نور بانو (گلوکار)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نور بانو (گلوکار)
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1942  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 14 فروری 1999 (56–57 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تلہار  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

نور بانو (ولادت: 1942ء - وفات: 14 فروری 1999ء) سندھ کی ایک لوک گلوکارہ تھیں۔[1] اپنی عمدہ اور پیاری آواز کی وجہ سے، وہ پورے سندھ میں، خاص طور پر دیہی سندھ میں مقبول تھی


سوانح عمری[ترمیم]

نور بانو 1942 میں پیری لاشاری ضلع بدین سندھ کے قریب گاؤں میتھو گوپانگ میں پیدا ہوئی تھیں۔ بعد میں، وہ تلہار سندھ چلی گئیں۔ اس کے والد کا نام سلیمان گوپانگ تھا جو ایک غریب کسان تھا. وہ کسی اسکول میں نہیں جاتی تھی اور آس پاس کے دیہات میں شادی کے گیت گاتی تھی.[2] انہوں نے حیات گوپانگ اور استاد مٹھو کچھی سے موسیقی کی تربیت حاصل کی۔

معروف اسکالرز پیر علی محمد شاہ راشدی اور پیر حسام الدین شاہ راشدی کو سندھ کی موسیقی اور ثقافت سے پیار تھا۔ انہوں نے تلہار میں سید وڈل شاہ راشدی کی رہائش گاہ کا دورہ کیا۔ سید وڈل شاہ نے ان کے اعزاز میں میوزیکل پروگرام کا اہتمام کیا۔نور بانو کو اس پروگرام میں گانے کے لئے بلایا گیا تھا۔ مہمان ان کی فطری میٹھی آواز سے بہت متاثر ہوئے اور انہیں ریڈیو پاکستان حیدرآباد میں گانے کا مشورہ دیا۔ پیر زمان شاہ راشدی، سید ودل شاہ کے بیٹے نے ان کا تعارف 1960 کی دہائی کے آخر میں ریڈیو پاکستان میں کیا۔[3] ریڈیو پاکستان میں ان کا پہلا گانا تھا "منهنجي ماروئڙن جون ٻوليون سڃاڻان" ("Munhnjay Marooaran joon boliyoon sujanan" میں اپنی عوام کی زبانیں جانتی ہوں)۔ یہ گانا ایک ہٹ گانا ثابت ہوا اور وہ سندھ کے ہر گاؤں میں مقبول ہوگئی۔ اس کا دوسرا ہٹ گانا تھا "منہنجے متھرں مارون تی ائے آلا ککر چھانو کجان Munhinjay Mithran Marun Tay Ala Kakar Chhanwa Kajan"۔ 1970 اور 1980 کی دہائی میں وہ سندھ کی مشہور خواتین لوک گلوکاروں میں شامل تھیں۔

ریڈیو پاکستان میں، انہوں نے زیادہ تر گانے بطور تنہا گلوکارہ گائے، تاہم، انھوں نے مشہور گلوکاروں ماسٹر محمد ابراہیم، مٹھو کچی، زرینہ بلوچ اور آمنہ کے ساتھ بھی گانے گائے۔ وہ اپنے سندھی شادی گانوں کے لئے بھی مشہور تھیں جنھیں "لاڈا" یا سہرہ کہتے ہیں۔ ان کے کچھ گانے ریڈیو پاکستان حیدرآباد کی میوزک لائبریری میں دستیاب ہیں۔


موت[ترمیم]

وہ 14 فروری 1999 کو تلہار میں فوت ہوگئیں اور انہیں حیدر شاہ لکیاری قبرستان میں سپردخاک کردیا گیا.[4]


میراث[ترمیم]

ان کی بیٹی ہمیرا گوپانگ بھی گلوکارہ تھیں لیکن وہ اپنی والدہ کی طرح مقبولیت حاصل نہیں کرسکیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Mai Noor Bano Sindhi Folk Music Singer". Media Music Mania (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 اپریل 2020. 
  2. Rahookro Usman; Noor Bano Gopang, Sona Sarekhiyoon Sartiyoon (In Sindhi), pp. 145, Samroti Publication, Tharparker, 2017.
  3. "Mai Noor Bano Sindhi Folk Music Singer". Media Music Mania (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 13 اپریل 2020. 
  4. Chandio, Khadim Hussain; Noor Bano, Maroo Jay Malir Ja (in Sindhi), pp. 242, Ganj Bux Kitab Ghar, 2002.