مہرانگیز دولت شاہی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
مہرانگیز دولت شاہی
Mehrangiz Dowlatshahi.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 13 دسمبر 1919[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران[1]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 20 اکتوبر 2008 (89 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیرس کا اٹھارہواں اراؤنڈڈسمنٹ[1]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت حزب رستاخیز  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر معلومات
مادر علمی جامعہ ہومبولت
جامعہ ہائیڈل برگ  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان،  مصنفہ،  سفارت کار  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مہرانگیز دولت شاہی ( فارسی: مهرانگیز دولتشاهی‎ ; 13 دسمبر 1919ء - 11 اکتوبر 2008ء) ایک ایرانی سماجی کارکن اور سیاست دان تھیں، جو پہلوی دور میں ڈنمارک میں ایران کےیسفیر سمیت اہم عہدوں پر فائز رہیں۔ وہ تین بار رکن پارلیمان بھی رہ چکی تھیں۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

دولت شاہی کی تاریخ پیدائش اور جائے پیدائش کے بارے میں متضاد اطلاعات ہیں جو انہوں نے خود بیان کی ہیں۔ [2] عباس میلانی کا کہنا ہے کہ انھوں نے دو مختلف سال 1917ء اور 1919ء دیے [2] یہی بات عباس میلانی نے اپنے پیدائشی شہر کے حوالے سے بھی نقل کی ہے جسے تہران اور اصفہان دونوں کے طور پر دیا گیا تھا۔ [2] ان کا خاندان کرمانشاہ میں مقیم بڑا زمیندار تھا۔ [3] ان کے والد محمد علی مرزا (مشکوت الدولہ کے نام سے بھی جانے جاتے ہیں)، مجلس کے رکن اور زمین کے مالک تھے۔ [4] وہ قاجار خاندان کےرکن تھے۔ [2] ان کی والدہ اختر الملک تھیں جو ہدایت قلی خان کی بیٹی تھیں۔ مہرانگیز رضا شاہ کی چوتھی بیوی عصمت دولت شاہی کی کزن تھیں۔ [5]

مہرانگیز نے برلن یونیورسٹی سے بیچلر کی ڈگری حاصل کی۔ انھوں نے ہائیڈلبرگ یونیورسٹی سے سماجیات اور سیاسیات میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔ [6]

عملی زندگی[ترمیم]

دولت شاہی نے سماجی خدمات اور قیدیوں کی مدد کے لیے قائم تنظیم میں کام کیا۔ [7] انھوں نے راہ نو (نیا راستہ) سوسائٹی قائم کی، جو بعد میں خواتین کی بین الاقوامی سنڈیکیٹ کا حصہ بن گئی۔ [7] سوسائٹی نے خواتین کو تربیت فراہم کی اور ان کے مساوی حقوق کی وکالت کی۔ انھوں نے جنوبی تہران میں بالغوں کی خواندگی کے پروگرام بھی شروع کیے تھے۔ [7] 1951ء میں، وہ اور خاتون کارکن صفیہ فیروز نے ایران میں خواتین کے انتخابی حقوق پر بات کرنے کے لیے محمد رضا شاہ سے ملاقات کی۔ وہ ایران کی خواتین کی تنظیم (ڈبلیو او آئی) کی بین الاقوامی امور کی مشاورتی کمیٹی کی ڈائریکٹر تھیں۔ [8] 1973ء میں انہیں خواتین کی بین الاقوامی کونسل کی صدر مقرر کیا گیا اور ان کی مدت ملازمت 1976ء میں ختم ہوئی۔ [9]

آخری ایام اور موت[ترمیم]

دولت شاہی 1979 کے انقلاب کے وقت ڈنمارک میں ایرانی سفیر کے طور پر خدمات انجام دے رہی تھیں۔ اس واقعے کے فوراً بعد وہ ملک چھوڑ کر پیرس میں آباد ہو گئیں۔ [7] 2002 ءمیں، انھوں نے سوسائٹی، حکومت، اور ایران کی خواتین کی تحریک کے عنوان سے ایک کتاب شائع کی۔ [7] اکتوبر 2008ء میں ان کا [7] انتقال پیرس میں ہوا۔

1997ء میں دولت شاہی کو امریکامیں ایرانی ویمن اسٹڈیز فاؤنڈیشن نے سال کی بہترین خاتون قرار دیا تھا۔ [10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت https://deces.matchid.io/id/O5N7Omy7MFmh
  2. ^ ا ب پ ت Abbas Milani (19 دسمبر 2008). Eminent Persians: The Men and Women Who Made Modern Iran, 1941–1979. Syracuse, NY: Syracuse University Press. صفحہ 526. ISBN 978-0-8156-0907-0. 
  3. "Centers of Power in Iran" (PDF). CIA. May 1972. اخذ شدہ بتاریخ 5 اگست 2013. 
  4. "Dolatshahi, Mehrangiz". Harvard University. 22 فروری 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولائی 2013. 
  5. Camron Michael Amin (1 دسمبر 2002). The Making of the Modern Iranian Woman: Gender, State Policy, and Popular Culture, 1865–1946. Gainesville: University Press of Florida. صفحہ 115. ISBN 978-0-8130-3126-2. 
  6. ^ ا ب پ ت ٹ ث Nazy Kaviani (28 اکتوبر 2008). "Mehrangiz Dolatshahi". Iranian. 05 دسمبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولائی 2013.  Nazy Kaviani (28 اکتوبر 2008)۔ ۔ Iranian۔ Archived from the original on 5 دسمبر 2013۔ اخذکردہ بتاریخ 30 جولائی 2013۔
  7. "Oral History interview of Mehrangiz Dowlatshahi". Foundation for Iranian Studies. Bethesda, MD. 24 مارچ 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولائی 2013. 
  8. "About us". International Council of Women. 9 ستمبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولائی 2013. 
  9. "The Woman of the Year. Past awardees". IWSF. 12 جولائی 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولائی 2013.