نازیہ حسن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نازیہ حسن
Nazia Biddu Shashi Gopal.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 3 اپریل 1965  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 13 اگست 2000 (35 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لندن  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات سرطان  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
زہیب حسن  ویکی ڈیٹا پر (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فنی زندگی
صنف پاپ موسیقی  ویکی ڈیٹا پر (P136) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آلات موسیقی صوت  ویکی ڈیٹا پر (P1303) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادر علمی جامعہ لندن  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ گلو کارہ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحہ  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

نازیہ حسن کو برصغیر میں پاپ موسیقی کے بانیوں میں شمار کیا جاتا ہے۔ نازیہ حسن 3 اپریل 1965 میں کراچی پاکستان میں پیدا ہوئیں۔ تعلیم لندن میں حاصل کی۔ 1980 میں پندرہ سال کی عمر میں وہ اس وقت شہرت کی بلندیوں تک پہنچ گئیں جب انہوں نے بھارتی فلم قربانی کا گیت آپ جیسا کوئی میری زندگی میں آئے تو بات بن جائے گایا۔ اس گانے کی شہرت کے بعد نازیہ حسن نے گیتوں کے کئی البم اپنے بھائی زوہیب حسن کے جاری کیے۔ انہوں نے 1995 میں شادی کی اور سنہ 2000 میں سرطان سے وفات پاگئیں۔[1]

گیتوں کے البم[ترمیم]

  • آپ جیسا کوئی (1980)
  • ڈسکو دیوانے (1981)
  • بوم بوم (1982)
  • ینگ ترنگ (1986)
  • ہاٹ لائن (1987)
  • کیمرا کیمرا (1992)پس منظر

پس منظر[ترمیم]

نازیہ حسن کی پیدائش اپریل 1965 ء کو ہوئی ان کی وفات 13 اگست 2000 کو ہوئی [2] وہ ایک پاکستانی پاپ گلوکارہ ، گانا لکھاری ، وکیل اور سماجی کارکن تھیں۔ انہوں نے 10 سال کی عمر میں اپنے میوزک کیریئر کا آغاز کیا اور پاکستان کے نامور گلوکاروں میں سے ایک بن گئیں۔انہوں نے پورے جنوب مشرقی ایشیاء میں وسیع پیمانے پر مقبولیت حاصل کی اور انھیں جنوبی ایشیاء میں "پاپ کی ملکہ" کہا جاتا ہے[3] [4] وہ اپنے بھائی زوہیب حسن کے ساتھ دنیا بھر میں 65 ملین سے زیادہ ریکارڈ فروخت کی جانے والی البم کی خالق ہیں۔ ان کے انگریزی زبان کے گانے ڈسکو دیوانے نے انہیں برطانوی چارٹ میں جگہ بنانے والی پہلی پاکستانی گلوکارہ بنادیا۔اپنے کامیاب گلوکاری کیریئر کے وسط میں نازیہ حسن نے لندن کے دو نامور اسکولوں رچمنڈ امریکن انٹرنیشنل یونیورسٹی اور لندن یونیورسٹی سے معاشیات اور قانون میں ڈگری حاصل کی۔نازیہ حسن نے 1980 میں آنے والے گانے "آپ جیسا کوئی میری زندگی میں آئے" سے گلوکاری کا آغاز کیا جو بالی ووڈ کی ہندوستانی فلم قربانی میں شامل تھا[5] ان کا پہلا البم ڈسکو دیوانے (1981) ، دنیا بھر کے چودہ ممالک میں ریلیز ہوا اور اس وقت کا سب سے زیادہ فروخت ہونے والا ایشین پاپ ریکارڈ بن گیا[6] اس کے بعد بوم بوم (1982) [7] ینگ ترنگ (1984)[8] اور ہاٹ لائن (1987) جو زوہیب کے ساتھ ان کی آخری البم تھی۔ان کا آخری البم کیمرہ کیمرہ (1992) منشیات کے خلاف مہم کا حصہ تھا[9] وہ اپنے بھائی کے ساتھ وہ ٹیلی ویژن کے متعدد پروگراموں میں بھی دکھائی دیں۔ 1988 میں وہ سنگ سنگ میں موسیقی کے استاد سہیل رانا کے ساتھ نظر آئیں۔انہوں نے شعیب منصور کے تیار کردہ پہلے پاپ میوزک اسٹیج شو ، میوزک '89 کی میزبانی بھی کی [10] ان کی کامیابی نے پاکستانی پاپ میوزک کو تشکیل دینے میں کلیدی کردار ادا کیا۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

