نیکسلائٹ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نیکسلائٹ کا دائرہ کار 2007 میں (بائیں) اور 2013 میں (دائیں).

بھارت کے وسطی اور مشرقی علاقوں کے دیہی علاقوں میں پوری قوت اور شدت سے اپنی جارحانہ سرگرمیوں میں مصروف نیکسلائٹ موومنٹ کے جنگ جو خود کو پسے ہوئے طبقے کا نجات دہندہ قرار دیتے ہیں۔ انہیں اپنی جدوجہد کے ابتدائی سفر کے لیے منتخب کیے گئے مغربی بنگال کے علاقے ’’نکسل ہاڑی ‘‘ کی مناسبت سے ’’نیکسل‘‘ یا ’’نیکسلائٹ‘‘ کہا جاتا ہے۔ واضح رہے کہ پچیس مئی 1967 کو شروع ہونے والی اس باغیانہ تحریک کے اولین راہنما 1918 میں مغربی بنگال میں جنم لینے والے ’’چارو ماجو مدادر‘‘ اور ’’کانو سینیال‘‘ تھے، چین کے عظیم لیڈر ماؤزے تنگ کے نظریے اور فلسفے سے انتہائی متاثر تھے۔ ’’چارو ماجومدار ‘‘ نے اپنی تحریک کی نظریاتی پہچان کے لیے ’’آٹھ تاریخی دستاویزات‘‘ تحریر کی تھیں۔ جو آج بھی نیکسلائٹ تحریک کے نظریاتی فلسفے اور منشور کی بنیاد ہیں۔ 1967 میں آل انڈیا کو آرڈیننس کمیٹی فار کمیونسٹ ریولوشن کا قیام عمل میں لایا گیا۔ تاکہ مختلف کمیونسٹ گروہوں کو ایک پلیٹ فارم پر یک جا کیا جائے اور بالآخر 1969 میں کیمونسٹ پارٹی آف انڈیا سی۔ پی۔ ای (ایم ایل) کی شکل میں ایک متحد جماعت منظر عام پر آئی۔ بنیادی طور پر تمام نیکسلائٹ گروپوں کا خمیر اسی پارٹی سے اٹھا ہے۔ لیکن بعد میں اختلافات کے باعث کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا (ماوسٹ) علاحدہ گروپ کی شکل میں پیپلز وار گروپ کے ساتھ مل کر کام کرنے لگی۔ 1972 میں پولیس کی حراست میں ’’چاروما جومدار‘‘ کی موت کے بعد 1980 کی دہائی تک نکسلائٹ باغیوں کے لگ بھگ 30 گروپ بن گئے تھے۔ تاہم یہ تعداد اب کم ہو چکی ہے۔ ایک اندازے کے مطابق اس وقت بھارت کے 640 ضلعوں میں سے 160 میں کسی نہ کسی شکل میں نکسلائٹ تحریک کے باغیوں کا اثر رسوخ ہے، جب کہ ملک کے کل جنگلات کے پانچویں حصے پر بھی یہ چھاپہ مار چھائے ہوئے ہیں۔ اگرچہ کئی ایسے گروپ ہیں جن کا دعوی ہے کہ وہ اصل نیکسلائیٹ گروپ سے تعلق رکھتے ہیں لیکن کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا ایک ایسی سیاسی جماعت ہے جو نیکسلائٹ موومنٹ کے منشور کو سیاسی طور پر پروان چڑھانے کے لیے انتخابات میں حصہ لیتی ہے۔ اس کے علاوہ انڈین پیپلز فرنٹ بھی نیکسلائٹ تحریک کاسیاسی بازو کہلاتا ہے۔ جب کہ کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا(ماؤسٹ) اور کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا(جانا شکتی ) مکمل طور پر چھاپہ مار جنگ میں مصروف ہیں۔ ہندوستان کی کئی ریاستوں خصوصاً چھتیس گڑھ میں ان کی باغیانہ کاروائیاں جاری رہتی ہیں۔ سرکاری اہل کاروں پر حملے پولیس سٹیشن پر حملے اور حکومتی رٹ کو چلینج کرنا ان گروپوں کا مشن ہے۔ کچلے ہوئے طبقات اور آدی واسیوں کو ان کی مکمل حمایت حاصل ہے۔

بیرونی روابط[ترمیم]