موصل کی لڑائی (2016ء - 2017ء)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
جنگ موصل (2016ء–2017ء)
سلسلہ the عراقی خانہ جنگی (2014ء-تاحال) اور
عراق میں امریکی قیادت کی مداخلت

موصل کے حالات کا نقشہ، 14 جون2017 تک
  عراقی حکومت کا کنٹرول
  داعش کا کنٹرول
  پیشمرگہ کا کنٹرول
تاریخ16 ااکتوبر 2016ء – تاحال
(7 سال، 3 ماہ، 4 ہفتہ اور 1 دن)
مقامعراق
حیثیت جاری
سرحدی
تبدیلیاں
  • آئی ایس ایف نے 24 جنوری 2017 کو موصل پر پھر سے قبضہ کر لیا۔[9]
  • 3 دسمبر 2016ء کو آئی ایس ایف اور پشمرگہ نے 5,677 کلومربع میٹر (2,192 مربع میل) کی تمام زمین اور 369 گاؤں دولت اسلامیہ سے قبضہ میں لے لیے۔[10][11][12]
  • عراقی فوج نے عراقی-شامی سرحد کو محفوظ بنانے کے لیے 25 اپریل 2017ء کو ایک اور حملہ کیا[13][14]
مُحارِب

عراق کا پرچم عراق[1]
عراقی کردستان کا پرچم عراقی کردستان
(اپریل 2017ء تک)
کی مدد سے:

 ایران[6]
حزب اللہ[7]


عراقی مرد مجاہد سلسلہ نقشبندیہ[8]
 عراق اور الشام میں اسلامی ریاست (دولت اسلامیہ)
کمان دار اور رہنما

حیدر العبادی
(وزیر اعظم عراق)
عراق کا پرچم جنرل۔ عبدالعامر راشد یاراللہ
(اوپریشن کے کمانڈر
عراق کا پرچم طالب سغاتی الکنعان
(جوائنٹ ملٹری کمانڈ، ICTS)
عراق کا پرچم فاضل براوری
(آئی-ایس-او-ایف کمانڈر)
عراق کا پرچم محمد مہیل سلیمان الجبروری  [15]
(16th Division's 3rd Group commander)
عراق کا پرچم فلاح حسن سلیمان [16]
(91st Brigade commander)
ابو مہدی انجینئر[17]
(Head of the PMF)
عراقی کردستان کا پرچم مسعوود بارزانی
(President of Regional Kurdish Government)[18]
ریاستہائے متحدہ کا پرچم بارک اوباما
(President of the United States, until 20 جنوری 2017)
ریاستہائے متحدہ کا پرچم ڈونلڈ ٹرمپ
(President of the United States, since 20 جنوری 2017)
ریاستہائے متحدہ کا پرچماسٹیفن جے۔ٹاؤنسینڈ
(CJTF-OIR commander)
محمد خاوریتمی[7]
(Hezbollah commander of Iraqi operations)


عزت ابراہیم الدوری[8]
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابوبکر البغدادی
(Leader of ISIL)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم زیاد خروفہ [19]
(ISIL Minister of Media)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو عزام [20]
(ISIL Oil Minister)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم عبد اللہ البردانی [21][22]
(a.k.a Abu Ayoub al-Attar; ISIL's Mufti)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم عمران ابو مریم[23]
(ISIL War Council leader)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم حقی اسماعیل اویس [24]
(a.k.a. Abu Ahmed; ISIL Governor of Mosul)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم احمد خلف الجبروری
(ISIL military commander of Mosul)[25]
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم محمد میجبل الجواری [26]
(ISIL's Head of the Administrative Affairs in Nineveh and Raqqa)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو حجر (جنگی قیدی)[27]
(ISIL's eastern Mosul assistant leader)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم مروان حامد صالح الحیالی [28]
(Local wali of ISIL)

عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم کینان بریس [29]
(ISIL's Governor of Tal Afar)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو اسد العراقی[30]
(ISIL Emir of تلعفر)

عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم عمر مہدی احمد زیدان [31]
(a.k.a Abu Monzer Al-Urdoni; Education Department head)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم عزیز علی [32]
(Senior commander)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو حذیفہ  (Prominent ISIL leader)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم محمد علی محمود متار الہدادی [33]
(Top field commander)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم امام موصلی [34]
(Commander of the special security forces)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو فاروقFaruq [35]
(Commander of Bashiqa)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو یعقوب [36]
(Operations official)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچمابو حمزہ الانصاری [37]
(Senior leader)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم محمود شکری النعیمی [38]
(a.k.a. Sheikh Faris; senior commander)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم فلاح الرشیدی [39]
(ISIL vehicle suicide bomb leader)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو ترک 
(ISIL financial facilitator)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو عبد الرحمن [40]
(ISIL executioner)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم عباس سلیمان اسماعیل الحیدر [41]
(a.k.a. Abu Aesha; ISIL foreigners recruiter)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو ناظم حافظ العزرک [42]
(Prominent leader)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو حمزہ التونسی [43]
(Prominent explosives expert)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو در التونسی[44]
(Military commander; deserted)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم بلال الشاوش[44]
(Military commander; deserted)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو بکر الشیشانی [45]
(ISIL military official in Nineveh Governorate)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو فاطمہ التونسی [45]
(ISIL's financial official in Nineveh Governorate)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو يس الروسی [46]
(ISIL's military planning official)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو ماریہ الروسی [47]
(ISIL's petroleum supplies official)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچمابو مہا  
(ISIL's intelligence affairs official)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم علی رضا محمود [48]
(ISIL's education official)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم صالح حسن السکلوی(a.k.a. Dr. Abdullah) [45]
(ISIL health minister)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم ابو حسن الحموسی [45]
(ISIL's emir of health in Wilayat al Sham)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم احمد ابو غازی [49]
(ISIL's chemical official)
عراق اور الشام میں اسلامی ریاست کا پرچم سعد ابو شعیب [50]
(ISIL's Mosul Old City health minister)
طاقت

عراق کا پرچم 54,000–60,000 ISF troops[51][52]
14,000 paramilitary troops[51]
عراقی کردستان کا پرچم 40,000 Peshmerga troops[51]
Total: 108,500–114,000 fighters[53]

مدد:
450 CJTF–OIR personnel[54]
4,500–12,000 militants
(1,000 foreigners)[55][56][57]
1,000+ (as of 5 مئی)[58]
ہلاکتیں اور نقصانات

عراق کا پرچم 774 killed, 4,600+ wounded[59]
عراقی کردستان کا پرچم 30 killed, 70–100 wounded[60]
ریاستہائے متحدہ کا پرچم 2 killed[61][62]
ایران کا پرچم 3 killed[63][64]
Total: 807+ killed, ~4,700+ wounded (U.S. claim)

عراق کا پرچم عراقی کردستان کا پرچم 9,100 killed
(ISIL claim)[65]
2,000+ killed or wounded
(U.S. claim)[66]
2,000 killed (per a morgue worker)[67]
8,622–9,622+ killed (Iraqi claim)[68][69][70]
1,000+ civilians killed (اکتوبر–نومبر)[71]
3,864 civilians killed (Mid-فروری – Mid-مارچ 2017)[72][73]
8,000+ civilians killed or injured (as of 5 مئی 2017)[58]
Displaced:
415,986 (per IOM)[74][75]
670,000 (per Iraq)[76]
760,000 (per UN)[77][78]