نازیہ حسن کراچی سندھ ، پاکستان میں پیدا ہوئیں اور ان کی پرورش کراچی اور لندن میں ہوئی۔ وہ ایک بزنس مین بصیر حسن اور ایک فعال سماجی کارکن منیزہ بصیر کی بیٹی تھیں [11] وہ گلوکار زوہیب حسن اور زارا حسن کی بہن تھیں۔نازیہ حسن نے لندن میں رچرڈ امریکن یونیورسٹی میں بزنس ایڈمنسٹریشن اور اکنامکس میں بیچلر کی ڈگری حاصل کی 1999 میں وہ اقوام متحدہ میں خواتین کے بین الاقوامی لیڈرشپ پروگرام میں شامل ہوگئیں بعد میں وہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے لئے کام کرنے گئیں۔ آپ نے لندن یونیورسٹی ڈے لاء (ایل ایل بی) کی ڈگری حاصل کی۔

کیرئیر[ترمیم]

نازیہ حسن نے 1970 کی دہائی میں گلوکاری کا آغاز کیا جب وہ بطور چائلڈ آرٹسٹ پاکستان ٹیلی ویژن (پی ٹی وی) کے متعدد ٹیلی ویژن پروگراموں میں نظر آئیں۔ان کے پیشہ ورانہ میوزک کیریئر کا آغاز پندرہ سال کی عمر میں ہوا جب انھوں نے 1980 میں بالی ووڈ فلم قربانی کے گانے "آپ جیسا کوئی" گایا۔ انہوں نے برطانیہ میں ایک پارٹی میں فلم ڈائریکٹر فیروز خان سے ملاقات کی۔ بعد میں فیروزخان نے لندن میں مقیم ہندوستانی موسیقی کے موسیقار بدو کے ساتھ نازیہ حسن کے آڈیشن کی درخواست کی۔ اس کے بعد بدو نے انھیں "آپ جیسا کوئی" کے لئے سائن کیا[12] [13] [5] یہ گانا ہندوستان میں ایک بہت بڑی کامیابی تھی اور انکے پاکستانی ہونے کے باوجود نازیہ حسن نے وہاں راتوں رات شہرت حاصل کی [14] 1981 میں نازیہ حسن نے گانے کے لئے بہترین خواتین پلے بیک کا فلم فیئر ایوارڈ جیتا۔ نازیہ حسن اور ان کے بھائی زوہیب حسن نے اپنا پانچواں البم کیمرہ کیمرہ ریکارڈ کیا۔ البم کی ریلیز سے پہلے انھوں نے اور زوہیب نے اعلان کیا کہ یہ ان کی آخری البم ہوگی۔ یہ البم 1992 میں جاری کیا گیا تھا۔ یہ ان کے پچھلے البموں کی طرح بہت زیادہ کامیاب نہیں رہی اور اسے صرف اوسط ردعمل ملا۔ البم کی ریلیز کے بعد انہوں نے اپنی ذاتی زندگی پر توجہ مرکوز کرنے کے لئے گلوکاری کا کیریئر چھوڑ دیا۔ بدو نے ایک گانا "میڈ ان انڈیا" تیار کیا تھا اور وہ چاہتا تھا کہ نازیہ اسے گائے۔لیکن ریٹائرڈ نازیہ حسن نے ایسا گانا گانے سے انکار کردیا[15] اس کے بعد یہ گانا علیشہ چنائے کو پیش کیا گیا۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

