میری سی کول

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
میری سی کول
Seacole - Challen.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1805[1][2][3][4][5][6][7][8][9][10]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
کنگسٹن[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 14 مئی 1881 (75–76 سال)[8][11]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
لندن  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of the United Kingdom.svg متحدہ مملکت برطانیہ عظمی و آئر لینڈ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ نرس،  آپ بیتی نگار[1]،  مصنفہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[12]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل نرس  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
میری سی کول

میری سی کول (انگریزی: Mary Jane Seacole) جمیکا کی ایک مشہور تاجرہ تھی۔ اس نے كريميائی جنگ کے دوران ایک برطانوی ہوٹل قائم کروائی۔ سی کول نے ہوٹل کو بیان کرتے ہوئے یہ کہا کہ یہاں جنگ کے میدان میں زخمی فوجیوں کو وہ مدد فراہم کی جائے گی۔ 1991ء میں بعد از مرگ انہیں جمیکا کے میرٹ کے اعزاز سے نوازا گیا۔

جڑی بوٹیوں کا علم انہوں نے کیریبین سے حاصل کیا تھا۔ كريمیائی جنگ کے دوران مدد کے لیے انہوں نے درخواست کی تو اس کے لیے رد کر دیا گیا تھا۔ بعد میں وہ آزادانہ طور پر سفر کرکے اپنا ہوٹل قائم کرنے کے بعد جنگ میں زخمی ہونے والے فوجیوں کی مدد کرنے لگی۔ وہ بطور رضاکار بے انتہائی مقبول ہو گئی۔ موت کے بعد کافی وقت تک انہیں بُھلا دیا گیا تھا لیکن آج انہیں ایک ایسی شخصیت کی طرح یاد کیا جاتا ہے جنہوں نے نسلی تعصب کا کامیابی سے مقابلہ کیا۔

ان کی نوشتہ سوانح حیات "مسز سی کول کی ہمہ قومی حیرت انگیز مہمات" (Wonderful Adventures of Mrs. Seacole in Many Lands) (1857ء) ابتدائی دور کی مشترکہ نسلوں کی خود نوشتہ سوانحات میں سے ایک ہے۔ حالانکہ سوانح کے کچھ واقعات موضوع نزاع بنے ہوئے کیونکہ کچھ لوگوں کا دعوٰی ہے کہ کامیابی کے کچھ دعوے سیاسی طور پر مبنی اور حقیقت سے بعید ہیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

میری سی کول کی پیدائش کنگسٹن، جمیکا میں میری جین گرانٹ کے طور پر ہوئی تھی۔ ان کے والد، جیمز گرانٹ ایک سکاٹش برطانوی فوج میں لیفٹیننٹ تھے اور ماں ایک ڈاكٹریس تھی، جو روایتی کیریبین اور افریقی جڑی بوٹیوں سے علاج کا استعمال کرتی تھی اور ان کی ماں کو ہوٹل بلنڈ یل ہال چلاتی تھی جو ایک بورڈنگ ہاؤس تھا۔ یہ اس وقت کے سب سے بہترین ہوٹلوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ یہیں پر سی کول نے اپنی نرسنگ کی مہارت حاصل کی۔ سی کول کی سوانح عمری کے مطابق انہوں نے طب کا استعمال اپنی ماں سے سیکھا۔ ان کی ماں نے ان کی بہت مدد کی۔ سی کول کو اپنے دونوں جہانوں جمیکا اور اسکاٹ لینڈ پر بہت فخر تھا اور وہ خود کے لیے ایک لفظ کریول (Creole) کا استعمال کرتی تھی جو نسلی غیر جانبداری کے معنی میں استعمال کیا جاتا ہے۔

اپنی ماں کے پاس جانے سے پہلے سيكلے نے اپنی زندگی کے چند سال ایک بزرگ عورت کے ساتھ گزارے جنہیں وہ قسم اپنی محسنہ بلاتی تھی اور وہاں ان کے ساتھ خاندان کے ارکان جیسا سلوک کیا جاتا تھا۔ وہاں انہوں نے اچھی تعلیم حاصل کی۔ اسکاٹ لینڈ کے ایک افسر اور ایک قابل احترام پیشہ ورانہ کی تعلیم بیٹی ہونے کے طور پر انہوں نے جمیکا کے معاشرے میں ایک اعلی حیثیت رکھتی تھی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ مصنف: Virginia Blain، Isobel Grundy اور Patricia Clements — عنوان : The Feminist Companion to Literature in English — صفحہ: 961
  2. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12381135s — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  3. آئی ایس این آئی: http://www.isni.org/0000_0000_8383_3614 — اخذ شدہ بتاریخ: 11 جنوری 2016
  4. Mary Seacole
  5. Mary Seacole
  6. Mary Seacole
  7. Mary Seacole — مصنف: آرون سوارٹز — اجازت نامہ: GNU Affero General Public License, version 3.0
  8. ^ ا ب دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/Mary-Seacole — بنام: Mary Seacole — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  9. ایف اے ایس ٹی - آئی ڈی: http://id.worldcat.org/fast/201325 — بنام: Mary Seacole — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  10. بنام: Seacole — ایس ای ایل آئی بی آر: https://libris.kb.se/auth/314492 — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  11. فائنڈ اے گریو میموریل شناخت کنندہ: https://www.findagrave.com/cgi-bin/fg.cgi?page=gr&GRid=9068802 — بنام: Mary Seacole — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  12. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb12381135s — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  • Portrait of Mary Jane Seacole (née Grant), by Albert Charles Challen, c.1869, National Portrait Gallery; Lost portrait of Mary Seacole discovered, National Portrait Gallery, published 10 January 2005. NPG Collection* "Mixed Historical Figures". MixedFolks. 2003. Retrieved 30 March 2008.
  • Elizabeth Anionwu (2006). "About Mary Seacole". Thames Valley University. Retrieved 30 March 2008.* Robinson, p. 10.
  • "James Grant". Geni.
  • Scotland on Sunday, 16 May 2010, p. 10.* Seacole, Chapter 1.
  • Robinson, p. 22.
  • Robinson, p. 24