جنگ موصل عراق کے شمالی شہر موصل میں جاری جنگ تھی اور شدت پسند گروپ داعش کے خلاف جاری فوجی آپریشن میں شریک ایک امریکی عہدیدار نے تسلیم کیا تھا کہ مغربی موصل کا معرکہ توقع سے زیادہ پیچیدہ اور مشکل ہو چکا ہے۔ شدت پسند گروہ پر یہ بھی الزام تھق کہ یہ جنگ میں کیمیائی ہتھیار استعمال کر رہے تھے۔[79]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت "Mosul offensive: forces launch mass attack on Iraqi city in bid to oust Isis"۔ The Guardian۔ 17 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  2. "Canadian troops supporting Kurds in fight to free Mosul from ISIS"۔ CBC News۔ 17 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2016 
  3. "Australia to have role in battle for Mosul"۔ Sky News Australia۔ 17 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2016 
  4. "Germany 'will take part in the battle for Mosul'"۔ Al-Araby Al-Jadeed (The New Arab)۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اکتوبر 2016 
  5. "Battle for Mosul: Turkey confirms military involvement"۔ Al Jazeera۔ 23 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 23 اکتوبر 2016 
  6. "What role is Iran playing in the Mosul offensive?"۔ Christian Science Monitor۔ 29 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 5 نومبر 2016 
  7. ^ ا ب David Daoud (5 نومبر 2016)۔ "Hezbollah fighters train Iraqi Shiite militants near Mosul"۔ The Long War Journal۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 5 نومبر 2016 
  8. ^ ا ب "تحرير الموصل۔. جيش النقشبندية ينفي اشتباك البشمركة مع "داعش"" (بزبان عربی)۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  9. "Iraqi forces secure eastern Mosul from Islamic State"۔ USA Today۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 جنوری 2017 
  10. "Mosul offensive: Federal Police forces liberate 61 villages and 1400 square kilometers"۔ iraqinews.com۔ 30 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 نومبر 2016 
  11. "Battle for Mosul intensifies as Shiite militias join fray"۔ usatoday.com۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 نومبر 2016 
  12. "Joint Forces Continue to Advance, Liberating More Areas in Mosul"۔ BasNews۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 دسمبر 2016 
  13. "Mohamad Rasul al Allah opeartion area in South of Mosul"۔ ISIS – ISIL map, map of war in Syria, Iraq, Libya – Daesh map – Mosul operation – isis.liveuamap.com۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 ستمبر 2020 
  14. "Iraqi troops capture largest neighborhood in western Mosul"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  15. "Iraqi commander killed in western Mosul"۔ Iraqi News۔ 19 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  16. "Army commander killed during battles in Mosul"۔ Iraqi News۔ 15 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  17. Muhannad al-Ghazi (25 اکتوبر 2016)۔ "Anti-IS troops are gaining ground on multiple fronts in Iraq"۔ Al-Monitor۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 1 نومبر 2016 
  18. "Mattis Confers With Kurdistan Regional Government President"۔ United States Department of Defense۔ 18 فروری 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  19. "Iraqi airstrike kills ISIS Media Minister in Mosul"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  20. "ISIL Oil Minister Killed in Iraqi Forces' Offensive Near Mosul"۔ 11 جنوری 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  21. "IS Mufti Killed in Western Mosul"۔ Iraqi News۔ 14 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  22. "Senior Isis mufti killed in Mosul airstrike, Iraqi forces claim"۔ International Business Times UK۔ 15 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  23. "Unknown individuals attack house of IS leader in Mosul"۔ Iraqi News۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  24. "Daesh governor of Mosul, other leaders killed"۔ Press TV۔ 16 فروری 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  25. Iraqi forces advance from north ahead of ‘extremely violent’ fight
  26. "Islamic State head of administrative affairs in Nineveh, Raqqa, killed in western Mosul"۔ Iraqi News۔ 21 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  27. "Interior Ministry: Assistant of IS Official arrested in eastern Mosul"۔ Iraqi News۔ 8 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  28. "ISIS leader among militants killed in Mosul district"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  29. "Two IS mayors killed in army operations in western Mosul"۔ Iraqi News۔ 9 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  30. "Baghdadi appoints teacher as Islamic State's new Emir in Tal Afar"۔ Iraqi News۔ 29 دسمبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 دسمبر 2016 
  31. "Kurdistan Security Council announces death of senior IS member in Mosul"۔ Kurdistan 24۔ 31 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  32. "Airstrike kills senior ISIS leader killed in Tel al-Sheer village, Nineveh"۔ Iraqi News۔ 20 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 اکتوبر 2016 
  33. "Iraq: Top Field Commander of ISIL Killed in Mosul"۔ Fars News۔ 16 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  34. "Report: ISIS 'Rambo' killed in battle south of Mosul"۔ Jerusalem Post۔ 27 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 اکتوبر 2016 
  35. "Turkish and Kurdish soldiers join forces to gain advantage in Mosul push"۔ The Guardian۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  36. "Senior ISIS official killed in al-Shallalat district of Mosul"۔ Iraqi News۔ 1 نومبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 نومبر 2016 
  37. "ISIS leader reported dead in Mosul; Kurdish official says residents rising up"۔ Rudaw Media Network۔ 6 نومبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 نومبر 2016 
  38. Euan McKirdy، Mohammed Tawfeeq، Ingrid Formanek (11 نومبر 2016)۔ "Sources: Top ISIS commander killed in Mosul"۔ CNN۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 نومبر 2016 
  39. "U.S.-Led Coalition Airstrikes Eliminate Key ISIL Leaders in Syria, Iraq"۔ Us Department of Defense۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 4 جنوری 2017 
  40. "Islamic State's "women executioner" assassinated in western Mosul"۔ Iraqi News۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  41. "Islamic State foreigners recruiter killed in airstrike in western Mosul"۔ Iraqi News۔ 23 جنوری 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  42. "IS Leader Responsible for Preparing Suicide Bombers Killed in Mosul"۔ Basnews English۔ 27 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  43. "Prominent IS booby trapping expert, four others killed in Western Mosul"۔ Iraqi News۔ 26 مارچ 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  44. ^ ا ب "Prominent Tunisian jihadists defect from ISIS in Mosul"۔ ARA News۔ 15 دسمبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  45. ^ ا ب پ ت "ISIS Health Minister, Other Leaders Killed in Mosul"۔ IFP News۔ 20 فروری 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 فروری 2017 
  46. "IS military planning official, six others killed, west of Mosul"۔ Iraqi News۔ 24 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  47. "Police: Islamic State petroleum official killed with 11 others in western Mosul"۔ Iraqi News۔ 7 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  48. "IS 'education official' killed in coalition airstrike, western Mosul"۔ Iraqi News۔ 23 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  49. "Federal Police kills IS Chemicals Official in Mosul"۔ Iraqi News۔ 20 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  50. "Islamic State's "health minister" killed in Mosul's Old City: police"۔ Iraqi News۔ 29 مارچ 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  51. ^ ا ب پ Nick Paton Walsh، Max Blau، Madison Park، Eliott C. McLaughlin (17 اکتوبر 2016)۔ "Battle for Mosul: Iraqi forces inflict 'heavy losses'"۔ سی این این۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2016 
  52. "PressTV-LIVE UPDATE: Final push to retake Mosul"۔ presstv.com۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2016 
  53. Tim Hume (25 اکتوبر 2016)۔ "Battle for Mosul: How ISIS is fighting to keep its Iraqi stronghold"۔ CNN۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 اکتوبر 2016 
  54. "Iraq launches offensive on ISIL in Anbar province"۔ The National۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  55. "Irak : l'opération pour reprendre Mossoul des mains de l'EI est lancée"۔ Le Monde (بزبان فرانسیسی)۔ 17 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں
    operation-pour-reprendre-mossoul-des-mains-de-l-ei_5014713_3218.html اصل
    سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2016
     
