نگکی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نگکی
قصبہ
خیبر پختونخوا میں ایبٹ آباد
خیبر پختونخوا میں ایبٹ آباد
ملک پاکستان
صوبہ خیبر پختونخوا
صدر مقام ایبٹ آباد
منطقۂ وقت پاکستان معیاری وقت (UTC+5)
ویب سائٹ http://www.abbottabad.gov.pk

نگکی(Nagakki) ضلع ایبٹ آباد کاایک گاؤں ہے۔ جو شہرکے جنوب مشرق میں واقع ہے۔ ایبٹ آباد شہر سے ملا ہواہے۔ یہ ایک پہاڑی علاقہ ہے۔

ماحولیات[ترمیم]

سربن پہاڑی اسی گاؤں میں واقع ہے جس میں راجا رسالو کاتاریخی غارموجودہے۔ یہاں کی تاریخی جامع مسجد علی المرتضی اپنے فن تعمیر کی وجہ سے بہت مشہور ہے۔

تعلیم و صحت[ترمیم]

یہ گاؤں تعلیمی اعتبار سے ایبٹ آباد کے پسماندہ علاقوں میں شمار ہوتا ہے۔ گاؤں میں کل پانچ پرائمری اسکول جن میں تین لڑکوں اور دولڑکیوں کے ہیں۔ اس کے علاوہ ایک مڈل سکول لڑکیوں کے لیے الگ سے ہے۔ گاؤں میں صحت کی سہولیات بالکل نہیں ہیں۔ اگر کوئی شخص بیمار پڑجائے تو اس کوچار پائی پراٹھا کر ایبٹ آباد لایا جاتا ہے۔ اکثر مریض راستے میں ہی دم توڑ جاتے ہیں۔ گاؤں میں نو چھوٹی مسجدیں اور دوجامع مساجد ہیں۔

آبادیات[ترمیم]

گاؤں کی اکثریت گجربرادری سے تعلق رکھتی ہے۔ تاہم یہاں پر چند گھر سادات ,کشمیریوں کے بھی ہیں۔ گاؤں کی آبادی تقریبا پانچ ہزار افراد پر مشتمل ہے۔ اس گاؤں کی آبادی مختلف محلہ جات میں پھیلی ہوئی ہے جن میں محلہ گراں، ڈنہ،گویرا، کلساں،پھلواڑیاں،تنگڑ، جوڑیاں، پنولہ، گڑنگاں، منو دی گلی، کوٹ، رتیاں، چھوئیاں،بیکڑی، ناڑیاں، کندھے،پلہڑ، ھاڑیاں اور پتن شامل ہیں۔ گاؤں تقریبا سب لوگ گوجری زبان بولتے ہیں۔ تاہم ہندکو بھی سمجھی جاتی ہے۔ گاؤں کی چند کلومیٹر سڑک پختہ ہے باقی آدھی سڑک کچی ہے جو علاقے کے مکینوں نے اپنی مدد آپ بنائی ہے۔ اپنی خوبصورتی کے لحاظ سے یہ علاقہ اپنی مثال آپ ہے۔ لیکن علاقے کے نمائندوں نے ہمیشہ اس گاؤں سے سوتیلی ماں جیسا سلوک کیا ہے۔ جس کی وجہ سے یہاں بنیادی سہولیات نہ ہونے کے برابر ہیں۔ گاؤں کی زمین زرخیز ہے۔ فصلوں میں گندم اور مکئی بوئی جاتی ہے۔ اس کے علاوہ پھلوں میں خوبانی اخروٹ ناشپاتی وغیرہ پائے جاتے ہیں۔ یہاں کی مشہور شخصیات میں مرحوم مولوی خلیل الرحمٰن رح۔ اور ان کے چھوٹے بھائی مرحوم محمد یونس۔ عزیز الرحمان آف ناڑیاں۔ مرحوم ٹھیکیدار چوہدری تاج محمد۔ حاجی اسماعیل۔ چن زیب سابقہ کسان کونسلر۔ مظفر ملک۔ حاجی مشتاق احمد۔ چوہدری میرداد۔ اورنگزیب ماسٹر۔ شامل ہیں۔ گاؤں میں نوجوان کی اکثریت بیرون ملک بوجہ روزگار مقیم ہیں۔ جن میں سعودی عرب اور دبئی سرفہرست ہیں۔ یہاں کی عورتیں محنتی ہیں اور مردوں کے شانہ بشانہ کام کرتی ہیں۔ جس میں گھر کے کام کاج کے علاوہ فصل کٹائی اور گھاس کٹائی اور مویشیوں کو سنبھالنا شامل ہے۔ اگر حکومت اس علاقے پر تھوڑی سی توجہ بھی دے تو اس علاقے کی تقدیر بدل سکتی ہے۔ کیونکہ یہ علاقہ ایبٹ آباد کا قریبی ہل سٹیشن بن سکتا ہے۔

مزید[ترمیم]