرد ترین درجہ حرارت -97.7 سینٹی گریڈ تھا۔ لہٰذا اس علاقے میں درجہ حرارت میں پانی کے نقطۂ انجماد(0 درجے سینٹی گریڈ) سے کہیں نیچے رہا۔[266]

مریخی کھوجی جہاں گرد[ترمیم]

سطح سے نکلے ہوئے ابھاروں کی قریب سے تصویر
پتلی چٹانوں کی پرتیں جو ایک دوسرے کے متوازی نہیں ہیں۔
قلمی کچے لوہے کے کروچے (چھوٹی گولیاں)
جزوی پیوستہ کروچہ (چھوٹی گولی)

مریخی کھوجی جہاں گرد، اسپرٹ اور آپرچونیٹی نے مریخ کے ماضی میں پانی کے کافی ثبوت حاصل کیے ہیں۔ اسپرٹ جہاں گرد ایک ایسی جگہ پر اترا ہے جس کو جھیل کی تہ سمجھا جاتا تھا۔ جھیل کی تہ لاوے کے بہاؤ سے ڈھکی ہوئی ہے، لہٰذا ابتدا میں بہنے والے پانی کے ثبوتوں کا سراغ لگانا کافی مشکل ہے۔ 5 مارچ 2004ء ناسا نے اعلان کیا کہ اسپرٹ نے پانی کی تاریخ سے متعلق ثبوت ایک چٹان میں پائے ہیں جس کو "ہمفرے" کا نام دیا گیا ہے۔[267]

دسمبر 2007ء میں جب اسپرٹ نے الٹا سفر شروع کیا تو اپنے ساتھ پیچھے ایک ناکارہ پہیے کو بھی کھینچتا چلا گیا، پہیے نے مٹی کی اوپری تہ کو کریدا تو سیلیکا سے لبریز سفید فرش کا ٹکڑا نکلا۔ سائنس دان سمجھتے ہیں کہ یہ لازمی طور پر دو میں سے ایک طریقے سے بنا ہوگا۔[268] پہلا طریقہ تو یہ ہے کہ گرم پانی کے چشمے کے رسوب اس وقت بنتے ہیں جب پانی سیلیکا کا ایک جگہ حل کرتا ہے اور دوسری جگہ لے جاتا ہے (یعنی کہ چشموں کی صورت میں)۔ دوسرا طریقہ یہ ہے کہ تیزابی بھاپ چٹانوں میں موجود شگافوں سے نکل کر ان کو معدنیات سے محروم کر دیتی ہے اور پیچھے صرف سیلیکا باقی بچ جاتا ہے۔[269] اسپرٹ جہاں گرد نے کولمبیا پہاڑی کے گوسف شہابی گڑھے میں پانی کے ثبوت پائے ہیں۔ چٹانوں کے کلووس جماعت میں موسسباور طیف پیما نے گو تھائٹ کا سراغ لگایا[270] جو صرف پانی کی موجودگی میں ہی بنتی ہے۔[271][272][273] اس کے علاوہ لوہا تکسیدی صورت میں،[274] کاربونیٹ سے لبریز چٹانیں بھی ملی ہیں جس کا مطلب یہ کے سیارے کے علاقے کبھی پانی کی میزبانی کرتے تھے۔[275][276]

آپرچونیٹی جہاں گرد کو ایک ایسی جگہ پر بھیجا گیا جہاں بڑی مقدار میں مدار سے کچا لوہا دیکھا گیا تھا۔ کچا لوہا اکثر پانی سے بنتا ہے۔ جہاں گرد نے حقیقت میں پرتی چٹانیں اور سنگ مرمر یا نیل بیری جیسے کچے لوہے کے پتھر دیکھے۔ دوسری جگہ اپنے سفر کے دوران میں آپرچونیٹی نے اینڈیورنس شہابی گڑھے میں واقع برنس چوٹی میں موجود ہوائی ٹیلے کے طبقات کی تفتیش کی۔ اس کے آپریٹروں نے نتیجہ اخذ کیا کہ سطح سے ان نکلے ہوئے ابھاروں کی رکھوالی اور جوڑ کر رکھنے کو اتھلے زیر زمین پانی کے بہاؤ نے بنایا ہے۔ اپنے مسلسل کام کرنے کے برس آپرچونیٹی اب بھی ثبوت بھیج رہا ہے کہ مریخ پر موجود یہ جگہ ماضی میں مائع پانی سے گیلی رہی ہوگی۔[277][278]

مریخی کھوجی جہاں گرد نے قدیمی پانی کے ماحول کے بھی ثبوت حاصل کیے ہیں جو بہت زیادہ تیزابی تھے۔ حقیقت میں آپرچونیٹی نے جو چیز زیادہ دریافت کی یا ثبوت پائے ہیں وہ گندھک کے تیزاب کے ہیں جو حیات کے لیے انتہائی پر آشوب کیمیا ہے۔[279][280] 17 مارچ 2013ء میں ناسا نے اعلان کیا کہ آپرچونیٹی نے مٹی کے ذخائر پائے ہیں جو عام طور پر گیلے ماحول میں بنتے ہیں اور جو معتدل تیزابیت کے قریب ہیں۔ یہ تلاش مزید ثبوت قدیمی گیلے ماحول کے بارے میں دیتی ہے جو ممکنہ طور پر حیات کے لیے ساز گار ہوگی۔

مریخی پڑتال گر جہاں گرد[ترمیم]

ورنل شہابی گڑھے میں موجود ہائی رائز سے دیکھے جانے والے چشمے۔ ماضی کی حیات کے ثبوت کو تلاش کرنے کے لیے یہ چشموں والی جگہیں کافی اچھی ہیں کیونکہ گرم چشمے حیات کی شکل کے ثبوت لمبے عرصے تک محفوظ رکھ سکتے ہیں۔ محل وقوع اوکسیا پالس چو گوشہ ہے۔

مریخی پڑتال گر جہاں گرد ہائی رائز آلے نے کئی تصاویر اتاریں جو اس بات کا عندیہ دیتے ہیں کہ مریخ کے ماضی میں پانی سے متعلق کافی شواہد موجود ہیں۔ ایک اہم دریافت نے قدیمی گرم چشموں کا ثبوت پایا۔ اگر اس میں خرد حیاتیات نے اپنا مسکن بنایا ہوا ہوگا تو اس میں حیاتیاتی نقش پا ضرور موجود ہوں گے۔[281] 2010ء میں ایک تحقیق شایع ہوئی جس نے قوی ثبوت جاری رہنے والے رسوب ساز عمل کے ویلس مرینیر کے قریب کے علاقوں میں فراہم کیے۔ وہاں پر موجود معدنیات کی اقسام پانی سے نسبت رکھتی ہیں۔ مزید براں چھوٹی شاخ دار نہروں کی زیادہ تعداد کافی بڑے پیمانے پر ہونے والے رسوبی عمل کا عندیہ دیتی ہے۔

مریخ پرکئی جگہوں پر پائی جانے والی چٹانیں اکثر بطور پرتوں کے پائی جاتی ہیں جن کو پرت مطبق طبقہ کہتے ہیں۔[282] پرتیں کئی طریقوں سے بنتی ہیں جس میں آتش فشانوں، ہواؤں اور پانی کے ذرائع شامل ہیں۔[283] مریخ پر ہلکے رنگ کی چٹانیں آبیدہ معدنیات جیسے کہ گندھک کا نمک اور مٹی سے نسبت رکھتی ہیں۔[284]

ایسی موف شہابی گڑھے کے مغربی ڈھلوان پر موجود پرتیں۔ محل وقوع نواچس چو گوشہ ہے۔

مدار گرد نے سائنس دانوں کو اس بات کو تعین کرنے میں مدد دی کہ مریخ کی سطح موٹی ہموار غلاف سے ڈھکی ہوئی ہے جس کو برف اور گرد کا آمیزہ سمجھا جاتا ہے۔[285][286] اتھلی زیر زمین کے نیچے برف کے غلاف کو اکثر و بیشتر تبدیل ہونے والے موسم کی وجہ سمجھا جاتا ہے۔ مریخ کے مدار اور جھکاؤ میں تبدیلی پانی کی برف کی تقسیم پر قطبی علاقوں سے لے کر نیچے ٹیکساس جتنے عرض البلد تک زبردست طریقے سے اثر انداز ہوسکتی ہے۔ کچھ مخصوص ماحولیاتی تبدیلیوں کے دوران میں پانی کے بخارات قطبی برف کو چھوڑ دیتے ہیں اور کرۂ فضائی میں داخل ہوجاتے ہیں۔ پانی زمین پر کم عرض البلد پراس وقت واپس چلا جاتا ہے جب برف کے ذخائر دھول کے ساتھ نرمی سے ملتے ہیں۔ مریخ کا کرۂ فضائی باریک ذرّات کی کافی مقدار رکھتا ہے۔ جب پانی کے بخارات ذرّات پر تکثیف ہوتے ہیں تو وہ پانی کے اضافی وزن سے نیچے گر جاتے ہیں۔ جب غلاف کے اوپری تہ پر موجود برف واپس کرۂ فضائی میں جاتی ہے، تو وہ اپنے پیچھے دھول کو چھوڑ دیتی ہے جو بقیہ برف کے لیے حاجز کا کام دیتی ہے۔ 2008ء میں مریخی پڑتال گر مدار گرد میں لگے اتھلے ریڈار سے کی جانے والی تحقیق نے قوی ثبوت گوشہ دار دھول تہ بند کے بارے میں ہیلس پلانیشیا میں دیے اور وسطی شمالی نصف عرض البلد میں برفیلے تودے ہیں جو چٹان کی پتلی تہ سے ڈھکے ہوئے ہیں۔ اس کے ریڈار نے ان گوشہ دار دھول تہ بندوں کے اوپر اور نیچے سے انعکاس کا کافی قوی سراغ لگایا، مطلب یہ کہ خالص پانی کی برف نے زیادہ تر حصّے کو بنایا ہے۔ گوشہ دار دھول تہ بندوں میں پانی کی برف کی دریافت ظاہر کرتی ہے کہ پانی نچلے عرض البلد کی سطح پر بھی پایا جاتا ہے۔

ستمبر 2009ء میں شایع ہونے والی تحقیق بتاتی ہے کہ مریخ پر موجود کچھ نئے شہابی گڑھے خالص پانی کی برف کو دکھاتے ہیں۔[287] کچھ وقت کے بعد برف غائب ہوجاتی ہے اور بخارات بن کر کرۂ فضائی میں چلی جاتی ہے۔ برف صرف چند فٹ گہری ہے۔ برف کی تصدیق مریخی پڑتال گر مدار گرد میں لگے ہوئے بھنچے ہوئے تصویری طیف پیما (کرزم) سے ہوئی تھی۔[288]

کیوریوسٹی جہاں گرد[ترمیم]

ہوتاہ سطحی چٹان – ایک قدیمی بہاؤ کا فرش جس کو کیوریوسٹی جہاں گرد کی ٹیم نے دریافت کیا (14 ستمبر 2012ء) (قریب سے سہ جہتی نسخہ)
مریخ پر سطحی چٹان – میدانی سیلابی بہاؤ کی گاد کا ڈھیر – جو اس بات کی طرف اشارہ کرتا ہے کہ پانی بہاؤ کے ساتھ شدت سے بہتا ہوگا۔

اپنے جاری رہنے والے منصوبوں کے دوران میں ناسا کے کیوریوسٹی جہاں گرد نے مریخ پر واضح دریائی عمل سے بننے والی گاد کو دریافت کیا۔ اس قسم کے سطح سے اوپر کے ابھاروں میں موجود گول پتھروں کے خصائص سابقہ زبردست دریائی بہاؤ کے بارے میں بتاتے ہیں یہ بہاؤ ٹخنے اور کمر کی اونچائی کے درمیان میں گہرے تھے۔ یہ چٹانیں الوویل فین نظام کے نیچے شہابی گڑھے سے اترتے ہوئے پائی گئی ہیں جن کو پہلے مدار سے شناخت کیا گیا تھا۔

2012ء میں اکتوبر کے مہینے میں کیوریوسٹی نے مریخی مٹی کا پہلا ایکس رے انکسار تجزیہ کیا۔ نتائج سے کئی معدنیات بشمول فلسپار، پائیروکسین اور زبرجد کی موجودگی کا معلوم ہوا اور یہ پتا لگا کہ نمونے کی مریخی مٹی اسی طرح کی تھی جیسے کہ موسمی اثر سے بننے والی ہوائی آتش فشاں کی سنگ سیاہ کی مٹی۔ جس نمونے کا استعمال کیا گیا تھا وہ سیاروی دھول کے طوفان سے تقسیم ہوئی اور مقامی باریک دھول تھی۔ اب تک کیوریوسٹی نے جن مادّوں کا تجزیہ کیا ہے ان کے نتائج گیل شہابی گڑھے کے ذخیرے کے ابتدائی تصور سے ہم آہنگ ہیں جس میں ان کو گیلی سے خشک ماحول کے دوران میں درج کیا گیا تھا۔[289]

دسمبر 2012ء میں ناسا نے مطلع کیا کہ کیوریوسٹی نے اپنا پہلا مفصل مٹی کا تجزیہ کیا ہے جس میں پانی کے سالمات، گندھک اور کلورین کی موجودگی مریخی مٹی میں ملی ہے۔[290][291] مارچ 2013ء میں ناسا نے آبیدہ معدنیات جیسا کہ آبیدہ کیلشیئم کے ثبوت کی اطلاع کافی چٹانی نمونوں میں دی جس میں ٹنٹینا چٹان اور سٹون انلئیر چٹان کے ٹوٹے ہوئے ٹکڑے جبکہ جیسے کہ وینس اور نوڈلیس کی دوسری چٹانوں جیسا کہ نور چٹان اور ورنیکی چٹان بھی شامل تھیں۔[292][293][294] جہاں گرد کے ڈین آلے کو استعمال کرتے ہوئے تجزیہ سے 2 فٹ نیچے تک کی گہرائی میں زیر زمین سطح کے نیچے موجود پانی کے ثبوت جس میں پانی کی مقدار 4 فیصد تک کی تھی، جہاں گرد کے براڈبری اترنے کی جگہ سے گلینلج میدان میں واقع یلونائف ساحل کے علاقے میں واپس جاتے ہوئے ملے ہیں۔

26 ستمبر 2013ء میں ناسا کے سائنس دانوں نے مطلع کیا کہ مریخ کے کیوریوسٹی جہاں گرد نے کثیر کیمیائی طور پر بندھے ہوئے پانی (1.5 سے 3 فیصد تک) کا سراغ گیل شہابی گڑھے میں واقع ایولس پالس کے راکنیسٹ علاقے سے حاصل کردہ مٹی کے نمونوں میں لگایا ہے۔[295][296][297][298][299][300] مزید براں ناسا نے دو اہم مٹی کی اقسام کو دیکھا۔ ایک باریک دانے دار مافک قسم کی جبکہ دوسری مقامی بڑے دانے کی فیلسک قسم کی ہے۔[301] مافک قسم مریخی مٹی کی دوسری مٹی اور مریخی دھول جیسی ہے جوآبیدہ مٹی کے بے شکلی مرحلے سے تعلق رکھتی ہے۔ پرکلورائٹ جس کی موجودگی حیات سے متعلق نامیاتی مادّوں کی موجودگی کا سراغ مشکل لگا دیتی ہے اس کا بھی کیوریوسٹی جہاں گرد کے اترنے کی جگہ پر پایا گیا ہے (اور اس کو پہلے بھی مزید فینکس خلائی گاڑی کے قطبی اترنے کی جگہ پر دیکھا گیا ہے) جس سے ایسا لگتا ہے کہ یہ "نمکیات سیاروی طور پر پھیلے ہوئے ہیں"۔ ناسا نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ جاک ایم چٹان جس کا سامنا کیوریوسٹی نے گلنیج کی طرف جاتے ہوئے کیا تھا ایک موگیرائٹ (سنگ سیاہ کی ایک قسم) تھا اور میدانی چٹانوں سے بہت ملتا ہے۔[302]

9 دسمبر 2013ء میں ناسا نے مطلع کیا کہ سیارہ مریخ میں ماضی میں تازہ پانی کی جھیل تھی (جو خرد حیات کے لیے قابل رہائش ماحول رکھ سکتی تھی)۔ یہ ثبوت کیوریوسٹی جہاں گرد سے کیے گئے گیل شہابی گڑھے میں موجود ماؤنٹ شارپ کے قریب ایولس پالس کے میدان کی تحقیق سے حاصل ہوئے۔ 16 دسمبر 2014ء میں ناسا نے مطلع کیا کہ اس کو ایک ایسا سراغ ملا ہے جس میں سیارے مریخ کے کرۂ فضائی میں موجود میتھین میں غیر معمولی اضافہ اور پھر کمی ہوئی ہے؛ مزید براں نامیاتی کیمیائی مادّوں کا سراغ بھی کیوریوسٹی جہاں گرد سے چٹان میں سوراخ کرنے سے حاصل ہونے والے سفوف میں ملے ہیں۔ اس کے علاوہ ڈیوٹیریم کی ہائیڈروجن سے نسبت کی تحقیق بھی یہ بتاتی ہے کہ مریخ کے گیل شہابی گڑھے میں پانی کا زیادہ حصّہ قدیمی دور کے دوران میں شہابی گڑھے میں جھیل کی تہ بننے سے پہلے ہی برباد ہو گیا، اس کے بعد پانی کی بڑی مقدار نے ضائع ہونا جاری رکھا۔[303][304][305]

