نہال سیوہاروی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نہال سیوہاروی
معلومات شخصیت
پیدائش 27 اگست 1901  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سیوہارہ،  بجنور ضلع،  برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 29 اگست 1951 (50 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کراچی،  پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شعبۂ عمل غزل،  رباعی  ویکی ڈیٹا پر (P101) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

نہال سیوہاروی (پیدائش: 27 اگست، 1901ء - وفات: 29 دسمبر، 1951ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے ممتاز شاعر تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

نہال سیوہاروی 27 اگست، 1901ء میں سیوہارہ، بجنور ضلع، اترپردیش، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے تھے۔[1][2] ان کا اصل نام منشی عبد الخالق تھا۔ تقسیم ہند کے بعد وہ پاکستان منتقل ہو گئے تھے۔ ان کے مجموعہ کلام گلبانگ آزادی اور شباب و انقلاب کے نام سے اشاعت پزیر ہوچکے ہیں۔[2]

تصانیف[ترمیم]

  • گلبانگ آزادی (56 رباعیات)
  • شباب و انقلاب (1927ء سے 1943ء تک کا کلام، پیش لفظ از جوش ملیح آبادی) سال اشاعت 1944ء

نمونۂ کلام[ترمیم]

غزل

اُڑا لیے ہیں کچھ اربابِ گلستاں نے تو کیاہزار شیوۂ نو ہیں مری فغاں کے لیے
زمینِ کوچۂ جاناں سے آ رہی ہے صدابلندیاں نہیں مخصوص آسماں کے لیے
ہے سخت بے ادبی گر کہے فسانۂ عشقہر ایک بات مناسب نہیں زباں کے لیے
اندھیری رات، تھکی ہمتیں، کڑی منزلسلامتی کی دعا مانگ کارواں کے لیے
سجائی فکرِ درخشاں نے میری بزمِ نجومتھی منتظر یہ زمیں ناز آسماں کے لیے[3]

غزل

رابطہ ہے مجھے شیشے سے نہ پیمانے سےپھر وہ کیا بات ہے منسوب ہوں مے خانے سے
اہلِ مے خانہ سلیقے سے پئیں آبِ حیاتورنہ پھر موت ہے چھلکے گی جو پیمانے سے
ایک عالم سے جدا مصلحتیں ہیں اُس کیکون ہر بات پہ اُلجھے ترے دیوانے سے
خرد آشوب ہے ہر نکتۂ عرفان حیاتاور بڑھتا ہے جنوں عقل کے بڑھ جانے سے[4]

وفات[ترمیم]

نہال سیوہاروی 29 دسمبر، 1951ء کو کراچی، پاکستان میں وفات پاگئے۔[1][2]

حوالہ جات[ترمیم]