میانمار فوجی تاخت، 2021ء

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
2021ء میانمار مسلح بغاوت
بسلسلہ میانمار میں داخلی تنازع اور سیاسی بحران
Aung San Suu Kyi & Min Aung Hlaing collage.jpg
میانمار کی معزول ریاستی کونسلر آنگ سان سو چی (بائیں)، اور بغاوت کے رہنما مین آنگ ہلاینگ (دائیں)
تاریخ1 فروری 2021 – تاحال
مقاممیانمار
نتیجہ

فوجی بغاوت کامیاب

حکومت
حکومت میانمار ٹاٹمادو
کمانڈر اور رہنما
Flag of Myanmar.svg آنگ سان سو چی
(میانمار ریاستی کونسلر)
Flag of Myanmar.svg وین مائنٹ (میانمار کے صدر)
Flag of the Myanmar Army.svg مین آنگ ہلاینگ
(تاتماڈو کے چیف آف کمانڈر)
Flag of Myanmar.svg مائنٹ سوی (جنرل)
(میانمار کے پہلے نائب صدر)
شریک یونٹیں
نامعلوم میانمار مسلح افواج
ہلاکتیں اور نقصانات
کوئی اطلاع نہیں

2021ء میانمار مسلح بغاوت (انگریزی: 2021 Myanmar coup d'état) میانمار میں مسلح بغاوت 1 فروری 2021ء کی صبح اس وقت ہوا جب ریاستی کونسلر آنگ سان سو چی، صدر وین مائنٹ اور حکمران جماعت کے دیگر رہنماؤں کو میانمار کی فوج، تاتماڈو نے گرفتار کر کے حراست میں لیا۔[1][2] تاتماڈو نے ایک سال کے لیے ایمرجنسی کا اعلان کیا اور اعلان کیا کہ اقتدار کو مسلح افواج کے کمانڈر انچیف مین آنگ ہلاینگ کے سپرد کر دیا گیا ہے۔ نومبر 2020ء کے عام انتخابات میں منتخب ہونے والے ممبروں کی میانمار کی پارلیمنٹ میں حلف اٹھانے سے ایک دن قبل ہی بغاوت کی گئی۔[3][4][5] بغاوت کے فورا بعد ہی ، فوج نے آنگ سان سو چی کو غیر قانونی طور پر سیرتکلمہ درآمدی کے الزام عائد کرکے ان کی نظربندی کو باضابطہ طور پر جائز قرار دیا۔[6][7]

3 فروری کو، وین مائنٹ پر میانمار کے قانون کی دفعہ 25 کے تحت کورونا وائرس کی پابندی کی خلاف ورزی کرنے کا الزام عائد کیا گیا۔[8] اس سے پہلے آنگ سان سو چی کو غیر قانونی طور پر سیرتکلمہ درآمدی کے الزام عائد کرکے ان کو حراست میں لیا گیا تھا۔ سیرتکلمہ پر میانمار میں پابندی ہے اور اس کو حاصل کرنے سے قبل فوج سے وابستہ ایجنسیوں سے منظوری لینے کی ضرورت ہوتی ہے۔[8] وین مائنٹ اور آنگ سان سو چی کو دو ہفتوں کے لئے حراست میں لیا گیا۔[9][10][11]

پس منظر[ترمیم]

میانمار (سابقہ ​​برما) 1948ء میں برطانیہ سے آزادی کے اعلان کے بعد سے ہی سیاسی عدم استحکام کا شکار رہا ہے۔ 1958ء اور 1960ء کے درمیان، فوج نے ملک میں جمہوری طور پر منتخب وزیر اعظم یو نو کے کہنے پر ایک عارضی نگران حکومت تشکیل دی تاکہ سیاسی تنازعات کو حل کیا جاسکے۔[12] 1960ء کے برمی عام انتخابات کے بعد فوج نے رضاکارانہ طور پر عوامی حکومت کو بحال کیا۔[13] دو سال سے بھی کم عرصے بعد، فوج نے 1962ء کی بغاوت میں اقتدار پر قبضہ کرلیا، جس کی قیادت جنرل نی ون کر رہے تھے، اس کے بعد نی وین نے 26 سال تک فوجی حکومت کی۔[14]

