مکتبہ آصفیہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Central library renewate.JPG
ملکبھارت
ٹائپقومی و ریاستی کتب خانوں کی فہرست
قیام1891
مقامافضل گنج، حیدرآباد، دکن
متناسقات17°22′27″N 78°28′42″E / 17.3742°N 78.4783°E / 17.3742; 78.4783متناسقات: 17°22′27″N 78°28′42″E / 17.3742°N 78.4783°E / 17.3742; 78.4783
مجموعہ
مجموعہکتابs, journals، اخبارs, magazines, and manuscripts
ذخیرہ کتب~ 5,00,000 books/magazines
~17,000 manuscripts
Legal depositYes
رسائی اور استعمال
Open

مکتبہ آصفیہ (انگریزی: State Central Library, Hyderabad) کا نیام بدل کر اسٹیٹ سینٹرل لائبریری حیدراباد کر دیا گیا ہے۔ یہ حیدرآباد، دکن میں واقع ایک عوامی کتب خانہ ہے جسے 1891ء میں قائم کیا گیا تھا۔ موسی ندی کے قریب واقع افضل گنج میں موجود یہ کتب خانہ 500,000 کتابوں کا گھر ہے جس میں متعدد نوادرات، مخطوطے موجود ہیں۔ اس میں متعدد مخطوطے کھجور کی چھال پر پر لکھے ہوئے ہیں۔و2و

تاریخ[ترمیم]

یہ کتب خانہ سید حسین بلگرامی کی کاوشوں کا نتیجہ ہے۔ ان کا ذاتی کتب خانہ اس قدر وسیع ہوا کہ ایک بڑی عمارت میں اسے منتقل کرنا پڑا۔ عمارت کا کل رقبہ 72,247 مربع یارڈ پر محیط ہے جسے عزیزی علی نے ڈیزائن کیا ہے۔ 1932ء میں اس کی سنگ بنیاد شاہزادہ میر عثمان علی نے رکھی تھی۔ 1936ء میں تعمیر مکمل ہونے کے بعد آصفیہ کتب خانہ کو اس عمارت میں منتقل کر دیا گیا۔

ذخیرہ[ترمیم]

کتب خانہ میں 19ویں صدی اور 20ویں صدی کی پانچ لاکھ کتابوں اور 1941ء میں میر عثمان علی کا جاری کردہ اخبار حیدراباد سماچار کے نسکے موجود ہیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]