13 اپریل 2015ء میں نیچر نے نمی اور سطح کے درجہ حرارت کے بارے کیوریوسٹی سے حاصل کردہ اعداد و شمار کی روشنی میں ایک تجزیہ شایع کیا، جس میں مائع نمکین پانی کے سالموں کے ثبوت کو رات میں مریخ کے زیر زمین سطح کے اوپری 5 سینٹی میٹر میں بتایا۔ پانی کی سرگرمی اور درجہ حرارت ان شرائط سے کہیں کم رہا ہے جو چٹانی خرد حیاتیات کے نظام استحالہ کے لیے ضروری ہوتا ہے۔[306][307] 8 اکتوبر 2015ء کو ناسا نے تصدیق کی کہ جھیلیں اور بہتی ہوئی ندیاں گیل شہابی گڑھے میں آج سے لگ بھگ 3 ارب 30 کروڑ سے لے کر 3 ارب 80 کروڑ برسوں کے درمیان میں وجود رکھتی تھیں اور انہوں نے ماؤنٹ شارپ کی نچلی تہوں کو رسوبی گاد بھیج کر بنایا ہے۔[308][309]

نگار خانہ[ترمیم]

دریائی وادیاں اور مخرج نہریں[ترمیم]

نالیاں[ترمیم]

برفیلے تودے[ترمیم]

سطح پر موجود برف[ترمیم]

