ملالہ فنڈ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ملالہ فنڈ
Malala Fund Logo.svg
مقصدایک ایسی دنیا جہاں تعلیم ہر لڑکی کا حق ہو
قیام2013
بانیانملالہ یوسفزئی
ضیاء الدین یوسفزئی
قسم501(c)(3) charitable organization
81-1397590
مرکوزتعلیم نسواں, تعلیم کا حق
صدر دفاترواشنگٹن ڈی سی, U.S.
CEO
سوزسن اہلر
عملہ
48
ویب سائٹwww.malala.org

ملالہ فنڈ ایک بین الاقوامی ، غیر منافع بخش تنظیم ہے جو لڑکیوں کی تعلیم کے لئے کام کرتی ہے۔ اسکی بنیاد ملالہ یوسف زئی ، جو پاکستان میں خواتین تعلیم کے لئے سرگرم کارکن اور سب سے کم عمر نوبل انعام یافتہ ہیں اور ان کے والد ضیاء الدین، نے مل کر رکھی۔ [1] [2] [3] تنظیم کا بیان کردہ ہدف یہ ہے کہ ہر لڑکی کے لئے 12 سال تک مفت ، محفوظ اور معیاری تعلیم کی فراہمی یقینی بنائی جائے۔ [4] بمطابق جولائی 2020 ، تنظیم کا عملہ 48 ہے اور اسے افغانستان ، برازیل ، ایتھوپیا ، ہندوستان ، لبنان ، نائیجیریا ، پاکستان اور ترکی میں کام کرنے والے 58 وکلاء کی مدد حاصل ہے۔ [5] [6]

تاریخ[ترمیم]

2013 میں ملالہ فنڈ میں پہلی امداد انجلینا جولی کی طرف سے آئی تھی جنھوں نے 200،000 ڈالر کا ذاتی عطیہ دیا تھا ، جسے سوات میں لڑکیوں کی تعلیم کے لئے فنڈ کے طور پر استعمال کیا جانا تھا جہاں سے ملالہ کا تعلق ہے ۔ [7] [8]

2014 میں ، ملالہ فنڈ نے دیہی کینیا میں ایک آل گرلز سیکنڈری اسکول کی تعمیر میں مدد [9] کی اور شمالی وزیرستان میں تنازعہ اور 2014 کے سیلاب سے متاثر بچوں کے لئے پاکستان میں اسکول کے سامان کی فراہمی اور تعلیم فراہم کی۔ [10]

2015 میں ، جب سیرا لیون کی حکومت نے ایبولا کی وبا کی وجہ سے اسکول بند کردیے ، تو ملالہ فنڈ نے ریڈیو خرید کر 1،200 پسماندہ لڑکیوں کو اپنی تعلیم جاری رکھنے کے لئے کلاس روم بنائے۔ [11] [12] نائیجیریا میں لڑکیوں کے لئے ملالہ کی وکالت کے طور پر ، [13] ملالہ فنڈ نے بوکو حرام کے اغوا سے آزاد ہونے والی چیبوک اسکول کی طالبات کو انکی ثانوی تعلیم کے لئے مکمل اسکالرشپ دینے کا وعدہ کیا۔ [14] 12 جولائی 2015 کو ، اپنی 18 ویں سالگرہ پر ، ملالہ نے شامی مہاجرین کے لئے شام کی سرحد کے قریب واقع ، لبنان کی وادی بیکا میں ایک سیکنڈری اسکول کے لئے ملالہ فنڈ کے ذریعے مالی اعانت کا اعلان کیا۔ [15] [16]

سنہ 2016 میں ، ملالہ نے اپنی سالگرہ کے موقع پر داداب پناہ گزین کیمپ کا دورہ کیا اور ملالہ فنڈ کے تعاون سے رہنمائی اور زندگی کی مہارت سے متعلق مشاورتی پروگرام سے مہاجرین لڑکیوں کی تقسیم اسناد کی تقریب میں شرکت کی۔ [17] دسمبر 2016 میں ، بل اینڈ میلنڈا گیٹس فاؤنڈیشن نے ملالہ فنڈ کو ترقی پذیر ممالک میں تعلیم کے حمایتی افراد کی مدد کے لئے ایجوکیشن چیمپئن نیٹ ورک کے آغاز کرنے کی خاطر 4 ملین کا وعدہ کیا۔ [18] [19]

2017 میں ، ملالہ فنڈ نے سرمایہ کاری کے منصوبوں میں نمایاں توسیع کی جس کے بارے میں نیوز ویک نے بیان کیا ، "مقامی لوگوں کے ذریعہ چلائے جانے والے تعلیم کی وکالت کا منصوبہ" ، مہربان یوسف زئی اور ان کے والد کی قیادت میں انکے پاکستان میں رہتے وقت ہوئی، اور یہ اگلے دہائی میں ہر سال میں 10 ملین ڈالر تک کی ادائیگی کرے گا۔ " [20] نئی گرانٹ میں افغانستان میں ایک ایسا منصوبہ بھی شامل کیا گیا ہے جس میں اساتذہ کی بھرتی اور تربیت میں مدد کی جائے گی تاکہ ملک کی بھیڑ بھری کلاس رومز میں مناسب تعداد برقرار رکھی جاسکے [21] [22] اور نائجریا میں مقامی کارکنوں کی عوامی تعلیم کو 9 سال سے بڑھا کر 12 سال کرنے کی مہم بھی اسکا حصہ ہے ۔ [23]