  56. Peter Bergen, CNN National Security Analyst۔ "ISIS leaders may flee Mosul as their ranks are decimated"۔ cnn.com۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 اکتوبر 2016 
  57. "Over 12,000 ISIS militants fighting for Mosul"۔ Aranews۔ 27 جون 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  58. ^ ا ب "Mosul offensive: Iraqi army launches 'final push' as army attacks Isil from north-west"۔ The Telegraph۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  59. "Top US commander: 284 Iraqi security-force members killed fighting ISIS in west Mosul"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  60. "IS trickling out of Mosul as losses mount: US general"۔ AFP۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 اکتوبر 2016 
  61. "Blast kills U.S. service member outside Mosul, Pentagon says"۔ CBS News۔ 29 اپریل 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  62. "First US Service Member Killed In Mosul Offensive"۔ Military.com۔ 20 اکتوبر 2016۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اکتوبر 2016 
  63. "Iranian sniper embedded in Iraqi militia killed near Mosul – FDD's Long War Journal"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  64. "Iraq says Iranian commander killed fighting IS"۔ ABC News۔ 27 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  65. "Mosul Ops: ISIL claims 9,000 Iraqi soldiers killed in six months"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  66. "US says 2,000 IS fighters killed, gravely wounded in Mosul"۔ Yahoo News۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2016 
  67. Thomson Reuters Foundation۔ "Packed Iraq morgue reveals toll of Mosul conflict"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  68. "Islamic State leader Baghdadi abandons Mosul fight to field commanders, U.S. and Iraqi sources say"۔ 8 مارچ 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 – Reuters سے 
  69. "Car bombs Target Civilians in Mosul; 25 Killed in Iraq"۔ Antiwar.com۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  70. "Iraqi forces fight to break through ISIS' last five defenses in Mosul"۔ Rudaw۔ 21 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2017 
  71. UN months۔ "Thousands killed since Iraq launched Mosul assault"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2 دسمبر 2016 
  72. "4,000 Iraqi civilians killed in Western Mosul campaign: Army source"۔ Anadolu Agency۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  73. "4,000 civilians reportedly killed in West Mosul operation"۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  74. "Displacement Tracking Matrix (DTM)"۔ International Organisation For Migration۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جون 2017 
  75. "Mosul Iraq Situation Flash Update" (PDF)۔ United Nations High Commissioner for Refugees۔ 6 نومبر 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 7 نومبر 2016 
  76. "Minister: Mosul refugees numbers at 670,000"۔ Iraqi News۔ 17 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  77. "Iraq says Iranian commander killed fighting IS"۔ New York Daily News۔ 27 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  78. "Battle for Mosul: United Nations says 200,000 civilians in grave danger as conflict draws to close"۔ Firstpost۔ 29 مئی 2017۔ 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 جون 2017 
  79. اردو پوائنٹ انٹرنیشنل - بغداد - داعش موصل کی لڑائی میں کیمیائی ہتھیار استعمال کر رہی ہے، عراقی فورسز کا دعویٰ