ملائیشیا میں مذہب

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

ملائیشیا ایک کثیر ثقافتی اور کثیر ملکی ملک ہے، جس کا سرکاری مذہب اسلام ہے۔ 2010ء کی آبادی اور رہائش شماری کے مطابق، 61.3 فیصد آبادی اسلام پر عمل کرتے ہیں۔ جب کہ 19.8 فیصد بدھ مت؛ 9.2 فیصد عیسائیت؛ 6.3 فیصد ہندو مت؛ اور 3.4 فیصد روایتی چینی مذاہب پر عمل کرتے ہیں۔[1][2] ملائیشیا میں خود ساختہ بے دین کی تعداد بہت کم ہے۔ ریاست کو انسانی حقوق کی تنظیموں کی جانب سے بے دینوں کے خلاف حکومت کے امتیازی سلوک پر تنقید کا نشانہ بنایا گیا ہے، کابینہ کے کچھ ارکان یہ کہتے ہیں کہ "مذہب کی آزادی مذہب سے آزادی نہیں ہے"۔[3][4]

ملائیشیا میں اسلام کی نمائندگی سنی الہیات کے شافعی سے ہوتی ہے اور حکومت کی جانب سے مذہب کی کسی بھی دوسری شکل (جیسے شیعہ اسلام) پر عمل کرنے پر بہت زیادہ پابندی ہے۔[5][6] آئین ملائیشیا کو ایک سیکولر ملک بناتا ہے اور مذہب کی آزادی کی ضمانت دیتا ہے، جبکہ ملائیشیائی معاشرے میں اپنی اہمیت کی علامت کے لئے اسلام کو "سرکاری مذہب" کے طور پر قائم کرتا ہے۔

ملائیشیائی چینی مختلف عقائد پر عمل کرتے ہیں: مہایان بدھ مت اور چینی روایتی مذاہب (بشمول تاؤ ازمہندو مذہب پر عمل ملائیشیائی ہندوستانی کی اکثریت کرتی ہے۔ عیسائیت نے کچھ برادریوں خصوصا مشرقی ملیشیا میں خود کو قائم کیا ہے۔ اس کا تعلق کسی خاص نسلی گروہ سے نہیں ہے۔

مختلف مذہبی گروہوں کے مابین تعلقات عام طور پر کافی روادار ہوتے ہیں، حالانکہ مختلف نسلی گروہوں کے افراد نسلی اور مذہب پر مبنی زیادہ یکساں ذاتی تعلقات رکھتے ہیں۔[7] عید، کرسمس، قمری سال، اور دیپالی کو قومی تعطیلات قرار دیا گیا ہے۔ ملائیشیا کے سیاستدانوں کی طرف سے مذہبی ہم آہنگی کو ترجیح کے طور پر دیکھا جانے والے مختلف گروہوں کے مابین مذہبی افہام و تفہیم کے فروغ کے لئے مختلف گروہ تشکیل دیئے گئے ہیں۔[حوالہ درکار]

مذہبی تقسیم[ترمیم]



Circle frame.svg

ملائیشیا میں مذہب (2010)[8]

  اسلام (61.3%)
  بدھ مت (19.8%)
  مسیحیت (9.2%)
  ہندو مت (6.3%)

ملائشیا میں دنیا کے تمام بڑے مذاہب کی نمایاں نمائندگی ہے۔[9] آبادی اور رہائش شماری کے اعداد و شمار ان مذاہب کی پیروی کرتے ہوئے آبادی کے تقریبا ان تناسب کو ظاہر کرتے ہیں:[8]

سال اسلام بدھ مت عیسائیت ہندو مت کنفیوشزم ، تاؤ ازم اور دیگر روایتی چینی لوک مذہب کوئی مذہب نہیں دوسرے مذاہب یا کوئی معلومات نہیں
2000 60.4٪ 19.2٪ 9.1٪ 6.3٪ 2.6٪ 2.4٪
2010 61.5٪ 19.6٪ 9.2٪ 6.3٪ 1.3٪ 0.7٪ 0.5٪

ملائیشیائی مالائی کے تمام لوگ قانون کے مطابق مسلمان ہیں۔ زیادہ تر ملائیشیائی چینی مہایانا بدھ مت یا چینی روایتی مذاہب کی پیروی کرتے ہیں (بشمول تاؤ مت، کنفیوشس مت، اجداد پرستی یا نئے فرقے)۔[9] 2010ء کی شماری کے اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ ملائیشیا کی نسلی چینی کا 83.6 فیصد بدھ کے نام سے پہچانتا ہے، جن میں متعدد تعداد پیروکاروں کی پیروی کرتی ہے جو تاؤ مت (3.4٪) اور عیسائیت (11.1٪) کے بعد ہیں۔[8] در حقیقت، چینی لوک مذاہب کے پیروکاروں کی فیصد زیادہ ہوسکتی ہے، کیونکہ بہت سے لوگ بدھ مت اور لوک مذاہب دونوں پر عمل کرتے ہیں۔

عیسائیت غیر مالائی بومی پترا برادری (46.5٪) کا ایک اہم مذہب ہے جس میں 40.4 فیصد اضافی مسلمان ہیں۔[8] مشرقی ملیشیا کے بہت سے دیسی قبائل نے عیسائیت اختیار کرلی ہے، حالانکہ عیسائیت نے جزیرہ نما ملائشیا میں بہت کم ہے۔[9]

اسلام[ترمیم]

صباح میں کوٹا کنابالو سٹی مسجد

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Population Distribution and Basic Demographic Characteristic Report 2010 (Updated: 05/08/2011)". Department of Statistics, Malaysia. اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2017. 
  2. "Taburan Penduduk dan Ciri-ciri Asas Demografi" (PDF). Jabatan Perangkaan Malaysia. صفحہ 82. 13 نومبر 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 مارچ 2013. 
  3. "Putrajaya: Freedom of religion does not equal freedom from religion". 2017-11-23. اخذ شدہ بتاریخ 10 مارچ 2018. 
  4. Robert Evans (9 December 2013). "Atheists face death in 13 countries, global discrimination: study". روئٹرز. 
  5. Ambiga Sreenevasan (18 July 2007). "PRESS STATEMENT: Malaysia a secular State". The Malaysian Bar. اخذ شدہ بتاریخ 11 مارچ 2017. 
  6. Wu & Hickling, p. 35.
  7. "Racism has poisoned Malaysian politics for far too long". The National (بزبان انگریزی). 26 November 2018. اخذ شدہ بتاریخ 21 اپریل 2019. 
  8. ^ ا ب پ ت "Taburan Penduduk dan Ciri-ciri Asas Demografi" (PDF). Jabatan Perangkaan Malaysia. صفحہ 82. 13 نومبر 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 مارچ 2013. 
  9. ^ ا ب پ "Religion". Tourism Malaysia. 10 اپریل 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 جولا‎ئی 2011. 

مزید پڑھئیے[ترمیم]

  • Lee، Raymond L. M.؛ Ackerman، Susan Ellen (1997). Sacred Tensions: Modernity and Religious Transformation in Malaysia. University of South Carolina Press. ISBN 978-1-57003-167-0.