مہر عبد الرشید

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
Maher Abd al-Rashid
ماهر عبد الرشيد
Iraqi Commanders Iran-Iraq War (cropped).jpg
راشد ایران عراق جنگ کے دوران۔
پیدائش1942ء
تکریت, عراق
وفات29 جون 2014ء (72 سال)
سلیمانیہ, عراق
وفاداریFlag of عراق Ba'athist Iraq
سروس/شاخعراقی فوجی
سالہائے فعالیت1963–2003
درجہIraqi general Colonel General
Commands held3rd Army
مقابلے/جنگیںایران عراق جنگ

1991 uprisings in Iraq

2003 Invasion of Iraq
تعلقاتAli Maher Abdul Rashid (son)
Abdullah Maher Abdul Rashid (son)
Sahar al-Rashid (daughter)
Marwan Taher Abdul Rashid (nephew)
قصی صدام حسین (son-in-law)

مہر عبد الرشید (عربی : ماهر عبد الرشيد) عراقی فوج کے ایک جنرل تھے اور البو ناصر قبیلے سے تعلق رکھتے تھے۔[1] ایران-عراق جنگ کے دوران عبد الرشید نامور مقام پر فائز ہوئے، اور انہیں صدام کے بہترین جرنیلوں میں سے ایک سمجھا جاتا تھا،[2] ریٹائرمنٹ ہونے کے بعد عراق کے چیف آف آرمی اسٹاف کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے تھے، جس کی وجہ سے انہیں 1983ء میں مجبور کیا گیا تھا۔[3] عبد الرشید نے جنگ کے دوران عراق کو اپنا اقدام دوبارہ حاصل کرنے میں مدد دینے میں بھی نمایاں کردار ادا کیا۔ راشد کے بارے میں تمام تشخیص اس قدر مہربان نہیں تھے اور رعد مجيد الحمدانی نے ان کا حوالہ "فوج کے ایک بے وقوف جرنیلوں" میں کیا ہے۔[4]

ایران – عراق جنگ[ترمیم]

عبد الرشید نے عوامی طور پر صدام حسین پر تنقید کرتے ہوئے دعوی کیا تھا کہ عراق کی بہت ساری ہلاکتیں صدام کے فوجی امور میں دخل اندازی کی وجہ سے ہوئی ہیں۔[5] صدام نے عوامی تنقید اور الفاو‎ جزیرہ نما سے ایرانیوں کو ہٹانے میں ناکامی دونوں کی وجہ سے عبد الرشید بغداد واپس جانے کا حکم دیا۔ اس بات سے آگاہ تھا کہ بغداد واپس جانے کا حکم شاید راشد کے لئے موت کی سزا ہے، اس کے افسران نے صدام کو متنبہ کیا کہ اگر راشد کے ساتھ کچھ ہوا تو وہ بغاوت کریں گے۔[6]

اس کے باوجود، مہر کو ایران-عراق جنگ کے خاتمے کے بعد ان جنرلوں کی طاقت کو کم کرنے کی کوشش میں نظربند رکھا گیا تھا، جو جنگی سالوں کے دوران اثر و رسوخ بن چکے تھے تاکہ بغاوت کی کسی بھی ممکنہ کوششوں کو تشکیل دینے سے روک سکے۔[7][8]

1991ء میں بغاوت[ترمیم]

جنگ خلیج کے بعد عراق میں بغاوت کی لہر دوڑ گئی اور صدام حسین نے عبد الرشید سے بات کی کہ وہ بعثت حکومت کے خلاف بغاوت کو ختم کرنے میں مدد کریں۔ [9]

عراق جنگ اور بعد کے واقعات[ترمیم]

2003ء میں عراق پر حملے سے قبل عبد الرشید کو عراقی مسلح افواج کی جنوبی کمانڈ کی سربراہی صدام نے دی تھی۔ صدام حسین نے انہیں عراقی فوج کی تیسری، چوتھی اور ساتویں کور کے لئے جنرل سپروائزر کے عہدے پر بھی مقرر کیا۔ عراقی حکومت کے خاتمے کے بعد عبد الرشید غائب ہو گئے، بعد میں، جولائی 2003ء میں تکریت میں گرفتار کیا گیا۔ عبد الرشید نے اگلے پانچ سال جیل میں گزارے۔[10]

