منیرہ سلطان (دختر عبد المجید اول)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
منیرہ سلطان (دختر عبد المجید اول)
(ترکی میں: Münire Sultan ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش 10 دسمبر 1844  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول،  استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 29 جون 1862 (18 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مدفن استنبول  ویکی ڈیٹا پر (P119) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the Ottoman Empire (1844–1922).svg سلطنت عثمانیہ  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد عبد المجید اول  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والدہ ودرجنان قادین افندی  ویکی ڈیٹا پر (P25) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
احمد کمال الدین  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

منیرہ سلطان ( عثمانی ترکی زبان: منیرہ سلطان ; 9 دسمبر 1844 – 29 جون 1862) ایک عثمانی شہزادی تھی، جو سلطان عبدالمجید اول اور ان کی اہلیہ وردیسنان کادن کی بیٹی تھی۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

منیرہ سلطان 9 دسمبر 1844 کو توپکاپی محل میں پیدا ہوئے۔ اس کے والد سلطان عبدالمجید اول تھے، اور اس کی والدہ ورڈیسنان کدن، [1] شہزادہ کیتوک جیورگی اچبا اور شہزادی یلیزاویتا ہانیم کی بیٹی تھیں۔ [2] وہ اپنے والد سے پیدا ہونے والی نویں بیٹی تھی اور اپنی ماں کی سب سے بڑی اولاد تھی۔ اس کا شہزاد احمد کمال الدین کا ایک بھائی تھا، جو اس سے تین سال چھوٹا تھا۔ [3]

پہلی شادی[ترمیم]

منگنی[ترمیم]

مارچ 1854ء میں استنبول کے ایک قاصد نے منیر سلطان کی منگنی کا اعلان مصر کے عباس اول کے بیٹے شہزادہ ابراہیم الہامی پاشا اور اس کی اہلیہ مہویچ ہانم سے کیا۔ بڑی عوامی تقریبات کا اعلان کیا گیا اور وائسرائے کو اس خبر سے بے حد خوش ہونے کی اطلاع ملی۔ [4][5] ابراہیم پاشا نے اسے شادی کے تحفے کے طور پر سولٹیئر کی انگوٹھی، سولیٹیئر بالیاں اور ایک برائیلیٹ بھیجا۔ شفاف ڈھکنوں سے ڈھکے ہر طرح کے پرفیوم اور مشک اور مستی کے پیالے بھی تھے۔ سیکسنی کے شربت اور چینی مٹی کے برتنوں پر مشتمل کرسٹل کیفے موجود تھے جن میں ہر طرح کے تحفظات تھے، اور آخر میں چینی چینی مٹی کے برتن کی پلیٹوں پر مشرقی اور مغربی دونوں کینڈی تھے۔ [6] اس کی والدہ، ورڈیسینن کڈن نے ان میں سے کچھ پرفیوم اور کھانے کے لقمے دوسری شہزادیوں کو دیے، اور انہیں اپنے وفد میں شامل لوگوں میں یکساں طور پر تقسیم کیا۔ [7][8] منگنی سیمی پاسشا پیلس میں ہوئی۔ [9]

شادی[ترمیم]

یہ شادی 10 اگست 1854ء کو استنبول کے بالطالیمانی سہیلانے میں ہوئی۔ [10] یہ شادی 31 جولائی 1857 کو انجام پائی [11] جوڑے کو ان کی رہائش گاہ کے طور پر فندکلی میں واقع ایک محل دیا گیا تھا۔ [12]

دوسری شادی[ترمیم]

منیرہ 1860ء میں شہزادہ ابراہیم الہامی کی موت کے وقت بیوہ ہو گیا تھا جب بیبک محل کے قریب باسفورس کو عبور کرتے ہوئے اس کی کشتی الٹ گئی۔ 2 جنوری 1861 کو، اس نے اپنے پہلے شوہر، دامت ابراہیم پاشا، [1] کے بیٹے سراسکر رضا پاشا کے نام سے دوسری شادی کی۔ [13][14] اس جوڑے کا ایک بیٹا تھا جس کا نام سلطان زادے علا الدین بے تھا جو 16 دسمبر 1861 [3] پیدا ہوا تھا۔

موت[ترمیم]

منیرہ سلطان کا انتقال سترہ سال کی عمر میں 29 جون 1862ء کو فائنڈیکلی میں واقع اپنے محل میں ہوا، اور اسے گلستو حانم، فاتح مسجد، استنبول کے مقبرے میں دفن کیا گیا۔ [1]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ Uluçay 2011.
  2. Tuna، Mahinur (2007). İlk Türk kadın ressam: Mihri Rasim (Müşfik) Açba : 1886 İstanbul-1954 New-York. As Yayın. صفحہ 23. ISBN 978-9-750-17250-2. 
  3. ^ ا ب Adra، Jamil (2005). Genealogy of the Imperial Ottoman Family 2005. صفحات 8. 
  4. Toledano، Ehud R. (فروری 13, 2013). State and Society in Mid-Nineteenth-Century Egypt. Cambridge University Press. صفحہ 53. ISBN 978-0-521-53453-6. 
  5. Warner، Jayne L. (2001). Cultural Horizons: A festschrift in honor of Talat S. Halman, Volume 1. Syracuse University Press. صفحات 161. ISBN 978-0-8156-8132-8. 
  6. Isin، Mary (جنوری 8, 2013). Sherbet and Spice: The Complete Story of Turkish Sweets and Desserts. I.B.Tauris. صفحات 48. ISBN 978-1-84885-898-5. 
  7. Lewis، Reina؛ Micklewright، Nancy (جولائی 1, 2006). Gender, Modernity and Liberty: Middle Eastern and Western Women's Writings: A Critical Sourcebook. I.B.Tauris. صفحہ 186. ISBN 978-1-86064-956-1. 
  8. McWilliams، Mark (جولائی 1, 2012). Celebration: Proceedings of the Oxford Symposium on Food and Cookery 2011. Oxford Symposium. صفحہ 154. ISBN 978-1-903018-89-7. 
  9. Pakalın، Mehmet Zeki (1954). Osmanli tarih deyimleri ve terimleri sözlüğü، Volume 3. Millî Eğitim Basımevi. صفحہ 349. 
  10. Badem، Candan (2010). "The" Ottoman Crimean War: (1853–1856). BRILL. صفحات 320 n. 96. ISBN 978-9-004-18205-9. 
  11. Sakaoğlu، Necdet (2008). Bu mülkün kadın sultanları: Vâlide sultanlar, hâtunlar, hasekiler, kadınefendiler, sultanefendiler. Oğlak Yayıncılık. صفحہ 623. ISBN 978-9-753-29623-6. 
  12. Mülayim، Selçuk؛ Akşit، İlhan (2005). Turkish Art and Architecture in Anatolia & Mimar Sinan. Akşit. صفحہ 195. ISBN 978-9-757-03922-8. 
  13. Paşa، Ahmed Cevdet (1960). Tezâkir. [2]۔ 13 – 20, Volume 2. Türk Tarih Kurumu Basımevi. صفحہ 144. 
  14. Saz، Leyla؛ Demir، Sedat (2016). Haremde Yaşam: Saray ve Harem Hatıraları. Hatıra. Dün Bugün Yarın Yayınları. صفحہ 159. ISBN 978-605-61331-1-4. 

ذرائع[ترمیم]

  • Uluçay، Mustafa Çağatay (2011). Padişahların kadınları ve kızları. Ankara: Ötüken. ISBN 978-9-754-37840-5.