ملک مہر النساء آفریدی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ملک مہر النساء آفریدی
تفصیل=

Member of the قومی اسمبلی پاکستان
مدت منصب
25 March 2008 – 25 March 2013
صدر آصف علی زرداری
وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی, راجہ پرویز اشرف
Member of the قومی اسمبلی پاکستان
مدت منصب
2 December 1988 – 6 August 1990
صدر غلام اسحاق خان
وزیر اعظم بینظیر بھٹو
Member of the Central Executive Committee of the Pakistan Peoples Party
مدت منصب
2001 – 2008
President of the Women Wing KPK
مدت منصب
16 May 1985 – 2 February 2010
معلومات شخصیت
پیدائش 7 اپریل 1943  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پشاور  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 4 مارچ 2013 (70 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش پشاور
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
جماعت پاکستان پیپلز پارٹی  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد 1
عملی زندگی
مادر علمی جامعۂ پشاور  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ملک مہر النساء آفریدی ( اردو: ملک مہرالنساءآفریدی ؛ پشتو: مالك مَہرُالنساءاپريدي‎ ؛ 7 اپریل 1943 میں پیدا ہوئی۔ 4 مارچ ، 2013 ء) ایک پاکستانی وکیل اور سیاستدان تھی۔ [1] وہ دو بار پارلیمنٹ کے ایوان زیریں کی رکن رہ چکی ہیں۔ وہ 1988 سے 1990 تک 8 ویں قومی اسمبلی [2] میں خواتین کے لئے مخصوص نشستوں پر اور پھر 13 ویں قومی اسمبلی [3] میں 2008 سے 2013 تک منتخب ہوئی تھیں۔ وہ 24 اپریل 1968 کو بطور طلباء رہنما پاکستان پیپلز پارٹی میں شامل ہوگئیں اور 4 مارچ 2013 کو اپنی وفات تک اپنی جماعت سے وفادار رہیں۔ وہ ایک کامیاب وکیل تھیں جن کے ساتھیوں نے ان کا احترام کیا۔ وہ پاکستان پیپلز پارٹی کی سنٹرل ایگزیکٹو کمیٹی کی رکن تھیں۔ [4] [5] [6]

ابتدائی زندگی[ترمیم]

ملک النساء آفریدی شمال مغربی صوبہ کے شہر پشاور میں ملک عبدالمالک افریدی کے ہاں پیدا ہوئیں۔ وہ آفریدی قبیلہ کے ملک الدین خیل قبیلے سے تعلق رکھتی تھیں۔ اس کے والد کی موت اس وقت ہوئی جب وہ نو سال کی تھی۔ اس کی والدہ اسکول ٹیچر تھیں اور بعد میں جی ایچ ایس ایس بیگم شہاب الدین اسکول کی پرنسپل رہیں۔

وہ پاکستان گرل گائیڈ ایسوسی ایشن کی رکن تھیں اور مغربی پاکستان اور مشرقی پاکستان (اب بنگلہ دیش ) کے مختلف کیمپوں میں انھوں نے شرکت کی تھی۔ 1965 کی پاک بھارت جنگ کے دوران وہ ایک رضاکار رہیں اور انہیں ہندوستان کے فضائی حملوں سے متاثرہ زخمیوں کی امداد کے لئے لیڈی ریڈنگ اسپتال پشاور میں تعینات کیا گیا تھا۔

وہ سیاست میں شامل ہونے کے لئے اپنی والدہ اور سوتیلے ماموں سے متاثر تھیں۔ ان کی والدہ پاکستان موومنٹ میں سرگرم تھیں اور آل انڈیا مسلم لیگ کی رکن تھیں۔ اس کی والدہ برطانوی قانون کے خلاف پشاور میں ہونے والے متعدد تاریخی مظاہروں میں شامل تھیں۔

اس کے سوتیلے ماموں ، ملک وارث خان آفریدی ، انڈین نیشنل کانگریس کے رکن تھے۔ ہندوستان میں برطانوی حکمرانی کی مخالفت کرنے پر وہ متعدد بار قید رہے۔[حوالہ درکار] [ حوالہ کی ضرورت ] اپنی والدہ اور چچا سے متاثر ہوکر انہوں نے پہلے ہی طالب علم رہنما اور پھر گنج وارڈ کے صدر کی حیثیت سے کم عمری میں ہی سیاست میں شمولیت اختیار کی۔

