منیر احمد خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

کرسی نشین پی اے ای سی، 1972–1991; ائی اے ای اے سٹاف ممبر، 1958–72; کرسی نشین عالمی ادارہ برائے نیوکلیائی توانائی بورڈ آف گورنرز، 1986–87

ڈاکٹر منیر احمد خان کو بجا طور پر پاکستان کے ایٹمی پروگرام کا خالق کہا جا سکتا ہے، طویل عرصے تک انٹرنیشنل اٹامک نرجی کمیشن سے سینئر ٹیکنیکل اسٹاف کے طور پر وابستہ رہتے ہوئے انہوں نے ’ری ایکٹر خان‘ کا خطاب حاصل کیا۔

ری ایکٹر ٹیکنالوجی اور پاور پلانٹس میں ان کے تجربے کو پرکھتے ہوئے ذوالفقار علی بھٹو نے انھیں پاکستان اٹامک انرجی کمیشن کا چیئرمین منتخب کیا اور ان کی سربراہی میں پلوٹونیم افزودگی کے منصوبے کا آغاز ہوا،جس کے لیے ڈاکٹر منیر نے فرانس اور چند ممالک کے ساتھ کچھ معاہدات بھی کیے، مگر ڈاکٹر عبد القدیر خان کی آمد کے بعد سائنسدان 2 گروہوں میں بٹتے گئے اور بلاآخر پلوٹونیم منصوبے کو التواء میں ڈالتے ہوئے ذوالفقار علی بھٹو نے یورینیم افزودگی کے لیے گرین سگنل دے دیا۔

ڈاکٹر منیر کو اپنے طویل کیریئر میں یہ کریڈٹ حاصل رہا کہ ایک ذمہ دار عہدے پر فائز رہتے ہوئے انھوں نے خود کو بہت حد تک تنازعات سے دور رکھا اور اپنی توجہ سائنس و ٹیکنالوجی کی ترویج اور نیوکلیئر تحقیقات پر مرکوز رکھی۔

ان کا سب سے بڑا کارنامہ کہوٹہ انرچمنٹ پلانٹ کا قیام تھا، جہاں پاکستان اٹامک انرجی کمیشن سے منسلک نامور سائنسدانوں نے دن رات کام کرتے ہوئے گراں قدر خدمات سر انجام دیں۔

کہا جاتا ہے کہ یورینیم افزودگی کے 24 مراحل میں سے ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی ٹیم نے صرف ایک اسٹیج مکمل کیا، جب کہ باقی 23 مراحل کہوٹہ لیبارٹریز میں پاکستان اٹامک انرجی کے ماتحت تکمیل کو پہنچے۔

ڈاکٹر منیر 1991 تک پاکستان اٹامک انرجی کمیشن کے چیئرمین کے عہدے پر فائض رہے، ان کی خدمات پر حکومت پاکستان نے انھیں ستارۂ امتیاز اور ہلالِ امتیاز سے نوازا۔