قدیمی جھیلیں[ترمیم]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. جیکوسکی، بی ایم؛ ہیبرل، آر ایم(1992ء)۔ "مریخ کے پانی کا موسمی برتاؤ "۔ کیفر ایچ ایچ و دیگر میں۔ ٹکسن، اے زی :یونیورسٹی آف ایریزونا پریس۔ صفحہ نمبر 969-1016۔
  2. اوجا، ایل؛ ولہیلم، ایم بی؛ میرچی، ایس ایل؛ مک ایون، اے، ایس؛ رے، جے جے؛ ہینلی، جے؛ ماسی، ایم چوجناکی، ایم۔(2015ء)۔ " مریخ کے باز گرد ڈھلوانی خط میں آبیدہ نمک کے طیفی ثبوت"۔ نیچر جیو سائنس doi:10.1038/ngeo2546
  3. کار ایما ایچ(1996ء)۔ مریخ پر پانی۔ نیویارک: آکسفورڈ یونیورسٹی پریس۔ صفحہ 197۔
  4. ببرنگ، جے۔ پی؛ لینگون، ویس؛ پولٹ؛ فرانکویس؛ جینڈرن، الین؛ گونڈت، بریگٹ؛ برتھی، مچل؛ سوفلٹ، الین؛ دروسرٹ، پیری، کومبس، مچل، بیلوکی، جیانکارلو؛ مروز، وسیلی، مینگ گولڈ، نیکولس؛ شمٹ، برنارڈ؛ ومیگاٹیم،ارارڈ، ایس؛ فورنی، او،مانود، این؛ پولی، جی،؛ انکریناز، ٹی، فوچٹ، ٹی؛ ملکیوری، آر؛ الٹیری، ایف؛ فورمیسانو، وی؛ بونیلو، جی؛ فونٹی، ایس؛ کپاچیونی، ایف، سیرونی، پی؛کوراڈینی،، اے؛ کٹسوف، وی؛ و دیگر۔(2004ء)۔ " مریخ کے جنوبی قطبی ٹوپی میں سدا بہار پانی کی برف کی شناخت"۔ نیچر 428 (6983): 627–630۔ Bibcode:2004Natur.428.۔627B۔ doi:10.1038/nature02461۔PMID 15024393۔
  5. "مریخ کے جنوبی قطب پر پانی"۔ یورپی خلائی ایجنسی (ای ایس اے)۔ 17 مارچ 2004ء۔
  6. "مریخی مہم: کمرۂ خبر"۔ 28 مئی 2002ء۔
  7. فیلڈمین، ڈبلیو سی و دیگر (2004ء)۔" مریخ کی سطح کے قریب سیاروی ہائیڈروجن کی تقسیم"۔ جے۔ ارضیاتی طبیعیاتی تحقیق109۔ Bibcode:2004JGRE.۔10909006F۔doi:10.1029/2003JE002160۔
  8. کریسچن سن، پی آر (2006ء)۔ " مریخ کے قطبین اور دائمی زیر سطحی منجمد زمین پر پانی"۔ ارضی سائنسی جہاں عناصر 3(2):151-155۔
  9. کار، 2006ء، صفحہ- 173۔
  10. ہیچٹ، ایم ایچ (2002ء)۔ "مریخ پر مائع پانی کا عارضی پن"۔ ایکارس 156(2): 373-386۔ Bibcode:2002Icar.۔156.۔373H۔ doi:10.1006/icar.2001.6794۔
  11. ویبسٹر، گائے؛ براؤن، ڈواین (10 دسمبر 2013ء)۔ "ناسا کے مریخی خلائی جہاز نے مزید متحرک سرخ سیارے کا پتا دیا"۔ ناسا۔
  12. "مریخ پر برف اور نمک سے بنا مائع پانی"۔ ارضی طبیعیاتی تحقیقی خطوط (ناسا فلکی حیاتیات)۔ 3 جولائی 2014ء۔
  13. پولاک جے بی (1979ء)۔ " میدانی سیارے میں موسمی تغیر"۔ ایکارس 37 (3): 479–553. Bibcode:1979Icar.۔.37.۔479P۔ doi:10.1016/0019-1035(79)90012-5۔
  14. پولاک جے بی؛ کاسٹنگ، جے ایف؛ رچرڈسن، ایس ایم؛ پولیاکوف، کے (1987ء)۔ "مریخ کی ابتدا میں گرم و مرطوب موسم کی صورت"۔ ایکارس 71 (2): 203–224. Bibcode:1987Icar.۔.71.۔203P۔doi:10.1016/0019-1035(87)90147-3۔
  15. “releases/2015/03/150305140447”۔ sciencedaily.com۔ اخذ کردہ 25 مئی 2015ء۔
  16. ویلانوا، جی؛ مومام ایم؛ نووک، آر؛ کوفل، ایچ، ہارٹو، پی، انکریناز، ٹی؛ ٹوکناگا، اے، خیاط، اے؛ اسمتھ، ایم (2015ء)۔ "مریخی ماحول میں پانی کی شدید ہم جائی بے قاعدگیاں: موجودہ اور قدیمی ذخائر کی تلاش"۔ سائنس۔ doi:10.1126/science.aaa3630۔
  17. بیکر، وی آر؛ اسٹروم، آر جی؛ گولک، وی سی؛ کارجیل، جے ایس؛ کوماٹسو، وی ایس (1991ء)۔ "مریخ پر قدیمی سمندر، برفیلی چادریں اور آبی چکر"۔ نیچر 352(6348): 589–594. Bibcode:1991Natur.352.۔589B۔ doi:10.1038/352589a0۔
  18. پارکر، ٹی جے؛ ساؤنڈر، آر ایس، شینی برگر، دے ایم (1989ء)۔ "مریخ کے مغربی ڈیوٹرونیلس میں سا میں عبوری شکلیات: نچلے/ اونچے میدانوں کے تغیر کے مضمرات"۔ ایکارس 82: 111–145. Bibcode:1989Icar.۔.82.۔111P۔ doi:10.1016/0019-1035(89)90027-4۔
  19. ڈوہم، جے ایم؛ بیکر، وکٹر آر؛ بؤینٹن، ولیم وی؛ فیئرن، البرٹو جی؛ فیرس، جسٹن سی؛ فنچ، مائیکل؛ فرفارو، رابرٹو؛ ہیئر،ٹرینٹ ایم؛ جانز، دڈینیل ایم؛ کارجیل،جیفری ایس؛کارنٹی لیک، سونیتی؛ کیلر، جان؛ کیری، کرس، کم، کیونگ جے؛ کوماٹسو، گورو؛ مہانی، ولیم سی؛ شولزی مکوچ، ڈرک، مارینانجیلی، لوشیا؛ جیان جی؛ رویز، جویر؛ وہیل لاک، شون جے (2009ء)۔ "جی آر ایس ثبوت اور مریخ پر ممکنہ تیسرے ارضیاتی دور کے سمندر"۔ سیاروی اور خلائی سائنس 57 (5–6): 664–684. Bibcode:2009P&SS.۔.57.۔664D۔doi:10.1016/j.pss.2008.10.008۔
  20. "پی ایس آر ڈی: قدیمی سیلابی پانی اور مریخ پر سمندر"۔ Psrd.hawaii.edu۔ 16 جولائی 2003ء۔
  21. "گیما – شعاع کے ثبوت اشارے کرتے ہیں کہ قدیم مریخ میں سمندر تھے"۔ خلائی حوالہ 17 نومبر 2008ء۔
  22. کلفرڈ، ایس ایم؛ پارکر، ٹی جے (2001ء)۔ "مریخی آبی کرہ کا ارتقا: قدیمی سمندر کے مقدر کے مضمرات اور شمالی میدانوں کی موجودہ صورت حال"۔ ایکارس 154: 40–79. Bibcode:2001Icar.۔154.۔.40C۔ doi:10.1006/icar.2001.6671۔
  23. ڈی ایکلی، گائٹانو؛ ہینیک، برائن ایم (2010ء)۔ " ڈیلٹا اور وادیوں کی تقسیم مریخ پر قدیمی سمندر کے ثبوت دیتی ہے" نیچر جیو سائنس 3 (7): 459–463.Bibcode:2010NatGe.۔.3.۔459D۔ doi:10.1038/ngeo891۔
  24. "قدیمی سمندروں نے مریخ کا ایک تہائی حصّہ ڈھانپا ہوا ہوگا"۔ Sciencedaily.com۔ 14 جون 2010ء۔
  25. کار، 2006ء، صفحہ 144–147۔
  26. فسیٹ، سی آئی؛ ڈکسن، جیمز ایل؛ ہیڈ، جیمز ڈبلیو؛ لیوی، جوزف ایس؛ مرچنٹ، ڈیوڈ آر۔ (2010ء)۔ "مریخی ایمیزون پر برفیلے تودے اور برفیلی وادیاں"۔ ایکارس 208 (1): 86–100.Bibcode:2010Icar.۔208.۔.86F۔ doi:10.1016/j.icarus.2010.02.021۔
  27. "ماضی نمائی:10 برس قبل مریخ پر پانی کی دریافت کا اعلان"۔ SPACE.com۔ 22 جون (2000ء)۔
  28. چنگ، کینتھ (9 دسمبر 2013ء)۔ "مریخ پر ایک قدیمی جھیل اور شاید حیات بھی"۔ نیویارک ٹائمز۔
  29. مختلف (9 دسمبر 2013ء)۔ " سائنس – مجموعہ خاص – کیوریوسٹی جہاں گرد مریخ پر۔" سائنس۔
  30. پارکر، ٹی؛ کلفرڈ، ایس ایم بینرڈت، ڈبلیو بی۔ (2000ء)۔ "آرگائیر پلانیشیا اور مریخی مائیاتی چکر" (پی ڈی ایف۔ قمری اور سیاروی سائنس XXXI: 2033۔ Bibcode:2000LPI.۔.۔31.2033P۔
  31. ہائیزنگر ایچ؛ ہیڈ جے (2002ء)۔ " مریخی آرگائیرطاس کی مقام نگاری اور شکلیات: اس کی ارضیاتی اور آبیاتی تاریخ پر مضمرات"۔ پلانٹ۔ اسپیس سائنس۔ 50 (10–11): 939–981. Bibcode:2002P&SS.۔.50.۔939H۔ doi:10.1016/S0032-0633(02)00054-5
  32. سوڈربلوم، ایل اے۔ (1992ء)۔ کیفر، ایچ ایچ؛ ودیگر۔ ای ڈی ایس۔ " طیف پیما سے کیے گئے مشاہدات کی رو سے مریخی سطح کی ہیئت اور معدنی علم: 0.3μm تا 50 μm۔ مریخ میں۔ ٹکسن، اے زی: یونیورسٹی آف ایریزونا پریس۔ صفحہ 557–593. ISBN 0-8165-1257-4
  33. گلوچ، ٹی؛ کرایسٹنسن، پی (2005ء)۔ " منتشر بازو کی ارضیاتی اور معدنی نقشہ سازی: پانی سے لبریز تاریخ کے ثبوت"۔ جے جیوفز۔ ریز 110: E09006.Bibcode:2005JGRE.۔110.9006G۔ doi:10.1029/2004JE002389
  34. ہولٹ، جے ڈبلیو؛ سفاینلی، اے؛ پلوٹ، جے جے؛ ینگ، ڈی اے؛ ہیڈ، جے ڈبلیو؛ فلپس، آر جے؛ کیمبل، بی اے؛ کارٹر، ایل ایم؛ جم، وائی؛ سیو، آر؛ ٹیم، شراڈ (2008ء)۔ "مریخ کے وسطی جنوبی عرض البلد میں واقع ہیلس طاس کے قریب گوشہ دار دھول تہ بند کے اندر برف کی موجودگی کے ریڈار کے صدائی ثبوت" (پی ڈی ایف)۔ قمری اور سیاروی سائنس۔ XXXIX: 2441.Bibcode:2008LPI.۔.۔39.2441۔
  35. ایموس، جوناتھن (10 جون 2013ء)۔"پرانے آپرچونیٹی مریخی جہاں گرد نے چٹان دریافت کیا"۔ ناسا (بی بی سی نیوز)۔
  36. "مریخی جہاں گرد آپرچونیٹی نے چٹان میں مٹی کے سراغ کا تجزیہ کیا"۔ جیٹ پروپلشن لیبارٹری، ناسا۔ 17 مئی 2013ء۔
  37. "عالمگیری نہیں بلکہ مقامی عوامل عظیم مریخی سیلاب کا سبب بنے"۔ پلانٹری سائنس انسٹی ٹیوٹ (اسپیس ریفرنس)۔ 11 ستمبر 2015ء۔ اخذ کردہ 2015-09-12۔
  38. ہیرسن، کے گریم، آر (2005ء)۔ "سطح پر پانی سے بننے والی وادیوں کے جال اور سطح کا کٹاؤ مریخ کی ابتدا میں۔"ارضی طبیعیاتی تحقیقی جریدہ 110: E12S16.Bibcode:2005JGRE.۔11012S16H۔ doi:10.1029/2005JE002455
  39. ہوورڈ، اے؛ مور، جیفری ایم؛ ارون، روسمین پی (2005ء)۔ "ابتدائی مریخ پر وسیع پیمانے پر ہونے والے بہاؤ کا شدید ختم ہوا دور:1۔ وادیوں کے جال کی تراش اور متعلقہ ذخائر"۔ ارضی طبیعیاتی تحقیقی جریدہ 110: E12S16.Bibcode:2005JGRE.۔11012S16H۔ doi:10.1029/2005JE002455
  40. ارون، روسمین پی؛ ہوورڈ، ایلن ڈی، کراڈوک، رابرٹ اے؛ مور، جیفری ایم (2005ء)۔ " "ابتدائی مریخ پر وسیع پیمانے پر ہونے والے بہاؤ کا شدید ختم ہوا دور:2۔ بڑھتا ہوا بہاؤ اور پیلو جھیل کا ارتقا"۔ ارضی طبیعیاتی تحقیقی جریدہ 110: E12S15. Bibcode:2005JGRE.۔11012S15I۔ doi:10.1029/2005JE002460
  41. فسیٹ سی، ہیڈ،III (2008ء)۔ " وادیوں کے جال سے بھرنے والی- کھلے طاس کی مریخ پر جھیل: نوچیان سطح اور زیر سطح مائیات کی تقسیم و مضمرات"۔ ایکارس 198: 37–56. Bibcode:2008Icar.۔198.۔.37F۔ doi:10.1016/j.icarus.2008.06.016
  42. مور، جے؛ ولہلمز، ڈی (2001ء)۔ "مریخ پر ہیلس بطور قدیمی برف سے ڈھکی ہوئی جھیل کی ممکنہ جگہ" (پی ڈی ایف)۔ ایکارس 154 (2): 258–276. Bibcode:2001Icar.۔154.۔258M۔doi:10.1006/icar.2001.6736
  43. ویٹز، سی؛ پارکر، ٹی (2000ء)۔ " نئے ثبوت جو بتاتے ہیں ویلس مرینیرس کے اندرونی ذخائر کھڑے ہوئے پانی کے جسم کی موجودگی بنے ہیں" (پی ڈی ایف)۔ قمری اور سیاروی سائنس XXXI: 1693.Bibcode:2000LPI.۔.۔31.1693W۔
  44. "نئے سراغ بتاتے ہیں کہ قدیمی مریخ گیلا تھا"۔ Space.com۔ 28 اکتوبر 2008ء۔
  45. اسکوئرس، ایس ڈبلیو؛ ودیگر (1992ء)۔ " مریخی مٹی پر برف"۔ کیفر، ایچ ایچ مریخ۔ ٹکسن، اے زی: یونیورسٹی آف ایریزونا پریس صفحہ 523–554. ISBN 0-8165-1257-4۔
  46. ہیڈ، جے مرکانٹ، ڈی (2006ء)۔ شمالی عربیہ میدان میں شمالی وسطی عرض البلد ایمیزونی برفیلے دور کے دوران مریخ پرنوچیان شہابی گڑھے کی دیواروں پر ہونے والی تبدیلی: گوشہ دار دھول تہ بند کی ہیئت اور ارتقا اور ان کا بھری ہوئی دھاری دھار وادیوں سے تعلق اور برفیلے تودوں کا نظام (خلاصہ)۔ قمری۔ سیارہ۔ سائنس – 37۔ صفحہ 1128۔
  47. ہیڈ، جے؛ و دیگر (2006ء)۔ " تغیر اگر مریخی سرحد پر شاخیت کا سبب ایمیزونی وسطی عرض البلد علاقائی گلیشیر بستگی بنی" جیوفز، ریز، خطوط: 33۔
  48. ہیڈ، جے؛ مرکانٹ، ڈی (2006ء)۔ " مریخ کے ایمیزونی دور میں ثبوت برائے عالمگیری پیمانے پر شمالی وسطی عرض البلد میں گلیشیر بستگی: دھول سے اٹے ہوئے تودے اور تودوں سے بھری وادیاں 30 تا 50 شمالی عرض البلد پٹی میں (خلاصہ)"۔ قمری۔ سیارہ۔ سائنس – 37۔ صفحہ 1127۔
  49. لوئس، رچرڈ (23 اپریل 2008ء)۔ "برفیلے تودوں سے معلوم ہوا کہ مریخی ماحول حال میں متحرک ہے"۔ براؤن یونیورسٹی۔
  50. پلوٹ، جیفری جے؛ سفاینلی، علی؛ ہولٹ، جان ڈبلیو؛ فلپس، راجر جے؛ ہیڈ جیمز ڈبلیو؛ سیو، رابرٹو؛ پٹزیگ، نتھانیل ای؛ فریجری، الیسندرو (2009ء)۔ "مریخ کے وسطی شمالی عرض البلد میں واقع گوشہ دار دھول تہ بند میں ریڈار سے حاصل کردہ برف کے ثبوت" (پی ڈی ایف)۔ ارضیاتی طبیعیاتی تحقیقی خطوط 36 (2)۔ Bibcode:2009GeoRL.۔3602203P۔doi:10.1029/2008GL036379۔
  51. وال، مائک (25 مارچ 2011ء)۔ "مریخ پر حیات کی تلاش کرنے والے کرس کار سے سوال و جواب"۔ Space.com۔
  52. ڈارٹنیل، ایل آر؛ ڈسور گھر؛ وارڈ؛ کوٹس (30 جنوری، 2007ء)۔ "مریخی تابکار ماحول کی سطح اور زیر سطح نمونہ گیری: فلکی حیاتیات پر مضمرات" ارضی طبیعیاتی تحقیقی خطوط۔ 34 (2)۔ Bibcode:2007GeoRL.۔34.2207D۔doi:10.1029/2006GL027494۔ خلیاتی ساخت پر آئن زدہ تابکاری ممکنہ فلکی حیاتیاتی رہائشیوں کی زندگی کی بقاء کو محدود کرنے کا ایک اہم عوامل ہے۔
  53. ڈارٹنیل، ایل آر؛ ڈسور گھر؛ وارڈ؛ کوٹس (30 جنوری، 2007ء)۔ "مریخی زیر سطحی آئن زدہ تابکاری: حیاتیاتی نقش پا اور ارضیات"۔ حیاتیاتی ارضیاتی سائنسز 4: 545–558.Bibcode:2007BGeo.۔.۔4.۔545D۔ doi:10.5194/bg-4-545-2007۔ اخذ کردہ 1 جون 2013ء۔ خوابیدہ خلیات یا تخمک پر اس آئن زد تابکار میدان کا مضر اثر اورزیر سطح سالماتی حیاتیاتی نقوش کا ثابت قدم رہنا اور ان کی خصلت نگاری۔[۔۔] سطح سے دو میٹر کی گہرائی میں بھی کوئی بھی جرثومہ خوابیدہ اور موجودہ جما دینے والے ماحول میں منجمد ہی رہے گا اور یوں اس کا استحالہ غیر فعال ہوگا اور اپنے خلیات کی تنزلی کے بعد ان کی مرمت نہیں کر سکے گا۔
  54. ڈی مورائس، اے (2012ء)۔ "مریخ کے لیے ممکنہ حیاتیاتی نمونہ" (پی ڈی ایف)۔ تینتالیسویں قمری و سیاروی سائنسی کانفرنس (2012ء)۔ اخذ کردہ 5 جون 2013ء۔ اس وقت وسیع آتش فشانوں نے ممکنہ طور پر زیر زمین شگاف اور غار مختلف پرتوں میں بنا دیے ہوں گے اور ہو سکتا ہے کہ مائع پانی ان زیر زمین جگہوں پر جمع ہو گیا ہو، جہاں بڑے آب اندوخت بن گئے ہوں گے جس میں نمکین مائع پانی، نمکیاتی نامیاتی سالمات اور ارضی حرارتی گرمی موجود ہوگی – یعنی زمین پر معلوم حیات کے تمام اجزائے ترکیبی وہاں موجود ہوں گے۔
  55. ڈیڈیمس، جان تھامس (21 جنوری 2013ء)۔ "سائنس دانوں کو ایسے ثبوت ملے ہیں کہ جیسے مریخ کی زیر زمین سطح حیات کو اپنی اندر رکھ سکتی ہے"۔ ڈیجیٹل جریدہ – سائنس۔ مریخ کی سطح پر کوئی حیات نہیں پنپ سکتی کیونکہ یہ تابکاری میں ڈوبی ہوئی مکمل جمی ہوئی ہے۔ زیر زمین موجود حیات اس سے محفوظ ہو سکتی ہے – پروفیسر پارنیل۔
  56. اسٹیجیر والڈ، بل (15 جنوری 2009ء)۔ "مریخی میتھین سے معلوم چلتا ہے کہ سرخ سیارہ مکمل طور پر مردہ نہیں ہے۔" ناسا کا گوڈارڈ اسپیس فلائٹ سینٹر (ناسا)۔ اگر میتھین کو مریخی خرد حیات بنا رہی ہے تو امکان ہے کہ وہ سطح سے کافی نیچے رہتی ہوگی، جہاں اب بھی اتنی گرمی ہو سکتی ہے کہ مائع پانی وجود قائم رکھ سکے۔
  57. ناسا کی مریخی کھوجی مہم کا عمومی جائزہ۔ http://www.nasa.gov/mission_pages/mars/overview/index.html
  58. ہارٹمین، 2003ء، صفحہ 11۔
  59. ہارٹمین، 1996ء، صفحہ 35۔
  60. کیفر، ایچ ایچ، جاکوسکی، بی ایم؛ سینڈر، سی (1992ء)۔ " سیارہ مریخ: عہد قدیم سے عہد جدید تک"۔ کیفر ایچ ایچ ودیگر۔ مریخ۔ ٹکسن اے زی: یونیورسٹی آف ایریزونا پریس۔ صفحہ 1-33۔
  61. ہارٹمین، 2003ء، صفحہ 20۔
  62. شیہان، 1996ء، صفحہ 150۔
  63. اسپنرڈ، ایچ منچ، جی؛ کپلان، ایل ڈی (1963ء)۔ "مدیر کے نام خط: مریخ پر پانی کے بخارات کا سراغ"۔ فلکی طبیعیاتی جریدہ 137: 1319. Bibcode:1963ApJ.۔.137.1319S۔doi:10.1086/147613
  64. لیٹن، آر بی؛ مررے، بی سی (1966ء)۔ " مریخ پر کاربن ڈائی آکسائڈ اور دوسرے طیران پزیر مادوں کا برتاؤ"۔ سائنس Science 153 (3732): 136–144. doi:10.1126/science.153.3732.136۔PMID 17831495
  65. لیٹن، آر بی؛ مررے، بی س؛ شارپ، آر پی؛ ایلن، جے ڈی؛ سلوان، آر کے (1965ء)۔ " مرینیر چہارم مریخ کی تصویر کشی: ابتدائی نتائج"۔ سائنس 149 (3684): 627–630.doi:10.1126/science.149.3684.627۔ PMID 17747569۔
