منشی رضی الدین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
منشی رضی الدین
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1912  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 2003 (90–91 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ موسیقار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

منشی رضی الدین (پیدائش: 1913ء - وفات: 2003ء) پاکستان کے معروف گلوکار تھے۔ ان کے آبا و اجداد امیر خسرو اور بہادر شاہ ظفر کے دور میں فنِ موسیقی سے وابستہ تھے۔ وہ معروف قوال بہاؤ الدین کے بڑے بھائی اور فرید ایاز کے والد تھے۔

سوانح[ترمیم]

منشی رضی الدین برصغیر پاک و ہند کے معروف قوال ۔ ابتدا میں آپ نے نظام آف حیدرآباد دکن کے ہاں اپنے فن کا مظاہرہ کیا۔ ریاست حیدرآباد جب 1948ء میں بھارت میں ضم ہو گئی تو آپ پاکستان تشریف لے آئے۔ یہاں آپ نے منظور نیازی اور برادز کے ساتھ مل کر ایک قوالی گروپ بھی تشکیل دیا لیکن 1966ء کے بعد سے آپ نے اکیلے ہی اپنے فن کا مظاہرہ کیا۔ حکومتِ پاکستان نے آپ کو 1967ء میں صدارتی تمغہ برائے حسنِ کارکردگی سے نوازا۔۔ آپ کا انتقال 4 جولائی 2003ء کو کراچی میں ہوا۔ منشی صاحب مشہور موسیقار تان رس خان کے وارث تھے اور انہوں نے اپنے دادا رضی الدین سے تربیت حاصل کی اور حیدرآباد دکن میں کئی برس تک گانے کے بعد سن 1950ء کی دہائی میں پاکستان آ گئے۔

برصغیر کی اصناف موسیقی
Dhrupad 2.jpg
اقسام موسیقی
اقسام موسیقی

فنّی خدمات[ترمیم]

عربی اور فارسی زبانوں پر دسترس کے ساتھ ساتھ منشی رضی الدین دُھرپد گائیکی کے، گنے چنے استادوں میں سے ایک تھے، جو اب پاکستان میں تقریباً ناپید ہو چکی ہے۔

منشی رضی الدین کا پسندیدہ ساز تان پورہ تھا بقول منشی صاحب تان پورے کے چار تار بیک وقت بارہ آوازوں کو جنم دیتے ہیں۔ اور اسی وجہ سے ان کی قوالیوں میں تان پورے کا متواتر استعمال جاری رہتا تھا۔[1]

ان کے پرستار انہیں منشی صاحب کے نام سے جانتے ہیں۔ وہ باکمال گائیک ہونے کے ساتھ ساتھ موسیقی کے علم پر مہارت بھی رکھتے تھے۔

کلام اقبال[ترمیم]

آپ نے جہاں متعدد شعرا کے کلام کو جلا بخشی وہیں علامہ محمد اقبال کے کلام کو بھی اپنی آواز میں پیش کیا۔ آپ کلامِ اقبال فارسی کو بہت عمدہ طریقے سے پیش کرتے تھے۔ آپ کی آواز میں جو کلام اقبال شہرت کی بلندیوں پر پہنچا اُن میں فارسی غزل ’از دیرِ مغاں آیم بے گردشِ صہبا مست‘ سب سے مقبول ہوئی۔[2]

تاثرات[ترمیم]

ان کے فر زند فرید ایاز الحسینی نے اپنے والد صاحب کی گائیکی پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ : " منشی رضی الدین ہمہ جہت شخصیت تھے۔ وہ علم موسیقی اور عمل موسیقی پر باقاعدہ اختیار رکھتے تھے۔

فرید ایاز نے والد صاحب کو یاد کرتے ہوئے کہا کہ بقول منشی رضی الدین قوالی کو اٹھارہ علوم سے تزیں کیا جاتا ہے۔ اور اٹھارہ علوم پر نظر رکھنے کے بعد ایک گویا بنتا ہے۔ علوم قوالی یا سماع میں میں جتنے بھی شعرا گزرے چاہے وہ کسی بھی زبان کے ہوں ان سب کے کلام سے نہ صرف منشی صاحب کو واقفیت تھی بلکہ ان کا شان نزول بھی جانتے تھے۔" [1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب عروج جعفری (Friday, 30 July, 2004). "منشی رضی الدین کی پہلی برسی". بی بی سی اردو ڈاٹ کوم. 
  2. (تحریر و تحقیق: میاں ساجد علی‘ علامہ اقبال سٹمپ سوسائٹی) منشی رضی الدین کی آواز میں مذکورہ بالا فارسی کلامِ اقبال درج ذیل لنک پر سنا جا سکتا ہے: https://www.youtube.com/watch?v=urNOm87_9qk