عبد الرحیم بستوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

عبد الرحیم بستوی
لقبامام المنطق و الفلسفہ
ذاتی
پیدائش1934ء
وفات9 ستمبر 2015(2015-90-09) (عمر  80–81 سال)
مدفنقاسمی قبرستان
مذہباسلام
قومیتبھارتی
فقہی مسلکسنی، حنفی
تحریکدیوبندی
بنیادی دلچسپیفقہ، اصول فقہ، اصول تفسیر، منطق، علم کلام
اساتذہحسین احمد مدنی، محمد ابراہیم بلیاوی، فخر الحسن مرادآبادی

عبد الرحیم بستوی (1934ء - 2015ء) ایک ہندوستانی دیوبندی عالم اور معقولات و منقولات؛ دونوں طرح کے علوم کے ماہر تھے اور چونتیس سال تک دار العلوم دیوبند کے استاذ رہے۔

ابتدائی و تعلیمی زندگی[ترمیم]

ان کی پیدائش 1934ء میں مشرقی اتر پردیش کے غیر منقسم ضلع بستی (موجودہ ضلع سنت کبیر نگر) کے دریا باد گاؤں میں ہوئی تھی۔[1] ان کے والد ماجد کا نام محمد سلیم تھا۔[2] ان کی ابتدائی تعلیم اپنے گاؤں کے مکتب میں ہوئی۔[3] مکتب کی تعلیم کے بعد ہدایۃ النحو و علم الصیغہ تک کی تعلیم ان کے گاؤں کے قریب مدرسہ عربیہ دینیہ، مونڈا ڈیہہ بیگ میں ہوئی۔[4] اس کے بعد شرح تہذیب، قطبی، شرح ابن عقیل اور شرح جامی تک کی تعلیم مدرسہ نور العلوم، بہرائچ میں ہوئی۔[5]مدرسہ نور العلوم، بہرائچ کے بعد وہ آگے کی تعلیم کے لیے 1372ھ بہ مطابق 1952ء میں دار العلوم دیوبند میں داخل ہوئے اور 1375ھ بہ مطابق 1955ء میں وہاں سے فارغ ہوئے۔[6][7] ان کے اساتذۂ دار العلوم دیوبند میں حسین احمد مدنی، فخر الحسن مرادآبادی، محمد ابراہیم بلیاوی، بشیر احمد خان بلند شہری، محمد سالم قاسمی اور حسین احمد بہاری شامل ہیں۔[8] [9][10] نیز میسور کے زمانۂ تدریس میں وہیں سے ادیب ماہر اور ادیب کامل کا امتحان پاس کیا۔[11]

تدریس و خدمات[ترمیم]

فراغت کے بعد وہ چار سال مدرسہ کلیدِ علوم عمری کلاں، ضلع مرادآباد میں مدرس رہے۔[12][13] اس کے بعد ت 1958ء میں میسور کی درگاہی مسجد میں چار سال امام و خطیب رہے اور فجر کے بعد درسِ قرآن بھی دیا کرتے تھے۔[14][15] اس کے بعد وہ 1963ء میں مدرسہ شمس العلوم، ہندو پور، ضلع اننت پور آندھرا پردیش میں بحیثیت صدر مدرس مقرر ہوئے اور تقریباً اٹھارہ سال تک؛ تدریس، صدارت اور اہتمام کی شکل میں انھوں نے اس مدرسہ میں خدمات انجام دیں۔[16] 1981ء میں دار العلوم دیوبند میں انتظامی انقلاب کے بعد وہ وہاں تدریس کے لیے مدعو کیے گئے اور تاوفات 34 سال تک دار العلوم دیوبند کے استاذ رہے۔[16] اس عرصہ میں مختلف کتابیں جیسے: ترجمۂ قرآن، نور الانوار، تفسیر جلالین، شرح العقائد النفسیہ، سراجی، مشکوٰۃ المصابیح اور خصوصاً سلم العلوم، مبادی الفلسفہ، میبذی؛ ان سے متعلق رہیں۔[16]

بیعت و خلافت[ترمیم]

تعلیم سے فراغت کے بعد ہی وہ مولانا حسین احمد مدنی سے بیعت ہو گئے تھے، مولانا مدنی کی وفات کے بعد دوبارہ کسی اور سے دوبارہ بیعت نہیں ہوئے، اس کے بعد 2006ء میں بنگلہ دیش کے دورہ کے موقع پر مولانا اشرف علی تھانوی کے خلیفہ مولانا الطاف حسین نے انھیں خلافت سے نوازا۔[16]

وفات و پسماندگان[ترمیم]