  66. کلیورے، اے؛ و دیگر (1965ء)۔ " اخفائی تجربات: مریخ کے کرہ فضائی اور کرۂ روانیہ کی پیمائش کے پہلے براہ راست نتائج۔" Science 149 (3689): 1243–1248.doi:10.1126/science.149.3689.1243۔ PMID 17747455
  67. گروٹزنگر، جان پی (24 جنوری 2014ء)۔ "خصوصی مسئلہ کا تعارف – سکونت پذیری، رکازیات اور نامیاتی کاربن کی مریخ پر تلاش"۔ سائنس 343 (6169): 386–387. Bibcode:2014Sci.۔.343.۔386G۔ doi:10.1126/science.1249944۔
  68. متفرق (24 جنوری 2014ء)۔ " خصوصی اشاعت – فہرست مضامین- مریخ پر قابل سکونت جگہ کی کھوج"۔ سائنس 343 (6169): 345–452۔
  69. متفرق (24 جنوری 2014ء)۔ "خصوصی مجموعہ – کیوریوسٹی - مریخ پر قابل سکونت جگہ کی کھوج"۔ سائنس۔
  70. گروٹزنگر، جے پی؛ و دیگر۔ (24 جنوری 2014ء)۔ " مریخی گیل شہابی گڑھے کے علاقے یلو نائف میں قابل سکونت تالابی بہاؤ کا ماحول"۔ سائنس 343 (6169): 1242777.doi:10.1126/science.1242777۔
  71. روڈریگیز، جے، ایلکسز پی؛ کارجیل ایس؛ بیکر، وکٹر آر؛ گلیک، ورجینیا سی؛ و دیگر (8 ستمبر 2015ء) "مریخی مخرج نہریں: ان کے آب اندوخت کے منبع کس طرح بنتے ہیں اور آیا کیوں یہ اتنی سرعت کے ساتھ خالی ہو جاتے ہیں؟" نیچر – سائنٹفک رپورٹ 5: 13404.doi:10.1038/srep13404۔ اخذ کردہ 2015-09-12۔
  72. اسٹاف (2 جولائی 2012ء) "زمین کی گہرائی میں قدیمی مریخی پانی کی موجودگی"۔ Space.com۔
  73. کراڈوک، آر؛ ہوورڈ، اے (2002ء)۔ "گرم، گیلے ابتدائی مریخ پر ہونے والی بارش کی صورت"۔ جے جیوفز۔ ریز 107: E11. Bibcode:2002JGRE.۔107.5111C۔ doi:10.1029/2001je001505
  74. ہیڈ، جے؛ و دیگر (2006ء)۔ "مریخ کے وسطی عرض البلد میں واقع وسیع وادیائی برفیلے تودوں کے ذخیرے: بعید ایمیزونی بے قاعدگی سے ہونے والی ماحولیاتی تبدیلیوں کے ثبوت"۔ زمین سیارہ۔ سائی لیٹ 241: 663–671. Bibcode:2006E&PSL.241.۔663H۔ doi:10.1016/j.epsl.2005.11.016
  75. میڈلین، جے؛ و دیگر۔ (2007ء)۔ مریخ: شمالی وسطی عرض البلد کے گلیشیر بستگی کے لیے پیش کردہ ماحولیاتی منظرنامہ" قمری سیارہ۔ سائی۔ (خلاصہ) 38۔ صفحہ 1178۔
  76. میڈلین، جے؛ و دیگر۔ (2009ء)۔ "مریخ پر ایمیزونی شمالی وسطی عرض البلد کے گلیشیر بستگی: ایک پیش کردہ ماحولیاتی منظر نامہ" ایکارس 203: 300–405. Bibcode:2009Icar.۔203.۔390M۔doi:10.1016/j.icarus.2009.04.037۔
  77. مسچنا، ایم؛ و دیگر۔ (2003ء)۔ "مریخی پانی اور کاربن ڈائی آکسائڈ کے چکر کے مداری خطوط پر: سادہ طیران پزیر اسکیم کے ساتھ ایک عمومی چکر دار نمونہ کی تحقیق۔" جے۔ جیوفز۔ ریز 108(E6): 5062. Bibcode:2003JGRE.۔108.5062M۔ doi:10.1029/2003je002051۔
  78. اسٹاف (28 اکتوبر 2008ء)۔ "ناسا کا مریخی پڑتال گر مدار گرد نے گیلے مریخ کی تفصیلات کو افشا کیا۔" اسپیس ریفرنس۔ ناسا۔
  79. لونائن، جوناتھن آئی؛ چیمبرز، جان؛ و دیگر۔ (ستمبر 2003ء)۔ "مریخ پر پانی کا ماخذ"۔ ایکارس 165 (1): 1–8. Bibcode:2003Icar.۔165.۔.۔1L۔ doi:10.1016/S0019-1035(03)00172-6۔ اخذ کردہ 10 جون 2013ء۔
  80. سوڈربلوم، ایل اے؛ بیل، جے ایف (2008ء)۔ "مریخی سطح کی چھان بین:1992ءتا 2007ء"۔ بیل جے ایف کی مریخی سطح: ہیئت، علم معدنیات اور طبیعیاتی خصائص۔ کیمبرج یونیورسٹی پریس۔ صفحہ 3 تا 19۔
  81. منگ، ڈی ڈبلیو؛ مورس، آر وی؛ کلارک، آر سی (2008ء)۔ " مریخ پر آبی تغیر"۔ بیل جے ایف کی مریخی سطح: ہیئت، علم معدنیات اور طبیعیاتی خصائص۔ کیمبرج یونیورسٹی پریس۔ صفحہ 519تا 540۔
  82. لیوِس جے ایس (1997ء)۔ نظام شمسی کی طبیعیات اور کیمیا (ترمیم شدہ)۔ سان ڈیاگو، سی اے: اکیڈمک پریس۔ ISBN 0-12-446742-3۔
  83. لاسو، جے؛ و دیگر (2013ء)۔ " مریخی آبی کرہ کی مقداری جانچ"۔ اسپیس سائی۔ ترمیم شدہ۔ 174: 155–212. doi:10.1007/s11214-012-9946-5۔
  84. کلارک، بی سی؛ و دیگر۔ (2005ء)۔ " مریڈیانی پلانم میں واقع سطحی چٹانوں کا کیمیا اور علم معدن۔" زمین سیارہ۔ سائی خطوط 240: 73–94. Bibcode:2005E&PSL.240.۔.73C۔doi:10.1016/j.epsl.2005.09.040۔
  85. بلوم، اے ایل (1978ء)۔ ارضیاتی شکلہ: نوحیاتی دور کی جدید زمینی تشکیل۔ انگل ووڈ کلیفس، این جے: پرنٹس – ہال۔ صفحہ 114۔
  86. بؤینٹن، ڈبلیو وی؛ و دیگر (2009ء)۔ "مریخی فینکس خلائی گاڑی کے اترنے کی جگہ پر چھونے کے پتھروں کے ثبوت"۔ سائنس 325 (5936): 61–4. doi:10.1126/science.1172768۔PMID 19574384۔
  87. گوڈنگ، جے ایل؛ اروڈسن، آر ای؛ زولوٹوف، ایم وائی یو۔ (1992ء)۔ " طبیعیاتی اور کیمیائی موسم کی کفیت"۔ کیفر کی، ایچ ایچ؛ و دیگر۔ مریخ۔ ٹکسن، اے زی: یونیورسٹی آف ایریزونا پریس۔ صفحہ 626–651. ISBN 0-8165-1257-4۔
  88. میلوش، ایچ جے (2011ء)۔ سیاروی سطح کے عوامل۔ کیمبرج یونیورسٹی پریس۔ صفحہ 296.ISBN 978-0-521-51418-7۔
  89. ابراموف، او؛ کرنگ، ڈی اے (2005ء)۔ "مریخ کی ابتدا میں تصادم سے ہونے والی حرحرارتی سرگرمی"۔ جے جیوفز۔ ریز۔ 110: E12S09. Bibcode:2005JGRE.۔11012S09A۔doi:10.1029/2005JE002453۔
  90. شرینک ایم او؛ برازیلٹن، ڈبلیو جے؛ لینگ، ایس کیو۔ (2013ء)۔ " بل کھاتی ہوئی، کاربن اور گہرائی میں رہنے والی حیات"۔ علم معدنیات اور ارضیاتی کیمیا پر جائزہ 75: 575–606. doi:10.2138/rmg.2013.75.18۔
  91. باکوم، مارٹن (مارچ تا اپریل 2006ء)۔ "مریخ پر حیات؟" امریکن سائنٹسٹ۔
  92. چیزیفیر، ای، لنگلائس، بی؛ کوئینسنیلم وائی؛ لبلانک، ایف۔ (2013ء)، "ابتدائی مریخ کے کھوئے ہوئے پانی کا مقدر: بل کھاتی ہوئی جگہوں کا کردار۔"(پی ڈی ایف)، ای پی ایس سی خلاصہ 8: EPSC2013-188۔
  93. ایہلمان، بی۔ ایل؛ مسٹارڈ، جے ایف؛ مرچی، ایس ایل (2010ء)۔ " مریخ پر بل کھائی ہوئی جگہوں کے ذخیروں کی ارضیاتی ترکیب"۔ جیوفز۔ ریز خطوط 37: L06201. Bibcode:2010GeoRL.۔37.6201E۔doi:10.1029/2010GL042596۔
  94. بلوم، اے ایل (1978ء)۔ ارضیاتی شکلہ: نوحیاتی دور کی جدید زمینی تشکیل۔ انگل ووڈ کلیفس، این جے: پرنٹس – ہال۔ صفحہ 120۔
  95. اوڈی، اے؛ و دیگر۔ (2013ء)۔ "مریخ پر زبرجد کی سیاروی چھان بین: غلاف اور پرتوں کی ہیئت کے بارے میں اندرونی معلومات۔" جے جیوگز۔ ریز 118: 234–262. Bibcode:2013JGRE.۔118.۔234O۔doi:10.1029/2012JE004149۔
  96. سوئنڈلم ٹی ڈی؛ ٹریمن، اے ایچ؛ لنڈاسٹارم، ڈی جے؛ برکلینڈ، ایم کے ؛ کوہین، بی اے؛ گریر، جے اے؛ لی، بی؛ اولسن، ای، کے (2000ء)۔ "لفییٹی شہابیے کی جگہ ایڈنگسائٹ میں غیر عامل گیسیں: چند کروڑ برس پہلے تک مریخ میں مائع پانی کے ثبوت"۔ شہابی اور سیاروی سائنس 35 (1): 107–115. Bibcode:2000M&PS.۔.35.۔107S۔ doi:10.1111/j.1945-5100.2000.tb01978.x
  97. گولک، وی؛ بیکر، وی (1989ء) "بہاؤ سے بنی وادیاں اور مریخی قدیمی موسم"۔ نیچر 341(6242): 514–516. Bibcode:1989Natur.341.۔514G۔ doi:10.1038/341514a0۔
  98. ہیڈ، جے، کریسلافسکی، ایم اے؛ آئی وانو، ایم اے؛ ہائیزنگر، ایچ؛ فلر، ای آر؛ پراٹ، ایس (2001ء)۔ "مریخ کی تاریخ کے وسط میں پانی: مولا سے حاصل کردہ اعداد و شمار کی تازہ معلومات"۔ امریکن جیوفزیکل یونین۔ Bibcode:2001AGUSM.۔.P31A02H
  99. ہیڈ، جے؛ و دیگر۔ (2001ء)۔ "مریخ کی سطح پر پانی کے کھڑے اجسام کی کھوج: جب وہ وہاں تھے، تو وہ کہاں گئے اور فلکی حیاتیات کے لیے کیا مضمرات ہیں؟" امریکن جیوفزیکل یونین۔ 21: 03. Bibcode:2001AGUFM.P21C.۔03H۔
  100. ڈیوڈ، لیونارڈ (20 جنوری 2005ء)۔ "مریخی جہاں گرد کی شہابیے کی دریافت نے سوالات اٹھا دیے۔" Space.com۔ اخذ کردہ 10 فروری 2013ء۔
  101. میر، سی (2012ء) مریخی شہابیہ انتخاب؛ نیشنل ایرونا ٹکس اینڈ اسپیس ایڈمنسٹریشن۔http://curator.jsc.nasa.gov/antmet/mmc/
  102. "شیرگوٹی شہابیہ – جے پی ایل، ناسا"۔ ناسا اخذ کردہ 9 دسمبر 2010ء۔
  103. ہملٹن، ڈبلیو کریسچنسن، فلپس آر؛ مکسوین، ہیری وائی (1997ء)۔ "مرتعش طیف پیمائی کا استعمال کرتے ہوئے شہابی علم ہجریات اور علم معدنیات کا تعین۔" ارضیاتی طبیعیاتی تحقیق کا جریدہ 102: 25593–25603. Bibcode:1997JGR.۔.10225593H۔doi:10.1029/97JE01874۔
  104. ٹریمن، اے (2005ء)۔ "نیکلائٹ شہابیہ: مریخ سے آئی اجائيٹ سے لبریز آتشی چٹان"(پی ڈی ایف)۔ کیمی ڈر ارڈی طبیعیاتی کیمیا۔65 (3): 203–270.Bibcode:2005ChEG.۔.65.۔203T۔ doi:10.1016/j.chemer.2005.01.004 اخذ کردہ 8 ستمبر 2006ء۔
  105. مک کے، ڈی؛ گبسن جونیئر، ای کے ؛ تھامس کیپرٹا، کے ایل؛ والی، ایچ؛ رومانک، سی ایس؛ کلیمٹ، ایس جے؛ چلئیر، ایکس ڈی؛ میچلنگ، سی آر؛ زار، آر این (1996ء)۔ "مریخ پر ماضی کی حیات کی تلاش: مریخی شہابیہ AL84001 میں ممکنہ نامیاتی سرگرمی کا نشان"۔ سائنس 273 (5277): 924–930.Bibcode:1996Sci.۔.273.۔924M۔ doi:10.1126/science.273.5277.924۔ PMID 8688069
  106. گبس، ڈبلیو؛ پاول، سی (19 اگست 1996ء)۔ "اطلاع میں غلطی؟"۔ سائنٹفک امریکن۔
  107. "تنازع جاری: مریخی شہابیہ حیات سے چمٹ گیا – واقعی ایسا ہوا ہے؟"۔ SPACE.com. 20 مارچ 2002ء۔
  108. بادا، جے؛ گلوین، ڈی پی؛ مکڈونلڈ، جی ڈی؛ بیکر، ایل (1998ء)۔ "مریخی شہابیے AL84001 میں کی جانے والی درنمو امینو ایسڈس کی تلاش"۔ سائنس 279 (5349): 362–365.Bibcode:1998Sci.۔.279.۔362B۔ doi:10.1126/science.279.5349.362۔ PMID 9430583
  109. رایبرن، پی (1998ء)۔"سرخ سیارے مریخ کے راز ہوئے طشت از بام"۔ نیشنل جیوگرافک (واشنگٹن ڈی سی)۔
  110. مور، پی ؛ و دیگر (1990 ء)۔ نظام شمسی کے نقشے۔ نیو یارک: مچل بیزلے پبلشرز۔
  111. کیفر، ہو ایچ، ایڈیشن۔ (1994 ء) (مریخ نسخہ دوم)۔ ٹکسن: یونیورسٹی آف ایریزونا پریس۔ آئی ایس بی این 0-8165-1257-4۔
  112. برمن، ڈینیل سی ؛ کراؤن، ڈیوڈ اے ؛ بلی ماسٹر، لیزلی ایف (2009 ء)۔ " مریخ کے وسطی عرض البلد میں ہونے والا کٹاؤ "۔ ایکارس 200: 77–95۔ Bibcode:2009Icar۔۔200۔۔۔77B۔doi:10۔1016/j۔icarus۔2008۔10۔026۔
  113. فسٹ، کیلب آئی ؛ ہیڈ، جیمز ڈبلیو (2008 ء)۔ "مریخی وادیوں کے جال کا دور: بچانے والے شہابی گڑھوں کی گنتی سے حاصل ہونے والے پابندی"۔ ایکارس 195: 61–89۔Bibcode:2008Icar۔۔195۔۔۔61F۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2007۔12۔009۔
  114. مالن، مائیکل سی (2010 ء) "1985ء تا 2006ء تک مریخی مدار گرد کے کیمرے کی سائنسی تفتیش کا جائزہ۔ مارس جریدہ 5: 1–60۔ Bibcode:2010IJMSE ۔۔5۔۔۔۔1M۔doi:10۔1555/mars۔2010۔0001۔
  115. " ہوائی مینسا کے قریب پیچ دار پہاڑیاں " Hiroc.lpl.arizona.edu.۔ جنوری 31، 2007 ء۔
  116. زیمبل مین، جے؛ گرفن، ایل (2010 ء)۔ "ہائی رائز سے مریخی میڈوسا مجوف کی ساخت کے نچلے رکن کی پیچ دار پہاڑیوں اور ابھری ہوئی لکیروں والی زمین کی حاصل کردہ تصاویر"۔ ایکارس 205: 198–210۔Bibcode:2010Icar۔۔205۔۔198Z۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2009۔04۔003۔
  117. نیوسوم، ایچ ؛ لانزا، نینا ایل ؛ او لیلہ، این ایم ؛ وائز مین، سینڈرا ایم ؛ روش، ٹیڈ ایل ؛ مارزو، گسپے اے ؛ ٹومابینی، لیویو ایل ؛ اوکوبو، کرس ایچ ؛ اوسٹرلو، مکی ایم ؛ ہیملٹن، وکٹوریا ای ؛ کرمپلر، لیری ایس (2010 ء)۔ " مریخی شہابی گڑھے میاموٹو میں پلٹی ہوئی نہروں کے اجماع " ایکارس 205: 64–72۔ Bibcode:2010Icar۔۔205۔۔۔64N۔doi:10۔1016/j۔icarus۔2009۔03۔030۔
  118. مورگن، اے ایم ؛ ہاورڈ، اے ڈی ؛ ہوبلی، ڈی ای جے ؛ مور، جے ایم ؛ ڈیٹرچ، ڈبلیو ای ؛ ولیمس، آر ایم ای ؛ بر، ڈی ایم ؛ گرانٹ، جے اے ؛ ولسن، ایس اے ؛ مٹسوبارا، وائی (2014 ء)"مریخی سہیکی شہابی گڑھے کے سیلابی باد کش میں تہ نشین گاد اور موسمی ماحول اور اس کا ارضیاتی باد کش کے اتاکاما صحرا سے موازنہ"۔ ایکارس 229: 131–156۔Bibcode:2014Icar۔۔229۔۔131M۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2013۔11۔007۔
  119. ویٹز، سی ؛ ملی کن، آر ای ؛ گرانٹ، جے اے ؛ مک ایون، اے ایس ؛ ولیمس، آر ایم ای ؛ بشپ، جے ایل ؛ تھامسن، بی جے (2010 ء)" مریخی پڑتال گر مدار گرد کے ہلکے رنگوں کی پرتوں کے ذخائر اور ان سے متعلق سطح مرتفع سے متصل ویلس مرینیرس کی سیلابی زمینی ساخت کے مشاہدات"۔ ایکارس 205: 73–102۔ Bibcode:2010Icar۔۔205۔۔۔73W۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2009۔04۔017۔
  120. "ایکارس" 210 (2)۔ سائنس ڈائریکٹ۔ دسمبر 2010 ء۔ صفحہ۔ 539–1000۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010 ء۔
  121. کیبرول، این ؛ گرن، ای، نسخہ (2010 ء)۔ مریخ پر جھیلیں۔ نیو یارک: ایلسویر۔
  122. گولڈ اسپیل، جے؛ اسکوئرس، ایس (2000 ء) "مریخ پر زیر زمین پانی کا رساؤ اور وادیوں کی تشکیل"۔ ایکارس 148: 176–192۔ Bibcode:2000Icar۔۔148۔۔176G۔ doi:10۔1006/icar۔2000۔6465۔
  123. کار، مائیکل ایچ مریخ کی سطح۔ کیمبرج سیاروی سائنس سلسلہ نمبر(6)۔ آئی ایس بی این 978-0-511-26688-1۔
  124. مک کولی، جے 1978ء۔ مریخی چوگوشے کوپریٹس کا ارضیاتی نقشہ۔ یو ایس ارضیاتی متفرقہ نقشوں کی فہرست I-897
  125. نیڈل، ایس ؛ اسکوئرس، اسٹیون ڈبلیو؛ اینڈرسن، ڈیوڈ ڈبلیو (1987ء)۔ ویلس مرینیرس، مریخ میں پرتوں کے ذخائر کے ماخذ اور ان کا ارتقا، "۔ ایکارس 70 (3): 409–441۔Bibcode:1987Icar۔۔۔70۔۔409N۔ doi:10۔1016/0019-1035(87)90086-8۔
  126. مٹسوبارا، یو، ایلن ڈی ہاورڈ اور سارا اے ڈریمونڈ۔۔ "ابتدائی مریخ کا آبیاتی چکر: جھیلوں کے طاس۔" جریدہ جیوفزیکل ریسرچ: سیارے(1991–2012) 116۔E4 (2011)
  127. " قدیمی جھیلوں کے ثبوتوں کو ظاہر کرتی مریخ کی حیرت انگیز و شاندار تصاویر۔"۔ Sciencedaily.com۔ جنوری 4، 2010ء۔
  128. گپتا، سنجیو؛ وارنر، نیکولس؛ کم، ریک؛ لن، یوآن؛ مولر، جان؛ -1#جونگ-، شی- (2010ء)۔ "ہیس پیرین استوائی چونے کے پتھر کی ایریز ویلس میں جھیلیں مریخ پر بطور گرم موسم کے بدلنے کا ثبوت ہیں۔ Geology 38: 71–74. doi:10.1130/G30579.1
  129. براؤن، ڈیوائینی ؛ کولی، اسٹیو؛ ویبسٹر، گائے؛ اگل، ڈی سی (ستمبر 27، 2012ء)۔"ناسا جہاں گرد نے مریخ کی سطح پر پرانی جھیلوں کی تہیں دیکھی ہیں"۔ ناسا۔
  130. ناسا (ستمبر 27، 2012ء)۔ "ناسا کے کیوریوسٹی جہاں گرد نے مریخ پر پرانے نہروں کی تہیں تلاش کی ہیں ویڈیو(51:40)"۔ ناسا ٹیلی ویژن۔
  131. چانگ، الیشیا (ستمبر 27، 2012ء)۔"مریخی جہاں گرد کیوریوسٹی نے قدیمی نہروں کے سراغ پائے ہیں" ایسوسی یٹیڈ پریس۔
  132. "ناسا جہاں گرد نے ایسے حالات کا سراغ لگایا ہے جو مریخ پر کسی قدیم زمانے میں حیات کے لیے ساز گار تھے"۔ ناسا مارچ 12، 2013ء۔
  133. ڈی ایکلی، گیٹانو اور برائن ایم ہینک"ڈیلٹاؤں اور وادیوں کی عالمگیری تقسیم مریخ پر قدیم سمندروں کے مفروضہ کو تقویت دیتی ہے"۔ نیچر جیو سائنس 3.7 (2010ء) 459-463۔
  134. کار، ایم ایچ (1979ء) "مریخ پر ماضی میں سیلابوں کا آنا بند ہوئے آب اندوخت کی وجہ سے آتا تھا۔"(پی ڈی ایف)۔ جے جیوفز۔ ریز۔ 84: 2995–3007۔Bibcode:1979JGR ۔۔۔84۔2995C۔ doi:10۔1029/JB084iB06p02995۔