1988ء میں، ملک بھر میں ملک بھر میں مظاہرے ہوئے۔ جس کو 8888 کی بغاوت کا نام دیا گیا، معاشی بدحالی کی وجہ سے بدامنی پورے میانمار میں پھیل گئی اور اس کے بعد نی وین کو اقتدار چھوڑ پڑا۔[15] ستمبر 1988ء میں، فوج کے اعلی رہنماؤں نے اسٹیٹ لا اینڈ آرڈر بحالی کونسل (ایس ایل او آر سی) تشکیل کی، پھر اقتدار پر قبضہ کرلیا۔[16] ملک کی جدید بانی آنگ سان کی بیٹی آنگ سان سو چی، اس عرصے میں قابل ذکر جمہوریت پسند کارکن بن گئیں۔ 1990ء میں، فوج نے آزادانہ انتخابات کی اجازت اس کی وجہ سے فوج کو عوامی حمایت حاصل ہوئی۔ آخر کار، انتخابات کے نتیجے میں سوچی کی پارٹی، نیشنل لیگ برائے جمہوریہ کو زبردست فتح حاصل ہوئی۔ لیکن، فوج نے اقتدار چھوڑنے سے انکار کر دیا اور سوچی کو نظربند کردیا۔[17][18][19]

تقریبات[ترمیم]

این ایل ڈی کے ترجمان میو نیونٹ نے کہا ہے کہ صبح کی چھاپے میں آنگ سان سو چی، ون مِینٹ، ہان تھا مِینٹ اور پارٹی کے دیگر رہنماؤں کو "حراست میں لیا گیا" تھا۔ میو نیونٹ نے مزید کہا کہ انھیں توقع ہے کہ انہیں بھی جلد ہی حراست میں لے لیا جائے گا۔[20]

رد عمل[ترمیم]

گھریلو[ترمیم]

احتجاج[ترمیم]

2 فروری 2021ء کو قومی دار الحکومت، نیپیداو سمیت ملک بھر میں ڈاکٹر اور سرکاری ملازمین نے بغاوت کی مخالفت میں ایک مہم چلائی۔[21][22] "سول نافرمانی کی تحریک" نامی فیس بک مہم کے ایک گروپ نے 2 فروری کو اپنے ابتدائی آغاز کے بعد سے اب تک 100،000 سے زیادہ لوگوں نے فالو کیا ہے۔[23] سرکاری سطح پر چلنے والے درجنوں سرکاری اسپتالوں اور اداروں کے ڈاکٹر اور کارکنوں نے 3 فروری سے ہڑتال شروع کرنے کا وعدہ کیا۔[24][25] یانگون کے تجارتی دار الحکومت کے رہائشیوں نے بغاوت کی مخالفت میں احتجاج کیا۔[26][27] کچھ یانگونیوں نے 2 فروری کی شام 8 بجے 15 منٹ پر ایک مختصر احتجاجی ریلی نکالی، جس میں تاناشاہی کو ختم کرنے اور آنگ سان سو چی کی رہائی کا مطالبہ کیا۔[28]

تھائی لینڈ کے سب سے بڑی اسٹیٹ ڈویلپر ، اماتا نے یانگون میں ایک بلین ڈالر کے صنعتی زون کے ترقیاتی منصوبے کو روک دیا ہے یہ کام دسمبر 2020ء میں شروع کیا گیا تھا ۔[29][30] میانمار کی سب سے بڑی کار ساز کمپنی سوزوکی موٹر اور متعدد صنعت کاروں نے بغاوت کے نتیجے میں کام روک دیا۔[29] یانگون اسٹاک ایکسچینج نے 1 فروری سے تجارت کو بھی معطل کر دیا ہے۔[29]

بین اقوامی[ترمیم]

  میانمار
  بغاوت کی مذمت کی
  تشویش کا اظہار
  غیر جانبدار
  No public position
جاپان کے شہر ٹوکیو کے کاسومیگاسکی میں 3000 مظاہرین آنگ سان سو چی کی رہائی کے لئے مطالبہ کرتے ہوئے۔[31]