تعلیم[ترمیم]

انہوں نے اپنی ابتدائی اور ثانوی تعلیم جی ایچ ایس ایس بیگم شہاب الدین اسکول سے حاصل کی۔ انہوں نے 1960 میں میٹرک مکمل کیا۔ پھر وہ گورنمنٹ فرنٹیئر کالج برائے ہائر سیکنڈری تعلیم میں گئیں اور 1963 میں اپنی فیکلٹی آف آرٹس (ایف اے) مکمل کی۔ انہوں نے اپنی بیچلر آف آرٹس (بی اے) کی ڈگری 1965 میں اور بیچلر آف ایجوکیشن (بی ایڈ) 1974 میں کالج آف ایجوکیشن یونیورسٹی پشاور سے حاصل کی ۔ انہوں نے 1970 میں آرٹ ڈگری (ایم اے) پشتو اور پشاور یونیورسٹی سے ماسٹر آف آرٹس (ایم اے) سائکلوجی حاصل کی۔ وہ لا کالج پشاور گئی اور بیچلر آف لا ( ایل ایل ) میں ڈگری حاصل کی ۔

وہ اپنے کالج میگزین تعلیم کے پشتو حصے کی مدیر تھیں۔ وہ کالج آف ایجوکیشن اینڈ لا کالج میگزین کی ایڈیٹر بھی تھیں۔ اس نے پشتو شاعری اور پشتو ڈرامے لکھے جو ریڈیو پاکستان کے ذریعہ نشر ہوتے تھے۔

کیریئر[ترمیم]

وہ پبلک سروس کمیشن کے ذریعہ منتخب کردہ پشتو میں لیکچرر بنی۔ انہوں نے پشاور کے مشہور کالج میں "فرنٹیئر کالج برائے خواتین پشاور" اور "ویمن ڈگری کالج نوشہرہ" میں بطور استاد درس دی۔

سیاسی کیریئر[ترمیم]

2007 میں سوشلسٹ بین الاقوامی اجلاس کے دوران بے نظیر بھٹو کا انٹرویو۔ مہرون نسا آفریدی پس منظر میں

انہوں نے شہید ذوالفقار علی بھٹو کی طرف سے پارٹی قائم ہونے کے فورا بعد ہی 24 اپریل 1968 کو پیپلز پارٹی میں شمولیت اختیار کی۔ 1970 میں جب حیات شیر پاؤ نے پی پی پی ویمن ونگ شروع کی تو وہ گنج وارڈ کی صدر مقرر ہوگئیں۔ انہوں نے گھر گھر جاکر گنج وارڈ کا اہتمام کیا جو اس وقت قدامت پسند پشتون معاشرے میں بہت مشکل تھا۔

بیماری اور موت[ترمیم]

مہرن النساء آفریدی 2006 کے بعد سے پارکنسن کی بیماری میں مبتلا تھیں جب اس مرض میں اضافہ ہوتا گیا تو ان کی صحت آہستہ آہستہ خراب ہوتی گئی۔ اسے 26 فروری ، 2013 کو اسپتال میں داخل کیا گیا تھا اور انہیں میننگائٹس کی تشخیص ہوئی تھی جس کے نتیجے میں گردوں کی خرابی ہوئی تھی اور آخر کار وہ کارڈیک گرفت سے [7] 4 مارچ ، 2013 کو صبح تقریبا 1: 20 بجے دم توڑ گئیں۔

میراث[ترمیم]

تصنیف شدہ کتابیں[ترمیم]

  • گلابونا (2015)

یہ بھی دیکھو[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

  1. "National Assembly of Pakistan". www.na.gov.pk. اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2018. 
  2. http://www.na.gov.pk/uploads/former-members/8th%20National%20Assembly.pdf
  3. http://www.na.gov.pk/uploads/former-members/13th%20National%20Assembly.pdf
  4. "Government of Pakistan" (PDF). اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2018. 
  5. "Women's Parliamentary Caucus" (PDF). اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2018. 
  6. http://khyber1.rssing.com/chan-18278469/all_p1.html
  7. "Archived copy". 17 جون 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 جون 2015.