  135. بیکر، وی ؛ ملٹن، ڈی (1974ء)"مریخ اور زمین پر تباہ کن سیلابوں سے ہونے والا کٹاؤ"۔ ایکارس23: 27–41۔ Bibcode:1974Icar۔۔۔23۔۔۔27B۔ doi:10۔1016/0019-1035(74)90101-8۔
  136. "مریخی سیاروی سرویر MOC2-862 ریلیز"۔ Msss.com. اخذ کردہ جنوری 16، 2012ء۔
  137. اینڈریو ہینا، جیفری سی ؛ فلپس، راجر جے ؛ زوبر، ماریا ٹی (2007ء)۔ "میریڈیانی پلانم اور مریخی سیاروی آبیاتی نظام "۔ نیچر 446 (7132): 163–6۔Bibcode:2007Natur۔446۔۔163A۔ doi:10۔1038/nature05594۔ PMID 17344848۔
  138. ارون؛ روز مین، پی ؛ کراڈوک، رابرٹ اے ؛ ہاورڈ، ایلن ڈی (2005ء) مریخی وادیوں میں واقع اندرونی نہریں: چھوڑے جانے اور بہنے والی چیز کی پیداوار"۔ Geology 33 (6): 489–492۔doi:10۔1130/g21333۔1۔
  139. جیکوسکی، بروس ایم (1999) "پانی، ماحول اور حیات"۔ سائنس 283 (5402): 648–649۔doi:10۔1126/science۔283۔5402۔648۔ PMID 9988657۔
  140. لیمب، مائیکل پی، و دیگر "کیا چشمے گھاٹیوں کو چٹانوں میں کاٹ سکتے ہیں؟" جریدہ جیوفزیکل ریسرچ: سیارے (1991–2012) 111۔E7 (2006)۔
  141. گروٹزنگر، جے پی ؛ آر وڈسن، آر ای ؛ بیل III، جے ایف ؛ کیلون، ڈبلیو؛ کلارک، بی سی ؛ فائیک، ڈی اے ؛ گولومبک، ایم ؛ گریلی، آر ؛ ہیلڈیمین، اے ؛ ہرکن ہوف، کے ای ؛ جولیف، بی ایل ؛ کینول، اے ایچ ؛ مالن، ایم ؛ مک لینن، ایس ایم ؛ پارکر، ٹی ؛ سوڈر بلوم، ایل ؛ شول ڈکسٹین، جے این ؛ اسکوئرس، ایس ڈبلیو؛ ٹوسکا، این جے؛ واٹرس، ڈبلیو اے (نومبر 25، 2005ء)۔"سوکھے سے گیلے ہوائی ذخائر کے نظاموں کی طبقات شناسی اور رسوب شناسی، گَلمُچھ تشکیل، میریڈیانی پلانم" مریخ، زمین اور سیاروی سائنسی خطوط 240 (1): 11–72۔ Bibcode:2005E&PSL 240۔۔۔11G۔doi:10۔1016/j۔epsl۔2005۔09۔039۔ آئی ایس ایس این 0012-821X۔
  142. مچلسکی، جوزف آر ؛ نیلز، پال بی ؛ کواڈروس، جویر؛ پارنیل، جان؛ راجرس، اے ڈی این ؛ رائٹ، شان پی (جنوری 20، 2013ء)۔ "مریخ پر زیر زمین پانی کی سرگرمی اور گہرے حیاتیاتی کرۂ پر اس کے مضمرات"۔ نیچر جیو سائنس 6 (2): 133–138۔Bibcode:2013NatGe۔۔۔6۔۔133M۔ doi:10۔1038/ngeo1706۔ اخذ کردہ جون 17، 2013ء۔ یہاں پر ہم مریخ کی زیر زمین سکونت پذیری کا تصوراتی نمونہ پیش کر رہے ہیں اور ساتھ میں زیر زمین پانی کا گہرے طاس میں جمع ہونے کے ثبوتوں کا جائزہ بھی لے رہے ہیں۔
  143. زوبر، ماریا ٹی (2007ء)۔" سیاروی سائنس:مریخ ضرب کھانے کے دھانے پر" نیچر 447(7146): 785–786۔ Bibcode:2007Natur۔447۔۔785Z۔ doi:10۔1038/447785a۔PMID 17568733۔
  144. انڈریوس ہینا، جے سی؛ زوبر، ایم ٹی؛ آر وڈسن، آر ای؛ وائز مین، ایس ایم (2010ء) "ابتدائی مریخی مائیات: میریڈیانی پلایا ذخائر اور عربیہ میدان کے رسوبی نامچے"۔ جے جیوفز۔ ریز۔ 115: E06002۔ Bibcode:2010JGR E ۔115۔6002A۔doi:10۔1029/2009JE003485۔
  145. مک لینن، ایس ایم ؛ و دیگر (2005ء)۔ تبغیر ہوئی برنس ساخت، میریڈیانی پلانم کا ماخذ و رسوبی چٹانی عمل"۔ سائی۔ لیٹ۔ 240: 95–121۔Bibcode:2005E&PSL 240۔۔۔95M۔ doi:10۔1016/j۔epsl۔2005۔09۔041۔
  146. اسکوئرس، ایس ڈبلیو؛ کینول، اے ایچ (2005ء)" میریڈیانی پلانم پر واقع رسوبی چٹانیں: ماخذ، رسوبی چٹانی عمل اور حیات پر ان کے مضمرات" زمین سیارہ۔ سائی۔ لیٹ۔ 240: 1–10۔Bibcode:2005E&PSL 240۔۔۔۔1S۔ doi:10۔1016/j۔epsl۔2005۔09۔038۔۔
  147. اسکوئرس، ایس ڈبلیو؛ و دیگر (2006ء)"میریڈیانی پلانم پر دو برس : آپرچونیٹیجہاں گرد سے حاصل کردہ نتائج"۔ سائنس 313: 1403–1407۔ doi:10۔1126/science۔۔
  148. وائز مین، ایم؛انڈریوس ہینا، جے سی؛ آر وڈسن، آر ای ؛ مسٹارڈ، جے ایف؛ زبرسکی، کے جے (2011ء) کرزم اعداد و شمارکا استعمال کرتے ہوئے عربیہ میدان میں آبیدہ گندھک کے تیزاب کی تقسیممریخی مائیات پر اس کے مضمرات"۔ بیالیسویں قمری و سیاروی سائنس کانفرنس۔
  149. انڈریوس ہینا، جیفری سی ؛ لیوس، کیون ڈبلیو (2011ء) مریخ کی ابتدائی مائیات: 2۔ نواچیاناور ہیس پیرین دور میں مائیات کا ارتقا"۔ جیوفزیکل جریدہ Research: Planets (1991–2012) 116: E2۔ Bibcode:2011JGR E ۔116۔2007A۔doi:10۔1029/2010je003709۔
  150. کلفورڈ، ایس ایم ؛ پارکر، ٹی جے (2001ء) "مریخی آبیاتی کرہ کا ارتقا: قدیمی سمندروں کے مقدر اور شمالی میدانوں کی موجودہ حالت پر اس کے مضمرات"۔ ایکارس 154: 40–79۔ Bibcode:2001Icar۔۔154۔۔۔40C۔doi:10۔1006/icar۔2001۔6671۔
  151. اسمتھ، ڈی؛ و دیگر (1999ء)"مریخ کے ثقلی میدان: مریخی سیاروی سرویر سے حاصل کردہ نتائج" (پی ڈی ایف)۔ سائنس 284 (5437): 94–97۔ Bibcode:1999Sci۔۔۔286۔۔۔94S۔doi:10۔1126/science۔286۔5437۔94۔ PMID 10506567۔
  152. ریڈ، پیٹر ایل؛ لیوس، ایس آر (2004ء) مریخی ماحول پر نظر ثانی: صحرائی سیارے کا ماحول و کرۂ فضائی(پیپر بیک)۔ چیکسٹر، یو کے : پریکسس۔ آئی ایس بی این 978-3-540-40743-0۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  153. "مریخی شمال کبھی سمندروں سے ڈھکا ہوا تھا"۔ Astrobio.net۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  154. "نئے نقشے مریخ کے قدیمی سمندروں کو تقویت دیتے ہیں"۔ SPACE.com۔ نومبر 23، 2009۔
  155. کار، ایم ؛ ہیڈ، جے (2003ء)"مریخ پر سمندر: مشاہداتی ثبوت اور ممکنہ مقدر کی جانچ"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 108: 5042 ۔Bibcode:2003JGR E۔108۔5042C۔ doi:10۔1029/2002JE001963۔
  156. "مریخی سمندروں کا مفروضہ سامنے آگیا"۔ ناسا فلکی حیاتیات۔ ناسا جنوری 26، 2001ء۔
  157. پیرن؛ ٹیلر، جے؛ و دیگر (2007ء)"بگڑی ہوئی ساحلی پٹیوں کی مقامی جغرافیہ سے حاصل کردہ قدیمی مریخی سمندروں کے ثبوت"۔ نیچر 447 (7146): 840–843۔doi:10۔1038/nature05873۔
  158. کوفمین، مارک (مارچ 5، 2015ء)"مریخ پر سمندر تھے، سائنس دان نئے اعداد و شمار کی روشنی میں کہتے ہیں" نیو یارک ٹائمز۔ اخذ کردہ مارچ 5، 2015۔
  159. بوینٹن، ڈبلیو وی؛ و دیگر(2007ء) "مریخ کے نچلے اور وسطی عرض البلد میں مرتکز، ہائیڈروجن، سلیکان، کلورین، پوٹاشیم، لوہا اور تھوریم"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ: سیارے 112(E12)۔ Bibcode:2007JGR E ۔11212S99B۔ doi:10۔1029/2007JE002887۔
  160. فیلڈمین، ڈبلیو سی؛ پریٹی مین، ٹی ایچ؛ موریس، ایس؛ پلوٹ، جے جے؛ بش، ڈی ایل؛ وینی مین، ڈی ٹی؛ ٹوکر، آر ایل (2004ء)"مریخ پر سطح کے قریب ہائیڈروجن کی عالمگیری تقسیم"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 109: E9۔ Bibcode:2004JGR E ۔109۔9006F۔doi:10۔1029/2003JE002160۔ E09006۔
  161. فیلڈمین، ڈبلیو سی؛ و دیگر (2004ء) "مریخ پر سطح کے قریب ہائیڈروجن کی عالمگیری تقسیم"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 109: E9۔ Bibcode:2004JGR E ۔109۔9006F۔doi:10۔1029/2003JE002160۔ E09006۔
  162. "مریخی شمالی قطب میں واقع شہابی گڑھے میں پانی کی برف" (پریس ریلیز)۔ ای ایس اے جولائی 27، 2005ء۔
  163. "برف کی جھیلیں سرخ سیارے پر پائی گئی"۔ بی بی سی۔ جولائی 29، 2005ء۔
  164. مرے، جان بی ؛ و دیگر (2005ء)"مریخی ایکسپریس کے بہتر معیار کے اسٹیریو کیمرے سے لی گئی مریخی خط استواء کے قریب منجمد سمندر کی تصاویر"۔ نیچر 434 (7031): 352– 356۔Bibcode:2005Natur۔434۔۔352M۔ doi:10۔1038/nature03379۔ PMID 15772653۔ یہاں ہم پیش کرتے ہیں بہتر معیار کی یورپی اسپیس ایجنسی کے مریخی ایکسپریس خلائی جہاز کے اسٹیریو کیمرے سے لی گئی تصاویر جو اس بات کا اشارہ دیتے ہیں کہ شاید اس طرح کی جھیلیں کبھی وجود رکھتی تھیں۔
  165. اروسی، آر؛ کارٹاکی، ایم ؛ سیک چیٹی، اے ؛ فیڈریکو، سی ؛ فلامینی، ای ؛ فریجری، اے ؛ ہولٹ، جے ڈبلیو؛ مرینا انجیلی، ایل ؛ نوچیز، آر ؛ پیٹینلی، ای ؛ فلپس، آر جے ؛ پیکارڈی، جی ؛ پلوٹ، جے جے ؛ سفاینلی، اے ؛ سیو، آر (2008ء)۔ " سربیرس پالس،مریخ میں واقع ممکنہ منجمد سمندر کے اوپر سے زیر سطحی ریڈارکی صوتی موجیں "(پی ڈی ایف)۔ قمری اور سیاروی سائنس۔ XXXIX: 1۔Bibcode:2007AGUFM P14 B ۔05O۔ doi:10۔1109/ICGPR 2010۔5550143۔ آئی ایس بی این 978-1-4244-4604-9۔
  166. بارلو، نا ڈائین جی مریخ:اس کی اندرونی سطح اور ماحول کا تعارف۔ کیمبرج یونیورسٹی پریس۔ آئی ایس بی این 978-0-521-85226-5۔
  167. "مریخی جنوبی قطب میں گہری اور وسیع برف"۔ ناسا نیوز اور میڈیا ریسورسز۔ ناسا مارچ 15، 2007ء
  168. کوسٹا ما، وی - پی ؛ کریسلافسکی، ایم اے؛ ہیڈ، جے ڈبلیو (جون 3، 2006ء)"مریخ کے شمالی میدانوں میں موجودہ بلند عرض البلد میں برفیلے غلاف:خصائص و جائے وقوع"۔ جیوفزیکل ریسرچ خطوط 33 (11): L11201۔Bibcode:2006GeoRL ۔3311201K۔ doi:10۔1029/2006GL025946۔
  169. پلوٹ، جے جے؛ و دیگر (مارچ 15، 2007ء) "مریخ کے جنوب پولر میں موجود پرتوں کے ذخائر کے اوپر ریڈار کی صوتی لہریں"۔ سائنس 316 (5821): 92–95۔ doi:10۔1126/science۔1139672۔PMID 17363628۔
  170. جانسن، جان (اگست 1، 2008ء)"مریخ پر پانی ہے۔ ناسا نے تصدیق کردی"۔ لوس انجیلس ٹائمز۔
  171. "دفن ہوئے مریخی پرتوں کے ریڈار سے حاصل کردہ نقشے ماحولیاتی چکر سے باہم موافقت رکھتے ہیں"۔۔ آن اوربٹ۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  172. فش بو، کے ای؛ برنی، شینی برگر؛ ہرکن ہوف، کینتھ ای ؛ کرک، رنڈولف ایل ؛ فورٹیزو، کورے؛ رسل، پیٹرک ایس ؛ مک ایون، الفریڈ (2010ء)"مریخ کے شمالی قطبی پرتوں کے ذخائر میں 'پرتوں' کے معنی کی جانچ اور اس کا ماحول سے تعلق پر اثر"(پی ڈی ایف)۔ ایکارس 205 (1): 269–282۔ Bibcode:2010Icar۔۔205۔۔269F۔doi:10۔1016/j۔icarus۔2009۔04۔011۔
  173. ڈکسبری، این ایس؛ زوٹیکوف، آئی اے؛ نیلسن، کے ایچ ؛ رومانوفسکی، وی ای؛ کارسی، ایف ڈی (2001ء) "عددی نمونہ برائے متبادل ماخذ جھیل وستوک اور اس کے مریخ کے لیے ماورائے ارض حیات پر مضمرات"(پی ڈی ایف)۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 106: 1453۔Bibcode:2001JGR ۔۔106۔1453D۔ doi:10۔1029/2000JE001254۔
  174. کیفر، ہو ایچ (1992ء)۔مریخ۔ یونیورسٹی آف ایریزونا پریس۔ آئی ایس بی این 978-0-8165-1257-7۔ اخذ کردہ مارچ 7، 2011ء۔
  175. "کثیر الاضلاع صورت والی میدان: مریخ اور زمین کی سطح میں مماثلت"۔ SpaceRef۔ ستمبر 28، 2002ء۔
  176. اسکوئرس، ایس (1989ء)۔ "یوری کا انعام یافتہ لیکچر: مریخ پر پانی"۔ ایکارس 79 (2): 229–288۔Bibcode:1989Icar۔۔۔79۔۔229S۔ doi:10۔1016/0019-1035(89)90078-X۔
  177. ^ ا ب لیفورٹ، اے ؛ رسل، پی ایس ؛ تھامس، این (2010ء)" مریخ کے پینوس اور ایمفیٹیرائٹ پٹیری علاقوں میں چونے کے میدانوں کا مشاہدہ از ہائی رائز"۔ ایکارس 205: 259–268۔Bibcode:2010Icar۔۔205۔۔259L۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2009۔06۔005۔
  178. "ناسا – تباہی پھیلانے والے لاوے کے بہاؤ مریخی اتھابسکا ویلس میں"۔ Nasa.gov۔ جنوری 11، 2010ء۔
  179. ڈنڈاس، سی، ایس بریرنی، اے مک ایون۔ 2015ء مریخی عمل تصعید میں حرارتی عمل سے بننے والے چونے کے میدانوں کے نمونے کی تشکیل۔ ایکارس: 262، 154-169۔
  180. ہیڈ، جیمز ڈبلیو؛ مسٹارڈ، جان ایف ؛ کریسلافسکی، میخائل اے ؛ ملی کن، رالف ای ؛ مارکانٹ، ڈیوڈ آر (2003ء) "مریخ کے ماضی قریب کے برفیلے ادوار"۔ نیچر 426 (6968): 797–802۔Bibcode:2003Natur۔426۔۔797H۔ doi:10۔1038/nature02114۔ PMID 14685228۔
  181. "غلافی میدانوں کی چیر پھاڑ از ہائی رائز(PSP_002917_2175)"۔ ایریزونا یونیورسٹی۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  182. برنی، ایس ؛ انجرسول، اے پی (2002ء) " عمل تصعید سے مریخی قطبی مسام دار صورت کی تشکیل کا نمونہ" امریکن ایسٹرونومیکل سوسائٹی (امریکن ایسٹرونومیکل سوسائٹی) 34: 837۔ Bibcode:2002DPS ۔۔۔34۔0301B۔
  183. اسٹروم، آر جی ؛ کروفٹ، اسٹیون کے ؛ بارلو، نا ڈائین جی (1992ء) "مریخی تصادم سے پیدا ہونے والے شہابی گڑھوں کا اندراج، مریخ"۔ یونیورسٹی آف ایریزونا پریس۔ آئی ایس بی این 0-8165-1257-4۔
  184. ای ایس اے – مریخی ایکسپریس – دم بخود کردینے والے ڈیوٹرونیلس مینسا کے مریخ پر نظارے۔ Esa.int مارچ 14، 2005ء۔
  185. ہوبر، ای ؛ و دیگر (2005ء) "مریخ میں واقع ہیکاٹس تھولس میں پہلوی آتش فشانی دہانے کی دریافت"۔ نیچر 434 (7031): 356–61۔ Bibcode:2005Natur۔434۔۔356H۔doi:10۔1038/nature03423۔ PMID 15772654۔
  186. شینی، ڈیوڈ ای ؛ ہیڈ، جیمز ڈبلیو؛ فاسٹوک، جیمز ایل ؛ مارکانٹ، ڈیوڈ آر (2007ء)"مریخ میں واقع ارسیا مونس میں بلندی پر ہونے والی حالیہ گلیشیر بستگی:بڑے منطقہ حارہ کے پہاڑوں کی تشکیل و ارتقا پر پڑنے والے مضمرات"(پی ڈی ایف)۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 112 E3): E03004)۔ Bibcode:2007JGRE ۔11203004S۔doi:10۔1029/2006JE002761۔
  187. شینی، ڈی؛ و دیگر (2005ء)"مریخ پر واقع ٹھنڈ پر انحصار کرنے والے پہاڑی تودوں کا ماخذ و ارتقا: پیوونس مونس پنکھے کی شکل کے ذخائر"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 110 (E5): E05001۔ Bibcode:2005JGR E۔11005001S۔ doi:10۔1029/2004JE002360۔
  188. باسیلفسکی، اے ؛ و دیگر (2006ء) "حال ہی میں مریخ میں واقع اولمپس مونس کے مشرقی کوکھ میں ہونے والی ارضیاتی ارضی سختائے پرتوں کی آتش فشانی اور سیلابی سرگرمی"۔ جیوفزیکل ریسرچ خطوط 33۔ L13201۔ Bibcode:2006GeoRL ۔3313201B۔ doi:10۔1029/2006GL026396۔
  189. ملی کن، آر ؛ و دیگر (2003ء) "مریخ کی سطح پر ریشے دار بہاؤ کی صورت کے خدوخال: مریخی جہاں گرد پر لگے ہوئے اعلیٰ درجے کے کیمرے (ایم او سی) سے حاصل کردہ تصاویری مشاہدات"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 108 (E6): 5057۔ Bibcode:2003JGR E ۔108۔5057M۔doi:10۔1029/2002je002005۔
  190. آرف اسٹورم، جے ؛ ہارٹمین، ڈبلیو (2005ء)" مریخی بہاؤ کے خدوخال اور ثلجی ملبے جیسی پہاڑیاں اور گھاٹیاں:ارضیاتی مطابقت اور باہمی تعلق"۔ ایکارس 174 (2): 321–35۔Bibcode:2005Icar۔۔174۔۔321A۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2004۔05۔026۔
  191. ہیڈ، جے ڈبلیو؛ نیوکم، جی ؛ جو مین، آر ؛ ہیزنگر، ایچ ؛ ہوبر، ای ؛ کار، ایم ؛ میسن، پی ؛ فوینگ، بی ؛ ہوفمین، ایچ ؛ کریسلافسکی، ایم ؛ ورنر، ایس ؛ ملکووچ، ایس ؛ وین گسلٹ، ایس ؛ ایچ آر ایس سی شراکتی تفتیش کار ٹیم (2005ء) "مریخ پر منطقہ حارہ سے لے کر وسطی عرض البلد میں منجمد پالا اور برف کے اجتماع، بہاؤ اور تودوں کی تشکیل" نیچر 434 (7031): 346–350۔Bibcode:2005Natur۔434۔۔346H۔ doi:10۔1038/nature03359۔ PMID 15772652۔
  192. اسٹاف (اکتوبر 17، 2005ء) "مریخی موسمی بہاؤ: وسطی عرض البلد برفیلے تودے"۔ Marstoday۔ براؤنیونیورسٹی۔
  193. برمن، ڈی ؛ و دیگر (2005ء) "خم دار پہاڑیوں اور گھاٹیوں کا مریخ کے نیوٹن طاس علاقے میں موجود شہابی گڑھوں کی شکست و ریت میں کردار"۔ ایکارس 178 (2): 465–86۔Bibcode:2005Icar۔۔178۔۔465B۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2005۔05۔011۔
