نمیکہ سلطان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نمیکہ سلطان
معلومات شخصیت
پیدائش 9 مارچ 1888  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
یلدز محل،  قسطنطنیہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 6 ستمبر 1969 (81 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بوستانجی  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
والد محمد سلیم آفندی  ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

امینہ نمیکہ سلطان ( عثمانی ترکی زبان: امینہ نميكہ سلطان ; 9 مارچ 1888ء – 6 ستمبر 1969ء) ایک عثمانی شہزادی تھیں، جو سلطان عبدالحمید ثانی کے بیٹے شہزادہ محمد سلیم کی بیٹی تھیء۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

نمیکہ سلطان 9 مارچ 1888ء کو یلدز محل میں پیدا ہوئیں۔ [1] ان کے والد شہزادہ محمد سلیم تھے، اور ان کی والدہ اریا حانم تھیں، جو حسن علی مارشن اور فاطمہ ہوریکان اریدبا کی بیٹی تھیں۔ ان کی والدہ سلطان محمد وحید الدین کی پہلی بیوی نازک ادا قادین کی بہن تھیں۔ [2] وہ اپنے والدین کی دوسری اولاد اور اکلوتی بیٹی تھیں۔ ان کا ایک بڑا بھائی شہزادہ محمد تھا جو جوانی میں مر گیا تھا۔ وہ سلطان عبدالحمید ثانی اور بدر فلک قادین کی پوتی تھیں۔ [3]

مارچ 1898ء میں، انھوں نے اپنی خالہ نعیمہ سلطان کی شادی میں شرکت کی، جو عبدالحمید ثانی اور بیدار قادین کی بیٹی تھیں اور غازی عثمان پاشا کے بیٹے، محمد کمال الدین پاشاسے شادی کر رہی تھیں۔ رسمی موقع کے دوران میں، وہ اپنی خالہ شادیہ سلطان اور عائشہ سلطان کے ساتھ بیٹھی تھیں۔ [1]

نمیکہ نے اپنی ماں کو 1904ء میں کھو دیا جب وہ سولہ سال کی تھیں۔ [3]

شادی[ترمیم]

نمیکہ سلطان نے علی قینان اسین بے سے 22 جون 1911ء کو یلدز محل میں شادی کی۔ [1] جوڑے کو گوزٹیپ محل ان کی رہائش کے طور پر دیا گیا تھا۔ نمکیہ نے 13 نومبر 1912ء کو پہلی اولاد، ایک بیٹی، فاطمہ فتحیہ خانم سلطان کو جنم دیا۔ تین سال بعد، 14 ستمبر 1915ء کو، نمکیہ نے گوزٹیپ محل میں اپنی دوسرے اولاد، ایک بیٹے، سلطان زادہ ابراہیم کو جنم دیا۔ چار سال بعد، 1 مارچ 1920ء کو، اس نے گوزٹیپ محل میں اپنی تیسرے اولاد، ایک بیٹے، سلطان زادہ کاظم کو جنم دیا۔ [3][4] ان کے شوہر بیرون ملک تعلیم حاصل کرنے والے ترکی کے پہلے کان کنی انجینئر تھے۔ [5]

مارچ 1924ء میں شاہی خاندان کی جلاوطنی پر، نمکیہ اور ان کا خاندان پیرس، فرانس میں آباد ہوا، جہاں انھوں نے 15 جنوری 1927ء کو اپنی چوتھی اور آخری اولاد کو جنم دیا۔ [3]۔ بعد میں وہ طرابلس، لبنان چلے گئے۔ یہاں ان کے شوہر علی قینان نے طرابلس کے میئر کے طور پر خدمات انجام دیں۔ [6] وہ 1962ء میں علی قینان کی وفات پر بیوہ ہو گئیں۔ [3]

موت[ترمیم]

1952ء میں، شہزادیوں کے لیے قانون کی منسوخی کے بعد، نمکیہ ترکی واپس آگئیں، اور استنبول کے بوستانجی ضلع میں آباد ہو گئیں۔ [3] ان کا انتقال 6 ستمبر 1969ء کو 81 سال کی عمر میں ہوا اور انہیں یحییٰ آفندی قبرستان، استنبول میں واقع شہزادہ کمال الدین کے مقبرے میں دفن کیا گیا۔ [1] [3][4]

شجرہ نسب[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت Brookes 2010.
  2. Aredba، Rumeysa؛ Açba، Edadil (2009). Sultan Vahdeddin'in San Remo Günleri. Timaş Yayınları. صفحہ 33. ISBN 978-9-752-63955-3. 
  3. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج Adra، Jamil (2005). Genealogy of the Imperial Ottoman Family 2005. صفحہ 24. 
  4. ^ ا ب "SULTAN İKİNCİ ABDÜLHAMİD HAN'IN TORUNLARI". Ibrahimpazan.com. اخذ شدہ بتاریخ 28 جون 2020. 
  5. "Saray'a Damat Olmak.۔۔". www.erkembugraekinci.com. 1 جولائی 2019. اخذ شدہ بتاریخ 1 نومبر 2020. 
  6. Ekinci، Ekrem (1924-03-03). "LÜBNAN'DA SON OSMANLILAR". Ekrem Buğra Ekinci (بزبان ترکی). اخذ شدہ بتاریخ 06 فروری 2021.