میر علی تبریزی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(میرعلی تبریزی سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
میر علی تبریزی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1330  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تبریز  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1452 (121–122 سال)، سنہ 1446 (115–116 سال) اور سنہ 1447 (116–117 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تبریز  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ فن کار، خطاط، شاعر  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
میرعلی تبریزی کی خطاطی کا نمونہ
میرعلی تبریزی کی خطاطی کا نمونہ

میرعلی تبریزی ( وفات: 856ھ/ 1452ء) خط نستعلیق کے بانی ہیں جو فارسی، پشتو، کھوار اور اردو لکھنے کے لیے عام طور پر استعمال ہوتا ہے۔ میر علی تبریزی نے دو رسمہائے خط نسخ اور تعلیق کی خصوصیات کو ملا کر ایک نیا خط بنایا جسے نستعلیق کہا جاتا ہے۔[1] ان کی زندگی کا زیادہ عرصہ تبریز میں گزرا وہ ماہر خطاط ہونے کے علاوہ ایک شاعر بھی تھے۔

میرعلی تبریزی کے بارے میں یہ بھی کہا جاتا ہے کہ ایک رات انہوں نے خواب میں ہنسوں کو اڑتے ہوئے دیکھا اور دورانِ پرواز ان کے لچکدار جسم اور ان کے پروں کی خوبصورت حرکت سے متاثر ہوکر بیدار ہونے پر عبارت کے الفاظ کو تعلیق کی خمداری اور نسخ کی ہندساتی خصوصیات آپس میں امتزاج کر کہ نستعلیق خط کو ایجاد کیا۔[2] جس طرح ہنس کے پروں کی طوالت اور خوبصورتی دیکھنے والے اور ہنس کی محو پرواز حرکات پر مختلف ہوا کرتی ہیں اسی طرح نستعلیق میں بھی ایک ہی حرف کو متعدد سیاق و سباق کے لحاظ سے مختلف انداز دیا جاتا ہے۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

میرعلی تبریزی ہرات (موجودہ افغانستان) میں چودہویں صدی میں پیدا ہوئے۔ انہیں کئی مرتبہ میر علی ہروی جو سولہویں صدی کے نستعلیق کاتب شاہی تھے، بھی سمجھا جاتا ہے لیکن دراصل یہ دو الگ شخصیات ہیں۔ ان کے بارے میں زیادہ معلومات تاریخی طور پر دستیاب نہیں۔ ان کی وفات 856ھبمطابق 1452ءمیں ہوئی۔ ان کی ولادت کے بارے میں ابہام پایا جاتا ہے جو 1320ء یا 1340ء ہو سکتی ہے۔ انہیں قدوة الکتاب کے لقب سے جانا جاتا ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. S. Brent Plate, "Religion, art, and visual culture: a cross-cultural reader",Palgrave Macmillan, 2002. pg 93:"precision of tradition still allows for creativity, and there is a telling story of a famous Persian calligrapher, Mir Ali Tabrizi (died c. 1420 CE),"
  2. Religion, art, and visual culture. by S. brent