بنگلہ دیش، [32] چین، [33] بھارت، [34] انڈونیشیا، [35] جاپان، [36] ملائیشیا، [37] پاکستان، [38] جنوبی کوریا، [39] سنگاپور[40] اور متعدد ممالک نے بغاوت کے رد عمل میں تشویش کا اظہار کیا۔ جن میں سے زیادہ تر نے حکومت اور فوج کے مابین اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے بات چیت کرنے کو کہا۔ آسٹریلیا،[41][42] کینیڈا،[43] فرانس،[44] جرمنی،[45] جاپان،[46] نیوزی لینڈ،[47] ہسپانیہ،[48] سویڈن،[49] ترکی، [50]مملکت متحدہ[51] اور ریاست ہائے متحدہ[52] نے بغاوت کی مذمت کی ہے اور حراست میں لئے گئے عہدیداروں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے۔ وہائٹ ​​ہاؤس نے بھی بغاوت کرنے والوں کے خلاف پابندیاں عائد کرنے کی دھمکی دی۔[53][54][55] کمبوڈیا، تھائی لینڈ اور ویت نام نے بغاوت کو داخلی معاملہ قرار دیتے ہوئے کسی ایک کی حمایت کرنے سے واضح طور پر انکار کردیا۔[56][57][58]

تھائی لینڈ کے شہر بینکاک میں ساٹھھن نویا روڈ پر واقع برمی سفارت خانے کے پاس ایک گروپ نے بغاوت کے خلاف احتجاج کیا۔ یہ گروپ تقریباً 200 برمی تارکین وطن اور کچھ تھائی جمہوریت پسند کارکنوں پر مشتمل تھا، جن میں پیریٹ چیوارک اور پنوسایا سیتھیجیراوتاناکول بھی شامل تھے۔[59]احتجاج پولیس کے لاٹھی چارج کے ساتھ ختم ہوا۔ دو مظاہرین زخمی ہوئے تھے جن کو اسپتال میں داخل کرایا گیا اور دو دیگر کو گرفتار کر لیا گیا۔[60] جاپان کے شہر توکیو میں برمی شہریوں نے اقوام متحدہ کی یونیورسٹی کے سامنے بھی جمع ہوئے اور بغاوت کے خلاف احتجاج کیا۔[61] 3 فروری کو 150 سے زائد برمی امریکی نے واشنگٹن ڈی سی میں میانمار کے سفارت خانے کے سامنے احتجاج کیا۔ لائن آسٹریلیا کی بنیادی کمپنی کیرن نے بغاوت کے تناظر میں تاتماڈو سے تمام تعلقات ختم کر دیئے۔[62][63]