ان کا انتقال 24 ذی قعدہ 1436ھ بہ مطابق 9 ستمبر 2015ء بہ روز بدھ ہوا۔[17][18][19][20] قاسمی قبرستان میں مدفون ہوئے۔[21] == پس ماندگان == ان کے پس ماندگان میں اہلیہ اور ایک بیٹی کے علاوہ نو بیٹے ہیں، جن میں سے ایک مفتی، ایک پی ایچ ڈی اسکالر، چار عالم، ایک بی اے و آئی ٹی آئی کیے ہوئے اور بقیہ حفاظ و قراء ہیں[22] == پس ماندگان == ان کے پس ماندگان میں اہلیہ اور ایک بیٹی کے علاوہ 9 بیٹے ہیں، جن میں سے ایک مفتی، ایک پی ایچ ڈی اسکالر، چار عالم، ایک بی اے و آئی ٹی آئی کیے ہوئے اور بقیہ حفاظ و قراء ہیں۔[22] ان کے بیٹوں کے اسمائے گرامی یہ ہیں: نور الہدیٰ قاسمی، مہتمم دار العلوم فاروقیہ دیوبند، قمر الہدیٰ قاسمی، شمس الہدیٰ دریابادی، اسسٹنٹ پروفیسر مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی، نجم الہدیٰ قاسمی، بدر الہدیٰ قاسمی، عین الہدیٰ دریابادی، ضیاء الہدیٰ قاسمی، فیض الہدیٰ دریابادی، خیر الہدیٰ دریابادی۔[22]

قلمی خدمات[ترمیم]

اخبار تنظیم، میسور اور ماہنامہ نور و نار، بنگلور میں ان کے دینی و شرعی مضامین شائع ہوتے رہتے تھے۔[23] نیز ان کی تصانیف میں مندرجۂ ذیل کتابیں شامل ہیں:[24]

  • پندرہ سنتیں
  • شب برات
  • شب معراج
  • احکام عید الاضحیٰ
  • خطبات لندن
  • خطبات برمنگہم
  • اسلام اور سلام
  • شرحِ سراجی
  • سوانح رحیمی (خود نوشت) (غیر مطبوعہ)
عبد الرحیم بستوی پر لکھے گئے مضامین و مقالات کا مجموعہ ”امام المنطق و الفلسفہ“
اشتیاق احمد دربھنگوی کی کتاب مولانا بستوی کا ذکر جمیل“ کا سرورق

رفقا و زملا[ترمیم]

ان کے رفقاء میں بڑے بڑے مشاہیر علماء شامل تھے:[9]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. دریابادی، قاسمی 2018, p. 348.
  2. دربھنگوی 2016, p. 11.
  3. دربھنگوی 2016, p. 13.
  4. دربھنگوی 2016, p. 14.
  5. دربھنگوی 2016, p. 15.
  6. دربھنگوی 2016, p. 16.
  7. دریابادی، قاسمی 2018, p. 157.
  8. دربھنگوی 2016, p. 17,19,20.
  9. ^ ا ب نور عالم خلیل امینی (ربيع الأول 1437 هـ/ جنوری 2015ء). الشيخ عبد الرحيم القاسمي البستوي – رحمہ اللہ (بزبان عربی) (ایڈیشن 2015). مجلہ الداعی، دار العلوم دیوبند. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2021. 
  10. دریابادی، قاسمی 2018, p. 45.
  11. دربھنگوی 2016, p. 69.
  12. دربھنگوی 2016, p. 23.
  13. بجنوری، مولانا توحید عالم (نومبر 2015ء). "کڑے سفر کا تھکا مسافر، تھکا وہ ایسا کہ سوگیا ہے". www.darululoom-deoband.com. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2021. 
  14. دربھنگوی 2016, p. 24.
  15. دریابادی، قاسمی 2018, p. 158,159.
  16. ^ ا ب پ ت دریابادی، قاسمی 2018, p. 159.
  17. قاسمی، مولانا عرفی (10 ستمبر 2015ء). "مولانا عبدالرحیم بستوی کے انتقال سے دارالعلوم دیوبند کا ناقابل تلافی نقصان". www.uniurdu.com. یو این آئی اردو سروس. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2021. 
  18. دریابادی، قاسمی 2016, p. 46.
  19. غزنوی، مولانا عبد الرؤف (مارچ 2016ء). "حضرت مولانا عبد الرحیم بستویؒ استاد دارالعلوم دیوبند کی رحلت!". www.banuri.edu.pk. جامعۃ العلوم الاسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن، کراچی، پاکستان. اخذ شدہ بتاریخ 11 دسمبر 2021. 
  20. "مولانا عبد الرحیم بستوی بھی چل بسے". ماہنامہ دار العلوم. مکتبہ دار العلوم دیوبند. 99 (10). ذی الحجہ 1436ھ بہ مطابق اکتوبر 2015ء. 
  21. دریابادی، قاسمی 2015, p. 49.
  22. ^ ا ب پ دربھنگوی 2016, p. 65,66.
  23. دربھنگوی 2016, p. 35.
  24. دریابادی، قاسمی 2018, p. 170.
  25. دربھنگوی 2016, p. 65.

کتابیات[ترمیم]

  • دریابادی، قاسمی، شمس الہدیٰ، نجم الہدی (اپریل 2018). امام المنطق و الفلسفہ (ایڈیشن پہلا). دریا باد، ضلع سنت کبیر نگر، یوپی: دار العلوم ابی ابن کعب. 
  • دربھنگوی، اشتیاق احمد (2016). حضرت بستوی کا ذکر جمیل (ایڈیشن پہلا). دیوبند: مکتبہ حجاز.