نیوزی لینڈ میں خواتین کا حق رائے دہی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کیٹ شیپرڈ نیوزی لینڈ کی خواتین کے حق رائے دہی کی تحریک کی سب سے نمایاں رکن تھیں۔

نیوزی لینڈ میں خواتین کا حق رائے دہی انیسویں صدی کے آخر میں ایک اہم سیاسی مسئلہ تھا۔ ابتدائی نوآبادیاتی نیوزی لینڈ میں، جیسا کہ یورپی معاشروں میں، خواتین کو سیاست میں کسی بھی طرح کی شمولیت سے باہر رکھا گیا تھا۔ انیسویں صدی کے نصف آخر میں رائے عامہ میں تبدیلی آنا شروع ہوئی اور کیٹ شیپارڈ کی قیادت میں خواتین کے حق رائے دہی کی مہم چلانے والوں کی برسوں کی کوششوں کے بعد نیوزی لینڈ دنیا کی پہلی ایسی قوم بن گئی جہاں تمام خواتین کو پارلیمانی انتخابات میں ووٹ ڈالنے کا حق حاصل ہوا۔[1]

خواتین کو حق رائے دہی دینے والے انتخابی بل کو گورنر لارڈ گلاسگو نے 19 ستمبر 1893ء کو شاہی منظوری دی تھی۔ 28 نومبر 1893ء کو ہونے والے انتخاب میں خواتین نے پہلی بار ووٹ دیا (ماؤری ووٹروں کے لیے انتخابات 20 دسمبر کو ہوئے تھے)۔ اس کے علاوہ 1893ء میں، الزبتھ یٹس اون ہنگا کی میئر بنیں، پہلی بار برطانوی سلطنت میں کسی خاتون کو ایسا عہدہ ملا تھا۔[2]

21ویں صدی میں مردوں کے مقابلے خواتین ووٹر زیادہ ہیں اور خواتین بھی مردوں کے مقابلے زیادہ ووٹ ڈالتی ہیں۔[3] تاہم، مرد غیر ووٹر کے مقابلے خواتین کی زیادہ فیصد تعداد ایسی رکاوٹ کو محسوس کرتی ہے، جو انہیں ووٹ ڈالنے سے روکتی ہے۔[4]

ابتدائی مہم[ترمیم]

پولینیشیائی معاشرے اور یورپی اشرافیہ میں خواتین نسب کے ذریعے اہم رسمی سیاسی عہدے حاصل کر سکتی ہیں۔[5] تاہم، پولینیشیائی اور توسیعی طور پر ماوری معاشرہ کرشماتی خواتین کے نمایاں براہ راست اثر و رسوخ رکھنے میں اختلاف تھا۔[6][7] یہ مارے (کمیونٹی ہاؤسز) پر ہونے والی کچھ میٹنگوں میں خواتین کو بات نہ کرنے کی پابندی کی وجہ سے محدود تھا۔ نتیجے کے طور پر، کچھ مورخین نوآبادیات کو نیوزی لینڈ میں خواتین کے حقوق کے لیے ایک عارضی قدم کے طور پر دیکھتے ہیں۔[8]

نیوزی لینڈ میں حق رائے دہی کی تحریک 19ویں صدی کے آخر میں شروع ہوئی، جو برطانوی سلطنت اور ریاستہائے متحدہ میں اسی طرح کے گروہوں سے متاثر تھی۔[9] ووٹ دینے کا حق بڑی حد تک سماجی اخلاقیات کو بہتر بنانے اور خواتین کی حفاظت اور معیار زندگی کو بہتر بنانے کے طریقے کے طور پر تلاش کیا گیا۔ لہاذا، حق رائے دہی کی مہمات شراب کی نقل و حرکت کی ممانعت کے ساتھ جڑی ہوئی تھیں۔ یہ کچھ مزاحمت کا مرکز تھا، اس تحریک کو اکثر مقامی ذرائع ابلاغ میں پیوریٹینیکل اور ڈریکونین کے طور پر پیش کیا جاتا تھا۔ اس کی وجہ سے وہ سیاست دان بھی نکلے جنہوں نے خواتین کے حق رائے دہی کی مخالفت کرنے والے الکحل کی صنعت کی حمایت کی، جیسا کہ جنوبی ڈنیڈن کے ایم پی ہنری فش۔[10]