  194. "پیچیدہ منقش میدانی افقی وادی" Hirise.lpl.arizona.edu۔ اخذ کردہ جنوری 16، 2012ء۔
  195. "عدم ترتیب بہاؤ کے نمونے"۔ ایریزونا یونیورسٹی۔ اخذ کردہ جنوری 16، 2012ء۔
  196. "ہو سکتا ہے کہ مریخ برفانی دور سے گزرتا ہوا نمودار ہوا ہو"۔ ScienceDaily (ایم ایل اے ناسا/جیٹ پروپلشن لیبارٹری)۔ دسمبر 18، 2003ء۔
  197. مسٹارڈ، جے ؛ و دیگر (2001ء) "موجودہ سطح سے قریب برف کی شناخت سے مریخ پر ہونے والی حالیہ موسمی تبدلیوں کا ثبوت ملا ہے"۔ نیچر 412 (6845): 411–4۔doi:10۔1038/35086515۔ PMID 11473309۔
  198. کریسلافسکی، ایم ؛ ہیڈ، جے (2002ء) "مریخ:موجودہ عرض البلد پر انحصار کرنے والے پانی کی برف سے زرخیز غلاف کی ہیئت و ارتقا"(پی ڈی ایف)۔ جیوفزیکل ریسرچ خطوط 29 (15): 14–1–14–4۔ Bibcode:L ۔29o۔۔14K۔ doi:10۔1029/2002GL015392۔
  199. شینی، ڈی ؛ و دیگر (2005ء)"مریخ پر واقع ٹھنڈ پر انحصار کرنے والے پہاڑی تودوں کا ماخذ و ارتقا: پیوونس مونس پنکھے کی شکل کے ذخائر"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 110 (E5): E05001۔ Bibcode:2005JGR E۔11005001S۔ doi:10۔1029/2004JE002360۔
  200. فارگیٹ، ایف ؛ و دیگر (2006ء) "بلند خمیدگی پر ماحولیاتی رسوب سازی کی وجہ سے مریخ پر برفیلے تودوں کی تشکیل"۔۔ سائنس 311 (5759): 368–71۔ Bibcode:2006Sci۔۔۔311۔۔368F۔doi:10۔1126/science۔1120335۔ PMID 16424337۔
  201. ڈکسن، جیمز ایل ؛ ہیڈ، جیمز ڈبلیو؛ مارکانٹ، ڈیوڈ آر (2008ء) " ایمیزونی دور کے بعد کے حصّے میں مریخ کی فروعی تقسیم کی سرحد پر برفیلے تودوں کی تشکیل: برفیلے تودوں کی زیادہ موٹائی اور مختلف مراحل کے ثبوت" Geology 36 (5): 411–4۔ doi:10۔1130/G24382A 1۔
  202. ہیلڈ مین، جینیفر ایل ؛ و دیگر (مئی 7، 2005ء) "مریخی موجودہ ماحولیاتی حالات میں مائع پانی کے بہنے سے بننے والی مریخی نالیاں" (پی ڈی ایف)۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 110: Eo5004۔ Bibcode:2005JGRE ۔11005004H۔doi:10۔1029/2004JE002261۔ 'وہ حالات جیسا کہ ابھی مریخ پر جاری ہیں، مائع پانی کے لیے حرارتی دباؤ کے مستحکم دور سے پرے '۔۔۔ 'مائع پانی عام طور پرسیارے کی نچلی جگہوں اور پست عرض البلد پر قائم رہتا ہے کیونکہ ماحولیاتی دباؤ پانی کے بخارات کے دباؤ سے زیادہ ہوتا ہے اور استوائی خطوں میں درجہ حرارت دن کے حصّے میں 273 K تک پہنچ سکتا ہے۔"
  203. مریخی نالیاں نمکین مائع کے بہاؤ سے بن سکتی ہیں"۔ Sciencedaily.com۔ فروری 15، 2009ء۔
  204. مالن، مائیکل سی ؛ ایڈگیٹ، کینتھ ایس ؛ پوشی اولوا،للیا وی ؛ مک کولی، شان ایم ؛ ڈوبیرا، ایلڈر زی نوح (دسمبر 8، 2006ء) "حالیہ تصادموں سے ہونے پیدا ہونے والے شہابی گڑھوں کی شرح اور عصر حاضر کی نالیوں کے مریخ پر بننے کا عمل"۔ سائنس 314 (5805): 1573–1577۔Bibcode:2006Sci۔۔۔314۔1573M۔ doi:10۔1126/science۔1135156۔ PMID 17158321۔ اخذ کردہ ستمبر 3، 2009ء۔
  205. ہیڈ، جے ڈبلیو؛ مارکانٹ، ڈی آر؛ کریسلافسکی، ایم اے(2008ء)"مریخ پر نالیوں کی تشکیل:حالیہ ماحول کے ماضی سے تعلق اور آفتاب زدگی کا خرد بینی ماحول"۔ پی این اے ایس 105 (36): 13258–63۔ Bibcode:2008PNAS ۔10513258H۔doi:10۔1073/pnas۔0803760105۔ پی ایم سی 2734344۔ PMID 18725636۔
  206. ہینڈرسن، مارک (دسمبر 7، 2006ء)"گزرے پانچ برسوں کے دوران مریخ پر پانی بہتا رہا ہے،ناسا" ٹائمز (یو کے )۔
  207. "مریخ کی حالیہ تصاویر نے بہتے ہوئے پانی کے ثبوت ظاہر کیے"۔ کرسچین سائنس مانیٹر۔ اخذ کردہ مارچ 17، 2007ء۔
  208. مالن، مائیکل سی ؛ ایڈگیٹ، کینتھ ایس (2000ء) "مریخ پر حالیہ سطحی رساؤ اور سطحی بہاؤ کے ثبوت"۔ سائنس 288 (5475): 2330–2335۔Bibcode:2000Sci۔۔۔288۔2330M۔ doi:10۔1126/science۔288۔5475۔2330۔PMID 10875910
  209. کالب، کے ؛ پیلٹیئر، جان ڈی؛ مک ایون، الفریڈ ایس (2010ء) "مریخ میں واقع ہیلی شہابی گڑھے کی نالیوں سے تعلق رکھنے والے روشن ڈھلوان ذخائر کی تشکیل کے نمونے: حالیہ مائع پانی کے اشارے"۔ ایکارس 205: 113–137۔ Bibcode:2010Icar۔۔205۔۔113K۔doi:10۔1016/j۔icarus۔2009۔09۔009۔
  210. ہوفمین، نک (2002ء) "مریخ پر سرگرم قطبی نالیاں اور کاربن ڈائی آکسائڈ کا کردار" فلکی حیاتیات 2 (3): 313–323۔ doi:10۔1089/153110702762027899۔ PMID 12530241۔
  211. موزل وائٹ، ڈونلڈ ایس ؛سوئنڈل، ٹموتھی ڈی ؛ لو نائن، جوناتھن آئی (2001ء) "مریخ پر مائع کاربن ڈائی آکسائڈ کی ٹوٹ اورحالیہ چوٹی نالیوں کی تشکیل"۔ جیوفزیکل research letters28 (7): 1283–1285۔ Bibcode:2001GeoRL ۔28۔1283M۔ doi:10۔1029/2000gl012496۔
  212. مک ایون، الفریڈ۔ ایس ؛ اوجھا، لوجینڈرا؛ ڈنڈاس، کولن ایم (جون 17، 2011ء) "مریخی گرم ڈھلوانوں پر موسمی بہاؤ"۔ سائنس (امریکن ایسوسی ایشن برائے ترقی سائنس) 333 (6043): 740–743۔ Bibcode:2011Sci۔۔۔333۔۔740M۔doi:10۔1126/science۔1204816۔ E ایس ایس این 0036-8075۔ PMID 21817049۔
  213. "نیپالی سائنٹسٹ لوجیندرا اوجھا داغ، ممکنہ مریخی پانی "۔ نیپالی بلاگر۔ 6 اگست، 2011ء۔
  214. "ناسا کے خلائی جہاز سے حاصل کردہ اعداد وشمار مریخ پر بہتے ہوئے پانی کا عندیہ دے رہے ہیں"۔ ناسا۔ 4 اگست، 2011ء۔
  215. مک ایون، الفریڈ؛ لوجیندرا، اوجھا؛ ڈنڈاس، کولن؛ میٹسن، سارا؛ برینی، ایس ؛ رے، جے ؛ کل، سیلبی؛ مرچی، اسکاٹ؛ تھامس، نیکولس؛ گولک، ورجینیا (5 اگست 2011ء) "مریخی گرم ڈھلانوں پر موسمی بہاؤ"۔ سائنس 333 (6043): 743–743۔doi:10۔1126/science۔1204816۔ PMID 21817049۔ اخذ کردہ 28 ستمبر 2015۔
  216. ڈریک، نادیہ؛ 28، نیشنل جیوگرافک پبلشڈ ستمبر۔ "ناسا نے 'قطعی' مریخ پر مائع پانی تلاش کر لیا"۔ نیشنل جیوگرافک نیوز۔ اخذ کردہ 2015-09-30۔
  217. موسکوویٹز، کلارا "آج مریخ پر پانی بہتا ہے، ناسا کا اعلان" اخذ کردہ ۔2015-09-30۔
  218. "ناسا کی نیوز کانفرنس:آج کے مریخ پر مائع پانی کے ثبوت"۔ ناسا 28 ستمبر 2015ء۔
  219. "ناسا نے اس ثبوت کی تصدیق کردی کہ آج کے مریخ پر پانی بہتا ہے"۔ اخذ کردہ 2015-09-30۔
  220. "حیات کے لیے لازمی شرائط"۔ ناسا سی ایم ای ایکس اخذ کردہ مئی 26، 2013ء۔
  221. شروگر، اینڈریو سی ؛ گولڈن، ڈی سی ؛ منگ، ڈو ڈبلیو (جولائی 20، 2012ء) "مریخی مٹی میں حیاتیاتی زہر:1۔ خرد حیاتیاتی آبادیوں پر مٹی جیسے خشک ذخائر اور مریخی ماحول میں زندہ باقی رہنا "(پی ڈی ایف)۔ ایلسویر -پلانٹری اور اسپیس سائنس۔
  222. بیٹی، ڈیوڈ ڈبلیو؛ و دیگر (جولائی 14، 2006ء)۔ "ایم ای پی اے جی ایس آر-ایس اے جی (2006) غیر شایع شدہ قرطاس ابیض " (پی ڈی ایف) مریخ کے کھوجی پروگرام کے تجزیاتی جماعت میں (ایم ای پی اے جی)۔ مریخی خصوصی علاقے کی سائنس کے تجزیہ کی جماعت کی کھوج۔ جیٹ پروپلشن لیبارٹری ناسا صفحہ۔ 17۔
  223. "دریافت کی فنیات اورمریخ کی زیر سطح میں قابل سکونت ماحول کی وصف نگاری"۔ Bibcode:2012DPS ۔۔۔4421522F۔ اخذ کردہ مارچ 21، 2014ء۔
  224. نیل -جونز، نینسی؛او کیرول، سنتھیا (اکتوبر 12، 2005ء)۔ "نئے نقشوں نے مزید ثبوت اس بات کے فراہم کیے کہ مریخ کبھی زمین جیسا تھا"۔ گوڈارڈ اسپیس فلائٹ سینٹرناسا۔
  225. "مریخی اندرون: ہلکی مقناطیسیت "۔ مریخ ایکسپریس۔ یورپی اسپیس ایجنسی۔ جنوری 4، 2007ء۔
  226. دیھانت، وی ؛ لیمر، ایچ ؛ کلاکوف، وائی این ؛ گرییبمئر، جے -ایم ؛ و دیگر (2007ء) "ابتدائی زمین و مریخ کے ماحولیاتی ڈھال پر سیاروی مقناطیسی مبراقی اثر"۔ اسپیس سائنسزسلسلہ آئی ایس ایس آئی 24: 279–300۔ doi:10۔1007/978-0-387-74288-5_10۔ اخذ کردہ جون 6، 2013ء۔
  227. "مریخ پر کس چیز نے اس کو حیات کے لیے اتنا معاندانہ بنا دیا؟"۔ بی بی سی نیوز۔ جنوری 7، 2013ء۔
  228. ڈارٹنیل، ایل آر ؛ ڈیسورگر؛ وارڈ؛ کوٹس (جنوری 30، 2007ء) "مریخی سطح اور زیر سطحی تابکار ماحول کی نمونہ کاری: فلکی حیات پر اس کے مضمرات"۔ جیوفزیکل ریسرچ خطوط 34 (2)۔ Bibcode:2007GeoRL ۔34۔2207D۔doi:10۔1029/2006GL027494۔ "جما دینے والے حالات کی وجہ سے خوابیدہ جرثومے یا تخمک عمل استحالہ کے قابل نہیں ہوسکتے یہ جمع ہوتی تابکاری کی وجہ سے غیر فعال ہوں گے۔ مریخ کی 2 میٹر کی گہرائی تک جتنا ہم کھودنے کے قابل ہیں، وہاں تابکاری کے خلاف مزاحمت رکھنے والے خلیہ کواب بھی قابل زیست رہنے کے لیے پچھلے 450٫000 برسوں میں دوبارہ سے زندہ ہونا ہوتا، برف سے محفوظ رکھے گئے قابل زیست خلیات قیاسی سربیرس سے ڈھکی برف کے اندر سے نکالنے کے لیے کم از کم7.5 میٹر کی گہرائی تک کھودنا ہوگا"۔
  229. "مریخ: 'قوی ثبوت' شاید سیارہ حیات کا پالنا ہو سکتا ہے"، سائنس دان کہتے ہیں "۔ بی بی سی نیوز۔ جنوری 20، 2013ء۔
  230. مچلسکی، جوزف آر ؛ کواڈروس، جویر؛ نیلز، پال بی ؛ پارنیل، جان؛ راجرس، اے ڈی این ؛ رائٹ، شان پی (جنوری 20، 2013ء) "مریخ پر زیر زمین پانی کی سرگرمی اور اس کے گہرے حیاتیاتی کرہ پر اثرات"۔ نیچر جیو سائنس 6 (2): 133–138۔ Bibcode:2013NatGe۔۔۔6۔۔133M۔doi:10۔1038/ngeo1706۔ اخذ کردہ جنوری 22، 2013ء۔
  231. اینڈرسن، پال ایس (دسمبر 15، 2011ء) " نئی تحقیق بتاتی ہے کہ مریخ کے بڑے علاقے حیات کو قائم رکھ سکتے ہیں"۔ یونیورس ٹوڈے اکثر سائنس دان اس بات سے متفق ہیں کہ جانداروں کی بقاء و افزائش کے لیے سب سے موزوں جگہ زیر زمین ہوگی۔
  232. "سکونت پذیری کی اہلیت اور حیاتیات: حیات کی کیا خصوصیات ہوسکتی ہیں؟"۔ فینکسمریخی مہم یونیورسٹی آف ایریزونا۔ اخذ کردہ جون 6، 2013ء۔ اگر آج حیات کی کوئی صورت مریخ پر اپنا وجود رکھتی ہوگی تو سائنس دانوں کو یقین ہے کہ وہ مریخی سطح کے نیچے پانی کے جوہڑوں میں ہی ہوگی۔
  233. تھان، کر (اپریل 2، 2007ء) "مریخ کے ممکنہ نئے غار حیات کی تلاش کا نیا ہدف"۔ Space.com۔
  234. ہائینی، پال او ؛ شوفیلڈ، جان ٹی ؛ کلینبوہل، آرمن ؛ کاس، ڈیوڈ اے ؛ مک کلیز، ڈینیل جے (فروری 4–6، 2013ء) " دور حاضر کے مریخ میں مائع پانی کی حر حرکی قیام پذیری: سطح "(پی ڈی ایف)۔ عصر حاضر کیمریکہ کی سکونت پذیری کی اہلیت 2013ء(پی ڈی ایف)۔ کیلی فورنیا، یو ایس اے: یو سی ایل اے انسٹی ٹیوٹ برائے سیارے و ماورائے شمس سیارے۔ اخذ کردہ جون 17، 2013ء۔ یہ نتائج بتاتے ہیں کہ مریخ پر عصر حاضر کی بہاؤ کی سرگرمیاں (نالیاں) ہو سکتا ہے کہ پورے سیارے پر پھیلی ہوئی برف سے تعلق رکھنے کی بجائے موسم یا اندرونی موسمی چکر کے دوران میں زیر زمین آب اندوخت سے نکلنے والے پانی سے تعلق رکھتی ہوں۔ "مریخی کھوجی مہم"۔ Marsprogram.jpl.nasa.gov۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  235. "وائکنگ جہاں گرد کے مریخی نظارے"۔ History.nasa.gov۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  236. "وائکنگ جہاں گرد کے مریخی نظارے"۔ History.nasa.gov۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  237. "باب پنجم"۔ ناسا کی تاریخ، ناسا۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  238. "شہابی گڑھے "۔ ناسا اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  239. مورٹن، او(2002ء) مریخی نقشہ سازی۔ پیکاڈور، این وائی۔
  240. آر وڈسن، آر؛ گوڈنگ، جیمز ایل ؛ مور، ہینری جے (1989ء) " عکس بند، نمونہ اور تجزیہ کی گئی از وائکنگ خلائی گاڑی "۔ جیو فزکس کا جائزہ 27: 39–60۔Bibcode:1989RvGeo۔۔27۔۔۔39A۔ doi:10۔1029/RG027i001p00039۔
  241. کلارک، بی ؛ بیرڈ، اے کے ؛ روز جونیئر۔، ایچ جے؛ ٹولمن پی، تیسرا؛ کیل، کے ؛ کیسٹرو، اے جے؛ کیلیہر، ڈبلیو سی؛ روی، سی ڈی؛ ایوانس، پی ایچ (1976ء) " وائکنگ کے اترنے کی جگہ پر موجود مریخی نمونوں کا غیر نامیاتی تجزیہ"۔ سائنس 194 (4271): 1283–1288۔ Bibcode:1976Sci۔۔۔194۔1283C۔doi:10۔1126/science۔194۔4271۔1283۔ PMID 17797084۔
  242. ہوئفین، ٹی ایم ؛ و دیگر (2003ء)۔ "مریخ کے نیلی فوسے کے علاقے میں زبرجد کی دریافت"۔ سائنس 302: 627–630۔ doi:10۔1126/science۔1089647۔
  243. هوئفین، ٹی ؛ کلارک، آر این؛بینڈ فیلڈ، جے ایل؛ اسمتھ، ایم ڈی؛پرل، جے سی؛ کریسچنسن، پی آر (2003ء)۔ مریخی علاقے نیلی فوسے میں زبرجد کی دریافت "۔ سائنس 302 (5645): 627–630۔Bibcode:2003Sci۔۔۔302۔۔627H۔ doi:10۔1126/science۔1089647۔ PMID 14576430۔
  244. مالن، مائیکل سی ؛ ایڈگیٹ، کینتھ ایس (2001ء)۔ مریخی سیاروی سرویرکے مریخی مدار گرد کا کیمرا:بین السیاروی جہاز بنیادی مہم کے دوران"۔ جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 106 (E10): 23429–23570۔ Bibcode:2001JGR ۔۔10623429M۔doi:10۔1029/2000JE001455۔
  245. "معدنیاتی اور موسمیاتی خصوصیات"۔ ناسا
  246. گولومبک، ایم پی ؛ کک، آر اے ؛ایکو نومو، ٹی ؛ فولکنر، ڈبلیو ایم ؛ ہیلڈیمین، اے ایف سی ؛ کیلی مین، پی ایچ ؛ کنڈسن، جے ایم ؛ میننگ، آر ایم ؛ مور، ایچ جے ؛ پارکر، ٹی جے ؛ ریڈر، آر ؛ شوفیلڈ، جے ٹی ؛ اسمتھ، پی ایچ ؛ وہان، آر ایم (1997ء) "مریخی پاتھ فائینڈر کا جائزہ مہم اور اترنے کی جگہ کے قیاس "۔ سائنس 278 (5344): 1743–1748۔Bibcode:1997Sci۔۔۔278۔1743G۔ doi:10۔1126/science۔278۔5344۔1743۔ PMID 9388167۔
  247. مرچی، ایس ؛ مسٹارڈ، جان؛ بشپ، جینس؛ ہیڈ، جیمز؛ پیٹرس، کارلی؛ ایرارڈ، اسٹیفنی (1993ء) "مریخ کے روشن علاقوں کی طیفی خصوصیات میں ہونے والے تغیرات"۔ ایکارس 105 (2): 454–468۔ Bibcode:1993Icar۔۔105۔۔454M۔ doi:10۔1006/icar۔1993۔1141۔
  248. "بیل کا صفحہ اول (1996ء)جیو کیمکل سوسائٹی پیپر"۔ Marswatch.tn.cornell.edu۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  249. فیلڈمین، ڈبلیو سی ؛ بوینٹن، ڈبلیو وی ؛ ٹوکر، آر ایل ؛ پریٹی مین، ٹی ایچ ؛گیس نالٹ، او ؛ اسکوئرس، ایس ڈبلیو؛ الفک، آر سی؛ لارنس، ڈی جے ؛ لا سن، ایس ایل ؛ موریس، ایس ؛ مک کنی، جی ڈبلیو؛ مور، کے آر ؛ ریڈی، آر سی (2002ء) "مریخ کے نیوٹران کی سیاروی تقسیم از مریخی مہم"۔ سائنس 297 (5578): 75–78۔ Bibcode:2002Sci۔۔۔297۔۔۔75F۔doi:10۔1126/science۔1073541۔ PMID 12040088۔
  250. میٹروفانوف، آئی ؛ اینفی موف، ڈی ؛ کوزیریو، اے؛ لٹویک، ایم ؛ سنین، اے ؛ ٹریٹ یاکوف، وی ؛ کریلوف، اے ؛ شیوٹ سوف، وی ؛ بوینٹن، ڈبلیو؛ شینو ہارا، سی؛ ہمارہ، ڈی ؛ سانڈرس، آر ایس (2002ء) "مریخی مہم کے بلند توانائی کے نیوٹران سراغ رساں سے حاصل کردہ زیر زمین ہائیڈروجن کے نقشے"۔ سائنس 297(5578): 78–81۔ Bibcode:2002Sci۔۔۔297۔۔۔78M۔ doi:10۔1126/science۔1073616۔PMID 12040089۔
