موسیٰ پاک شہید

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

شيخ سيد ابوالحساب موسى پاک شہید دسویں صدی ہجری کے ایک صوفی جو سید موسیٰ پاک شہید کے نام سے معروف ہیں،

سلسلہ نسب[ترمیم]

موسیٰ پاک شہید، سیّد حامد گنج بخش گیلانی کے بیٹے تھے۔ سیّد حامد گنج بخش گیلانی کے والد سیّد عبدالرزاق شاہ گیلانی، دادا سیّد عبدالقادر ثانی اور پردادا سیّد شیخ بندگی محمد غوث گیلانی حلبی اوچی تھے جو سیّد شیخ شمس الدین جیلانی حلبی کے اکلوتے فرزند تھے۔

ولادت[ترمیم]

ان کی ولادت 952ھ میں ہوئی

ملتان آمد[ترمیم]

ملتان میں سادات حسنی قادری کی بنیاد حضرت موسیٰ پاک شہید نے رکھی، آپ غوث پاک کی اولاد میں سے تھے۔ آپ کے مورث اعلیٰ مخدوم محمد غوث بندگی حلب سے ہندوستان میں تشریف لائے تھے، آپ کا ارشاد ہے کہ درویش پر حصول علم لازم ہے مگر اس سے بڑھ کر اس پر عمل کرنا لازم ہے۔

سلسلہ قادریہ[ترمیم]

سلسلہ قادریہ کے اہم بزگ جو ملتان، پاکستان میں دفن ہیں، آپ کی کتاب تیسیرالشاغلین کو سلسلہ قادریہ میں تصوف کا نصاب قرار دیا جاتا ہے۔[1]

شاہ عبد الحق کے مرشد[ترمیم]

سید موسیٰ پاک شہید کی عظمت کے لیے اگر صرف اتنا ہی کہہ دیا جائے کہ آپ ہندوستان کے جلیل القدر محدث شاہ عبدالحق دہلوی کے مرشد تھے، توکافی ہوگا، شاہ صاحب نے جس عقیدت و ادب کا اظہار اپنے مرشد سے کیا ہے وہ اصحاب بصیرت اور طالبان حقیقت کے لیے مشغل ہدایت ہے، ایک ایسا شخص جو شریعت کے علم میں یکتائے روزگار ہوا اور جس کا فرمایا ہوا لائق استفادہ اور قابل اعتماد ہو، وہ اپنے پیر و مرشد کے ساتھ عقیدت کے اظہار کے لیےکیا کچھ کر سکتا ہے یہ دیکھنا اور جاننا ہو تو شیخ کتاب اخبار الاخیار کے خاتمہ کا مطالعہ کر نا چاہیے، فرماتے ہیں :
خلاصہ زندگی کا ایک طویل حصہ بارگاہ رب العزت میں پہنچنے کے لیے بلاوسیلہ صرف کر دیا، مگر کچھ حاصل نہ ہوا، بارہا غیب سے وابتغو الیہ الوسیلۃ کا ارشاد پایااوروسیلہ کی تلاش میں سرگرداں رہا، مجھے ایسے شخص کی تلاش تھی جو میری نسبت کو صحیح اور ارادت کو درست کر دے اور یہ جس کے ہاتھ میں اپنا ہاتھ دے دوں، اس کے قدموں کو پکڑلوں بلکہ پوری زندگی اس کے قدموں میں گذاردوں ، بالاخر صدق طلب کام آیا اور اللہ نے میرے لیے ایک ہستی کو بھیجا جو نفس عیسیٰ، جس کا پر سانس آسمان معرفت سے خوان نعمت کا نازل کرتا ہے اور اولین و آخرین کے لیے عید و مسرت پیدا کرتا ہے، جو موسوی مقام رکھتا ہے جس کا جمال خجرہ و جہت سے نکلنے والی آگ کے مانند ہے، پھر اپنے شیخ موسیٰ پاک شہید کو ان القاب سے نوازتے ہیں۔

زین العابدین و امام الصادقین السید التقی النقی

وفات[ترمیم]

موسیٰ پاک شہید کی وفات 1010ھمیں ہوئی ان کا مزار شہرِ فصیل کے جنوبی حصہ میں واقع ہے۔ جس دروازے سے جسدِ مبارک کو شہر کے اندر لے جایا گیا وہ ’’پاک دروازہ‘‘ کے نام سے مشہور ہو گیا [2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. سرائیکی وسیب، (یادگاری اشاعت) 2010ء، سرائیکی ایریا سٹڈی سنٹر جامعہ بہاءالدین زکریا، ملتان، صفحہ 17-20
  2. تذکرہ اولیاءِ سندھ