مورو تنازع

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مورو تنازع
بسلسلہ فلپائن میں بغاوت;
شمالی بورنیو تنازع
Philippines Christian-Muslim Division Map (by majority).png
مینداناؤ میں آج بھی اکثریت مورو مسلم علاقوں کی ہے۔
تاریخ29 مارچ 1969ء (1969ء-03-29)–present
(50 سال، 9 مہینا، 3 ہفتہ)
مقامفلپائن (بنیادی طور پمینداناؤ میں)
حیثیت حکومت اور بہت سے ایم این ایل ایف اور ایم آئی ایل ایف کے درمیان میں امن معاہدہ ہو چکا ہے۔ حکومت اور امن معاہدے میں دہشت گردی
سرحدی
تبدیلیاں
مسلم مینداناؤ کا خود مختار علاقہ تاسیس اگست 1989
محارب

Flag of the Philippines.svg فلپائن

حمایت یافتہ از:
Flag of Russia.svg روس
Flag of the United States.svg ریاستہائے متحدہ (advisors)[1]
Flag of Australia.svg آسٹریلیا[2]
Flag of Indonesia.svg انڈونیشیا[3][4]
Flag of Malaysia.svg ملائیشیا (since 2001)[3][5][6][7]


انٹرنیشنل مانیٹرنگ ٹیم (آئی ایم ٹی)

مورو قومی محاذ آزادی (1996 تک)[8]
مورو اسلامی محاذ آزادی ( 2014تک)

سابق اعانتی:
Flag of لیبیا لیبیا (until 2011)[9][10][11][12]
Flag of پاکستان پاکستان ( 2002تک)[13]

Flag of Malaysia.svg ملائیشیا (1995 تک)[14][15][16]

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست ابو سیاف[17][18] (1991-تاحال)
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست BIFF (2008-تاحال)
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Maute group (2013-تاحال)[19][20]

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Khalifa Islamiyah Mindanao (2011-تاحال)[21]
کمانڈر اور رہنما

Ferdinand Marcos
(1969–1986)
کوریزون اکینو
(1986–1992)
Fidel V. Ramos
(1992–1998)
Joseph Estrada
(1998–2001)
Gloria Macapagal-Arroyo
(2001–2010)
Benigno Aquino III
(2010–2016)

رودریگو دوترتے
(2016–تاحال)

Nur Misuari (1969–1996)
Habier Malik 
Muslimin Sema (1969–1996)
Habib Mujahab Hashim (1969–1996)
Abul Khayr Alonto (1969–1996)
Murad Ebrahim (1978–2014)
مورو اسلامی محاذ آزادی (deceased)
سابق اعانتی:
انور سادات (1969–1981)[22]
معمر قذافی (1969–2011)

Mustapha Harun (1969–1995)[23][24]

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Khadaffy Janjalani 
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Galib Andang 
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Ameril Umbra Kato 

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست Isnilon Totoni Hapilon[17][25]
طاقت
Flag of فلپائن 125٫000-130٫000[26]

15٫000 (2012)[26]

11٫000 (2012)[26]
غیر متعین
ہلاکتیں اور نقصانات
کل اموات:
کم از کم 120٫000 بشمول شہریوں گے

