مظفر بخاری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

پروفیسر مظفر بخاری قیام پاکستان سے قبل پنجاب کے ضلع گورداسپور میں 1941 میں پیدا ہوئے۔ پاکستان بننے کے بعد ان کا خاندان لاہور میں بس گیا۔

تعلیم[ترمیم]

بخاری نے اسلامیہ ہائی سکول سنت نگر سے ورنیکلر فائنل (جماعت ہشتم) کا امتحان وظیفہ لیکر پاس کیا اور سکول بھر میں اوّل رہے۔ پھر وہ سینٹرل ماڈل ہائی سکول لاہور میں چلا گئے۔ وہاں سے انہوں نے میٹرک کا امتحان اعلیٰ نمبروں سے پاس کیا اور وظیفہ لیا۔ میٹرک کے بعد وہ گورنمنٹ کالج لاہور میں داخل ہو گئے وہاں سے ایم۔ اے انگلش کا امتحان پاس کیا۔

ملازمت[ترمیم]

تعلیم سے فراغت کے چند ماہ بعد گورنمنٹ کالج لاہور ہی میں انگریزی کا لیکچرار مقرر ہوئے۔ بطور طالبعلم اور استاد انہوں نے گورنمنٹ کالج لاہور میں 45 سال گزارے اور وہاں سے 2001ء میں ریٹائر ہوئے۔ ریٹائرمنٹ سے دس پندرہ سال پہلے ہی انہوں نے اپنے رہائش گاہ ماڈل ٹاؤن لاہور میں سی ایس ایس (CSS) کی اکیڈمی قائم کر لی تھی۔ جہاں وہ آج تک مقابلے کے امتحان میں شریک ہونیوالے طلبہ کو انگریزی پڑھاتے ہیں۔

ادبی خدمات[ترمیم]

انہیں بچپن ہی سے شعر و شاعری کا شوق تھا۔ ان کے اکثر اشعار میں مزاحیہ رنگ ہوتا تھا۔گورنمنٹ کالج لاہور میں قیام کے دوران میں انہوں نے سنجیدہ شاعری بھی کی۔ ان کی غزلیں کالج کے میگزین "راوی" اور ملک کے نامور ادبی رسائل بالخصوص "اوراق" میں چھپا کرتی تھیں۔1972ء میں انہیں روزنامہ "مغربی پاکستان"(جو اب بند ہوچکا ہے) میں کالم لکھنے کا موقع ملا۔ ان کے کالم میں مزاحیہ اور طنزیہ رنگ نمایاں ہوتا تھا۔ پھر ہولے ہولے ان کی طبیعت طنز و مزاح کی طرف مائل ہو گئی۔ ان کے مزاحیہ مضامین ماہنامہ "اردو ڈائجسٹ" میں چھپنے لگے۔

تصانیف[ترمیم]

پھر 1980 میں مزاحیہ مضامین اور کہانیوں پر مشتمل ان کی کتاب "گستاخی معاف " شائع ہوئی۔ یہ کتاب ادبی حلقوں اور عوام میں بہت مقبول ہے اب تک اس کے دس ایڈیشن شائع ہوچکے ہیں۔ آج کل وہ روزنامہ "نئی بات" میں گستاخی معاف ہی کے عنوان سے ہفتہ میں ایک دو کالم لکھتے ہیں جو زیادہ تر طنزیہ مزاحیہ ہوتے ہیں لیکن بعض اوقات سنجیدہ کالم بھی لکھتے ہیں۔ انہوں نے ایک انگریزی بول چال کی کتاب اور ایک سی ایس ایس کے طلبہ کے لیے انگریزی کی کتاب لکھی ہے۔ یہ دونوں کتابیں طالبعلموں میں بہت مقبول ہیں۔ مظفر بخاری آج کل میں ایک طنز و مزاح کا انسائیکلوپیڈیا مرتب کر رہے ہیں جس میں سو سے زیادہ مزاح نگاروں کی تحریریں شامل ہیں۔ اس کے علاوہ وہ اپنی سوانح عمری بھی لکھ رہے ہیں جس کا عنوان ہے "اپنی کھوج میں"۔ ان کا مختصر شعری مجموعہ بھی زیرِ ترتیب ہے۔ ان کی دیگر کتب کے نام یہ ہیں۔

٭ پیچ در پیچ

٭ بے ادب با مراد

٭ ایک سو ایک

٭ چمن کو چلئے

بیرونی حوالہ جات[ترمیم]

٭ اپنی کھوج میں

٭ پروفیسر مظفر بخاری کے اردو کالمز

٭ مزاح>> مظفر بخاری

٭ مظفر بخاری : مصنّف