30 مارچ 1995 کو نازیہ حسن نے کراچی میں منعقدہ ایک اسلامی شادی کی تقریب میں بزنس مین مرزا اشتیاق بیگ سے شادی کی [12] یہ ان کے کینسر کی تشخیص کے بعد ہوا۔ ان کا ایک بیٹا عریز حسن ، 7 اپریل 1997 کو پیدا ہوا تھا۔ یہ شادی نازیہ کی موت سے دس دن قبل طلاق کے بعد ختم ہوگئی تھی [16] بعد میں ایک انٹرویو میں ان کے بھائی زوہیب حسن نے بتایا کہ نازیہ کی ذاتی زندگی ہنگاموں سے بھری ہوئی تھی اور اس نے اپنے طور پر ذاتی لڑائیاں لڑی تھیں [17]

میراث[ترمیم]

پاکستان کا متحرک معاصر پاپ میوزک منظر خود نازیہ حسن کے پاپ کی تجدید کا پابند ہے۔ نیز 1990 کے دہائی کے بینڈوں ، بشمول وائٹل سائنز اور جوپیٹرز ، کو "میوزک '89" پر ایک پلیٹ فارم ملا۔ہندوستان میں بھی انھوںنے پاپ موسیقی پر زورآور اثر ڈالا۔ انڈیا ٹوڈے میگزین نے انہیں ان سب سے اوپر 50 افراد میں شامل کیا جنھوں نے ہندوستان کا چہرہ بدلنے میں مدد کی۔ انھوں نے بالی ووڈ میوزک اور انڈیا پاپ کے موجودہ آئی ایسفارمزم کی ترقی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ "انھوں نے اپنے وقت سے بہت پہلے - ہندوستان میں ذاتی البم کے رجحان کی ابتدا کی ، جسے بعد میں علیشا چنائے ، لکی علی اورشویتا شیٹی نے آگے جاری رکھا[18] [19] -ان کی موسیقی کی بڑی کامیابی کے بعد نازیہ اور زوہیب پر EMI گروپ نے معاہدہ کیا اور وہ جنوبی ایشین کی پہلی گلوکار تھیں جن پر کسی بین الاقوامی میوزک کمپنی نے دستخط کیے تھے[18] ڈسکو دیوانے کی مقبولیت کی۔وجہ سے ان کا استقبال کلکتہ ایئرپورٹ پر 50،000 سے 100،000 لوگ کرتے ہیں [20] مارچ 2002 کو نازیہ حسن ٹرئبیوٹ کنسرٹ کراچی میں منعقد ہوا وائٹل سائنز اور جوپیٹرز نے ایک ساتھ اسٹیج پر مظاہرہ کیا تقریبا 77 سالوں میں پہلی بار، کنسرٹ میں پُرجوش شائقین نے شرکت کی۔23 مارچ 2002 کو حکومت پاکستان نے نازیہ حسن کو اعلٰی شہری ایوارڈ پرائیڈ آف پرفارمنس سے نوازا۔ اسلام آباد میں منعقدہ ایک سرکاری تقریب میں یہ ایوارڈ صدر پاکستان پرویز مشرف کی جانب سے نازیہ حسن کی والدہ منیزہ بصیر کو پیش کیا گیا۔ 2007 میں ، احمد حسیب نے نازیہ حسن کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے میوزک پری کی ایک دستاویزی فلم تیار کی تھی جو کارا فلم فیسٹیول اور یونیورسٹی آف انقرہ میں نمائش کے لئے پیش کی گئی تھی۔ 2009 میں ڈائریکٹر فراز وقار نے نازیہ کو موسیقی میں کام کرنے اور پاکستان کو فخر دلانے پر انہیں خراج تحسین پیش کیا۔ نازیہ حسن کو "پاکستان کی سوئیٹ ہارٹ" کے نام سے جانا جاتا ہے[21]نازیہ حسن اب بھی مقدس خوبصورتی اور معصومیت کی علامت ہے اور اس کا اکثر موازنہ راجکماری ڈیانا سے کیا جاتا ہے کیونکہ وہ سونے کے دل کے مالک کے طور پر جانی جاتی تھیں [22] 31 اکتوبر 2014 کو گلوبل وائسز آن لائن نے ان کا نام "ینگ ، آزاد خواتین کے نام سے منسوب کیا جنہوں نے پاکستان میوزک انڈسٹری میں اپنے لئے جگہ بنائی [23] 16 نومبر 2014 کو ، کوک اسٹوڈیو پاکستان نے زوہیب حسن اور زو وائکاجی کے گائے ہوئے گانا "جانا" کے ساتھ سیزن سات میں نازیہ حسن کو خراج تحسین پیش کیا۔ اس گانے کو ناقدین اور سامعین نے بھی خوب پذیرائی دی۔ یہ گانا میوزک چارٹ پر بہت اوپر رہا اور میوزک چینلز اور ریڈیو اسٹیشنوں پر بہت مقبول ہے۔ 17 نومبر 2014 کو ، نازیہ حسن کو اے آر وائی نیوز کی "پاکستان کی 11 خواتین علمبرداروں میں سے ایک" کےطور پر نامزد کیا گیا[24]