2018 میں ایپل انکارپوریشن نے ملالہ فنڈ کے ساتھ شراکت میں ہندوستان اور لاطینی امریکہ میں توسیع کے لئے فنڈز فراہم کرنے اور 100،000 سے زیادہ لڑکیوں کو تعلیم دینے کے مقصد کی خاطر ٹیکنالوجی ، نصاب کی امداد اور پالیسی تحقیق فراہم کرنے کے لئے کام شروع کی۔ [24] [25] [26] [27] [28] اس کے علاوہ ، برازیل میں ایپل ڈویلپر اکیڈمی کے ساتھ ایک رابطہ قائم کیا جائے گا۔ [29]

منصوبے[ترمیم]

ایجوکیشن چیمپیئن نیٹ ورک[ترمیم]

ملالہ فنڈ دنیا بھر میں لڑکیوں کی ثانوی تعلیم کو آگے بڑھانے کے لئے مقامی حمایتیوں اور منصوبوں کیا ساتھ دیتا ہے۔ [30] ملالہ فنڈ کے لئے موجودہ ترجیحی ممالک میں افغانستان ، برازیل ، ایتھوپیا ، ہندوستان ، لبنان ، نائیجیریا ، پاکستان اور ترکی شامل ہیں ۔ [31] [32] پاکستان میں ایک حمایتی گلالئی اسماعیل ہیں، جو آویر گرلز تنظیم کی چیئرپرسن ہیں ، جس میں یوسف زئی نے 2011 میں تربیت حاصل کی تھی۔ [33] [34]

تحقیق اور حمایت[ترمیم]

ملالہ ، ضیاالدین ، ملالہ فنڈ کا عملہ ، ایجوکیشن چیمپیئن نیٹ ورک کے ممبران اور نوجوان تعلیم کے کارکن کانفرنسوں میں شرکت کرتے ہیں اور لڑکیوں کی تعلیم کی وکالت کے لئے سیاسی رہنماؤں سے ملتے ہیں۔ [35] [36] [37] [38] وکالت کے اہداف مین لڑکیوں کی تعلیم کے لئے فنڈ میں اضافہ [39] اور لڑکیوں کو اسکول جانے میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنا ہے ، جیسے کمسنی کیشادی ، مزدوری ، تنازعہ اور صنفی امتیاز وغیرہ۔ [40] ملالہ فنڈ نے بروکنگز انسٹی ٹیوشن ، ورلڈ بینک اور رزلٹ فار ڈیویلپنٹ کے ساتھ تعاون میں لڑکیوں کی ثانوی تعلیم کے اثرات پر تحقیق کی ہے۔

جون 2018 میں ، ملالہ فنڈ نے جی 7 ممالک اور ورلڈ بینک سے لڑکیوں کی تعلیم کے لئے 9 2.9 بلین کی فراہمی کو محفوظ رکھنے میں مدد کی۔ [41] [42]

گرلز وائسز[ترمیم]

جولائی 2018 میں ، ملالہ فنڈ نے اسمبلی کا آغاز کیا جو لڑکیوں کی کہانیوں لڑکیوں کیلئے کے حوالے سے ایک ڈیجیٹل اشاعت ہے ۔ [43] [44] ملالہ فنڈ نے زمرہ ویب میں ای میل نیوز لیٹر کے لئے 2020 کا ویبی ایوارڈ جیتا ۔ [45]

مقبولیت[ترمیم]