  251. بوینٹن، ڈبلیو وی ؛ فیلڈمین، ڈبلیو سی ؛ اسکوئرس، ایس ڈبلیو؛ پریٹی مین، ٹی ایچ ؛ بروکنر، جے ؛ ایوانس، ایل جی ؛ ریڈی، آر سی ؛ اسٹار، آر ؛ آرنلڈ، جے آر ؛ ڈریک، ڈی ایم ؛ اینگلرٹ، پی اے جے ؛ میٹزجر، اے ای ؛ میٹروفانوف، ایگور؛ ٹرومبکا، جے آئی ؛ d'Uston، سی ؛ وانکی، ایچ ؛گیس نالٹ، او ؛ ہمارہ، ڈی کے ؛ جانز، ڈی ایم ؛ مارسیالس، آر ایل ؛ موریس، ایس ؛ میخیوا، آئی ؛ ٹیلر، جی جے ؛ ٹوکر، آر ؛ شینو ہارا، سی (2002ء) "مریخ کی سطح کے قریب ہائیڈروجن کی تقسیم: زیر زمین برف کے ذخائر کے ثبوت"۔ سائنس 297 (5578): 81–85۔ Bibcode:2002Sci۔۔۔297۔۔۔81B۔doi:10۔1126/science۔1073722۔ PMID 12040090۔
  252. "ڈاو ویلس" مریخی مہم مشن۔ تھیمس۔ اگست 7، 2002ء۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  253. اسمتھ، پی ایچ ؛ تمپاری، ایل ؛ آر وڈسن، آر ای ؛ باس، ڈی ؛ بلاینی، ڈی ؛ بوینٹن، ڈبلیو؛ کارسویل، اے ؛ کیٹلنگ، ڈی ؛ کلارک، بی ؛ ڈک، ٹی ؛ ڈی جانگ، ای ؛ فشر، ڈی ؛ گویٹز، ڈبلیو؛ گن لوسن، پی ؛ ہیچٹ، ایم ؛ ہپکن، وی ؛ ہوفمین، جے ؛ ہوڈ، ایس ؛ کیلر، ایچ ؛ کوناویس، ایس ؛ لینج، سی ایف ؛ لیمون، ایم ؛ میڈسن، ایم ؛ مالن، ایم ؛ مارکیویز، ڈبلیو؛ مارشل، جے ؛ مکائی، سی ؛ میلن، ایم ؛ مچل انجیلی، ڈی ؛ و دیگر (2008ء) "فینکس مہم پر لگے ہوئے خصوصی حصّے کا تعارف:اترنے کی جگہ کی تصویر کشی کے تجربات، مہم کا جائزہ اور سائنسی توقعات۔ جے جیوفزیکل ریسرچ 113: E00A18۔Bibcode:2008JGR E ۔113۔0A18S۔ doi:10۔1029/2008JE003083۔
  254. "ناسا کے اعداد و شمار نے مریخ پر پانی اور آتش فشانوں پر نئی طرح سے روشنی ڈالی" ناسا ستمبر 9، 2010ء۔ اخذ کردہ مارچ 21، 2014ء۔
  255. میلن، ایم ؛ جیکوسکی، بی (1993ء) "مریخ پر حرارت میں جغرافیائی تغیر اور سطحی برف کا منتشر استحکام"۔ جے جغرافیائی ریسرچ 98: 3345–3364۔Bibcode:1993JGR ۔۔۔98۔3345M۔ doi:10۔1029/92JE02355۔
  256. "مریخ پر پانی کی تصدیق"۔ Nasa.gov۔ جون 20، 2008ء۔
  257. "مریخی خلائی گاڑی پر دھول، مٹی کی دریافت"۔ SPACE.com۔ اخذ کردہ دسمبر 19 ،2010ء۔
  258. مارٹینز، جی ایم اور رینو، این او (2013ء) "مریخ پر پانی اور نمک:حالیہ شواہد اور ایم ایس ایل پر اس کے اثرات"۔ اسپیس سائنس ریویوز 175 (1-4): 29–51۔doi:10۔1007/s11214-012-9956-3۔
  259. رینو، نلٹن او ؛ بوز، برینٹ جے ؛ کیٹلنگ، ڈیوڈ؛ کلارک، بینٹن سی ؛ ڈروب، لائن ؛ فشر، ڈیوڈ؛ گویٹز، والٹر؛ ہوڈ، اسٹبی ایف ؛ کیلر، ہورسٹ اوی؛ کوک، جیسپر ایف ؛ کوناویس، سمیول پی ؛ لئیر، کرسٹوفر؛ لیمون، مارک؛ میڈسن، مورٹن بو ؛ مارکیویز، وج سیچ جے ؛ مارشل، جان؛ مکائی، کرسٹوفر؛ مہتا، منیش؛ اسمتھ، مائلز؛ زورزانو، ایم پی ؛ اسمتھ، پیٹر ایچ ؛ سٹوکر، کیرول؛ ینگ، سوزین ایم ایم (2009ء) " فینکس کے اترنے کی جگہ پر ممکنہ پانی کے طبیعیاتی اور حرحرارتی شواہد" جریدہ جیوفزیکل ریسرچ 114: E00E03۔ Bibcode:2009JGR E ۔114۔0E03R۔doi:10۔1029/2009JE003362۔
  260. چانگ، کینتھ (مارچ 16، 2009ء)۔"مریخی خلائی گاڑی کی تصویر پر موجود چھینٹوں نے گرما گرم بحث چھیڑ دی؟ کیا وہ پانی ہے؟"۔ نیو یارک ٹائمز(آن لائن)۔
  261. "نئے تجزیات بتاتے ہیں کہ مائع نمکین پانی ممکنہ طور پر مریخ پر موجود ہے"۔ سائنس ڈیلی۔ مارچ 20، 2009ء۔
  262. "فلکی حیاتیات ٹاپ ٹین: جمنے کے لیے بہت زیادہ نمکین"۔ Astrobio.net۔ اخذ کردہ دسمبر 19 ،2010ء۔
  263. ہیچٹ، ایم ایچ ؛ کوناویس، ایس پی ؛ کوئین، آر سی ؛ ویسٹ، ایس جے ؛ ینگ، ایس ایم ایم ؛ منگ، ڈی ڈبلیو؛ کیٹلنگ، ڈی سی ؛ کلارک، بی سی ؛ بوینٹن، ڈبلیو وی ؛ ہوفمین، جے ؛ ڈی فلوریس، ایل پی ؛ گوسپوڈینووا، کے ؛ کاپٹ، جے ؛ اسمتھ، پی ایچ (2009ء) " فینکس خلائی گاڑی کے اترنے کی جگہ پر مریخی مٹی میں پرکلوریٹ اور قابل حل کیمیائی عناصر کا سراغ"۔ سائنس 325 (5936): 64–67۔Bibcode:2009Sci۔۔۔325۔۔۔64H۔ doi:10۔1126/science۔1172466 (inactive 2015-01-23)۔PMID 19574385۔
  264. اسمتھ، پی ایچ ؛ تمپاری، ایل کے ؛ آر وڈسن، آر ای ؛ باس، ڈی ؛ بلاینی، ڈی ؛ بوینٹن، ڈبلیو وی ؛ کارسویل، اے ؛ کیٹلنگ، ڈی سی ؛ کلارک، بی سی ؛ ڈک، ٹی ؛ ڈی جانگ، ای ؛ فشر، ڈی ؛ گویٹز، ڈبلیو؛ گن لوسن، ایچ پی ؛ ہیچٹ، ایم ایچ ؛ ہپکن، وی ؛ ہوفمین، جے ؛ ہوڈ، ایس ایف ؛ کیلر، ایچ یو؛ کوناویس، ایس پی ؛ لینج، سی ایف ؛ لیمون، ایم ٹی ؛ میڈسن، ایم بی ؛ مارکیویز، ڈبلیو جے ؛ مارشل، جے ؛ مکائی، سی پی ؛ میلن، ایم ٹی ؛ منگ، ڈی ڈبلیو؛ موریس، آر وی ؛ و دیگر (2009ء) "فینکس کے اترنے کی جگہ پر پانی کا سالمہ"۔ " سائنس 325 (5936): 58–61۔ Bibcode:2009Sci۔۔۔325۔۔۔58S۔doi:10۔1126/science۔1172339 (غیر فعال 2015-01-23)۔ PMID 19574383۔
  265. وائٹ وے، جے اے ؛ کومگیم، ایل ؛ ڈکنسن، سی ؛ کک، سی ؛ النیکی، ایم ؛ سی بروک، جے ؛ پوپوویچی، وی ؛ ڈک، ٹی جے ؛ ڈے وی، آر ؛ ٹیلر، پی اے ؛ پاتھک، جے ؛ فشر، ڈی ؛ کارسویل، اے آئی ؛ ڈالی، ایم ؛ ہپکن، وی ؛ زینٹ، اے پی ؛ ہیچٹ، ایم ایچ ؛ ووڈ، ایس ای ؛ تمپاری، ایل کے ؛ رینو، این ؛ مورس، جے ای ؛ لیمون، ایم ٹی ؛ ڈائرڈن، ایف ؛ اسمتھ، پی ایچ (2009ء) "مریخی پانی کی برف، بادل اوررسوب سازی"۔ سائنس 325 (5936): 68–70۔ Bibcode:2009Sci۔۔۔325۔۔۔68W۔doi:10۔1126/science۔1172344 (غیر فعال 2015-01-23)۔ PMID 19574386۔
  266. "سی ایس اے – نیوز ریلیز "۔ Asc-csa.gc.ca۔ جولائی 2، 2009ء۔
  267. "مریخی کھوجی جہاں گردمہم : پریس ریلیز"۔ Marsrovers.jpl.nasa.gov۔ مارچ 5، 2004ء۔
  268. "ناسا کے مریخی جہاں گرد اسپرٹنے گیلے ماضی کے حیرت انگیز ثبوت وا کیے"۔ ناسا مئی 21، 2007ء۔
  269. برٹسٹر، گائے (دسمبر 10، 2007ء) "مریخی جہاں گرد نے مریخ کے ماضی کے بھاپ کے ماحول کے ثبوتوں کی تفتیش کی"۔ پریس ریلیز۔ جیٹ پروپلشن لیبارٹری، پاساڈینا، کیلی فورنیا۔
  270. کلنگل ہوفر، جی ؛ و دیگر (2005ء)۔ قمری سیارہ۔ سائی۔(خلاصہ)۔ XXXVI: 2349۔
  271. شروڈر، سی ؛ و دیگر (2005ء)۔ جیوفزیکل ریسرچ (خلاصہ) (یورپی جیو سائنسز یونین، جنرل اسسمبلی) 7: 10254۔
  272. موریس، ایس ؛ و دیگر " مریخی شہابی گڑھے گوسف پر موسبیئرچٹانوں، مٹی و دھول کی معدن شناسی:میدانوں میں کمزور طور پر بدلی ہوئی سنگ سیاہ اور کولمبیا پہاڑیوں کے اثر نفوز سے تبدیل شدہ سنگ سیاہ میں سے اسپرٹ کا سفر"۔ جے جیوفز۔ ریز: 111۔
  273. منگ، ڈی ؛ میٹل فیلڈٹ، ڈی ڈبلیو؛ موریس، آر وی ؛ گولڈن، ڈی سی ؛ گلرٹ، آر ؛ ین، اے ؛ کلارک، بی سی ؛ اسکوئرس، ایس ڈبلیو؛ فررانڈ، ڈبلیو ایچ ؛ رف، ایس ڈبلیو؛ آر وڈسن، آر ای ؛ کلنگل ہوفر، جی ؛ مک سوین، ایچ وائی؛ روڈیونوف، ڈی ایس ؛ شروڈر، سی ؛ ڈی سوزا، پی اے ؛ وانگ، اے (2006ء) "مریخ کی کولمبیا پہاڑیوں میں واقع گوسف شہابی گڑھے میں عمل آب دار کے ارضی کیمیائی اور معدنیاتی اشارے"۔ جے جیوفز۔ ریز۔111 111: E02S12۔Bibcode:2006JGR E ۔111۔2S12M۔ doi:10۔1029/2005JE002560۔
  274. بیل، جے، ایڈیشن (2008ء) "مریخی سطح "۔ کیمبرج یونیورسٹی پریس۔ آئی ایس بی این 978-0-521-86698-9۔
  275. موریس، آر وی ؛ رف، ایس ڈبلیو؛ گلرٹ، آر ؛ منگ، ڈی ڈبلیو؛ آر وڈسن، آر ای ؛ کلارک، بی سی ؛ گولڈن، ڈی سی ؛ سیبا، کے ؛ کلنگل ہوفر، جی ؛ شروڈر، سی ؛ فلیسچر، آئی ؛ ین، اے ایس ؛ اسکوئرس، ایس ڈبلیو (جون 4، 2010ء) "مریخ میں کمیاب سطح سے نکلی ہوئی چٹانیں مل گئیں"۔ سائنس (Sciencedaily.com) 329 (5990): 421–424۔ Bibcode:2010Sci۔۔۔329۔۔421M۔doi:10۔1126/science۔1189667۔ PMID 20522738۔
  276. موریس، رچرڈ وی ؛ رف، اسٹیون ڈبلیو؛ گلرٹ، رالف؛ منگ، ڈگلس ڈبلیو؛ آر وڈسن، ریمنڈ ای ؛ کلارک، بینٹن سی ؛ گولڈن، ڈی سی ؛ سیبا، کرسٹن؛ و دیگر (جون 3، 2010ء) " اسپرٹ جہاں گردنے مریخ پر کاربونیٹ سے لبریز سطح سے ابھری ہوئی چٹانوں کی شناخت کی"۔ سائنس 329 (5990): 421–424۔Bibcode:2010Sci۔۔۔329۔۔421M۔ doi:10۔1126/science۔1189667۔ PMID 20522738۔
  277. "آپرچونیٹی جہاں گرد نے میریڈیانی پلانم کے گیلے ہونے کے مضبوط شواہد حاصل کرلیے"۔ اخذ کردہ جولائی 8، 2006ء۔
  278. ہارووڈ، ولیم (جنوری 25، 2013ء)۔ "آپرچونیٹی جہاں گرد کے مریخ پر کام کرتے ہوئے دس برس"۔ اسپیس فلائٹ ناؤ ۔
  279. بینیزن، کے سی؛ لکلئیر، ڈی اے (2003ء) "جدید و قدیم شدید تیزابی نمک کے ذخائر:مریخی ماحول کی زمینی مماثلت؟"۔ Astrobiology 3 (3): 609–618۔Bibcode:2003AsBio۔۔۔3۔۔609B۔ doi:10۔1089/153110703322610690۔ PMID 14678669۔
  280. بینیزن، کے ؛ بووین، B (2006ء) "تیزابی نمک کی جھیل کے نظام نے مریخ کے ماضی کے ماحول کے بارے میں اور حیات کی تلاش کے بارے میں اشارے دیے ہیں"۔ ایکارس 183 (1): 225–229۔Bibcode:2006Icar۔۔183۔۔225B۔ doi:10۔1016/j۔icarus۔2006۔02۔018۔
  281. اوسٹرلو، ایم ایم؛ ہیملٹن، وی ای؛ بینڈ فیلڈ، جے ایل؛ گلوچ، ٹی ڈی؛ بالڈریج، اے ایم ؛ کرسچنسن، پی آر؛ ٹومابینی، ایل ایل؛ اینڈرسن، ایف ایس (2008ء) "مریخ کے جنوبی اونچے میدانوں میں کلورائڈ پر مشتمل مادّے"۔ سائنس 319 (5870): 1651–1654۔ Bibcode:2008Sci۔۔۔319۔1651O۔doi:10۔1126/science۔1150690۔ PMID 18356522۔
  282. گروٹزنگر، جے ؛ ملی کن، آر، ایڈیشن۔ (2012ء) "مریخ کے رسوب کی ارضیات"۔ ایس ای پی ایم ۔
  283. "ہائی رائز کے اعلیٰ معیار کے سائنسی تصاویری تجربات " یونیورسٹی آف ایریزونا۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  284. "ہدف بنایا گیا علاقہ: نیلو سرٹس؟ مریخی مہم مشن ٹی ایچ ای ایم آئی ایس"۔ Themis.asu.edu۔ اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  285. میلن، ایم ٹی ؛ جیکوسکی، بی ایم ؛ پستاکو، ایس ای (1997ء) "مریخ پر استوائی سطحی برف کی استقامت"۔ جے جیوفز۔ ریز۔ (onlinelibrary.wiley.com)۔ 102(E8): 19357–19369۔Bibcode:1997JGR ۔۔10219357M۔ doi:10۔1029/97JE01346۔
  286. آرف اسٹورم، جان ڈی (2012ء) "مریخ پر استوائی برف کی چادروں کا مفروضاتی نمونہ" جے "(پی ڈی ایف)۔ ارضیاتی سیاروں کا مماثل موسمیات۔ قمری و سیاروی انسٹی ٹیوٹ۔
  287. برنی، شینی برگر؛ ڈنڈاس، کولن ایم ؛ کینیڈی، میگن آر ؛ میلن، مائیکل ٹی ؛ مک ایون، الفریڈ ایس ؛ کل، سیلبی سی ؛ ڈابر، انگرڈ جے ؛ شینی، ڈیوڈ ای ؛ سیلوس، کیمبرلی ڈی ؛ مرچی، اسکاٹ ایل ؛ کینٹر، بروس اے ؛ آر وڈسن، ریمنڈ ای ؛ ایڈگیٹ، کینتھ ایس ؛ روفر، اینڈریس؛ تھامس، نیکولس؛ ہریسن، تانیہ این ؛ پوشی اولوا، للیا وی ؛ سیلوس، فرینک پی (2009ء) "نئے تصادموں سے بنے شہابی گڑھوں میں وسطی عرض البلد میں موجود سطحی برف کی تقسیم"۔ سائنس 325(5948): 1674–1676۔ Bibcode:2009Sci۔۔۔325۔1674B۔ doi:10۔1126/science۔1175307۔PMID 19779195۔
  288. "مریخی شہابی گڑھوں میں موجود پانی کی برف ہوئی بے نقاب"۔ SPACE.com اخذ کردہ دسمبر 19، 2010ء۔
  289. براؤن، ڈیوائینی (اکتوبر 30، 2012ء)۔ "ناسا جہاں گرد کی مٹی پر پہلی تحقیق نے مریخی معدنیات کے نقش پا کو تلاش کرنے میں مدد کی"۔ ناسا۔
  290. براؤن، ڈیوائینی ؛ ویبسٹر، گائے؛ جونز، نینسی نیل (دسمبر 3، 2012ء)۔ "ناساکے مریخی جہاں گرد نے پہلی مرتبہ پوری طرح مریخی مٹی کے نمونوں کا تجزیہ کیا "۔ ناسا۔
  291. چانگ، کین (دسمبر 3، 2012ء)۔ "مریخی جہاں گرد کی دریافت منکشف"۔ نیو یارک ٹائمز۔
  292. ویبسٹر، گائے؛ براؤن، ڈیوائینی (مارچ 18، 2013ء)۔ "کیوریوسٹی مریخی جہاں گرد نے پانی کی موجودگی کے واقعات دیکھے"۔ ناسا۔
  293. رینکن، پال (مارچ 19، 2013ء)۔ "کیوریوسٹی نے چٹانوں کو توڑ کر حیرت انگیز سفید اندرون کو منکشف کیا"۔ بی بی سی
  294. اسٹاف (مارچ 20، 2013ء) "سرخ سیارے نے سفید چٹان حوالے کی اور سائنس دان انگشت بدنداں رہ گئے"۔۔ ایم ایس این۔
  295. لیبرمین، جوش (ستمبر 26، 2013ء)۔ " مریخی پانی مل گیا:کیوریوسٹی جہاں گردنے مریخی مٹی میں موجود آسانی سے قابل رسائی وافر مقدار کو ظاہر کیا"۔ آئی سائنس ٹائمز۔
  296. لیشن، ایل اے ؛ و دیگر (ستمبر 27، 2013ء) " کیوریوسٹی جہاں گرد سے کیے گئے مریخی سفوف کے طیران پزیر، ہم جا اور نامیاتی تجزیات "۔ سائنس 341 (6153): 1238937۔doi:10۔1126/science۔1238937۔
  297. گروٹزنگر، جان (ستمبر 26، 2013ء) "خصوصی مسئلہ کا تعارف:مریخی جہاں گرد کیوریوسٹی سے کیے گئے سطح کے مادّے کا تجزیہ"۔ سائنس 341 (6153): 1475۔Bibcode:2013Sci۔۔۔341۔1475G۔ doi:10۔1126/science۔1244258۔
  298. نیل -جونز، نینسی؛ زبرٹسکی، الزبتھ؛ ویبسٹر، گائے؛ مارشلے، میری (ستمبر 26، 2013ء)۔ "کیوریوسٹی کے ایس اے ایم آلے نے سطحی مٹی کے نمونے میں پانی و دیگر چیزوں کو پایا"۔ ناسا۔
  299. ویبسٹر، گائے؛ براؤن، ڈیوائینی (ستمبر 26، 2013ء)۔ " کیوریوسٹی کے اترنے کی جگہ پر متنوع قسم کی سائنس حاصل ہوئی"۔ ناسا۔
  300. چانگ، کینتھ (اکتوبر 1، 2013ء)۔"مریخ پر ٹکر سے حاصل ہونے والی مٹی نے ادائیگی کردی"۔ نیو یارک ٹائمز۔
  301. میسلن، پی -وائی؛ و دیگر (ستمبر 26، 2013ء) "کیم کیم سے مشاہدہ کیے گئے مریخ میں واقع گیل شہابی گڑھے میں مٹی کا تنوع اور آبیدگی"۔ سائنس 341 (6153): 1238670۔doi:10۔1126/science۔1238670۔
  302. اسٹولپر، ای ایم ؛ بیکر، ایم بی ؛ نیو کومب، ایم ای ؛ شمڈت، ایم ای ؛ ٹریمین، اے ایچ ؛ کزن، اے ؛ ڈیار، ایم ڈی؛ فسک، ایم آر ؛ گلرٹ، آر ؛ کنگ، پی ایل ؛ لیشن، ایل ؛ موریس، ایس ؛ مک لینن، ایس ایم ؛ مینٹی، ایم ای ؛ پریٹ، جی؛ رولینڈ، ایس؛ سوٹر، وی؛ وائن، آر سی؛ ایم ایس ایل سائنس ٹیم (2013ء)۔ " جیک ایم کی پیٹرو کیمیا :ایک مریخی موگیرائٹ"۔ سائنس (AAAS) 341(6153): 1239463۔ doi:10۔1126/science۔1239463۔ اخذ کردہ ستمبر 28، 2013ء۔
  303. ویبسٹر، گائے؛ جونز، نینسی نیل ؛ براؤن، ڈیوائینی (دسمبر 16، 2014ء)۔ "ناسا جہاں گرد نے مریخ پر عامل اور قدیم نامیاتی کیمیائی عناصر پائے"۔ ناسا۔ اخذ کردہ دسمبر 16 ،2014ء۔
  304. چانگ، کینتھ (دسمبر 16، 2014ء)۔ "ایک عظیم لمحہ: جہاں گردنے ایسے سراغ پائے ہیں جو حیات کے بارے میں اشارے دیتے ہیں"۔ نیو یارک ٹائمز۔ اخذ کردہ دسمبر 16، 2014ء۔
  305. مہافی، پی آر ؛ و دیگر (دسمبر 16، 2014ء) "مریخی ماحول: مریخ پر ہیس پیرین مٹی میں موجود معدنیات پر ماحولیاتی ارتقا کے نقوش"۔ سائنس 347(6220): 412–414۔ doi:10۔1126/science۔1260291۔ اخذ کردہ دسمبر 16، 2014ء۔
  306. مارٹن ٹورس، ایف جویر؛ زورزانو، ماریا پاز؛ویلنٹائن سیرانو، پٹریشیا؛ ہاری، ایری ماٹی؛ جینزر، ماریا (اپریل 13، 2015ء)۔"مریخ میں واقع گیل شہابی گڑھے میں چلتے ہوئے مائع پانی اور پانی کی سرگرمی"۔ نیچر جیو سائنس 8: 357–361۔ doi:10۔1038/ngeo2412۔ اخذ کردہ اپریل 14 ،2015ء۔
  307. رینکن، پال (اپریل 13، 2015ء)۔"مریخ پر مائع پانی کے شواہد پائے گئے"۔ بی بی سی نیوز۔ اخذ کردہ اپریل 15، 2015ء۔
  308. کیلون، وہائٹنی (اکتوبر 8، 2015ء)۔ "ناسا کی کیوریوسٹی جہاں گرد ٹیم نے مریخ پر قدیمی جھیلوں کی تصدیق کی"۔ ناسا۔ اخذ کردہ اکتوبر 9، 2015ء۔
  309. گروٹزنگر، جے پی؛ و دیگر (اکتوبر 9، 2015ء) " مریخ میں واقع گیل شہابی گڑھے میں موجود جھیل کی تحویل، کھدائی اور قدیم ماحول شناسی"۔ سائنس (journal) 350 (6257)۔doi:10۔1126/science۔aac7575۔ اخذ کردہ اکتوبر 9، 2015ء۔