سنگاپور پولیس فورس نے سنگاپور میں غیر ملکی لوگوں کے خلاف انتباہ جاری کیا ہے جو بغاوت مخالف مظاہروں میں حصہ لینے والے تھے۔[64][65]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Beech، Hannah (31 جنوری 2021). "Myanmar's Leader, Daw Aung San Suu Kyi, Is Detained Amid Coup". نیو یارک ٹائمز. ISSN 0362-4331. اخذ شدہ بتاریخ 31 جنوری 2021. 
  2. Mahtani، Shibani؛ Lynn، Kyaw Ye (1 فروری 2021). "Myanmar military seizes power in coup after detaining Aung San Suu Kyi". دی واشنگٹن پوسٹ. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  3. Reuters (1 فروری 2021). "Myanmar military seizes power, detains elected leader Aung San Suu Kyi". news.trust.org. 
  4. huaxia، ویکی نویس (1 فروری 2021). "Myanmar gov't declares 1-year state of emergency: President's Office". شینہوا نیوز ایجنسی. 
  5. "Myanmar Leader Aung San Suu Kyi, Others Detained by Military". voanews.com. VOA (Voice of America). 1 فروری 2021. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  6. Solomon، Feliz (2021-02-03). "After Myanmar Coup, Aung San Suu Kyi Accused of Illegally Importing Walkie Talkies". Wall Street Journal (بزبان انگریزی). ISSN 0099-9660. اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2021. 
  7. Facebook؛ Twitter؛ options، Show more sharing؛ Facebook؛ Twitter؛ LinkedIn؛ Email؛ URLCopied!، Copy Link؛ Print (2021-02-03). "Myanmar comes up with charges against Aung San Suu Kyi: Using illegal walkie-talkies". Los Angeles Times (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2021. 
  8. ^ ا ب Myat Thura؛ Min Wathan (2021-02-03). "Myanmar State Counsellor and President charged, detained for 2 more weeks". Myanmar Times (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2021. 
  9. Adange، Christy (2021-02-04). "Myanmar Coup: Aung San Suu Kyi charged with military for "transceiver and handshake"". Wall Street Journal (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2021. 
  10. Quint، The (2021-02-04). "Days After Coup, Aung San Suu Kyi Charged for Breaching Import Law". The Quint (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2021. 
  11. Solomon، Feliz (2021-02-03). "After Myanmar Coup, Aung San Suu Kyi Accused of Illegally Importing Walkie Talkies". Eminetra (بزبان انگریزی). ISSN 0099-9660. اخذ شدہ بتاریخ 04 فروری 2021. 
  12. "On This Day | The Day Myanmar's Elected Prime Minister Handed Over Power". The Irrawaddy (بزبان انگریزی). 26 September 2020. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  13. Butwell، Richard; von der Mehden, Fred (1960). "The 1960 Election in Burma". Pacific Affairs (Pacific Affairs, University of British Columbia) 33 (2): 144–157. doi:ڈی او ئي. 
  14. Taylor، Robert (25 May 2015). General Ne Win. ISEAS Publishing. ISBN 978-981-4620-14-7. 03 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  15. "How A Failed Uprising Set The Stage For Myanmar's Future". Time. 19 ستمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  16. "How A Failed Uprising Set The Stage For Myanmar's Future". Time. 19 ستمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  17. "Burma: 20 Years After 1990 Elections, Democracy Still Denied". Human Rights Watch. 26 ستمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  18. Nohlen، Dieter؛ Grotz، Florian؛ Hartmann، Christof (2001). Elections in Asia: A data handbook, Volume I. اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس. صفحات 599, 611. ISBN 0-19-924958-X. 
  19. Yan Aung، Wei (7 October 2020). "Myanmar's 1990 Election: Born of a Democratic Uprising, Ignored by the Military". The Irrawaddy. 31 جنوری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  20. Foundation، Thomson Reuters. "Aung San Suu Kyi and other leaders arrested, party spokesman says". news.trust.org. 1 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  21. "Nay Pyi Taw, Mandalay healthcare staff to join 'Civil Disobedience Campaign'". The Myanmar Times. 2 February 2021. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  22. "Myanmar Medics Prepare Civil Disobedience Against Military Rule". The Irrawaddy (بزبان انگریزی). 2 February 2021. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  23. "After coup, medical workers spearhead civil disobedience campaign". Frontier Myanmar (بزبان انگریزی). 2021-02-02. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  24. "After coup, medical workers spearhead civil disobedience campaign". Frontier Myanmar (بزبان انگریزی). 2021-02-02. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  25. Matthew Tostevin؛ Grant McCool؛ Stephen Coates (Feb 3, 2021). "Myanmar doctors stop work to protest coup as UN considers response". Financial Review (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 فروری 2021. 
  26. Reuters Staff (Feb 2, 2021). "Anti-coup protests ring out in Myanmar's main city". Reuters (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 03 فروری 2021. 
  27. "Myanmar coup latest: UN Security Council stops short of issuing statement". Nikkei Asia (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  28. "စစ်အာဏာသိမ်းမှုကို အနုနည်းအာဏာဖီဆန်မှု တချို့ရှိလာခြင်း". ဗွီအိုအေ (بزبان برمی). اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  29. ^ ا ب پ "Thailand's Amata halts $1bn Myanmar property project after coup". Nikkei Asia (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  30. "Thai developer invests $1bn to put Myanmar industry on global map". Nikkei Asia (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  31. "3,000 Myanmar protesters rally in Tokyo for Suu Kyi's release". The Asahi Shimbun. 