اس تنظیم کو سن 2015 کی امریکی دستاویزی فلم ، ہی نیمڈ می ملالہ ، اور ملالہ کی سوانح عمری ، میں ملالہ ہوں میں دکھایا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Hauser، Christine (5 April 2013). "Malala Yousafzai Announces Grant for Girls' Education". The New York Times. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  2. Whitcraft، Teri (4 February 2013). "Malala Yousafzai Is Grateful for Her 'Second Life,' Creates Malala Fund for Girls' Education". ABC News. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2018. 
  3. Leber، Jessica (1 September 2015). "How Teenage Activist Malala Yousafzai Is Turning Her Fame Into A Movement". Fast Company. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  4. Ong، Thuy (22 January 2018). "Apple partners with Malala Yousafzai's Malala Fund to help advance girls' education". The Verge. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  5. "Malala Fund Staff". Malala Fund. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2020. 
  6. "Malala Fund welcomes 22 advocates as Education Champions and expands into Ethiopia". Malala Fund. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2020. 
  7. Frith، Maxine (5 April 2013). "Angelina Jolie Donates $200,000 To Malala Fund". Huffington Post. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  8. Barker، Faye (5 April 2013). "Malala announces first grant from fund set up in her name". ITV News. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2018. 
  9. Smith، Hayden (5 July 2014). "Malala takes education bid to Kenya". Times of Malta. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  10. "Malala Fund Giving 2014: Who You Helped Support". Malala Fund. 14 January 2015. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  11. Poon، Linda (18 February 2015). "Now This Is An Example Of Truly Educational Radio". National Public Radio. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  12. "World Radio Day". Malala Fund. 9 February 2015. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  13. Umar، Haruna (19 July 2017). "Malala speaks out against Boko Haram in Nigeria". USA Today. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  14. Levs، Josh (13 April 2015). "Malala's letter to Nigeria's abducted schoolgirls: 'solidarity, love, and hope'". CNN. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  15. Westall، Sylvia (13 July 2015). "Nobel winner Malala opens school for Syrian refugees". Reuters. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  16. Mendoza، Jessica (13 July 2015). "Malala Yousafzai's birthday request: investment in 'books, not bullets'". The Christian Science Monitor. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2018. 
  17. Opile، Caroline (12 July 2016). "Malala Celebrates her 19th Birthday with Refugees in Dadaab". UNHCR. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  18. "The Malala Fund – Bill & Melinda Gates Foundation". Bill & Melinda Gates Foundation. December 2016. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  19. "Malala Fund Partners". Malala Fund. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  20. Gidda، Mirren (1 October 2017). "Malala Yousafzai's New Mission: Can She Still Inspire as an Adult?". Newsweek. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  21. Hicks، Bill (14 June 2017). "Tough school? War, illiteracy and hope in Afghanistan". BBC. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  22. Yousafzai، Ziauddin (9 October 2017). "Teachers are nation-builders. Developing countries must invest in them properly". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  23. "INTERVIEW: In fighting for girls' education, UN advocate Malala Yousafzai finds her purpose". UN News. 5 October 2017. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  24. Reilly، Katie (22 January 2018). "Apple Is Partnering With Malala's Non-Profit to Educate More Than 100,000 Girls". Time Magazine. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  25. Gallucci، Nicole (22 January 2018). "Apple becomes Malala Fund's first Laureate partner". Mashable. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2018. 
  26. Carbone، Christopher (23 January 2018). "Apple teams up with Malala Fund to educate more than 100,000 girls worldwide". Fox News. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  27. "Apple teams with Malala Fund to support girls' education". Apple Inc. 21 January 2018. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  28. Dickey، Megan Rose (22 January 2018). "Apple partners with Malala Fund to help girls receive quality education". TechCrunch. اخذ شدہ بتاریخ 10 ستمبر 2018. 
  29. Dickey، Megan Rose (22 July 2018). "Apple and Malala Fund take new step into Latin America to give girls a full education". Independent. اخذ شدہ بتاریخ 10 ستمبر 2018. [مردہ ربط]
  30. Van Oot، Torey (9 May 2017). "What Happens When The World's Most Famous Teen Activist Grows Up?". Refinery29. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  31. "Education Champion Network | Malala Fund". www.malala.org (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2019. 
  32. Carolina Moreno، Ana (16 July 2018). "A estratégia de Malala para colocar 130 milhões de meninas na escola". O Globo. اخذ شدہ بتاریخ 10 ستمبر 2018. 
  33. Plackis-Cheng، Paksy. "Aware Girls". Impactmania. اخذ شدہ بتاریخ 14 دسمبر 2018. 
  34. Briggs، Billy. "The Peshawar women fighting the Taliban: 'We cannot trust anyone'". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 13 دسمبر 2018. 
  35. "Malala Fund Advocacy". Malala Fund. اخذ شدہ بتاریخ 27 اگست 2018. 
  36. Heil، Emily (23 June 2015). "Malala Yousafzai visits Capitol Hill to advocate for girls' education". The Washington Post. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2018. 
  37. "15 women speak up on the power of education". Global Partnership for Education. 9 March 2018. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2018. 
  38. Rolenc، Sharon (3 October 2016). "From Yemen to the United Nations: St. Kate's student advocates for women's education". St. Catherine University News. اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2018. 
  39. Royle، Taylor؛ Johnston، Barry (21 June 2017). "G20 Will Never Get Women to Work Without Investing in Girls' Education". News Deeply. اخذ شدہ بتاریخ 10 ستمبر 2018. 
  40. Watson، Emma (8 March 2018). "Emma Watson and Malala Yousafzai: two activists on how empowering women begins with education". Vogue Australia. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  41. "$3 billion pledged for girls education at G7, delighting Malala". The Economic Times. 10 June 2018. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  42. Mohamed، Farah. "MALALA FUND ADVOCACY: The key to unlocking girls' potential". The Global Governance Project. اخذ شدہ بتاریخ 10 ستمبر 2018. 
  43. "Assembly Issue Archive". Malala Fund. 11 نومبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  44. Seshadri، Aditi (6 July 2018). "Malala Yousafzai's global non-profit launches a new digital publication". Vogue India. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2018. 
  45. Kastrenakes، Jacob (20 May 2020). "Here are all the winners of the 2020 Webby Awards". The Verge (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 22 مئی 2020. 

بیرونی روابط[ترمیم]