نازیہ حسن فاؤنڈیشن[ترمیم]

نازیہ حسن کے والدین نے 2003 میں نازیہ حسن فاؤنڈیشن کی تشکیل کے لئے اپنی بیٹی کی کوششوں کو آگے بڑھایا تاکہ وہ کسی بھی ذات ، نسل اور مذہب سے بالاتر ہوکر دنیا کو سب سے بہتر مقام بناسکیں۔ نازیہ حسن فاؤنڈیشن نے فیصلہ کیا کہ سڑک کے بچوں کے لئے اسکول کھولیں گے اور جس سے کام کرنے والے بچوں تعلیم میں مدد ملے گی [25] وہ پندرہ سالوں پر محیط اپنے کامیاب گلوکاری کیریئر کے ذریعے پاکستان کی مشہور شخصیتوں میں سے ایک بن گئیں۔ انہیں متعدد قومی اور بین الاقوامی ایوارڈز ملے اور 15 سال کی عمر میں فلم فیئر ایوارڈ جیتنے والی پہلی پاکستانی بن گئیں اور آج تک اس ایوارڈ کی سب سے کم عمر وصول کنندہ رہیں۔ نازیہ حسن پاکستان کے شہری ایوارڈ ، پرائیڈ آف پرفارمنس کے وصول کنندہ بھی تھیں۔ فلموں میں گانے کے علاوہ ، نازیہ حسن انسان دوست کاموں میں بھی مشغول رہیں اور 1991 میں یونیسف نے انھیں اپنا ثقافتی سفیر مقرر کیا[26] نازیہ حسن 13 اگست 2000 کو 35 سال کی عمر میں لندن میں پھیپھڑوں کے کینسر کی وجہ سے انتقال فرما گئیں۔

اعزازات[ترمیم]