2008ء میں عبد الرشید کی رہائی کے بعد وہ تکریت واپس آگئے، اور تکریت کے قریب اپنے فارم میں رہتے تھے۔[10]

وفات[ترمیم]

فالج کا شکار ہونے کے دو ماہ بعد، عبد الرشید 29 جون 2014ء کو عراق کے شہر سلیمانیہ کے اسپتال میں انتقال کرگئے۔ راشد بھی ایک دیرینہ علالت میں مبتلا تھے۔ اس کے بعد ان کے اہل خانہ نے اپنے دو پوتے، یحیی قصی صدام التکرتی اور یعقوب قصی صدام التکرتی بھی شامل تھے۔ جو قصی صدام حسین کے بچ جانے والے بچے بھی تھے۔[11]

ذاتی زندگی[ترمیم]

مہر عبد الرشید کا تعلق تکریت کے ایک سنی مسلمان سے تھا، اور وہ دونوں صدام حسین کے قریبی دوست اور اسی قبیلے، البو ناصر قبیلہ سے تعلق رکھتے تھے۔[12][13] 1985ء میں ان کی بیٹی سحر نے صدام حسین کے بیٹے قصی صدام حسین سے شادی کی۔ راشد نے ایران-عراق جنگ میں الفاو‎ جزیرہ نما کو آزاد کرانے کا وعدہ کیا تھا اور صدام کے بیٹے قصی کو اپنی بیٹی کی پیش کش کی تھی تاکہ وہ اس کی یقین دہانی کر سکے۔[4] اس شادی سے ان کے تین بچے تھے لیکن بعد میں طلاق ہوگئی۔[14]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "The Iraqi Tribes and the Post-Saddam System". Brookings. 8 July 2003. 
  2. Karsh, Efraim The Iran-Iraq War 1980–1988, London: Osprey, 2002 page 48
  3. "Gulf War - Iran Iraq War: Iraqi Reaction". Yahoo. 2 March 2009. 10 فروری 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  4. ^ ا ب Woods، Kevin M. (2011) [2010]. Saddam's Generals: Perspectives of the Iran-Iraq War. 4850 Mark Center Drive, Alexandria, Virginia: Institute for Defense Analyses. صفحہ 73. 
  5. Coughlin, Con (2005). Saddam: His Rise and Fall. Harper Perennial. صفحہ 220. ISBN 978-0-06-050543-1. 
  6. Karsh, Efraim The Iran-Iraq War 1980–1988, London: Osprey, 2002 page 53
  7. "The Iraqi Tribes and the Post-Saddam System". Brookings. 8 July 2003. 
  8. Tripp، Charles (2002) [2000]. A History of Iraq (ایڈیشن 2nd). The Edinburgh Building, Cambridge: Cambridge University Press. صفحہ 249. ISBN 0-521-52900-X. 
  9. Woods، Kevin M. (2009). Saddam's War: An Iraqi Military Perspective of the Iran-Iraq War. Washington, D.C.: Institute for National Strategic Studies, National Defence University. صفحہ 80. ISSN 1071-7552. 
  10. ^ ا ب "Maher Abdul Rashid". al-Mustaqbal (بزبان عربی). 2 July 2014. 08 جولا‎ئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  11. "Maher Abdul Rashid". al-Mustaqbal (بزبان عربی). 2 July 2014. 08 جولا‎ئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  12. "The Iraqi Tribes and the Post-Saddam System". Brookings. 8 July 2003. 
  13. Woods، Kevin M. (2009). Saddam's War: An Iraqi Military Perspective of the Iran-Iraq War. Washington, D.C.: Institute for National Strategic Studies, National Defence University. ISSN 1071-7552. 
  14. "Qusay Hussein". The Telegraph. 15 March 2005.