مورو تنازع فلپائن کے مینداناؤ علاقے میں ایک بغاوت ہے۔[27] مورو تنازع یوں تو صدیوں کی تاریخ رکھتا ہے، لیکن موجود دور میں اس تنازع کی تاریخ 1935ء کے قانون آباد کاری کے نام سے جبرا ناقذ کیے گئے ایک قانون سے شروع ہوتی ہے، اس قانون کی رو سے تمام مقامی مسلمانوں کو جاہل اور امن کے لیے خطرہ قرار دے کے ان کی آزادی اور ملکیت کے حقوق سلب کر لیے گئے، جب کہ ایک اور قانون جسے دولت کا قانون 141 کہتے ہیں مسلمانوں پر جبرا لاگو کر دیا گیا۔ اس قانون کے تحت مسلمانوں کی تمام املاک اور زمینوں کو سرکاری تحویل میں لے لیا گیا۔ ان قوانین نے مورو مسلمانوں اور حکومت فلپائن کے درمیان میں تنازع کی صورت اختیار کر لی۔[28]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Defense.gov News Article: Trainers, Advisors Help Philippines Fight Terrorism"۔ مورخہ جولائی 14, 2015 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2015۔ نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  2. Philippines to be a key recipient of Australia's New Regional Counter-Terrorism Package – Australian Embassy (archived from the original Archived مارچ 20, 2012 at the Wayback Machine on 1 ستمبر 2007)
  3. ^ ا ب Malcolm Cook۔ "Peace's Best Chance in Muslim Mindanao" (PDF)۔ Institute of Southeast Asian Studies۔ صفحہ 7۔ ISSN 2335-6677۔ مورخہ اپریل 18, 2015 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 ستمبر 2014۔ نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  4. Anak Agung Banyu Perwita۔ Indonesia and the Muslim World: islam and Secularism in the Foreign Policy of Soeharto and Beyond۔ NIAS Press۔ صفحات 116–117۔ ISBN 978-87-91114-92-2۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  5. "Nur Misuari to be repatriated to stand trial"۔ Australian Broadcasting Corporation۔ مورخہ جولائی 5, 2014 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 جولائی 2014۔ نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  6. Soliman M. Santos۔ Malaysia's Role in the Peace Negotiations Between the Philippine Government and the Moro Islamic Liberation Front۔ Southeast Asian Conflict Studies Network۔ ISBN 978-983-2514-38-1۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  7. "Malaysia asks PHL for help in tracking militants with Abu Sayyaf ties"۔ GMA-News۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 جولائی 2014۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  8. Ivan Molloy۔ "Revolution in the Philippines – The Question of an Alliance Between islam and Communism"۔ یونیورسٹی آف کیلیفورنیا۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 مئی 2012۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  9. "Khadafy admits aiding Muslim seccesionists"۔ Philippine Daily Inquirer۔ صفحہ 2۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  10. Paul J. Smith۔ Terrorism and Violence in Southeast Asia: Transnational Challenges to States and Regional Stability۔ M.E. Sharpe۔ صفحات 194–۔ ISBN 978-0-7656-3626-3۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  11. William Larousse۔ A Local Church Living for Dialogue: Muslim-Christian Relations in Mindanao-Sulu, Philippines : 1965–2000۔ Gregorian Biblical BookShop۔ صفحات 151 & 162۔ ISBN 978-88-7652-879-8۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  12. Michelle Ann Miller۔ Autonomy and Armed Separatism in South and Southeast Asia۔ Institute of Southeast Asian Studies۔ صفحات 291–۔ ISBN 978-981-4379-97-7۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  13. Moshe Yegar۔ Between Integration and Secession: The Muslim Communities of the Southern Philippines, Southern Thailand, and Western Burma/Myanmar۔ Lexington Books۔ صفحات 256–۔ ISBN 978-0-7391-0356-2۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  14. Tan، Andrew T/H.۔ A Handbook of Terrorism and Insurgency in Southeast Asia۔ Cheltenham, UK: Edward Elgar Publishing۔ صفحات 230, 238۔ ISBN 1-84720-718-9۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  15. Isak Svensson۔ International Mediation Bias and Peacemaking: Taking Sides in Civil Wars۔ Routledge۔ صفحات 69–۔ ISBN 978-1-135-10544-0۔ مورخہ 6 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  16. "Philippines rebel leader arrested"۔ BBC News۔ مورخہ ستمبر 26, 2015 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 ستمبر 2015۔ Malaysia's Inspector-General of Police Norian Mai said Mr Misuari and six of his followers were arrested at 3.30 am on Saturday (1930 GMT Friday) on Jampiras island off Sabah state. Manila had ordered his arrest on charges of instigating a rebellion after the government suspended his governorship of an autonomous Muslim region in Mindanao, the ARMM. Although the Philippines has no extradition treaty with Malaysia, the authorities have already made clear that they intend to hand Mr Misuari over to the authorities in Manila as soon as possible. Malaysian Prime Minister Mahathir Mohamad had said before the arrest that, although his country had provided support to the rebel group in the past in its bid for autonomy, Mr Misuari had not used his powers correctly. "Therefore, we no longer feel responsible to provide him with any assistance," he said. نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  17. ^ ا ب
  18. "3 soldiers killed, 11 hurt in Lanao del Sur clash"۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-02-27۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  19. Umel، Richel۔ "Army reports killing 20 'terrorists' in clashes with Lanao Sur armed group"۔ مورخہ 26 December 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2016-02-27۔ More than one of |archiveurl= and |archive-url= specified (معاونت); More than one of |archivedate= and |archive-date= specified (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  20. Kristine Angeli Sabillo۔ "New al-Qaeda-inspired group eyed in Mindanao blasts—terror expert"۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2015۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  21. Moshe Yegar۔ Between Integration and Secession: The Muslim Communities of the Southern Philippines, Southern Thailand, and Western Burma/Myanmar۔ Lexington Books۔ صفحات 258–۔ ISBN 978-0-7391-0356-2۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  22. Andrew Tian Huat Tan۔ Security Perspectives of the Malay Archipelago: Security Linkages in the Second Front in the War on Terrorism۔ Edward Elgar۔ ISBN 978-1-84376-997-2۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  23. Shanti Nair۔ اسلام in Malaysian Foreign Policy۔ Routledge۔ صفحات 67–۔ ISBN 978-1-134-96099-6۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ Mustapha was directly implicated in the provision of training facilities for separatist Moro guerrillas as well harbouring Moro Muslim refugees in Sabah due to his ethnic connection. نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  24. David Von Drehle۔ "What Comes After the War on ISIS"۔ مورخہ 26 December 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2015۔ More than one of |archiveurl= and |archive-url= specified (معاونت); More than one of |archivedate= and |archive-date= specified (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  25. ^ ا ب پ Lisa Huang؛ Victor Musembi؛ Ljiljana Petronic۔ "The State-Moro Conflict in the Philippines" (PDF)۔ Carleton۔ مورخہ ستمبر 29, 2015 کو اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2015۔ نامعلوم پیرامیٹر |deadurl= ignored (معاونت); نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  26. Gutierrez، Eric؛ Borras، Saturnino Jr۔ "Moro Conflict: Landlessness and Misdirected State Policies"۔ East-West Center Washington۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ – via Amazon۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)
  27. "The CenSEI Report (Vol. 2, No. 13, اپریل 2-8, 2012)"۔ مورخہ 26 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 جنوری 2015۔ نادرست |=مردہ ربط (معاونت)

بیرونی روابط[ترمیم]