گوگل نے 3 اپریل 2017 کو اُن کی 53ویں سالگرہ پر اُن کی تصویر کوڈوڈل کے طور پر [27] پر شامل کیا۔ یہ ڈوڈل پاکستان، آسٹریلیا، کینیڈا اور نیوزی لینڈ کے لیے تھا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Jai Kumar (23 اگست 2000). "Obituary: Nazia Hassan". guardian.co.uk. London: The Guardian. 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 مئی 2008. 
  2. Jai Kumar (23 August 2000). "Obituary: Nazia Hassan". guardian.co.uk. London: The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 18 مئی 2008. 
  3. "A toast to the queen of pop: Faraz Wakar's musical tribute to Nazia Hasan". اخذ شدہ بتاریخ 10 فروری 2016. 
  4. "Women Year Book of Pakistan" (en میں). Women Year Book of Pakistan (Ladies Forum Publications) 8: 405. 1990. doi:ڈی او ئي. 
  5. ^ ا ب "12 x 12: The 12 best Bollywood disco records". The Vinyl Factory. 28 February 2014. 
  6. "India Today" (en میں). انڈیا ٹوڈے (Thomson Living Media India Limited) 7 (13–16): 34. 1982. doi:ڈی او ئي. https://books.google.com/books?id=TKiVAAAAIAAJ. 
  7. "Pakistan Hotel and Travel Review" (en میں). Pakistan Hotel and Travel Review (Syed Wali Ahmad Maulai) 6-8: 45. 1983. doi:ڈی او ئي. https://books.google.com/books?id=blBQAAAAYAAJ. 
  8. "Nazia Hassan, our disco queen – The Express Tribune Blog". blogs.tribune.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 10 فروری 2016. 
  9. Desk، Entertainment (2015-04-03). "In memoriam: Nazia Hassan was born 50 years ago today". www.dawn.com. اخذ شدہ بتاریخ 10 فروری 2016. 
  10. http://blogs.tribune.com.pk/story/1054/nazia-hassan-our-disco-queen/
  11. Sangita Gopal؛ Sujata Moorti (2008). Global Bollywood: travels of Hindi song and dance. University of Minnesota Press. صفحات 98–9. ISBN 978-0-8166-4579-4. اخذ شدہ بتاریخ 07 جون 2011. 
  12. ^ ا ب "Nazia Hassan finally laid to rest". Expressindia.indianexpress.com. 7 September 2000. اخذ شدہ بتاریخ 09 اپریل 2014. 
  13. "'We'd wonder how the girls could go out with five guys who smelt so much of onions'". The Telegraph. Calcutta, India. 14 February 2010. اخذ شدہ بتاریخ 12 فروری 2010. 
  14. "Bollywood News: Bollywood Movies Reviews, Hindi Movies in India, Music & Gossip". Rediff.com. September 2000. اخذ شدہ بتاریخ 03 ستمبر 2010. 
  15. "Made for Nazia, sung by Alisha". Times of India. 20 September 2001. اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2011. 
  16. Qamar، Saaida (12 August 2012). "I will never forgive her: Zoheb Hassan". The Tribune. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2015. 
  17. "I will never forgive her: Zoheb Hassan". Express Tribune. 12 August 2012. اخذ شدہ بتاریخ 18 اکتوبر 2012. 
  18. ^ ا ب Bollywood.Net. "Remembering 'Aap Jaisa Koi' girl Nazia Hasan". 20 فروری 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 13 اگست 2009. 
  19. "Nazia Hassan: In memory of an iconic pop singer". Voice of India. 20 فروری 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 14 اگست 2009. 
  20. "The legacy of Nazia". دی ٹیلی گراف (بھارت) (بزبان انگریزی). 27 November 2005. 
  21. Web desk (3 April 2012). "'Pakistan's sweetheart': Nazia Hassan's 47th birthday". The Express Tribune. Tribune.com.pk. اخذ شدہ بتاریخ 09 اپریل 2014. 
  22. "PTV CLASSICS Yes Sir No Sir". youtube.com. اخذ شدہ بتاریخ 22 اپریل 2011. 
  23. "How Young, Independent Women are Making a Space for Themselves in Pakistan's Music Industry". Global Voices. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2015. 
  24. "11 female pioneers of Pakistan | ARY NEWS". arynews.tv. اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2015. 
  25. http://khaleejtimes.com/international/pakistan/pakistani-pop-star-nazia-hassans-family-to-open-school-for-street-children
  26. "Nazia Hassan – Women of Pakistan". Jazbah.org. 24 اکتوبر 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 ستمبر 2010. 
  27. گوگل ڈوڈلز