فہرست نگاری[ترمیم]

  • بوائیس، جوزف، ایم (2008ء)۔ اسمتھ سونیین کی مریخ کی کتاب ؛ کونیکی اینڈ کونیکی:اولڈ سیبروک، سی ٹی، آئی ایس بی این 978-1-58834-074-0
  • کار، مائیکل، ایچ(1996ء)۔ مریخ پر پانی ؛ آکسفورڈ یونیورسٹی پریس: نیو یارک، آئی ایس بی این 0-19-509938-9۔
  • کار، مائیکل، ایچ (2006ء) مریخ کی سطح ؛ کیمبرج یونیورسٹی پریس: کیمبرج، یو کے، آئی ایس بی این 978-0-521-87201-0۔
  • ہارٹمین، ولیم، کے (2003ء) مریخ کے مسافر کی رہنما: سرخ سیارے کی پرسرار زمین۔ ؛ ورک مین: نیو یارک، آئی ایس بی این 0-7611-2606-6۔
  • ہینلن، مائیکل(2004ء) حقیقی مریخ :اسپرٹ، آپرچونیٹی،مریخی ایکسپریس اور سرخ سیارے کو کھوجنے کی جستجو ؛ کانسٹیبل: لندن، آئی ایس بی این 1-84119-637-1۔
  • کارجیل، جیفری، ایس(2004ء) مریخ: ایک گرم و مرطوب سیارہ۔ ؛ اسپرنگر پرایکسس : لندن، آئی ایس بی این 1-85233-568-8۔
  • مورٹن، اولیور (2003ء) مریخ کی نقشہ سازی: سائنس، تخیل اور جہاں کی پیدائش؛ پیکاڈور: نیو یارک، آئی ایس بی این 0-312-42261-X۔
  • شیہان، ولیم(1996ء) سیارہ مریخ: مشاہدات و دریافتوں کی تاریخ۔ ؛ یونیورسٹی آف ایریزونا پریس: ٹکسن، اے زی، آئی ایس بی این 0-8165-1640-5۔
  • وائکنگ جہاں گرد کی تصویر لینے والی ٹیم(1980ء)۔ وائکنگ جہاں گرد کے مریخی نظارے، سی آر۔ اسپٹزر،ایڈیشن۔؛ ناسا ایس پی-441: واشنگٹن ڈی سی

بیرونی روابط[ترمیم]