1869ء میں، ایک تخلص کے تحت، میری این مولر نے نیوزی لینڈ کے مردوں کے لیے ایک اپیل لکھی، جو نیوزی لینڈ میں شائع ہونے والے خواتین کے حق رائے دہی کے معاملے پر پہلا پمفلٹ تھا۔[11] 1870ء کی دہائی میں، میری این کولکلو (پولی پلم) عام طور پر خواتین کے حقوق اور خواتین کے حق رائے دہی کے لیے سرگرم وکیل تھیں۔[12] جان لارکنز چیز رچرڈسن خواتین کی ذمہ دارانہ مساوات کے شدید حامی تھے، وہ 1871ء میں جامعہ اوٹاگو میں خواتین کو داخلہ لینے کی اجازت دینے کے لیے تھے، اور ان کے داخلے کی راہ میں حائل دیگر رکاوٹوں کو دور کرنے میں مدد کرتے تھے۔[13] جان ہال، رابرٹ اسٹاؤٹ، جولیس ووگل، ولیم فاکس اور جان بیلنس سمیت کچھ سیاست دانوں نے بھی خواتین کے حق رائے دہی کی حمایت کی اور ء1878، 1879ء اور ء1887 میں خواتین کو ووٹ دینے والے بلوں کو پارلیمان میں شکست دی گئی۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Voting-age women outnumber men". archive.stats.govt.nz (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018. 
  2. "Voting and political participation | Stats NZ". www.stats.govt.nz. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018. 
  3. Gunson، Niel (1987). "Sacred women chiefs and female 'headmen' in Polynesian history". The Journal of Pacific History (بزبان انگریزی). 22 (3): 139–172. JSTOR 25168930. doi:10.1080/00223348708572563. 
  4. McLintock، Alexander Hare؛ R.F؛ Taonga، New Zealand Ministry for Culture and Heritage Te Manatu. "TRADITIONAL SOCIAL STRUCTURE". An encyclopaedia of New Zealand, edited by A. H. McLintock, 1966. (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018. 
  5. "Maori Women: Caught in the Contradictions of a Colonised Reality – Annie Mikaere – Te Piringa: University of Waikato". www.waikato.ac.nz. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018. 
  6. "First history of New Zealand women released". Stuff (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018. 
  7. "Brief history – Women and the vote | NZHistory, New Zealand history online". nzhistory.govt.nz. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018. 
  8. Women’s Suffrage، Archives New Zealand Info Sheet 4, مارچ 2011
  9. "Müller, Mary Ann"، Dictionary of New Zealand Biography
  10. "Mary Ann Colclough – Polly Plum | NZHistory, New Zealand history online". nzhistory.govt.nz. اخذ شدہ بتاریخ 16 دسمبر 2018. 
  11. Taonga، New Zealand Ministry for Culture and Heritage Te Manatu. "Richardson, John Larkins Cheese". teara.govt.nz (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 20 دسمبر 2018. 

مزید مطالعہ[ترمیم]

  • Dalziel, Raewynn. "Presenting the Enfranchisement of New Zealand Women Abroad" in Caroline Daley, and Melanie Nolan، eds. Suffrage and Beyond: International Feminist Perspectives (New York University Press, 1994) 42–64.
  • Grimshaw, Patricia۔ Women's Suffrage in New Zealand (1988)، the standard scholarly study
  • Grimshaw, Patricia۔ "Women’s Suffrage in New Zealand Revisited: Writing from the Margins," Caroline Daley, and Melanie Nolan، eds. Suffrage and Beyond: International Feminist Perspectives (New York University Press, 1994) pp 25–41.
  • Markoff, John. "Margins, Centers, and Democracy: The Paradigmatic History of Women's Suffrage," Signs: Journal of Women in Culture & Society (2003) 29#1 pp 85–116. compares NZ with Cook Islands & Finland in JSTOR
  • سانچہ:Cite Q
  • Ramirez, Francisco O.، Yasemin Soysal, and Suzanne Shanahan. "The Changing Logic of Political Citizenship: Cross-National Acquisition of Women’s Suffrage Rights, 1890 to 1990," American Sociological Review (1997) 62#5 pp 735–45. in JSTOR

بنیادی ماخذ[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

سانچہ:John Ballance