ندا حسنی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ندا حسنی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1977  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تہران  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 23 جون 2003 (25–26 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لندن  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات خود سوزی  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات خود کشی  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت مجاہدین خلق  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کارلتون  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ندا حسنی (پیدائش 1977ء، تہران، ایران ؛ وفات 23 جون 2003ء، لندن، انگلینڈ ) ایک ایرانی احتجاجی کے طور پر قابل ذکر ہے جس نے خود سوزی کر کے خودکشی کر لی تھی۔

تاریخ[ترمیم]

ندا حسنی کی پیدائش احمد اور فروغ حسنی کے ہاں ہوئی تھی، جو تین بچوں پر مشتمل ایک ایرانی خاندان کی سب سے بڑی اولاد تھی۔ اس خاندان نے 1980ء کی دہائی کے اوائل میں ایران چھوڑ دیا، اوٹاوا، اونٹاریو، کینیڈا میں آباد ہونے سے پہلے یونان میں پناہ لی۔ [1][2] حسنی نے کارلٹن یونیورسٹی میں کمپیوٹر سائنس کی تعلیم حاصل کی تھی۔ [1]

حسنی ایران میں اپنے چچا محمود حسنی کی پھانسی کے بعد 1988ء تک ایران کے عوامی مجاہدین کی حامی تھیں۔ ان کے والدین کے مطابق وہ تنظیم کی رکن نہیں تھی۔ محمود حسنی ان کے والد کے چھوٹے بھائی تھے، اور پھانسی سے قبل سات سال تک ایران میں قید تھے۔ [1] بچپن میں حسنی جیل میں اپنے چچا سے ملنے گئی تھیں۔ ان کے چچا ایک اندازے کے مطابق 35,000 مخالفیں کے اس گروپ میں شامل تھے جنہیں اس وقت پھانسی دی گئی تھی۔ حسنی کی مجاہدین کے لیے حمایت کی وجہ سےایران کی قومی مزاحمتی کونسل میں شامل ہونے کے لیے پیرس چلی گئیں، [2]

17 جون 2003ء کو حسنی لندن میں چھٹیاں گزار رہی تھیں، جب فرانس میں پولیس نے عوامی مجاہدین ایران کے ہیڈکوارٹر پر چھاپہ مارا، تقریباً 160 ارکان، جن میں مریم راجوی، اس گروپ کی شریک رہنما، ان کے شوہر مسعود راجویکو پوچھ گچھ کے لیے حراست میں لیا۔ اس گروپ پر یورپ میں ایرانی مفادات کے خلاف حملوں کی منصوبہ بندی کا شبہ تھا۔ [1][3][4] حسنی بعد میں فرانس میں گرفتاری اور رجوی اور مجاہدین کے دیگر ارکان کی ایران میں ممکنہ ملک بدری کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے لندن میں فرانسیسی سفارت خانے میں طلباکے احتجاج میں شامل ہوئیں۔ خود سوزی کے ذریعے احتجاج کرنے والے کچھ مظاہرین کے درمیان میں بحث ہوئی۔ حسنی کے حوالے سے کہا گیا کہ "ہم سب ایسا کرنے کے بارے میں سوچتے ہیں"، [1] اس حقیقت کے باوجود کہ شریک رہنما مریم راجوی نے خودکشی کے احتجاج کی مخالفت کا اظہار کیا۔ [4] 18 جون کی شام تقریباً 7:15 پر شام کو، حسنی، اکیلے، لندن میں فرانسیسی سفارت خانے کے سامنے واپس آئیں، جہاں انھوں نے خود کو پٹرول چھڑک کر آگ لگا لی۔ انہیں دو گھنٹے بعد ڈھونڈا گیا، اور اس کے بعد 23 جون کو ہسپتال میں اپنی والدہ کی موجودگی میں، [1][2] ان کی وفات ہوئی۔ [5]

حسنی کی میت تدفین کے لیے کینیڈا واپس بھیج دی گئی۔ حسنی کے جنازے میں، 30 جون 2003H کو، حسنی کی والدہ نے اپنی بیٹی کے اعمال پر فخر کا اظہار کیا۔ [2] انھوں نے اپنی بیٹی کی موت کے فوراً بعد انگلینڈ میں بھی اسی طرح کے جذبات کا اظہار کیا، جب کہ دوسروں کو اپنی بیٹی کی مثال پر عمل کرنے کی حوصلہ شکنی کی۔ [5]

حسنی کو پنکریسٹ قبرستان، اوٹاوا میں دفن کیا گیا ہے۔ [2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ ث Jeevan Vasagar، Parents mourn 'brave girl' who set herself on fire in memory of uncle; دی گارڈین، 25 جون 2003. اخذکردہ بتاریخ 2013-12-27.
  2. ^ ا ب پ ت ٹ Sarah Kennedy، 'I'll send Neda's message to the world,' mother vows. Ottawa Citizen، جولائی 1, 2003, pp. D1, D4.
  3. بی بی سی نیوز، Iranian fire protests at Paris arrests; جون 18, 2003. اخذکردہ بتاریخ 2013-12-29.
  4. ^ ا ب بی بی سی نیوز، Appeal over fire protests; جون 21, 2003. اخذکردہ بتاریخ 2013-12-29.
  5. ^ ا ب بی بی سی نیوز، Mother's tribute to fire victim; جون 26, 2003. اخذکردہ بتاریخ 2013-12-29.