  32. "Bangladesh wants democratic process upheld in Myanmar". Dhaka Tribune. 2A Media Limited. 1 فروری 2021. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  33. "China 'notes' Myanmar coup, hopes for stability". REUTERS. 1 فروری 2021. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  34. "China 'notes' Myanmar coup, hopes for stability". REUTERS. 1 فروری 2021. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  35. "Indonesia Urges All Parties in Myanmar to Exercise Self-Restraint". Ministry of Foreign Affairs of the Republic of Indonesia. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  36. "Japan urges Myanmar to uphold democracy after military stages coup". Kyodo News. 1 فروری 2021. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  37. "Press Release: Latest Situation in Myanmar". Ministry of Foreign Affairs (Malaysia). اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  38. "Pakistan hopes from all sides in Myanmar to be restraint, work for peace: Zahid Hafeez". www.radio.gov.pk (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  39. "S. Korea expresses concerns over Myanmar coup". Yonhap News Agency. فروری 1, 2021. اخذ شدہ بتاریخ فروری 1, 2021. 
  40. "MFA Spokesperson's Comments in Response to Media Queries on the Detention of Myanmar Leaders and Officials". Ministry of Foreign Affairs Singapore. 1 فروری 2021. 
  41. Tillett، Andrew (Feb 1, 2021). "Australia joins global condemnation of Myanmar generals". Financial Review (بزبان انگریزی). 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 فروری 2021. 
  42. "Statement on Myanmar". Minister for Foreign Affairs – Minister for Women – Senator the Hon Marise Payne. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  43. "Justin Trudeau on Myanmar: "The democratic process must be respected"". Cult MTL. 2 February 2021. 03 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  44. "France calls on Myanmar military to release Suu Kyi, respect election results". uk.sports.yahoo.com. 03 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  45. "Germany condemns Myanmar coup 'in strongest terms'". Aa.com.tr. 2020-11-08. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  46. "Japan urges Myanmar military to free Suu Kyi, restore democracy". Manila Bulletin. Agence France-Presse. 1 February 2021. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  47. Mahuta، Nanaia (1 February 2021). "New Zealand statement on Myanmar". via beehive.gov.nz. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  48. "Sánchez condena el golpe de Estado en Myanmar y pide vuelta a la democracia". La Vanguardia (بزبان ہسپانوی). 1 February 2021. 03 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  49. "Foreign Minister condemns military coup in Myanmar". sverigesradio.se. Sveriges Radio. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  50. Bir، Burak (1 February 2021). "Turkey condemns, 'deeply concerned' by coup in Myanmar". Anadolu Agency. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  51. "UK condemns military coup in Myanmar". Anadolu Agency (بزبان انگریزی). 1 February 2021. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  52. "Statement by White House Spokesperson Jen Psaki on Burma". The White House. 1 February 2021. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  53. Patrick Wintour؛ Julian Borger (2 February 2021). "Myanmar coup: Joe Biden threatens to resume sanctions". The Guardian (بزبان انگریزی). 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  54. "'Serious blow to democracy': World condemns Myanmar military coup". الجزیرہ (بزبان انگریزی). 1 February 2021. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  55. Cherni، Hajer (1 February 2021). "La Maison Blanche menace les auteurs du coup d'État militaire du Myanmar de sanctions" [White House threatens perpetrators of Myanmar military coup with sanctions]. Anadolu Agency (بزبان الفرنسية). 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  56. "West condemns Myanmar coup but Thailand, Cambodia shrug". Bangkok Post. Bangkok Post Public Company Ltd. 1 February 2021. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  57. "Myanmar's army seizes power, detains Aung San Suu Kyi". National Post (بزبان انگریزی). Reuters. 1 February 2021. 01 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  58. "Myanmar military coup: Nordic and Asian reactions". ScandAsia. 2 February 2021. 03 فروری 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 فروری 2021. 
  59. "ด่วน! ชาว 'เมียนมา' ชู 3 นิ้วบุกประท้วงหน้าสถานทูต ต้านรัฐประหารในประเทศ". Bangkok Biz News (بزبان تائی لو). 1 فروری 2021. اخذ شدہ بتاریخ 1 فروری 2021. 
  60. Pietromarchi، Virginia؛ Gadzo، Mersiha. "Myanmar's military stages coup d'etat: Live news". الجزیرہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  61. "Myanmar workers in Japan protest against Tatmadaw's actions". The Myanmar Times. 1 February 2021. اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2021. 
  62. Ben Butler؛ Ben Doherty (Feb 5, 2021). "Kirin beer company cuts brewery ties with Myanmar military over coup". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 05 فروری 2021. 
  63. Erin Handley (Feb 5, 2021). "Kirin, parent company of Australian beer company Lion, cuts ties with Myanmar military after coup". ABC News (Australia). اخذ شدہ بتاریخ 05 فروری 2021. 
  64. Netto، Stephen (Feb 5, 2021). "Police issues warning against plans to protest in Singapore over current situation in Myanmar". The Online Citizen. اخذ شدہ بتاریخ 05 فروری 2021. 
  65. "Police warn against plans to protest in Singapore over situation in Myanmar". CNA. Feb 5, 2021. اخذ شدہ بتاریخ 05 فروری 2021.